والد مرحوم کی یاد میں

(Rashid Ashraf, )
Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 4121 Print Article Print
About the Author: Rashid Ashraf

Read More Articles by Rashid Ashraf: 107 Articles with 124903 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

بہت ہی زبردست لکھا ہے اکتوبر کے مہینے میں والد صاحب کی یاد شدید تر ہو جاتی ہے آپ کا مضمون ہر دفعہ نئے سرے سے پڑھتا ہوں
By: Daud zafar nadeem , Sialkot on Oct, 07 2019
Reply Reply
0 Like
محمد اصغر ۔۔ اردو محفل پر تلمیذ ۔۔ گجرات

جناب محمد اصغر صاحب
آپ تو جانی پہچانی شخصیت ہیں، اردو محفل پر ایک عرصے سے آپ کے تبصرے دیکھ رہا ہوں
کس قدر اچھی بات آپ نے کہی کہ:
"اللہ رب العزت آپ کے والد صاحب اور جن پڑھنے والوں کے والد انتقال کر چکے ہیں، ان کے والد صاحبان کو جنت الفردوس میں جگہ عطا فرمائیں۔"

یہ دعا سب کے لیے ہے، تمام والدین کے لیے، یہ نعمت جس سے چھن جائے اس کی پریشاں حالی و پژمردگی کا تو کیا کہنا۔ میں نے زندگی میں دیکھا ہے کہ یہ عجب بات ہے کہ اکثر ایسا بھی ہوتا ہے کہ والدین کی زندگی میں اولاد ہر اچھا برا کررہی ہوتی ہے لیکن ادھر وہ دنیا سے رخصت ہوئے اور ادھر بچوں کو ان کی قدر اس طور معلوم ہوئی کہ زندگی کا رخ ہی بدل کر رہ گیا، جوں جوں وقت بیتا ہے اور انسان کی عمر بڑھتی ہے، اسے دنیا کی بے ثباتی اور والدین کی قدر و منزلت کا احساس ہوتا جاتا ہے، بہت سے خوش نصیب اس موقع سے فائدہ اٹھالیتے ہیں، کچھ ایسے ہیں جو ترستے رہ جاتے ہیں

ایک بات جو والد مرحوم کہتے تھے، بہت سادہ سی تھی، وہ یہ کہ "خلوص کے معاملے میں دنیا میں کوئی رشتہ ماں باپ سے بڑھ کر نہیں، ماں باپ کا خلوص اولاد کے لیے بے غرض ہوتا ہے، باقی سب کے پیچھے کوئی نہ کوئی غرض پوشیدہ ہوتی ہے۔""
By: Rashid Ashraf, Karachi on Dec, 15 2011
Reply Reply
0 Like
جناب راشد صاحب

آپ کے اس مضمون سے اپنے والد مرحوم کے لئے جو فطری محبت اور وابستگی عیاں یے وہ میری طرح کے بہت سے قارئین، جو اس نعمت سے محروم ہو چکے ہیں، کے لئے اپنے والد کی محبت بھری یادیں تازہ کرنے کا باعث ہے۔ ۔اللہ رب العزت آپ کے والد صاحب اور جن پڑھنے والوں کے والد انتقال کر چکے ہیں، ان کے والد صاحبان کو جنت الفردوس میں جگہ عطا فرمائیں۔
ابن صفی مرحوم کے حوالے سے آپ کے دئے ہوئے ربط کے ذریعے آپ کودیکھ کر اور آپ کی باتیں سن کر بہت اچھا محسوس ہوا۔

محمد اصغر ۔۔ اردو محفل پر تلمیذ ۔۔ گجرات
By: MUHAMMAD ASGHAR, Gujrat Punjab on Dec, 14 2011
Reply Reply
0 Like
شاہد احمد صاحب
آپ کا بہت شکریہ
By: Rashid Ashraf, Karachi on Nov, 23 2011
Reply Reply
0 Like
aaj dobara perha.buhut khub he
By: shahid ahmed, Khanewal on Nov, 22 2011
Reply Reply
0 Like
خؤرشید اکرام متوکل صاحب
آپ کے تبصرے پر بیحد ممنون ہوں
By: Rashid Ashraf, Karachi on Oct, 03 2011
Reply Reply
0 Like
Bhai Rashid yeh mai aaj kya padhne baith gaya aankheen aabdeedah ho gai,mere walid ka intaqal 1998 me huwa hai,lekin aaj woh beekhtear yad aagaei khas taur par woh jumla jo aap ne kisi murabbi ke hawale se quote kiya hai ;walid ki haseyat ghar ke main gate ki tarah hoti hai; yeh jis ke ghar ka main gate nahi hai wahi samajh sakta hai,Allah taala hum dono ke walidon ki maghfirat kare aur darjat ko buland kare,ameen.
By: Khursheed Ekram Mutawakkil, Kokata,India on Aug, 22 2011
Reply Reply
0 Like
Shah Sahab
Allah app kay walid sahab ko jannat main jaga dai - Ameen
Khair Andaish
By: Rashid Ashraf, Karachi on Jun, 16 2011
Reply Reply
0 Like
Rashid Bahi Allah Ap k Father Ki Maghferat Kry Or On Ko Janat men Jga De .Mary Sath b Saem He Hoa He...
By: Altaf shah, Islamabad on Jun, 16 2011
Reply Reply
0 Like
انجلا صاحبہ، عبید صاحب اور نعیم صدیقی صاحب
آپ کے قیمتی تبصروں کے لیے شکر گزار ہوں
نعیم صاحب! اللہ تعالٰی آپ کے والد محترم کے درجات بلند فرمائے آمین

خیر اندیش
راشد اشرف
By: Rashid Ashraf, Karachi on Dec, 27 2010
Reply Reply
0 Like
دلی کیفیات کا بے لاگ اور بے ساختہ۔ اظہار گہرا تاثر اور نصیحت بھی لئے ہوئے۔ کیونکہ یہ سانحہ مجھ پر ۱۹۷۹ میں گذر چکا ہے اس لئے میرے دل کو اس پر اثر تحریر نے زیادہ اداس کر دیا۔ ۲۸ مارچ ۱۹۷۹ میرے لئے ایک خوفناک سچ تھا کیونکہ میں جس ہستی کی صحت اور طویل عمری کی دعا اور خواہش کرتا تھا ان کے لئے مغفرت کی دعا کرنا میرا مقدر آئیے ہم دونوں ان دونوں کے لئے دعائے مغفرت کرتے ہیں۔

آسماں "انکی" لحد پر شبنم افشانی کرے
سبزہ نورستہ اس گھر کی نگہبانی کرے
By: Naeem Siddiqui, Jeddah on Dec, 27 2010
Reply Reply
0 Like
Allah aap kay Walid Sahib ko Jannat Naseeb karay, hum sub ko Naik, Eemandar, Dianut Dar, or Acha sucha Musalman banay, Aameen
By: ObaidUllah Muhammad, karachi on Dec, 27 2010
Reply Reply
0 Like
Beshak Rashid, baap ghar key main gate ki tarah, main gate hata deejaye, hifazat karna mushkil hojata hai.. aur aap apne walid mohtram ki bahtreen tarbeet ki akaas hain.
By: injila hamesh, karachi on Dec, 27 2010
Reply Reply
0 Like
بھائی عرفان انجم! آپ کا پیغام ابھی ابھی پڑھا، بہت شکریہ اس قدر محبت سے یاد کرنے کا
آپ سے ملاقات یاد نہیں، معافی چاہتا ہوں، یوں تو حیدرآباد میں ہمیشہ سے رہائش تھی لیکن والد صاحب کے بعد کوئی تین برس سے کراچی منتقل ہو گیا ہوں
رابطہ رکھئے گا اور ہاں، میری ویب سائٹ فرصت ہو تو ایک نظر دیکھئے گا، پتہ درج کررہا ہوں

www.wadi-e-urdu.com

مندرجہ ذیل لنک پر جیو ٹی وی کے ایک پروگرام کا لنک ہے جس کے پانچویں حصے میں آپ مجھے دیکھ سکتے ہیں

http://www.zemtv.com/2010/11/21/ibn-e-safi-21st-november-2010/

خیر اندیش
راشد اشرف
By: Rashid Ashraf, Karachi on Dec, 06 2010
Reply Reply
0 Like
rashid bhai ,,
assalamo alaikum
i have read today ur article about our uncle. it would not be ever possible to know about ur feelings ,untill anjum bhai tell me about this. anjum bhai has been shifted mirpurkhas to hyd 5 yrs ago. yesterday anjum bhai told me about the web n ur article. so i made up my mind to share my heartily feelings with u.
i m younger brother of anjum bhai, may b u have some know how about me or not,, but i know a little about u . i have met with u several times.
My uncle had good n close relations with my father. he had a polite , loving and humble nature personality. I have no words to explore his personality.
May bless his soul n place him in paradise.
(ameen)
By: irfan anjum (guddu), mirpurkhas on Dec, 04 2010
Reply Reply
0 Like
انجم بھائی
آمین ثم آمین
آپ کا پیغام و تبصرہ دیکھ کر ازحد خوشی ہوئی۔ آپ کے اور طارق بھائی کے لکھے ایک ایک لفظ سے والد محترم سے آپ کی عقیدت عیاں ہے۔ خوش رہیئے، سلامت رہیئے

میرا ای میل نوٹ فرمائیے گا:
[email protected]
By: Rashid Ashraf, Karachi on Dec, 04 2010
Reply Reply
0 Like
محترم راشد اشرف صاحب۔الله پاک آپکے والد مرحوم کو جنت میں اعلیٰ مقام عطا فرمائے۔۔میں سلیم چچا کو 1965سے یعنی اپنے بچپن سے جانتا ھوں جب وہ انکل لطیف مرحوم کے ساتھ اور کبھی اکیلے ھی ھمیں ملنے آیا کرتے تھے۔ ان جیسے شفیق انسان کا لاکھوں کیا کروڑوں میں بھی ملنا مشکل ھے ۔۔الله تعالیٰ آپکے لئے آسانیاں فرمائے۔۔۔۔۔۔
By: Anjum Riaz, Mirpurkhas on Dec, 03 2010
Reply Reply
0 Like
بھائی عثمان! اللہ تعالیٰ آپ کے والد صاحب کے جنت میں درجات بلند کرے بہت شکریہ کہ آپ نے مضمون پڑھا اور رائے سے نوازا مذکورہ مضمون پڑھ کر اگر ایک شخص بھی اپنے والد کو محبت سے یاد کرے تو مقصد پورا ہوتا ہے اور الحمد اللہ یہاں تو کتنے احباب ایسے ہیں جن کے لیے یہ باعث طمانیت و تقویت بنا
خیر اندیش
راشد
By: Rashid Ashraf, Karachi on Dec, 03 2010
Reply Reply
0 Like
i lost my father just when my school was started,i was of four years then,now after a long period fourteen years i have got addmission Civil Engineering....,i just keep on crying, thinking that how happy my father would be on my addmission had he been there,May ALLAH bless my father and your father with eternal peace and happiness(AMEEN)

Your article is just brilliant,that shows that your father had a great Personality,,May ALLAH bless You..........Ameen...............
By: usman ali khan, Karachi on Dec, 02 2010
Reply Reply
0 Like
ڈئیر حسن! خوش رہیئے، سلامت رہیئے
اللہ تعالیٰ آپ کے والدین کے جنت میں درجات بلند فرمائے (آمین) اور آپ کو آپ کی بقیہ زندگی میں ان کے لیے صدقہ جاریہ کا سبب بنائے
میرا ای میل نوٹ کیجیے گا:
[email protected]

آپ نے اپنے والدین کے بارے میں جو لکھا ہے وہ بھی ایک دل گداز حقیقت ہے، چھوٹی عمر میں اللہ تعالیٰ نے آپ کو اس کڑی آزمائش میں ڈالا لیکن وہی جانتا ہے کہ اس آزمائش پر صبر کرنے کا کس قدر اجر وہ آپ کو عطا کرے گا
By: Rashid Ashraf, Karachi on Dec, 01 2010
Reply Reply
0 Like
Rashid bhai aap ka article parha qasam se rona aagata.ALLAH PAK aap k father ki maghfirat kre or unhen jannat me maqam ata farmae. main in haalit se guzar chuka hn meri age 21 years hai jb meri mother ki death hui to main 18 years ka tha or jb father ki death k waqt 19 years age thi meri mera koi bhai b nahi hai iss liye apne aapko akela mehssos krta hn.waldain k intaqal se pehle ki zindagi or baad ki zindagi me bohat fark hai insan har rishte ko bhol sakta hai magr waldain k rishte ko nahi zindagi k har mor pe waldain ki kami mehsoos hoti hai. Q k mere waldain nahi hai iss liye jb kisi k intaqal ki khabr sunta hn to bohat dukh hota hai kuch krne ko dil nai krta.iss se ziyada bad qismati or kia ho gi mere liye k itni jaldi mere waldain mujh se juda ho gae phr sochta hn ALLAH pak jo b krta hai hamari behtari k liye krta hai abb to bus un k liye maghfirat ki dua hi kr sakte hain.
May GOD rest tour father's soul in peace,
(DUAGWO)
By: Hassan, karachi on Nov, 30 2010
Reply Reply
0 Like
ڈئیر طارق بھائی
آپ کے قیمتی تبصرے پر آج ہی نظر پڑی، مجھے بیحد خوشی ہے کہ آفاق میاں کے ذریعے آپ نے اس مضمون کو پڑھا اور پسند کیا اور یوں اسے سپرد قلم کرنے کی محنت وصول ہوئی

آپ کی دعا پر صدق دل سے میں بھی آمین کہتا ہوں

خیر اندیش
راشد
By: Rashid Ashraf, Karachi on Nov, 25 2010
Reply Reply
0 Like
Dear Rashid
Aaj Afaq ne aap ka aartical nikal k dikhaya ha; parh k aese laga k uncle aaj hi ham se juda hue han. mery liye un ki muhbat aur shfqt kabi na bhulne wali ha. ham log aksar un ki baten karty han. Allah un pe apni rehmton ka nazul kare AAMIN.
M Tariq zia Sadiq Abad. 17.11.2010
By: RASHID, KARACHI on Nov, 17 2010
Reply Reply
0 Like
جناب محبوب صاحب۔ آپ کے قیمتی تبصرے کے لیے میں شکر گزار ہوں
By: Rashid Ashraf, Karachi on Sep, 09 2010
Reply Reply
0 Like
Rashid Asraf Sahib,
My father has died ten year ago and Alhamdo Lillah my mother is alive.After reading your artical I went back ten year in past when my father was alive and recall all such loving moments and momories and time which i lived /enjoyed with my father.Tears begain to come out from my eyes
All fathers think, try, made efforts for betterment of their children.. In todays busy life we do not spare some time to recall memories of our loving parents and grand fathers amd mothers who gave us extrem selfish less love care and prays.They lived theirs for us.
We must spare some time to recall our parents and send them "Sawab" through recitation of Holy Quran and doing other "Nakeez".
May Allah grant forgiveness, eternal peace and "Bhashat" to your ,my and all parents of our all Mulim brothers.
By: Mehboob Ahmad, Multan on Sep, 08 2010
Reply Reply
0 Like
فلک صاحبہ! آپ کے تاثرات پڑھ کر جی ملول ہوا۔ اللہ تعالیٰ آپ کے والد محترم کے درجات بلند فرمائے۔
خیر اندیش
راشد اشرف
By: Rashid Ashraf, Karachi on Aug, 16 2010
Reply Reply
0 Like
ap ny jo b batian walid k mutlik kahi hn wo 100 % thek hn ham ny b apny walid ko kho dia ha aaj un ki vajha sy kisi kism ki kami ni ha pr phir b sa lagta ha jesa ak na pur hony wala khala hamri zindgi main aa gaya ha
By: falak, rwp on Aug, 15 2010
Reply Reply
0 Like
Your article is very very impressive. May God rest your father's soul in peace
By: Qudsiya Ahmed , Islamabad on Jul, 18 2010
Reply Reply
0 Like
Dear Rashid,

Tehreer achi thee aur shayad her us insan k dil ko afsurda bhee karey jo waldain ki neymat sey mahroom hain. Waldain ka koi replacement hota he naheen..... per kya keejiey k tajarba wo kangi hey jo ganjey honain k baaad haath aati hey. Aapki tehreer seyh sayad wo log jin ko waldain mayasar hain apni kuch islah kar sakain. Chund batain jo aapki tehreer mein kum mahsoos hoeen, mein haqeer o kam fehem hon likhnain ki jisarat kar raha hoon.......maan baap ka haq bachoon per unki zindigi mein tu hey he.....per us sey ziyad unki wafat k baad hay. ALLAH nein tauba aur apni islah ka darwaza her sakhs k liaey hameysa k liaey khula choora howa hey... jin k waldain rukhsat hocukey hain aur wo un ki zindigi mein un k liaey kuch naheen kar paeey tu ALLAH nein un k liaey bhee aik raasta rakha howa hey, jis per chul kar koi bhee apnain waldain ki khidmat un ki wafat k baad bhee kar sakta hey. wo kuch yoon hain k:

Waldain sey jo ziyadtian ho gaee hoon unhain sirf aur sirf ALLAH k liey moaf kar dia jaey;
Waldain ki mugfarat ki dua ki jaey; (per us k liey shart ALLAH k aagey Jhukna hey, warna kya insan aur kya uski dua)
Wo amal karain jo un k liaey Sadqa jaria hoo;
Un key Aziz, Rishtey daroon sey qata talluq na kya jaey:
Wo jin logoon sey mil kar khush hotey they un sey miltey raha jaey, unki kheyriat babat maloomat rakhee jaeen, k wo waldain k aziz, dost hain;


Tu dostoon gar chahtey ho k apnain waldain ki wafat k baad bhee un k laiey ajar ka bais banain rahain tu wo karain ju Khuda chahta hey,,,,,Jo Khuda ka hukm hey.....Jo Khuda nein rasta dia hey..................warna sirf maan baap ko yaad karnain ka tu koi nafa naheen, Na marhoom waldain ko aur na un ki aulad ko.

Dua ka talib
Banda-e-Haqeer
By: Rais, Karachi on Jul, 12 2010
Reply Reply
0 Like
محترم رضی احمد صاحب، جناب ابرار صفی صاحب اور فیصل سلیم صاحب کا شکریہ -- رضی صاحب کے اسلام آباد سے کراچی کے سفر کا ایک محرک یہ تحریر رہی، یہ جان کر بیحد خوشی ہوئی کہ محنت وصول پائی۔

خیراندیش
راشد اشرف
By: Rashid Ashraf, Karachi on Jul, 10 2010
Reply Reply
0 Like
Dear Rashid Bhai,
ALLAH aap k walid-e-mohtaram ko janat ul firdous mai jaga inayat furmai .. Ameen!!
baishak baap ki shafqat aur saye ka koi naim ul badal nahin ..
By: Muhammad Faisal Salim Khan, Sohar Oman on Jul, 09 2010
Reply Reply
0 Like
Brother Rashid,
Very Touchy , The feelings and opinion about the relation ship with parents are just with out a question, just remember My father,
By: Abrar Ahmed, Chicago on Jul, 09 2010
Reply Reply
0 Like
I read the article, the day it was posted.

Nowadays, I am settled in Islamabad and after reading the article I was confused whether i should post and leave some comments for the writer on the website or talk to my father who is in KHI.

I prefer calling my father and after conversation, I was not satisfied so made arrangements to proceed to KHI for two days only on Saturday and will return on Monday.

Though, I met my father lastly on 20 May 10 and talk few days earlier but still I cannot stop myself from visiting KHI.

Thanks Rashid.
By: Syed Razi Uddin Ahmad, Islamabad on Jul, 09 2010
Reply Reply
0 Like
میں اسے اپنی انتہائی خوش قسمتی سمجھتا ہوں کہ احباب نے اس مضمون کو میری درخواست پر پڑھا اور اپنی گراں قدر رائے و مشوروں سے نوازا

جناب محمود خان صاحب، احمد صفی صاحب، نائلہ حنا، تھنکنگ، عُزیر صاحب (ڈھاکا سے) اور خرم جاوید صاحب کے پُراثر، پُرسوز اور نصیحت آموز تبصروں کے لیے ان کا ممنون و احسان مند ہوں

خلوص کے ساتھ
راشد اشرف
By: Rashid Ashraf, Karachi on Jul, 09 2010
Reply Reply
0 Like
آپ کا مضمون پڑھ کر اپنے والد کے لئے عزت اور بڑھ گئی ہے- لوگ زیادہ تر یہ ہی سمجھتے ہیں کہ صرف ماں ہی کی خدمت کرنا کافی ہے لیکن والد کا مقام بھی ماں کے برابر ہے-میں بھی پہلے اپنی والدہ کی خدمت زیادہ کرتا تھا لیکن اب جب میں دو بیٹوں کا باپ بنا ہوں تو مجھے احساس ہوا ہے کہ باپ ماں سے زیادہ اپنی اولاد کے بارے میں فکرمند ہوتا ہے
By: khuram javed, karachi on Jul, 09 2010
Reply Reply
0 Like
Dear Rashid Ashraf

May ALLAH give you patience to bear the loss and grant your father peace.

We all have to return to our MAKER one day and we should not feel bad about it. This is the way it is.

But your message enlighten me about repenting the mistakes of being rude with parents.

I have my mother and InshALLAH today I will ask her forgiveness anyhow.

Thank you so much for letting me in.

Regards.
By: Thinking, Karachi on Jul, 09 2010
Reply Reply
0 Like
A.O.A.
Please accept my hearty condolence for a great loss which can neither be replaced nor forgotten.

Parents see their future in their children who r the ones who fulfill and complete their mission from where they had left.
I hope and pray u become a true janasheen of your father.

Thanks.
By: Naila Hina, Karachi on Jul, 09 2010
Reply Reply
0 Like
بہت اچھا
آپکی محبت آپکے والد کیلیے لائق تعریف ہے
الله تعالیٰ ہمیں انکے حقوق ادا کرنے کی توفیق عنایت فرمائے
By: Uzair, Dhaka on Jul, 08 2010
Reply Reply
0 Like
Dear Rashid:

I remember the couplet:

Woh jiss ka sayaa gHanaa gHanaa hai
buhat kaRi dHoop jHaelta hai

May ALLAH grant your father higher darajaat in Jannatul Firdous. He must be proud of you today. Please do remember him always in your prayers by saying: Rabb-ir-Ham-huma Kamaa rabba-yaani saGHeera

duAgo
By: Ahmad Safi, Karachi on Jul, 08 2010
Reply Reply
0 Like
راشد اشرف صاحب

الله آپ کو صبر جمیل عطا فرمائے آپ کو یہ دکھ جھیلنے کا حوصلہ عطا فرمائے آپ کے والد نے جو نصیحتیں کیں وہ زندگی بھر مشعل راہ ہے اور انکا تجربہ کا نچوڑ تھا
ہم سب کو ماں اور باپ کی خدمت کرنے کی توفیق دے کر دین و دنیا میں سرخرو ہو سکیں ماں اور باپ ایک سائبان اور رحمت ہیں۔ ہم زندگی کی بھیڑ میں بسا اوقات انکے حقوق پوی طرح ادا نہیں کرتے لیکن اسے پورا کرنے کی ہر ممکن کوشش کرنی چاہیے۔ ان کی صحیح قدر انکے بعد محسوس ہوتی ہے

الله تعالیٰ ہمیں انکے حقوق ادا کرنے کی توفیق عنایت فرمائے اگر وقت نکل گیا تو صرف پچھتاوہ رہ جاتا ہے
By: Mehmood Khan, karachl on Jul, 08 2010
Reply Reply
0 Like
Language: