اسلامی نظام حکومت اور جمہوریت !

(Akhtar Sardar, Kasoowal)
جمہوریت کے بارے میں ہمارے رہنماؤں ،دانشوروں کی ہزاروں مرتبہ سنی ہوئی چند باتیں ایک بار پھر مجھ سے سن لیں جمہوریت ایک نعمت ہے ،جمہوریت سب سے بہترین انتقام ہے ،جمہوریت کے لیے ہر طرح کی قربانی دیں گے،ہم نے جمہوریت کے لیے بہت قربانیاں دی ہیں ،ہم جمہوریت کے ساتھ کھڑے ہیں ،جمہوریت کو ڈی ریل نہیں ہونے دیں گے ،ہم جمہوریت بچانے آئے ہیں ،جمہوریت نہ رہی تو پاکستان کی بقا کو خطرہ ہے ۔جمہوریت ترقی کے لیے بہت ضروری ہے ۔توجہ طلب دو باتیں ہیں اول یہ کہ دنیا میں کسی بھی ملک میں جمہوریت نہیں ہے اور دوسری بات اسلام اور جمہوریت دو الگ نظام حکومت ہیں ۔

اﷲ سبحان و تعالیٰ نے قرآن پاک میں فرمایا ۔"جو کوئی اسلام کے علاوہ کسی اور دین کا طالب ہو گا وہ اس سے ہر گز قبول نہ کیا جائے گا اور ایسا شخص آخرت میں خسارہ پانے والوں میں سے ہو ـگا(آلعمران۔ 85 ) اب کوئی اگر یہ کہے کہ جمہوریت دین نہیں ہے تو میں نے اسے ایسا کیوں لکھ دیا ہے ۔دین کا مطلب نظام حیات ہے، قانون سازی اور ان پر عمل کا طریقہ کار ہے اور یہ ہی تو جمہوریت ہے دوبارہ پھر دیکھیں اﷲ تعالی نے فرمایا ہے جو کوئی اسلام کے علاوہ کسی اور دین کا طالب ہو گا مطلب یہ کہ کسی اور نظام کا طالب ہو گا اسلام کے علاوہ اسلام اور دین میں بھی فرق ہے۔

دوسری چیز جمہوریت ہے جو اسلام کی ضد ہے اور یونانی نظریات پر مبنی عیسائیوں اور یہودیوں کا پھیلایا ہوا طاغوتی نظام ہے کہنا یہ چاہتا ہوں کہ اسلام اور جمہوریت دو برعکس اور متصادم نظریات ہیں ۔ان کاآپس میں کوئی میل اور تعلق نہیں ہے ،جمہوریت ایک طاغوتی نظام ہے ۔اس کا کسی بھی صورت میں ساتھ دینا اسلام میں درست نہیں ہے ،ہندو اور مسلم کا فرق کیا ہے ان کا،، نظام زندگی ،،یہی تو د و قومی نظریہ تھا، جو پاکستان کی بنیاد بنا ۔ بات ہو رہی ہے جمہوریت اور اسلام کی آئیں ان کا موازنہ کرتے ہیں ۔

اسلام میں مقتدرِ اعلیٰ ذات صرف اﷲ سبحان و تعالیٰ ہے ۔تمام طاقت کا سرچشمہ اﷲ ہے ۔(البقرہ ۔165 )جمہوریت میں طاقت کا سرچشمہ عوام ہیں ۔ اﷲ نہیں ہے بلکہ اﷲ کی مخلوق ہے ۔

اسلام میں قانون اﷲ کے ہیں، مثلاََ حرام و حلال ،وراثت،عدلیہ،وغیرہ ۔اﷲ کی حکومت ،اﷲ کے بندوں کے ذریعے یعنی اﷲ کے بنائے ہوئے قوانین پر اﷲ کے بندوں کے ذریعے عمل ان کے اختیارات کا بھی ایک دائرہ ہوتا ہے۔ اور جمہوریت میں قانون سازی کا اختیار عوام کے نمائندوں کو حاصل ہوتا ہے (ان کے ایسے معبود ہیں جنہوں نے اﷲ کی اجازت کے بغیر ان کے لیے کوئی دین بنا دیا ہے؟ (سورۃ شوریٰ ۔آیت 21 ) جمہوریت میں قانون اﷲ کے بندے بناتے ہیں۔اب ایک بات بہت غور طلب ہے کہ اسلام کہتا ہے لوگوں کی اکثریت گمراہ ہوتی ہے (سورۃ انعام آیت نمبر 117 )میں اﷲ کا واضح فرمان ہے ـکہـ" اور اگرتم زمین پر رہنے والے لوگوں میں سے اکثر لوگوں کی اطاعت کر و گے تو وہ تمہیں اﷲ کی راہ سے گمراہ کر دیں گے" ۔ دوسری طرف جمہوریت کا تمام دارومدار اکثریت پر ہے دو جاہلوں کی رائے ایک عالم کی رائے پر بھاری ہوتی ہے۔
اسلام میں عالم اور جاہل برابرنہیں ہو سکتے لیکن جمہوریت میں برابر ہیں ۔ اس بات کی وضاحت ایسے بھی ہو سکتی ہے کہ دنیا میں اگر 7 ارب آبادی ہے تو ان میں سے ایک ارب 90 کروڑ مسلمان ہیں اور اکثریت مسلمان نہیں ہے جمہوریت میں تو مسلمانوں کو ان کی پیروی کرنی چاہیے اپنا دین چھوڑ دینا چاہیے میں کہنا یہ چاہتا ہوں کہ اکثریت گمراہ ہوتی ہے ۔جمہوریت کا نظام اکثریت کا نظام ہے، اس لیے یہ درست کیسے ہو سکتا ہے ۔

جمہوریت میں آپ قانون سازی کے ذریعے شراب ،جوا،زنا،ہم جنس پرستی ،مطلب جو دل چاہے اسے جائز کر سکتے ہیں، امراء کے لیے الگ اور غرباََ کے لیے الگ قانون بنا سکتے ہیں جمہوریت میں بعض افراد پر قانون کا اطلاق نہیں کر سکتے ان کو استثنیٰ حاصل ہوتا ہے لیکن اسلام میں ایسا نہیں ہے ۔خلیفہ وقت کو بھی استثنیٰ حاصل نہیں ہے ۔ اسلامی انصاف اور قانون کی نظر میں اولاد آدم سب برابر ہیں ۔اب آتے ہیں پہلی بات کی طرف دنیا کے کسی ملک میں بھی جمہوریت نہیں ہے۔ اورسب جمہوری کہلانا چاہتے ہیں ۔ وہ بھی ڈنڈے کے زور پر ۔آپ اقوام متحدہ کو ہی دیکھ لیں وہاں پانچ ممالک کو ویٹو کا حق دیا گیا ہے دل پر ہاتھ رکھ کر بتائیں کیا یہ جمہوریت ہے ؟ اب ساری دنیا کے ووٹ اگر کسی قرارداد پر ایک طرف ہوں اور صرف امریکہ یافرانس وغیرہ میں سے کوئی اس کے خلاف ووٹ دے تو اس قرار داد پر عمل روک دیا جاتا ہے تو یہ کہاں کی جمہوریت ہے ۔

دنیا میں جہاں مکمل جمہوریت ہے کہا جاتا ہے (مان لیں ان کے پاس ڈنڈا بھی ہے) ان کی تعداد بہت کم ہے۔ (جو خود کو جمہوریت کے چیمپین کہتے ہیں ان کا اسرار ہے کہ اسے حقیقی جمہوریت کہا جائے) پوری دنیا میں جمہوریت کا نظام بری طرح ناکام ہو چکا ہے بلکہ ہے ہی نہیں لیکن اس سے جن کے مٖفادات وابستہ ہیں وہ اسے قائم رکھنا چاہتے ہیں ،اسے سب سے بہترین نظام حکومت کہا جاتا ہے کہنے والے طاقت ور ہیں اس لیے سب مان رہے ہیں کہ وہ درست ہی کہتے ہیں ۔بہت افسوس کی بات ہے کہ جو ملک اسلام کے نام پر معرض وجود میں آیا ،اس میں اسلامی نظام رائج نہیں ہے اور جن کو اس کے لیے کوشش کرنی چاہیے وہ بھی جمہوریت کا راگ آلاپ رہے ہیں اور اسے اﷲ کی نعمت قرار دے رہے ہیں ۔اسلامی نظام حکومت اور جمہوریت میں فرق ہے قارئین آپ کیا کہتے ہیں اپنی رائے دیں۔
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Akhtar Sardar Chaudhry Columnist Kassowal

Read More Articles by Akhtar Sardar Chaudhry Columnist Kassowal: 496 Articles with 330178 views »
Akhtar Sardar Chaudhry Columnist Kassowal
Press Reporter at Columnist at Kassowal
Attended Government High School Kassowal
Lives in Kassowal, Punja
.. View More
08 Aug, 2016 Views: 495

Comments

آپ کی رائے