ا للہ۔۔۔۔۔۔!!!!

(naila rani, karachi)
دو ستو۔۔۔! لفظ ا للہ جب سے میر ی ز ند گی میں شا مل ہوا ہے ۔۔۔۔ز ند گی کی ہر چیز حسین ہو گئی ہے ۔۔۔۔ز ند گی بد ل سی گئی ہے یو ں لگتا ہے کا ئنا ت کی ہر شے میر ی ما تحت ہو چکی ہے جب سے میں اللہ کے ما تحت ہو ئی ہو ں ۔۔۔۔۔ اللہ نے مجھ پر ا پنی نعمتیں کھو ل د ی ہیں ۔۔۔۔۔جب سے اللہ کی ما ننے لگی ہو ں ۔۔۔۔۔کبھی کسی غیر اللہ کے سا منے شرمند گی کا سا منا نہیں ہوا جب سے ا للہ کا تعا ر ف ہو ا ہے ا سوقت سے ا سکی تعر یف کے لیئے ا لفا ظ ڈ ھو نڈ ر ہی ہو ں ۔۔۔۔۔ اللہ کی ر حمتو ں کے با رے میں سو چ ر ہی ہو ں ۔۔۔۔ا للہ کی و سعتو ں کے با رے میں سو چ رہی ہو ں ۔۔۔۔ا للہ کی حکمتو ں کے با رے میں سو چ ر ہی ہو ں ۔۔۔۔ا للہ کی دا نا ئی کے با رے میں سو چ ر ہی ہو ں ۔۔۔۔ا للہ کی بزرگی کے با رے میں سو چ ر ہی ہو ں ۔۔۔۔۔سچ بتا و ں ۔۔۔۔؟ ۔۔۔۔۔۔میر ی سو چ ا نتہا پر جا کر رک جا تی ہے ۔۔۔۔۔۔۔پھر غا ئب سے ایک ہی آ واز آ تی ہے ۔۔۔۔لا محدود۔۔۔لا محدود۔۔۔۔۔۔لا محدود۔۔۔۔اللہ کی نعمتیں لا محدود۔۔۔۔۔اللہ کی ر حمتیں لا محدود۔۔۔۔اللہ کی و سعتیں لا محدود۔۔۔۔ا لفا ظ ہیں کہ ملتے نہیں ۔۔۔۔۔۔۔کہ اللہ جیسی ہستی کی تعر یف کر و ں ۔۔۔۔۔جذ با ت ہیں کہ تھمتے نہیں ۔۔۔۔کہ اس کے با رے میں کچھ بیا ن نہ کر و ں ۔۔۔۔اللہ کی قسم ۔۔۔ اللہ کے تعارف کے بغیر ز ند گی بے کا ر تھی ۔۔۔۔۔بے یا ر و مدد گا ر تھی ۔۔۔۔۔بے آ سرا و بے سہا را تھی ۔۔۔۔جب سے آ گا ہی ہو ئی ہے ۔۔۔۔۔کہ اللہ کا مجھ پر کیا حق ہے ۔۔۔۔۔۔ندا مت ہے آ نسو ہیں ۔۔۔۔ضعیفی ہے ۔۔۔۔کمزو ر ی ہے ۔۔۔۔۔حق ا دا نہیں ہو تا ۔۔۔۔لا کھ کو شش کر و ں ا سکی ا یک نعمت کا بھی حق ا دا نہیں ہو تا۔۔۔۔۔۔ا للہ کے جو مجھ پر ا حسا نا ت ہیں ۔۔۔۔۔ان ا حسا نا ت کا شکر ا دا نہیں ہو تا ۔۔۔۔۔لا کھ شکر ا دا کر و ں ۔۔۔۔ا یک ا حسا ن کا بھی شکر ا دا نہیں کر سکتی۔۔۔۔۔

دو ستو ۔۔۔۔! ا للہ کے جلا ل کے با رے میں سو چتی ہو ں تو لر ز ا ٹھتی ہو ں ۔۔۔۔۔۔ا للہ کے جما ل کے با رے میں سو چتی ہو ں ۔۔۔۔ا حا طہ تصور سے با ہر ہے ۔۔۔ اللہ کی ا پنے بندے سے محبت کے با رے میں سو چتی ہو ں ۔۔۔۔بے ا ختیا ر ز با ن پر آ تا ہے ۔۔۔۔۔۔ا للہ کے علا وہ تیرا د نیا و آ خر ت میں کو ئی مخلص دو ست نہیں ۔۔۔نیک بند ے ا للہ کے و لی ہیں ۔۔۔۔۔اللہ نیک بندو ں کا و لی ہے ۔۔۔۔۔آ پ بھی صرف ا یک با ر ۔۔۔۔صر ف اور صر ف ا یک با ر ۔۔۔۔۔دل کی گہرا ئیو ں سے ا للہ کو پکا ر کر د یکھیئے ۔۔۔ا پنی ہر محبت ا للہ کی محبت کے ما تحت کر د یجیئے ۔۔۔۔۔ا للہ کے لیئے سب سے محبت کیجیئے ۔۔۔۔۔میں چا ہتی ہو ں ۔۔۔ اللہ میرا بن جا ئے ۔۔۔۔۔ اور میں ا للہ کی بن جا و ں ۔۔۔۔۔اور پھر ۔۔۔۔ا للہ کے قر یب ہو تی چلی جا و ں ۔۔۔۔ا سقدر قر یب ہو جا و ں کہ ا للہ سے را بطہ قا ئم ہو جا ئے ۔۔۔۔۔۔ا للہ سے با تیں ہو نے لگیں ۔۔۔۔ اللہ سے دو ستی ہو جا ئے ۔۔۔۔اللہ کے کا موں میں دل لگ جا ئے ۔۔۔۔۔۔۔ایک با ر سو چا تھا ۔۔۔۔کہ اللہ کہا ں ہے۔۔۔؟ ایک با ر پکا را تھا۔۔۔۔۔۔ ا ے اللہ تو کہا ں ہے ۔۔۔؟آواز آ ئی ۔۔۔۔ا للہ کہا ں نہیں ہے۔۔۔؟ اللہ تمہا رے دا ئیں با ئیں ۔۔۔۔۔۔ا للہ تمہا ر ے آ گے پیچھے ۔۔۔ا للہ ا و پر اور نیچے ۔۔۔ا للہ جلو ت میں بھی ہے ۔۔۔۔ا للہ خلو ت میں بھی ہے ۔۔۔۔ا للہ دل میں بھی ہے ۔۔۔۔ اللہ د ما غ میں بھی ہے ۔۔۔۔۔ا للہ گھر میں بھی ہے ۔۔۔۔ا للہ با زار میں بھی ہے ۔۔۔۔۔۔ اللہ مسجد میں بھی ہے ۔۔۔۔ ا للہ مندر میں بھی ہے ۔۔۔۔۔۔اور ہا ں ۔۔۔میر ی ز با ن پر بھی ا للہ تھا ۔۔۔۔۔۔گویا کہ میر ی ر گ رگ میں ا للہ ہی ا للہ تھا ۔۔۔۔تب میں پکا ر ا ٹھی تھی ۔۔۔اے ا للہ تو کتنا عظیم ہے ۔۔۔۔کہ تو تو میر ی شہ ر گ سے بھی ز یا دہ قر یب ہے ۔۔۔۔۔۔ا ب کیا ہے ۔۔۔۔؟

دو ستو ۔۔۔! ا للہ کو جب سے پکا راہے ۔۔۔۔ا للہ مجھے کسی کا محتا ج نہیں ہو نے د یتا ۔۔۔۔۔۔رگ رگ میں ا سکی محبت مو جزن ہو چکی ہے ۔۔۔۔۔جیسے سمندر سے لہر یں جدا نہیں ہو سکتیں ۔۔۔۔۔یو نہی دل میں ا للہ کا نا م نقش ہو چکا ہے ۔۔۔۔جو سا نسیں بن چکا ہے ۔۔۔۔۔ا للہ کے نا م کے بغیر سا نس آ تی نہیں ۔۔۔۔اور ان سا نسو ں کو ا للہ کے د یدا ر کا ا ختیا ر نہیں ۔۔۔۔۔ایک با ر پو چھا تھا ۔۔۔ اے اللہ تجھے مجھ سے کتنی محبت ہے ۔۔۔۔؟۔۔۔جو ا ب آ یا ۔۔۔۔ستر ما و ں سے بھی ز یا دہ ۔۔۔۔۔۔یعنی کہ ۔۔۔لا محدود۔۔۔۔اور یہ لا محدود کیا ہو تا ہے ۔۔۔۔جسکی کو ئی حد نہ ہو ۔۔۔۔سنو ۔۔۔۔! اللہ ہم سے بے حد محبت کر تا ہے ۔۔۔۔بس پھر کیا تھا ۔۔۔۔د نیا کی تما م حقیر و عا ر ضی محبتو ں کو خیر با د کہ د یا ۔۔۔۔۔اس ا یک محبت میں نی جا نے کیا تھا ۔۔۔کہ سب محبتیں عا ر ضی نظر آ ئیں ۔۔۔۔کمزور نظر آ ئیں ۔۔۔۔صر ف ا یک محبت تھی جو بے غر ض تھی ۔۔۔۔جو ا بد ی تھی ۔۔۔۔جو صرف مجھ سے تھی ۔۔۔۔اور و ہ محبت تھی ا للہ کی محبت

دو ستو ۔۔۔! سنو۔۔۔! اللہ تم سے بھی محبت کر تا ہے ۔۔۔۔اللہ تمہیں صبح و شا م پکا ر تا ہے ۔۔۔۔۔اللہ تمہیں ا پنی طر ف بلا تا ہے ۔۔۔۔اللہ تمہیں د ینا چا ہتا ہے۔۔۔۔وہ کچھ د ینا چا ہتا ہے ۔۔۔۔۔جو تمہیں اور کو ئی ذات نہیں دے سکتی ۔۔۔۔اللہ کے لیئے ا پنے د ل کو کھو ل کر تو د یکھیئے ۔۔۔۔۔اللہ کو پہچا ن کر تو د یکھیئے ۔۔۔۔اللہ سے یا ری لگا کر تو د یکھیئے ۔۔۔اللہ کی حفا ظت میں آ کر تو د یکھیئے ۔۔۔۔۔ہر مشکل آسان ہو جا ئے گی ۔۔۔۔ہر مسئلہ حل ہو جا ئے گا ۔۔۔۔۔ہر پت یشا نی دو ر ہو جا ئے گی ۔۔۔۔۔۔اللہ کو پکار کر تو د یکھو ۔۔۔۔تم اس کی طا قت کا انداز ہ نہیں لگا سکتے ۔۔۔۔تم ا سکی ر حمتو ں کا احا طہ نہیں کر سکتے ۔۔۔۔تم اسکی نعمتو ں کو شمار نہیں کر سکتے ۔۔۔۔اللہ کے قر یب ہو کر تو د یکھیئے ۔۔۔۔اللہ کو ا پنا بنا کر تو د یکھیئے ۔۔۔۔۔تمہا ری نظر میں بھی د نیا حقیر نہ ہو گئی تو کہنا ۔۔۔۔اللہ وہ اللہ ہے جس نے مجھےوآپ کو اور تما م بنی نو ع ا نسان کو بنا یا ۔۔۔۔بنا کر پھر مٹا ئے گا ۔۔۔۔اور مٹا کر پھر بنا ئے گا ۔۔۔۔اور تم ا سکی طاقت کا اندا زہ نہیں لگا سکتے۔۔کیو نکہ اللہ کی تعریف بس لفظ اللہ ہی سے مکمل ہو تی ہے یعنی کہ ا للہ بس اللہ ہے ۔۔۔
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: naila rani riasat ali

Read More Articles by naila rani riasat ali: 104 Articles with 108742 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
05 Sep, 2016 Views: 967

Comments

آپ کی رائے

آ پ نے در ست کہا ا للہ سے محبت ا نسان کو ہر برا ئی سے دور ر کھتی ہے ۔۔۔۔جزا ک اللہ ۔۔۔۔۔ جنا ب
By: naila rani, karachi on Sep, 08 2016
Reply Reply
0 Like
افسوس ناک بات تو یہ ہے کہ ہم جانتے ہیں کہ ہمارا رب ہم سے بے پناہ محبت رکھتا ہے مگر ہم پھر بھی اسکی نہیں مانتے ہیں لیکن یہ ضرور چاہتے ہیں کہ ہماری لوگ مان لیں۔ہم اکثر رب کے حکم کو ماننے سے ذیادہ لوگوں کا خوف رکھتے ہیں کہ لوگ کیا کہیں گے مگریہ نہیں سوچتے ہیں کہ ہمارا رب ہم سے ہمارے اعمال کے بارے میں پوچھ گچھ کریں گے۔اللہ سے محبت رکھنے والے ہر برائی سے دور رہتے ہیں۔

آپ کی تحریر عمدہ ہے۔مبارکباد قبول کیجئے گا۔
By: Zulfiqar Ali Bukhari, Rawalpindi on Sep, 07 2016
Reply Reply
0 Like

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ