دس روپے کی اوقات

(Syed Anwer Mahmood, Karachi)
دس پیسے کا سکہ بولاتیری قیمت مجھ سے سو فیصد زیادہ ہے، لیکن عرصے تک مجھے دیکر لوگوں کوایک روٹی ، یا بس میں پانچ کلومیٹر سفریا پھرایک کپ چائے کی سہولت حاصل تھی
دس روپے کا نیا سکہ پیدا ہوا تو اس کے ابا ڈار بہت خوش تھے
دس روپے کا سکہ دس پیسے کے سکے سے ملا تو
طنزیہ پوچھا تیری کیا اوقات تھی؟
دس پیسے کا سکہ بولا تیری قیمت مجھ سے سو فیصد زیادہ ہے
لیکن عرصے تک مجھے دے کر لوگوں کو ایک روٹی، یا
بس میں پانچ کلومیٹر سفر یا پھر ایک کپ چائے کی سہولت حاصل تھی
اب تو بتا کہ تیری کیا اوقات ہے؟
دس روپے کا سکہ شرمندگی سے بولا
اے دس پیسے کے سکے میری اوقات تو تجھ سے بہت کم ہے
روتے ہوئے بولا ہائے ابا ڈار تو نے مجھے کیوں پیدا کیا
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Syed Anwer Mahmood

Read More Articles by Syed Anwer Mahmood: 477 Articles with 319577 views »
Syed Anwer Mahmood always interested in History and Politics. Therefore, you will find his most articles on the subject of Politics, and sometimes wri.. View More
20 Oct, 2016 Views: 1024

Comments

آپ کی رائے
There is no value of 100 rupees, you are talking about 10 rupees. I think may be you do not know about the economy or you are just kidding. Anyhow wish your good luck!
By: Rashid Ali Abbas, Rawalpindi on Oct, 24 2016
Reply Reply
0 Like
aah kiya kahoon sir bilkul sahi likha hay aap nay das roopay ki okhath aik chawani say bhi gayee guzri hay ..... ab to sw roopay ki bhi koyee aukhath nahi thus roopay to door ko baath hay .... bohoth umda or khoobsurath Jazak Allah Hu Khairan Kaseera
By: farah ejaz, Karachi on Oct, 21 2016
Reply Reply
0 Like