پاکستان کے لبرلزلندن میں پاکستان کے مستقبل کے نام سے اکٹھے ہو رہے ہیں

(Mir Afsar Aman, Karachi)
 دی نیوز اخبار کی طرف سے خبر آئی ہے کہ پاکستان کے لبرلز لندن میں ایک کانفرنس بنام’’ پاکستان کا مسقبل‘‘ اکٹھے ہورہے ہیں۔یہ کانفرنس پاکستان کے اسلامی تشخص کی مخالف ایک نام نہاد تنظیم جس کا نام ساؤتھ ایشین ٹیررزم مخالف اینڈ حیومن رائٹس) saath ( نے کرنے کی منصوبہ بندی کی ہے اور امریکا میں مقیم ایک کالمسٹ ڈاکٹر محمد تقی اور امریکا میں ہی مقیم سابق پاکستانی سفیر ،پاکستانی بھگوڑے، حسین حقانی کی مشترکہ مدد کے تحت منعقد ہو رہی ہے۔سب سے پہلی بات کہ ان صاحبان کو اپنے پرانے سیکولر آقا کے ملک میں ہی اکٹھاہونا نصیب ہوا ہے ۔کیا انہیں اسلامی جمہوری پاکستان میں جگہ نہیں مل سکی؟یہاں تک پاکستان کے مستقبل کا تعلق ہے تو اس کے بنانے والے قائد اعظم ؒ نے اس کے بننے سے پہلے ہی ’’پاکستان کا مطلب کیا لا الہ الا اﷲ کا نعرہ دے کر طے کر دیا تھا۔ پاکستان بننے کے بعد سے ہی مٹھی بھر اسلام بیزار لبرلز بیرونی ایجنڈے اور مغربی تعذیب سے شکست خوردہ زہنیت لیے ہوئے اسلامی جمہوریہ پاکستان کو سیکولر بنانے کے لیے اپنی سی کوششیں کرتے رہے ہیں۔ مگر ان کے ناپاک عزائم کے مقابلے میں اسلامی جمہوریہ پاکستان کے نظریاتی محافظوں کے سامنے اُن کی ایک نہیں چلی اور پاکستان کے اسلامی تشخص اور دو قومی نظریہ کی حفاظت کرنے والوں کی انتھک جدو جہد کی وجہ سے مرحوم ذوالفقار علی بٹھو کے دور میں پاکستان کی پارلیمنٹ نے اس کا اسلامی آئین منظور کیا تھا جس کو ختم کرنے کے لیے یہ لبرل حضرات کوششیں کرتے رہتے ہیں۔ لندن میں اکٹھے ہونے والے چند لبرلز کو معلوم ہونا چاہیے کہ اسلامی جمہوریہ پاکستان کے اسلامی تشخص اور دو قومی نظریہ کی حفاظت کرنے اب بھی اسلامی جمہوریہ پاکستان میں عوام تازہ دم ہیں اور موجود ہیں۔ لندن کی اس میٹنگ کے روح رواں جو امریکا میں پاکستان کے سفیر رہے ہیں یہ صاحب سفیر کی حثییت سے مراعات تو پاکستان سے لیتے تھے اور مفادات امریکا کے پورے کرتے تھے۔ یہ صاحب میمو گیٹ کے سرغنہ بھی رہے ہیں۔ پاکستان کے خلاف لکھنے کی شہرت بھی حاصل کی ہے۔اپنی ایک ’’کتاب ملا ملٹری اتحاد‘‘ میں پاکستان کی فوج کے خلاف زبان درازی کی جس کوپاکستان میں پزیرائی نہ مل سکی۔ ہم نے اس کتاب پر اپنے کالم میں گرفت کی تھی اور ان کے پاکستان کے خلاف ناپاک عزائم کوپاکستان کے عوام کے سامنے اشکار کیا تھا۔ کتاب میں ہزاسرائی کے بعد بھی امریکی اخبارات میں پاکستان اور پاکستان کی فوج کے خلاف امریکا اور مغرب کواُکساتے رہتے ہیں۔جب میمو گیٹ پر عدالت میں مقدمہ چلا تو پیپلز پارٹی کا دور حکومت تھا۔ پہلے تویہ صاحب صدارتی آفس میں چھپے رہے۔ پھر عدالت کو یہ ضمانت دے کر امریکا چلے گئے تھے کہ جب بھی عدالت اعظمیٰ بلائے گی تو یہ حاضر ہو جائیں گے۔ عدالت کی کئی تاریخوں پر سیکورٹی کے بہانے آج تک پاکستان نہیں آئے۔ اس طرح یہ پاکستان کے بھگوڑے ہیں۔ کانفرنس کی دوسری شریک صاحبہ نے بھی پاکستان اور پاکستان کی فوج کے خلاف کتاب لکھ چکی ہیں جس کا نام ہے ’’خاکی وردی‘‘۔ اس میں فوج کو ایک تاجر ثابت کرنے کی ناپا ک کوشش کی ہے۔ اگر فوج نے پاکستان میں اپنے ریٹائرڈ لوگوں کی فلاح و بہبود کے لیے کچھ ادارے قائم کیے ہیں تو کسی غیر فوجی کو تکلیف نہیں ہونی چاہیے۔ اس کتاب پر بھی ہم نے اپنے ایک کالم میں گرفت کی تھی اور ان کی غلط باتوں کے مقابلے میں عوام کو صحیح معلومات سے آگاہ کیا تھا۔ فوج مخالف ایک مشہور نجی ٹی وی کے ایک پروگرام’’ جیو جیومینٹری‘‘ میں یہ صاحبہ بھی شریک تھی اور عوا م کو یہ کہہ کر گمراہ کرنے کی کوشش کی تھی کہ روس نے گرم پانیوں تک آنے کے لیے افغانستان پر حملہ نہیں کیا تھا۔ ان کے اس جھوٹ پر ہم نے اپنے کالم ’’حقائق یہ ہیں‘‘ میں تاریخی حوالے دے کر ثابت کیا تھا کہ افغانستان جیسے غریب ملک میں روس نے کیا کرنا۔ اس نے تو بلوچستان کے راستے گرم پانیوں تک رسائی کے لیے افغانستان پر قبضہ کیا ہے۔یہ مضمون بھی پاکستان کی کئی اخبارات میں چھپا تھا۔اس کانفرنس میں عوامی نیشنل پارٹی کے سینیٹرافراسیاب خٹک، بشرا گوہر، کالمسٹ راشد رحمان، ماروی سرمد،بینا سرور اور دوسرسے لبرلز کالمسٹ اور دانش ور بھی شریک ہو نگے۔ دعوت نامے میں کہا گیا ہے کہ کئی برسوں سے پاکستان کا لبرل،پروگریسو اورسیکولرویژن فوج اوراسلامی انتہا پسندوں کے دباؤ کے اندر ہے۔یہی باتیں حسین حقانی اور ڈاکٹرعائشہ اپنی کتابوں میں لکھ چکے ہیں جس کا ہم نے اوپر ذکر کیا ہے۔ کانفرنس کے منتظمین کے مطابق جان کے خطرے کی وجہ سے پاکستان میں مشہور لبلرزسائیڈلائن ہو گئے ہیں یا پس منظر میں چلے گئے ہیں۔ ان کے مطابق پاکستان کی بڑی سیاسی پارٹیاں فوج کی اسلامی سیاست کرنے اور انتہاپسندوں کی حمایت کی وجہ سے اپنی حیثیت کو بچانے کی جدوجہد میں لگی ہوئی ہیں۔اس وجہ سے انسانی بنیادی حقوق مرد عورت کے مساوی حقوق اور مذہب کے دخل نے انسانی اقدار پر قدغن لگا دیا ہے۔منتظمین سوچتے ہیں کہ باہر سے تو پاکستان کو سیکولر بنانے کا پریشر تو ہے مگر ملٹری اسٹیبلشمنٹ کی طرف سے انتہا پسندوں کی مدد جو ضیا دورسے چلی آرہی ہے اس کو ہم اندر سے کم کریں اور لبرلز، پروگریسو اور سیکولرز کو پاکستان میں آگے بڑھنے کی جدوجہد میں شرکت پر آمادہ کرنے کی کوشش کو مزید تیز کریں۔ہم نے اوپر دی نیوز اخبار میں جاری کردی اس تنظیم کا بیانیہ تحریر کر دیا ہے۔ یہ وہی پرانا مغربی بیانیہ ہے جو اسلام اورپاکستان کی نظریاتی سیاسی کو انتہا پسند ثابت کرنے اور پاکستان کی نظریاتی سرحدوں کی محافظ فوج کو روگ فوج ثابت کرنے کی بھونڈی کوششیں ہیں۔ اس بیانیہ میں رنگ بھرنے والے پاکستان کے لبرلز سیکولر اور پرگریسو نام نہادانشوروں،کالمسٹوں اور جن پارٹیوں کو قائد اعظنم ؒ نے جمہوری طریقے سے تحریک پاکستان کے وقت شکست دی اب پھر اپنے ناپاک عزائم اور پاکستان کے اسلامی تشخص کے خلاف لندن میں جمع ہو رہے ان کے بیانیہ پر عوام خود ہی فیصلہ کر سکتے ہیں یہ وہی بیانیہ نہیں ہے جو ابھی ابھی نواز حکومت نے اخبارات میں جاری کیا تھا جس میں حکومت کا میڈیا سل پکڑا گیا ہے۔ جس نے دنیا میں پاک فوج کو بدنام کیا ہے۔ پاک فوج نے اس پر گرفت کی۔حکومتی میڈیا نے پلانٹڈ خبر ایک انگریزی اخبار میں جاری کی۔ جس پر پہلی قسط کے طور پرپاکستان کے وزیر اطلاعات کو بھی فارغ کر دیا ہے۔ مذید انکوائری کے لیے اعلی سطحی کمیٹی بنا دی گئی ہے جو تحقیق کر کے باقی مجروموں کو بھی قانون کے کٹہرے میں لا کر قرار واقعی سزا دی جائے گی۔ صاحبو! پاکستان برصغیر کے مسلمانوں کے مطالبے کہ پاکستان کا مطلب کیا’’ لا الہ الا اﷲ‘‘ کی وجہ سے مثل مدینہ ایک ریاست پاکستان کے نام سے اﷲ تعالیٰ کی طرف سے تحفہ ہے۔ اﷲ ہی دشمنوں سے اس کی حفاطت فرمائے گا۔ چاہے دشمنوں کو کتنا ہی ناگوار گزرے۔ہمارے نزدیک لندن والی یہ کانفرنس پاک فوج کے خلاف سازش کرنے والے مجرموں کو تحفظ دینے کے لیے بیرونی آقاؤں کے کہنے پر منعقد کی جا رہی ہے۔
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Mir Afsar Aman

Read More Articles by Mir Afsar Aman: 928 Articles with 461437 views »
born in hazro distt attoch punjab pakistan.. View More
02 Nov, 2016 Views: 328

Comments

آپ کی رائے
آپ نے درست لکھا ،یہ نام نہاد سیکولر اور لبرلز جن قوتوں کی گود میں بیٹھ کر اور جس سرمائے کی طاقت کی بنیاد پہ اپنی زبان اور قلم کو پاکستان اور اس کے اداروں کے خلاف استعمال کر رہے ہیں انہوں نے پوری دنیا میں انسانی حقوق کو پامال کر رکھا ہے،ان سامراجی قوتوں کے اآلہ کار یہ نام نہاد سیکولر اور لبرلز جنہیں ان عالمی شیطانوں نے دانشور بنایا اور عالمی میڈیا میں جگہ دی یہ ان کی نوکری کر رہے ہیں، ان نام نہاد سیکولرز کو دنیا بھر کی قوموں کی تباہی اور، قوموں اور ریاستوں میں ہونے والی در اندازی اور انسانوں کی قتل و غارت گری نظر نہیں اآتی، ان نام نہاد سیکولر ز کو اس حقیقت تک رسائی نہیں ہوئی کہ جن ملکوں اور جن اآقائوں کی گود میں بیٹھ کر وہ کانفرنسیں کر رہے ہیں ساری دنیا کی دہشت گردی اور انتہا پسندی کے تانے بانے وہی ہیں؟یہ سامراجی قوتوں کے ایجنٹ ہیں جنہیں وقتا فوقتا استعمال میں لایا جاتا ہے،یہ بے ضمیروں کا ایک ایسا گروہ ہے جن کا نہ تو کوئی وطن ہے اور نہی کوئی اخلاقی معیار۔ملک کے تمام اہل علم اور باشعور صحافیوں اور سول سوسائٹی کو ان سامراجی ایجنٹوں کی تمام حرکات پہ نظر رکھنی چاہئے اور پاکستان کے خلاف عالمی سازشوں کے اس تانے بانے کو سمجھنا چاہئے اور اس کا سد باب کرنا چاہئے۔
By: Dr. Muhammad Javed, Karachi on Nov, 05 2016
Reply Reply
0 Like