ہلکی پھلکی سی نادانیاں

(Sana, Lahore)
ماں باپ کے خیال میں نادان انٹرنیٹ ہے، ٹیچرز کے خیال میں نادان فیس بک ہے، سٹوڈنٹس کے خیا ل میں نادان واٹس ایپ ہے، بوڑھوں کے خیال میں نادان جوانان قوم ہیں، جوانوں کے خیال میں نادان حکومت ہے، پی ٹی آئی کے خیال میں نادان نون لیگ ہے، نون لیگ کے خیال میں نادان خان ہے، دودھ مافیا کے خیال میں نادان پینے والے ہیں ، ڈاکٹرز کے خیال میں نادان مریض ہیں،۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سب کچھ لکھنے کے بعد مجھے لگ رہا ہے نادان وہ ہے جو سامنے آئینے میں ہے۔

نادانیاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کے شروع میں ویسے تو نا آتا ہے اور جن الفاظ کے شروع میں نا آتا ہو ہمارے ہاں وہ عام طور پر کسی اچھے مطلب کے حامل نہیں ہوتے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ناہنجار، ناشکرا، ناخلف، نامراد، ناسمجھ ، نااہل، نافرمان، ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ سب وہ الفاظ ہیں جن کے لئے کوئی بھی کتنا ہی مستحق کیوں نہ ہو مگر چاہے گا کہ کوئی بھی میرے لئے انکو استعمال نہ کرے۔

نادانیاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سن کر انسان امید کرتا ہے کہ کوئی نابالغ اور نا شناختی کارڈ والے افراد ہوں گے جو کہ ان نادانیوں میں پڑتے ہوں گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مگر اگر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اخبارات اٹھائیں، چینل گھمائیں، نظر دوڑائیں۔۔۔ ہر انسان ہی حسب توفیق ان میں پڑا نظر آئیگا۔

نادانی کا وصف عورتوں اور بچوں کے لئے مختص سمجھا جاتا ہے۔ آخر کو جو مخلوق ذیادہ احتجاج نہ کر سکیں اور آرام سے ملے ہوئے" ٹائٹلز" مان لیں انھی کے لئے ذیادہ عجیب القابات بولے جائیں گے نا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ویسے اگر غور کیا جائے تو کبھی کبھی مجھے خیال آتا ہے کہ عورتیں ایڑی چوٹی کا زور بھی لگا دیتی ہیں خود کو اس صلاحیت سے مالامال ثابت کرنے کے چکر میں۔

اگر یقین نہ آئے تو کھڑکی کا پردہ ہٹا کر اپنی محلے کی خواتین دیکھ لیں، چینل گھما کر سیاسی اور اینکری خواتین دیکھ لیں، اگر تب بھی یقین نہ آئے تو آپ ڈرامہ لگا لیں اس میں کوئی قید نہیں افغانی ایرانی ہندوستانی پاکستانی کوئی بھی ڈرامہ ہو آپکو نادانیوں کے وصف سے مالا مال ملے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ساتھ ہی ساتھ اسکو دیکھتے دیکھتے آپکی اپنی نادانی کی حس جاگنے لگے گی ۔ اگر اپنی حس کو سویا رکھنا چاہتے ہیں تو ڈراموں سے تو بالخصوص آپ پرہیز ہی رکھیں۔

اگر بچوں کی طرف آئیں تو بچے تو یہی لگتا ہے کہ چھوٹے ہیں سو نادان ہو سکتے ہیں مگر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہی بچے اپنی انتہائی کوششیں خود کو اپنے ماں باپ کا بھی باپ ثابت کرنے میں تُلے رہتے ہیں اور اگر انکےبڑے اپنی آںکھوں کے سامنے سے انکی "معصوم" نادانیوں کی پٹی ہٹا کر دیکھیں تو انکو بھی پتہ لگے گا کہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بچے بڑوں کی نسبت کم نادان اور انتہائی غیر معصوم ہیں۔

اگر آپ نے جوانان قوم کی نادانیاں چیک کرنی ہوں تو لڑکوں کی ون ویلنگ کرتے ہوئے اور لڑکیوں کی سیلفی لیتے ہوئے چیک کر سکتے ہیں۔ دونوں ہی نادان قوم اتنے زور و شور سے پہیئے اور موبائیل کے بٹن پر جان لگاتے ہیں جیسے اگر زندگی اور آکسیجن کا دارومدار انھی دو چیزوں پر ہے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اکثر یہ معصوم سی نادان حرکتیں پپیچھے رہ جانے والوں اور تصویروں کے دیکھنے والوں کی رُلاتی بھی بہت ہیں۔

نادان قوم کی بات ہو اور سیاستدانوں کی بات نہ ہو یہ کیسے ہو سکتا ہے۔۔۔ یہ وہ نادان ہیں جنکے پاس اکثر انھی مسائل کے لئے جان لڑانے کا وقت ہے جو نہ بھوک سے بلکتے کو کھانا دے سکیں اور نہ ہی جان و صحت کے لئے لڑنے والے کو صحت دے سکیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ان نادانوں نے انسانوں کو جتنے ناکوں چنے چبوائے اول الزکر کوئی بھی صنف انسانوں کا ایسا حال نہ کرسکے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ بس اپنا حال بے حال کر سکے۔ سیاستدان قوم دوسروں کو حال و بے حال کر سکے۔

نادانیوں کے لئے نہ جغراففیائی حدود کی قید ہے نہ ہی رنگ و نسل کی بس۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اختیار ملنے کی بات ہے۔ جسکے پاس جتنا وسیع اختیار ہوگا وہ اتنا ہی ذیادہ حال و بے حال کر سکے گا۔ انسانوں کو اگر اتنے نادان بہت سے حکمران نہ ملے ہوتے تو آج جو نادانیوں کو بھگت رہے ہیں وہ یقینی پر سکون ہوتے۔

ویسے غزا بھی نادان انسانوں کے ساتھ نادانی بھرا سلوک کر دیتی ہے چاہے کتنی ہی فائدہ مند اور اچھی کیوں نہ ہو۔ بے چاری خود نہ کسی کے ہاتھ تک جا سکتی ہے نہ کسی کے بکس تک مگر پھر بھی جو غزا ذیادہ نادان سمجھی جاتی ہے دنیا بھر میں وہ اتنی ہی ذیادہ کھائی بھی جاتی ہے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اب یہ تو سب ہی جانتے ہیں کہ نادان کھانے والا ہے مگر یہ اور بات ہے کہ جو بھی جس بھی "نادان غذا " کو کھا کر حال و بے حال ہوتا ہے وہ اس بے چاری کو شدید لعن طعن کرتا رہتا ہے۔

ماں باپ کے خیال میں نادان انٹرنیٹ ہے، ٹیچرز کے خیال میں نادان فیس بک ہے، سٹوڈنٹس کے خیا ل میں نادان واٹس ایپ ہے، بوڑھوں کے خیال میں نادان جوانان قوم ہیں، جوانوں کے خیال میں نادان حکومت ہے، پی ٹی آئی کے خیال میں نادان نون لیگ ہے، نون لیگ کے خیال میں نادان خان ہے، دودھ مافیا کے خیال میں نادان پینے والے ہیں ، ڈاکٹرز کے خیال میں نادان مریض ہیں،۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سب کچھ لکھنے کے بعد مجھے لگ رہا ہے نادان وہ ہے جو سامنے آئینے میں ہے۔

ہر کام آُپکو بتا رہا ہوتا ہے کہ یہ کتنا نادان اور کتنا غیر نادان نتیجہ دے گا خدارا اسی لئے سوچ سمجھ کر کچھ بھی کرنے کی عادت ڈالیں۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: sana

Read More Articles by sana: 231 Articles with 182806 views »
An enthusiastic writer to guide others about basic knowledge and skills for improving communication. mental leverage, techniques for living life livel.. View More
06 Feb, 2017 Views: 649

Comments

آپ کی رائے