کان بجنے کا سبب قیامت تک ’’اُمتی اُمتی ‘‘کی صدا،ایسے وقت درود پاک کی کثرت کریں

(Ata Ur Rehman Noori, India)
رسول اکرم صلی اﷲ علیہ وسلم ہر لمحہ ہماری یاد میں، کچھ دیر ہم ہجراں نصیبوں کو بھی ان کی یادکرنا چاہیے

انسان کسی کو وقت سے زیادہ قیمتی تحفہ دے ہی نہیں سکتاکیونکہ وہ اسے تحفے میں ایسی شئے پیش کررہاہے جو کبھی نہ واپس آسکتی ہے اور نہ ہی اسے خریداجاسکتاہے۔مگر افسوس!! ہمیں وقت کی قدر و قیمت کااحساس ہی نہیں ،سستی،کاہلی اور لاپرواہی کے ساتھ ساتھ فضول سرگرمیوں اور بے مقصد مصروفیات میں وقت ضائع کرکے ہم اپنے آپ کوبربادکررہے ہیں۔لیکن افسوس کہ اس بربادی کابھی ہمیں کوئی احساس نہیں۔صرف معاملات ہی میں نہیں بلکہ عبادات میں بھی وقت کاخیال رکھناانتہائی ضروری ہے۔ شاہکار دست قدرت مصطفی جان رحمتﷺ نے فرمایا:دو نعمتیں ایسی ہیں کہ جن کی ناقدری کرکے اکثر لوگ نقصان میں رہتے ہیں،ایک صحت اور دوسری فرصت۔(بخاری وترمذی)ایک اور مقام پر فرمایا:پانچ چیزوں کوپانچ چیزوں سے پہلے غنیمت جانو (۱ ) بڑھاپے سے پہلے جوانی کو(۲)بیماری سے پہلے صحت کو(۳)محتاجی سے پہلے تونگری کو(۴)مصروفیت سے پہلے فراغت کواور(۵)موت سے پہلے زندگی کو۔اگر ہم اپنے اوقات کاجائزہ لینگے تومعلوم ہوگاکہ ہم اپنی زندگی کے کتنے ہی قیمتی لمحات کوشوق کی نذر کردیتے ہیں،بے جاسیروتفریح،گپ شپ،فلموں،ڈراموں ،ایک دوسرے پر الزام تراشی،لڑائی،جھگڑے اور مسلمانوں کی غیبت کرنے میں صرف کردیتے ہیں ، دن بھر موبائل پر لگے رہنا،کسی بھی طرح وقت نکال کر ٹی وی اور کمپیوٹر پر بیٹھ کر فضول کاموں میں وقت برباد کرنا،یہ تمام باتیں عام ہیں۔آج ضرورت اس بات کی ہے کہ ہر آدمی بذات خود وقت کاخیال کریں ، اگر ہر انسان خود اپنی ذمہ داری کااحساس کریں تو بہت حد تک وقت کی ناقدری سے بچا جاسکتاہے۔ہمیں یہ بھی جاننے کی ضرورت ہے کہ اﷲ کا دین ہم تک پہنچانے کے لیے رسول اکرم صلی اﷲ علیہ وسلم نے کتنی قربانیاں پیش کیں،درد کی کتنی راہوں سے گذاریں گئے اور ہماری مغفرت کے لیے آپ نے کتنی کوششیں کیں۔

تاریخ کائنات میں محبت کی کوئی ایک بھی ایسی مثال نہیں ملتی جیسی محبت شہنشاہِ کونین نے اپنی گنہگار امت سے کی ہے۔ نگار خانۂ قدرت کے عظیم شاہکار غم خوارِ امت مصطفےٰ جانِ رحمت صلی اﷲ علیہ وسلم نے انتہائی درد،کرب، زخموں اور غموں کا بار سہہ لیا مگر ہماری بھیگی پلکوں، ڈبڈبائی آنکھوں کا بوجھ ان سے برداشت نہ ہوسکا۔ امت کے غم میں آپ ہر وقت نڈھال اور بارگاہِ خداوندی میں امت کی بخشش کے خواہاں نظر آتے ۔ کبھی غار حرا میں سجدہ ریز ہیں تو کبھی غارِ ثور میں، کبھی ہجرۂ عائشہ میں امت کے غم میں محوِ گریہ ہیں تو کبھی کعبۃ اﷲ ومسجد نبوی میں۔ غرضیکہ جب سارا زمانہ سوجاتا مصطفےٰ پیارے ہمارے لیے جاگتے۔دیلمی مسند الفردوس میں امیر المؤمنین مولیٰ علی کرم اﷲ تعالیٰ وجہہ الکریم سے راوی ہیں حضور صلی اﷲ تعالیٰ علیہ وسلم نے فرمایا:جب اﷲ تعالیٰ مجھ کو راضی کردینے کا وعدہ فرماتا ہے، تو میں راضی نہ ہوں گا اگر میرا ایک امتی بھی دوزخ میں رہا‘‘۔حضور صلی اﷲ تعالیٰ علیہ وسلم نے ایک دو یا تین راتیں (باختلاف روایات) تراویح کی نماز پڑھی۔ اس کے بعد صحابۂ کرام علیہم الرضوان حجرۂ مقدس سے آپ کے باہر تشریف لانے کے منتظر رہے مگر حضور صلی اﷲ علیہ وسلم کا شانۂ نبوت سے باہر تشریف نہیں لائے۔ آپ نے فرمایا: اگر میں (تراویح کے لیے) باہر آجاتا تو میری امت پر تراویح فرض ہوجاتی۔ ام المؤمنین حضرت عائشہ صدیقہ رضی اﷲ عنہا سے مروی ہے کہ ماہِ رمضان کی وسط رات میں ایک بار حضور اقدس صلی اﷲ علیہ وسلم نے مسجد میں نماز پڑھی لوگوں نے بھی حضور اکرم صلی اﷲ علیہ وسلم کی اقتدا میں نماز ادا کی۔ دوسری رات آدمیوں کی اتنی کثرت ہوئی کہ مسجد تنگ ہوگئی لیکن حضور صلی اﷲ علیہ وسلم حجرۂ نبوی سے برآمد نہیں ہوئے۔ صبح کو فجر کی نماز کے لیے تشریف لائے فجر کی نماز سے فارغ ہوکر لوگوں سے خطاب فرمایا: ’’تمہاری رات کی حالت مجھ سے پوشیدہ نہ تھی لیکن اندیشہ یہ تھا کہ نماز تروایح تم پر فرض ہوجائے اور تم اس کے ادا کرنے سے عاجز ہوجاؤ۔‘‘ (غنیۃ الطالبین ص: ۳۶۶)طبرانی باسناد حسن حضرت علی رضی اﷲ عنہ سے راوی ہیں کہ حضور اقدس صلی اﷲ تعالیٰ علیہ وسلم نے فرمایا:’’ اگر یہ بات نہ ہوتی کہ میری امت پر شاق ہوگا تو میں ان کو ہر وضو کے ساتھ مسواک کرنے کا امر فرمادیتا ۔‘‘یعنی فرض کردیتا اور بعض روایتوں میں لفظ فرض بھی آیا ہے۔ (بہار شریعت: جلد اول، حصہ دوم، ص: ۱۰)کیازمانے نے ایساکوئی قائد ورہبر دیکھاہے جس نے اپنے ماننے والوں سے اتنی محبت کی ہو؟ مصطفےٰ پیارے ہماری کمزوریوں سے بخوبی واقف تھے۔ ہم پر بار نہ گزرے ترک فرض کے عوض کہیں ہم ِ جہنم کے مستحق نہ ہوجائیں اس غرض سے مصطفےٰ پیارے کتنی احتیاط فرماتے۔

مصطفےٰ جانِ رحمت صلی اﷲ علیہ وسلم معراج کے لیے تشریف لے جارہے تھے ،تب آپ کی نظر براق پر پڑی، فکر مند ہوکر سر جھکا لیا۔حضرت جبرئیل علیہ السلام کو خطاب الٰہی ہوا کہ:’’ اے جبرئیل! میرے محبوب سے پوچھو کہ کیا پریشانی لاحق ہے اور کس وجہ سے توقف ہے؟ ‘‘آقا علیہ السلام نے فرمایاـ: میں گھر سے نکلا ہوں مجھے خلعت واعزاز حاصل ہواہے، میرے اعزاز واکرام کے لیے تمام ملائکہ مقربین حاضر ہوئے ہیں اور برق رفتار براق میرے لیے لائے ہیں۔ مجھے اندیشہ ہوا کہ کل قیامت کو جب میری امت قبروں سے اٹھے گی، برہنہ، خالی پیٹ، بھوکی، پیاسی، گناہوں کا بوجھ گردن پر رکھے،بے شمار مظلوموں کے ہاتھ ان کے دامن میں ہوں گے، پچاس ہزار سالہ راہ ان کے سامنے ہوگی، تیس ہزار سالہ باریک اور تاریک راہِ دوزخ پر سے گزرنا ہوگا وہ بے بضاعت فقرا اس مسافت کو کس طرح اور کن پیروں سے طے کرسکیں گے؟ فرمان آیا: ’’اے میرے حبیب! غم نہ کیجیے میں نے جس طرح آج رات عزت وبزرگی کا براق آپ کے دروازے پر بھیجا ہے اسی طرح آپ کی بلند ہمت امت کی ہر قبر پر ایک براق بھیجوں گا اور تمام کو سوار کرکے سلامتی کے ساتھ ہنستے کھیلتے پل صراط سے گزار دوں گا، قیامت کا پچاس سالہ راستہ پلک جھپکنے میں طے کروا کر بہشت عنبریں میں پہنچادوں گا۔ (معارج النبوہ ، ص: ۴۵۴)

ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے سرکار اعلیٰ حضرت علیہ الرحمہ ’’نفی الفی عمن استنار بنورہ کل شئی‘‘ میں تحریر فرماتے ہیں کہ ’’جان برادر! تو نے کبھی سنا کہ تیرا محب تجھے منانے کی فکر میں رہے اور پھر محبوب بھی کیسا! جانِ ایمان وکانِ احسان جسے اس کے مالک نے تمام جہان کے لیے رحمت بھیجا اور اس نے تمام عالم کا بارتنِ نازک پر اٹھالیا۔ تمہارے غم میں دن کا کھانا رات کا سونا ترک کردیا تم رات دن لہو ولعب اور ان کی نافرمانیوں میں مشغول اور وہ شب وروز تمہاری بخشش کے لیے گریاں وملول ۔جب وہ جانِ رحمت وکانِ رأفت پیدا ہوا بارگاہِ الٰہی میں سجدہ کیا اور رب ہب لی امتی (یا اﷲ! میری اُمت کو بخش دے) (صحیح مسلم )جب قبر شریف میں اُترا لب جاں بخشش کو جنبش تھی بعض صحابہ نے کان لگا کر سنا، آہستہ آہستہ ’’امتی،امتی‘‘(میری امت،میری امت) فرماتے تھے۔(صحیح مسلم شریف) قیامت میں بھی انہیں کے دامن میں پناہ ملے گی تمام انبیا علیہم السلام سے نفسی، نفسی اذہبوا الیٰ غیری(صحیح مسلم شریف) (آج مجھے اپنی فکر ہے کسی اور کے پاس چلے جاؤ) سنوگے اور اس غم خوار اُمت کے لب پر یارب امتی (اے رب میری امت کو بخش دے) کا شور ہوگا۔بعض روایات میں ہے کہ حضور ارشاد فرماتے ہیں: جب انتقال کروں گا صور پھونکنے تک قبر میں ’’امتی امتی‘‘ پکاروں گا۔ کان بجنے کا یہی سبب ہے کہ آواز جاں گداز اس معصوم، عاصی نواز کی جوہر وقت بلند ہے، گاہے ہم سے کسی غافل ومدہوش کے گوش تک پہنچتی ہے۔ روح اسے ادراک کرتی ہے اسی باعث اس وقت درود پڑھنا مستحب ہوا کہ جو محبوب ہر آن ہماری یاد میں ہے کچھ دیر ہم ہجراں نصیب بھی اس کی یاد میں صرف کریں۔‘‘(نفی الفی عمن استنار بنورہ کل شئی ص:۲۲)
٭٭٭

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Ataurrahman Noori

Read More Articles by Ataurrahman Noori: 535 Articles with 410034 views »
M.A.,B.Ed.,MH-SET,Journalist & Pharmacist .. View More
04 Apr, 2017 Views: 1050

Comments

آپ کی رائے
السلام علیکم و رحمۃ اللہ و برکاتہ،
ماشاء جناب عطا الرحمن نوری صاحب، ایم بھی ہیں، بی ایڈ اور ایم ایچ اور صحافی اور فارمسسٹ بھی ہیں۔ یعنی پڑھے لکھے محترم انسان ہیں۔
اور ہم آپ سے یہ امید بھی کرتے ہیں کہ آپ جو کچھ پیش کرتے ہوں گے اس کے بارے میں تحقیق بھی کرلیتے ہوں گے۔ اسی لیے ہم اس کالم کے حوالے سے آپ کے آگے چند سوالات رکھنا چاہتے ہیں۔ امید ہے کہ جوابات سے ضرور نوازیں گے،
پہلی بات یہ کہ اس بات کی تصدیق کردیں کہ آپ کی نظروں سے یہ حدیث تو گزری ہوگی جس میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد گرامی ہے کہ جس نے مجھ سے وہ بات منسوب کی جو کہ میں نے نہیں کہی وہ اپنا ٹھکانہ جہنم میں بنا لے۔
سب سے پہلے تو یہ جو قصہ آپ نے براق کے اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ، براق اور حضرت جبریل علیہ السلام کے درمیان مکالمے کی شکل میں پیش کیا ہے۔ اور حوالہ معراج النبوہ کا دیا ہے۔ آپ سے درخواست ہے کہ اپنی تحقیق سے یہ فرمادیں کہ معراج النبوہ نے یہ مکالمہ کس حدیث سے لیا ہے؟ اور اس کی اسناد کیا ہیں؟
دوسرا آپ نے اپنے اعلیٰ حضرت کا ارشاد مبارک اعلیٰ تحریر فرمایا کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے امت کے لیے دن کا کھانا اور رات کا سونا اپنی امت کے خاطر ترک کردیا۔ اس کی دلیل کیا ہے؟۔ جبکہ آپ نے تو اپنے دن اور رات کے معمولات کو مختلف حصوں تقسیم کر رکھا تھا۔ یعنی، رات کا ایک حصہ سونا، ایک حصہ میں اپنی ازواج مطہرات کے پاس جانا اور پھر ایک حصہ اپنے رب کی عبادت کرنا۔
چلتے چلتے یہ بھی فرمادیں کہ وہ کون سے صحابہ کرام رضوان اللہ اجمعین تھے جنہوں نے آپ کو تدفین کے وقت امتی، امتی پکارتے ہوۓ سنا اور اس کہانی کی اسناد کیا ہیں۔ منطقی طور پر تو یہ بات نہایت ہی فضول معلوم ہوتی ہے۔ محترم آپ یہ کہنا چاہ رہے ہیں کہ نبئ تدفین کے وقت باتیں کر رہے تھے۔ اور باتیں کرنے والا زندہ ہوتا ہے۔ تو کیا صحابہ نے آپ کو دفن کردیا اس کے باوجود کہ آپ کے دہن مبارک سے امتی امتی کے الفاظ نکل رہے تھے،
آخری بات یہ جو آپ نے قیامت تک امتی امتی اور کان بجنے کے بارے میں جو تحریر کیا ہے اس کی اسناد بھی بیان کر دیجیے
By: Baber Tanweer, Karachi on Apr, 09 2017
Reply Reply
2 Like
من گھڑت باتوں کی بھی کودلیل ہوتی تو جواب ملتا۔
By: Muhammad Ajmal Khan, Karachi on Apr, 11 2017
1 Like

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ