جب انسان محبت الہی کو تھام لیتا ہے

(ABDUL SAMI KHAN SAMI, Swabi)

سبکتگین بادشاہ اپنی ایک بیوی سے بہت زیادہ محبت کرتا تھا ، ایک مرتبہ اس کی دوسری بیویوں نے اس سے کہا کہ آپ فلاں بیوی سے زیادہ محبت رکھتے ہو حالانکہ حسن میں ہم اس سے زیادہ ہیں سمجھداری میں بھی ہم اس سے زیادہ ہیں آخر اس میں ایسی کون سی خاص بات ہے ہمیں تو اس میں ایسا کچھ نہیں نظر آتا ، آخر اسکی کیا وجہ ہے؟
بادشاہ نے کہا "اچھا میں کبھی اس بات کا جواب آپ کو دے دوں گا۔" اس کے بعد اس کی بیویاں یہ بات بھول گئیں ..
ایک دن سبکتگین نے اپنے گھر کے صحن میں بیٹھ کر کھا کہ آج میں اچھے موڈ میں ہوں اس لیے میں چاہتا ہوں کے تمام بیویوں کو اچھے اچھے انعامات سے نوازوں
وہ یہ سن کر خوش ہوگئیں کہ آج ہمیں شاہی خزانے سے انعام ملے گا، صحن میں سونے چاندی کے ڈھیر لگادیے گئے، بادشاہ نے کہا کہ اس میں جس بیوی کو جو چیز زیادہ پسند ہے وہ دوڑ کر اس پہ ہاتھ رکھے وہ چیز اس کی ہو جائے گی ..
چنانچہ جس وقت میں اشارہ کروں تم دوڑ کر اپنی پسند کی چیز پر ہاتھ رکھ دینا، بیویاں تیار ہوگئیں ، اور انہوں نے اپنی اپنی چیزوں پر نگاہیں جمالیں ، جیسے ہی بادشاہ نے اشارہ کیا سب بیویوں نے دوڑ کر اپنی اپنی پسند کی چیز پر ہاتھ رکھ لیا ...
لیکن! " وہ بیوی جس سے اس کو زیادہ محبت تھی وہ اپنی جگہ کھڑی رہی۔" سب بیویوں نے اس کی طرف دیکھا اور ھنسنے لگیں کہنے لگیں.. بادشاہ سلامت !" ہم کہتے تھے نا کہ یہ بے وقوف ہے اور آج اس کے عقل کی کمی کھل کر سامنے آگئی، یہ تو بس سوچتی ہی رہی لہذا آج اس کو کچھ نہیں ملنے والا۔"
بادشاہ نے اس سے پوچھا:"اے اللہ کی بندی! تم نے کسی چیز پر ہاتھ کیوں نہیں رکھا ؟؟
وہ کہنے لگی: بادشاہ سلامت! "میں پوچھنا چاہتی ہوں کہ آپ نے یہ کہا ہے نا کہ جو جس چیز پر ہاتھ رکھے گا وہ اسی کی ہو جائے گی ۔" بادشاہ نے کہا:" ہاں یہ ہی تو میں نے کہا تھا ۔"
اس نے یہ تصدیق سنی تو آگے بڑھی اور بادشاہ کے کندھے پر ہاتھ رکھ کر بولی
کہ ..."بادشاہ سلامت مجھے تو آپ چاہیے جب آپ میرے ہو گے تو پھر سارا خزانہ میرا ہوگیا۔"
بادشاہ نے اسکی یہ بات سنی تو باقی بیویوں سے کہا:" کہ دیکھو اس کی اسی عقلمندی اور محبت کیوجہ سے میں اس سے زیادہ محبت رکھتا ہوں."
اسی طرح جب انسان محبت الہی کو تھام لیتا ہے تو کائنات کی چیزیں اس کے لئے مسخر ہوجاتی ہیں..
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: ABDUL SAMI KHAN SAMI

Read More Articles by ABDUL SAMI KHAN SAMI: 99 Articles with 76684 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
01 May, 2017 Views: 509

Comments

آپ کی رائے