رسوائی کے آنسو

(Muhammad Saghir Qamar, )

روز پٹتے ہیں،ہر روز خوار ہوتے ہیں۔انڈونیشا سے مراکش،خجالت اور ذلت کاشکار امت اور امت پرمسلط بے ہمت حکمران !!

عالم اسلا م کے حکمران اپنے عقیدے اور ایمان کی شناخت سے بے بہرہ ہیں۔ جنھیں معلوم ہی نہیں کہ اس کائنات میں انہیں خلیفہ الٰہی بنا کر بھیجا گیا تھا اور بطور مسلمان وہ بر تر و اعلیٰ ہیں۔ مسلم حکمرانوں کی اکثریت یہ بھی نھیں جانتی کہ کفر کے سامنے سر نگوں ہونا شیطان کے آگے سجدہ کرنے کے مترادف ہے ۔ امریکی طاقت ـکے خوف نے ان کی سوچنے سمجھنے کی صلاحیت سلب کر رکھی ہے۔مسلمانوں کو خوف زدہ کرنے اور ان کے عقاید اور ایمان کو متزلزل کرنے کے لیے امریکہ اور اس کےِ حواریوں نے جھوٹے پروپیگنڈے کا طوفان اٹھا رکھا ہے ۔ اسلام کا منفی امیج پیش کرنے کے لیے سارے وسائل جھونک دیے گئے ہیں ۔دنیا بھر میں ’’ اسلامی بنیاد پرستی ‘‘ ’’ مسلم انتہاپسندی ‘‘ ’’ اسلامی دہشت گردی ‘‘ جیسے موضوعات اور عنوانات پر کتابوں اور مضامین کا ایک سیلاب ساامڈاہوا ہے ۔ہزاروں ٹیلی ویژن چینلز دن رات اسلام کو جنگ جو ‘ جھگڑالو اور لڑاکا مذہب ثابت کرنے میں لگے ہوئے ہیں اور زمین پر خلافت کے دعویدار پر سکوت مرگ طاری ہے یہ حکمران امریکہ کی چاکری میں ہلکان ہو رہے ہیں۔

نائن الیون کے بعد امریکہ کو عالم اسلام پر یورش کرنے کا بہانہ ہاتھ آ گیا ۔امریکہ ایک طرف مسلمان ممالک کے تیل کے خزانوں پر متصرف ہونا اور دوسری جانب انہیں اپنی غلامی کا شکار کر کے ان کے عقاید و نظریات میں نقب لگانا چاہتا تھا ۔پورا عالم اسلام ہی امریکی جبر وقہرکے نشانے پر تھا ‘ افغانستان اور عراق جیسے کمزور ممالک براہ راست انتقام کا نشانہ بنے اور آج بھی امریکی غارت گری کے نرغے میں ہیں ۔ان ممالک کے لاکھوں انسان اپنے ہی وطن میں در بدر کی ٹھوکریں کھانے پر مجبور ہیں۔ افغانستان اور عراق کے باہر بھی اسلامی دنیا کی حالت قابل رشک نہیں ۔عالم اسلام کے حکمران امریکی استعمار کی جارحیت سے زیادہ متاثر نہیں ہوئے ‘ وہ خود بھی مغربی تہذیب کے فرزند تھے اور ان کے پر جوش تعاون کی وجہ سے امریکہ کو اسلامی دنیا پر عملی اور معنوی قبضہ جمانے میں زیادہ دقت پیش نہیں آئی ۔ایک ارب سے زیادہ مسلمانوں کو یہ ذلت اور رسوائی خون کے آنسو رلاتی ہے۔مسلم حکمران دینی اور ملی غیرت و حمیت سے محروم اور امریکی چیلنج کے سامنے سر نگوں ہو چکے ۔ ان سے اس بات کی امید کم ہے کہ کبھی حمیت زندہ ہو ۔
مگر یہ راز آخر کھل گیا سارے زمانے پر
حمیت نام تھا جس کا گئی تیمور کے گھر سے

عالم اسلا م کے حکمران چپ رہے اور اسلامی اقدار کا چہرہ بگاڑ کر پیش کیا جاتا رہا ۔ امریکی غنڈے اور حواری اس عمل میں حصہ دار ہیں ۔ اسلام پر رقیق حملوں کا سلسلہ بڑھتا جا رہا ہے۔یہ حملے ڈیزی کٹر بموں سے کم ہلاکت خیز نہیں ۔پورا عالم اسلام مغربی میڈیا کی تباہ کن بم باری اور تابکاری کی زد میں ہے ۔اب تو یوں نظر آتا ہے کہ’’ نائن الیون‘‘ اور اسامہ بن لادن اسلام کے عسکری مزاج کے حوالے کے طور پر باقی رہ گئے ہیں ۔اس حوالے کے ذریعے دنیا بھر میں اسلام کے خلاف نفرت پھیلائی جاتی ہے ۔اس مرحلے پر کچھ نام نہاد مسلمان مفکرین اور دانشور بھی امریکہ کے ابلاغی حملے سے بری طرح متاثر ہیں ۔وہ امریکہ کی ہاں میں ہاں ملاتے ہیں اور کہتے ہیں‘ ہمیں چاہیے کہ امریکہ اور اہل مغرب کو اطمینان دلانے کے لیے اسلامی عقاید اور اصول و ضوابط میں ایسی تبدیلیاں کر دیں جن سے اسلام کا امیج بہتر ہو سکے ۔بہت سے کمزور ایمان علماء بھی یہ کہہ رہے ہیں کہ حکمت کا تقاضا یہی ہے کہ ہم سر جھکا کر اپنا بچاؤ کریں ۔بنیاد پرست اور دہشت گردقرار دے کر مارے جانے سے بہتر ہے کہ ہم اپنا عقیدہ دل میں رکھتے ہوئے سفید جھنڈے اٹھا لیں ۔امریکہ کو یقین دلا دیا جائے کہ مسلمان اس کے نظریات سے مصالحت کرنے اور اس کے تمدن کو اپنانے کے لیے تیار ہیں ۔یہی وجہ ہے کہ ہندوستان کے تین سو سے زیادہ نام نہاد ’’ علماء ‘‘ اب تک امریکی میزبانی سے لطف اندوز ہو چکے ہیں ۔ امریکہ ان ’’علماء ‘‘پر ثابت کر چکا ہے کہ اس کی جنگ ’’ پر امن ‘‘ مسلمانوں سے نہیں صرف ’’ دہشت گرد اسلام ‘‘ سے ہے ۔دوسری طرف امریکی دانشور اور مفکرین بڑے یقین سے کہتے ہیں کہ دنیا ئے اسلام میں مغربی تہذیب کو مٹانے کی زبردست خواہش موجود ہے اور مغربی تمدن کو نقصان پہنچانے کی ساری ذمے داری اسلام کے نظام تعلیم و تربیت میں ہے ۔وہ تشدد کو اسلامی تعلیم کا لازمی نتیجہ سمجھتے ہیں اور مسلمانوں سے مطالبہ کر رہے ہیں کہ اسلامی مدارس کا نصاب بدل دیا جائے ‘ان اسلامی اصولوں اور قوانین کو بھی بدل ڈالیں جن سے دہشت گردی اور انتہا پسندی جنم لیتی ہے ۔
مشہور امریکی دانشور ڈینئل پائپس نے ’’ نیویارک ٹائمز‘‘ میں لکھا تھا:۔
’’ کوئی پروا نہیں ‘اسلام ماضی میں جیسا بھی رہا ہے یا حال میں ہے ‘مستقبل میں یہ آج سے کچھ نہ کچھ مختلف ضرور ہوگا ‘‘ ۔

ایک نا قابل تردید حقیقت یہ ہے کہ امریکہ اپنی عسکری بالا دستی کے باوجود کمزور عراقیوں اور افغانوں کو بھی مسخر نہیں کر سکا ‘ تا ہم وہ ہمارے عقاید و نظریات پر ڈاکہ ڈالنے سے باز نہیں آئے گا ۔ اپنے اس مشن کے لیے اسے ہمارے ضمیر فروشوں کا تعاون حاصل ہے ۔بدقسمتی سے اسلامی تحریکیں نائن الیون کے چیلنج سے کماحقہ عہدہ برا نہیں ہو سکیں ۔اس میں شبہ نہیں کہ اﷲ کے لاکھوں بندے جبر و استبداد کے طوفان میں بھی ثابت قدم رہے۔انہوں نے کسی حال میں شیطان کی فوجوں کے سامنے ہتھیار نہیں ڈالے ۔لیکن امریکہ کی فکری یلغار کے سامنے ہماری قلعہ بندیاں عیب اور سقم سے خالی نہیں رہیں ۔ بعض اہل علم اور اہل قلم نے عوام الناس کے لیے فکر انگیز رہنمائی بھی کی ہے ‘لیکن مغربی ذرائع ابلاغ کی بے پناہ یورش کے سامنے تنکوں سے بند نہیں باندھا جا سکتا ۔ ہم ایک زبردست چیلنج سے دو چار ہیں ‘ چند عارضی اور عبوری اقدامات سے اس سیلاب کو روکنا مشکل ہے ۔ دنیا اسلام میں آمروں کے خلاف بپا تحریک روشنی کی ایک کرن ضرور ہے لیکن یہ خودروشنی نہیں ہے ۔ امریکہ کبھی نہیں چاہے گا کہ اس کے پٹھوؤں کے بعد ان ملکوں میں حقیقی عوامی قیادت سامنے آ جائے ۔ امریکہ اس خوف کو مٹانے کے لیے نئے مہرے تلاش کرے گا۔ کشمکش کی اس فضا میں اب بھی موقع ہے کہ اسلامی دنیا کے حکمران اپنی شناخت پہچانیں ۔ ایک حقیقی اسلامی معاشرے کے لیے کمربستہ ہوں ‘اگر وہ ایسا نہیں کریں گے‘ عوام کا مزاج نہیں پہنچانیں گے تویہ عالمی عنڈہ پہلے ان سب کواستعمال کرے گا پھر ان کو صدام ،قذافی ، بشار الاسد،زین العابدین علی اور حسنی مبارک جیسے انجام تک پہنچادے گا۔ امت کو ڈرانے کی نہیں جگانے کی ضرورت ہے۔ اپنی شناخت چھپانے کی نہیں ‘ بتانے اور باقی رکھنے کی ضرورت ہے۔یہ وقت کی پکار ہے۔۔۔وہ وقت جواب بہت کم رہ گیا۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Muhammad Saghir Qamar

Read More Articles by Muhammad Saghir Qamar: 51 Articles with 21505 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
16 May, 2017 Views: 466

Comments

آپ کی رائے