کیا عالم اسلام سو رہا ہے

(Mian Ihsan Bari, )

مسجد اقصیٰ یہودیوں کے گھیرے میں ہے اور اسرائیل مسلمانوں سے اپنی پرانی دشمنیوں کا بدلہ لینے کے لیے اپنے غلیظ ترین حربوں پر اترا ہوا ہے مسجد اقصیٰ جو کہ مسلمانوں کا قبلہ اول ہے ہمارے پیارے نبی اکرم محمد ﷺجب معراج شریف پر گئے تھے اور سات آسمانوں کی سیر کی تھی تو واپسی پر اسی مسجد میں ایک لاکھ چوبیس ہزار پیغمبروں نے ان ﷺکی اقتدا میں نماز ادا کی تھی عرصہ دراز تک پوری دنیا کے مسلمان اسی طرف منہ کرکے عبادات سر انجام دیتے تھے ہمارا قبلہ اول اس وقت اسرائیلیوں کے قدموں تلے روند ڈالا جارہا ہے مگر56اسلامی ممالک کے سربراہان کی زبانیں گنگ ہیں اور کسی صحیح العقیدہ مسلمان لیڈر شپ کے تقریباً نہ ہونے کی وجہ سے کوئی شخص زبان سے ایک حرف تک ادا نہیں کر رہا غالباً اصل وجہ"بڑے سامراج"سے ناراضگی نہ مول لینا ہے تاکہ اس امریکہ کا"سایہ"ان کے سروں پر قائم رہے اور کہیں وہ ان کے خلاف ہی نہ ہو جائے مسجد اقصیٰ کی بندش کے خلاف فلسطینی سڑکوں پر آئے توصہیونی فوجوں نے بہیمانہ تشدد کیامسلمان مسجد کے اطراف میں ہزاروں فلسطینیوں پرصہیونی فوج کی طرف سے عائد پابندیوں کے خلاف احتجاج کر رہے تھے اس احتجاج پر اسرائیلی فوج نے سخت تشدد شروع کردیا۔آنسو گیس کی شیلنگ صوتی بموں سے حملے اور دھاتی گولیوں کے ساتھ ساتھ نہتے مظاہرین پرہوائی فائرنگ بھی کی گئی۔اس طرح انہوں نے ان پابندیوں کے خلاف "یوم الغصب"منایا۔

مظاہرین زخمی ہوگئے مگرفلسطینی شہریوں نے اسرائیلی فوج کے وحشیانہ تشدد کے باوجودالیکٹرانکس گیٹس کی تنصیب کے خلاف دھرنا بھی جاری رکھا ہوا ہے اس وقت تو اسرائیلیوں نے قبلہ اول میں مسلمانوں کا داخلہ بند کر رکھا ہے اذان تک پر بھی پابندی ہے اسرائیلی افواج نے مسجد اقصیٰ میں داخلے کے لیے میٹل ڈیٹیکٹراور کیمرے نصب کیے ہیں جن کے خلاف فلسطینی شہری سراپا احتجاج ہیں فلسطینیوں کی طرف سے نام نہاد سیکورٹی اقدامات مسترد کیے جانے کے بعد اسرائیلی فوج نے نمازیوں کا قبلہ اول میں داخلہ بند کردیا تھا ور یہ بندش تا حال جاری ہے۔اسلامی تعاون تنظیم (OIC)نے قبلہ اول کے مسئلہ پر اجلاس بلایا ہے اور اُدھر اسرائیل اردن کا اجلاس بغیر نتیجہ ختم ہو گیا ہے اور فریقین میں مسجد میں داخلے کے لیے نصب کردہ الیکٹرانک گیٹس کو ہٹانے پر اتفاق نہ ہوسکا ہے جب کہ سخت کشیدگی جاری ہے اسرائیلی فورسز کی فائرنگ سے تین مسلمانوں کی شہادت اور ایک سو ستر کے زخمی ہوجانے کے ایک ہی روز بعدفلسطینی نوجوان نے چاقو کے وار کرکے تین اسرائیلیوں کو ہلاک اور ایک کو زخمی کردیا تھااسرائیلی فوجوں نے الزام لگا یا ہے کہ یہ حملہ19سالہ فلسطینی نوجوان عمر العابد نے کیا ہے ادھر فلسطینی اتھارٹی کے صدر محمود عباس نے اسرائیل کے ساتھ تمام رابطے منقطع کرنے کا اعلان کردیا ہے محمود عباس نے کہا ہے کہ مسجد اقصیٰ کے داخلے پر تمام اسرائیلی پابندیاں ختم ہونے تک روابط منقطع رہیں گے اسرائیلی نئی پابندیوں کی وجہ سے مقبوضہ فلسطین میں شدید کشیدگی پائی جاتی ہے موتمر عالم اسلامی کو بھی اپنا کردار ادا کرنا چاہیے اور سب سے بڑھ کر ایٹمی پاکستان کو عالم اسلام کے سربراہوں کی مشترکہ اسلامی کانفرنس منعقد کرکے اسرائیل کے پلید شکنجوں سے اپنے قبلہ اول مسجد الاقصیٰ کو چھڑوانا چاہیے۔

دنیا بھر میں ڈیڑھ ارب سے زائد مسلمانوں کی تعدادہے اگر ریت کے ذرے بھی ایک جگہ اتنے جمع ہوجائیں تو بہت بڑا ریت کا پہاڑ بن سکتا ہے مگرسبھی اسلامی ممالک اپنے مخصوص ذاتی مفادات میں الجھے ہوئے ہیں اور اسی وجہ سے آپس میں جنگ و جدل کی کیفیت پیدا کر رکھی ہے یہودیوں نے مسلمانوں سے غیر انسانی سلوک روا رکھا ہوا ہے جیلوں میں قیدیوں کو بھوکا رکھنے کے ساتھ ساتھ انہیں اذیتیں بھی دی جاتی ہیں انہیں فرضی پھانسیوں کے ذریعے قتل کرنے کے اقدامات بھی جاری ہیں داعش طالبان القاعدہ جیسی تنظیمیں جو کہ اپنے تئیں خود کو"کٹر نظریاتی مسلمان"کلیم کرنے کی دعویدار ہیں مگر مسلمان ممالک میں دہشت گردیوں کے علاوہ اور وہ بھی بڑے سامراج کے حکم کے بموجب اور کوئی کام نہیں کرتیں کیا یہ خودداری کے نعرے لگانے والے مسجد الاقصیٰ پر یہودیوں کا قبضہ نہیں چھڑوا سکتے؟ مگر ایسی تنظیمیں دعوے دار تو " انقلابی اسلام "کی ہیں مگرسارا ذور علاقوں پر قبضوں مال جمع کرنے اور پھر ان علاقوں پر قابض ہو کریہ مخصوص ٹولے اپنا سکہ جمانا اور چلانا چاہتے ہیں کاش عالم اسلام میں سے کوئی لیڈر شپ ابھرے اور اﷲ اکبر اﷲ اکبر کے نعرے لگاتے ہوئی اور سیدی مرشدی یانبیﷺ یانبیﷺ کا ورد کرتی ہوئی تمام مسالک مثلاً شیعہ سنی بریلوی دیوبندی اہلحدیث وغیرہ وغیرہ کو یکجا کرڈالے اور تمام عالم اسلام کے ممالک آپس میں شیر و شکر ہوجائیں تبھی یہود و نصاریٰ اورسامراجیوں کی دسترس سے ہم نجات پاسکیں گے۔

ویسے بھارتی علماء اکرام نے قبلہ اول کی بازیابی اور سہونیوں کے ظلم سے مسلمانوں کو نجات دلوانے کے لیے مودی حکومت کو اسرائیل کے ساتھ سفارتی تعلقات منقطع کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ اسرائیل جابر ،ظالم اور غاصب ہے پوری دنیا کے مسلمانوں کو اقوام متحدہ سے رابطہ کے ذریعے اسرائیل پر پابندی عائد کروانا چاہیے اسرائیل مخالف آرتھو ڈاکس یہودیوں نے اقوام متحدہ کے دفتر کے سامنے مظاہرہ میں اسرائیلی اقدامات کی مذمت کی ہے ناجائز ناپاک یہودی ریاست کا نجس وجود اور اب گریٹر اسرائیل کے نقشہ میں بیت المقدس کو خالی کروا کر یہودیوں کو آباد کرنے اور مسجد کی جگہ ہیکل سلیمانی کاناجائز و ناپاک اقدام یہودیوں کا مشن ہے اور اس ناپاک ریاست کو پورے عالم عرب سے باہر عجم تک پھیلانا جس کے اندر سعودی عرب بالخصوص خانہ کعبہ اور مسجد نبوی ﷺ بھی شامل ہوں۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Mian Ihsan Bari

Read More Articles by Mian Ihsan Bari: 278 Articles with 117751 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
31 Jul, 2017 Views: 419

Comments

آپ کی رائے

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ