بکرا اور قصائی(مکالمہ)

(Hukhan, karachi)

یار عجیب انسان ہو،،،تمیز ہی نہیں تمہیں،،،کہ دل،،گردے،،چانپ،،کھال سب کیسے کاٹی اتاری جاتی ہے،،
منو قصائی نے دائیں بائیں دیکھا،،،چند بکرےاور اسکے دو جونیئر قصائیوں کے سواکوئی نہ تھا،،،
پھر یہ آواز کہاں سےآئی،،،بے ڈھنگےانسان پچپن کا ہوگیاابھی تک منا ہی بنا ہوا ہے،،،
اب تو منو نےاپنے اطراف نظر دوڑائی،،،کچھ قربان شدہ بکرے،،،اور،،،کچھ قربان ہونے کو بکرے تھے،،،
اک بکرے نے منو کو جو آنکھ ماری،،،منوسب سمجھ گیا،،،بکرا ہی بول رہا تھا،،،
چھری سائیڈپر رکھی،،،اپنا بڑا سا منہ کھول کر اس میں چھوٹا سا پان رکھا،،،ابے کیا مسئلہ ہے تنے،،،
بکرا غصے سے بولا،،،میری ملاقات بہت جلد ہی جنت کے فرشتے سے ہونے والی ہے،،،
یہ تنے منے نہ کرمیرے ساتھ تمیز سے بات کرنا ،،،ورنہ،،،دوں گاایک زور سے تیری چانپ میں،،،
کہ تیری ساری گھوم جائےگی،،،منو نے حیرت سے بکرے کو دیکھا،،،بکرا بولا،،بات سمجھ نہیں آئی نا،،،
اسی لیے کہتا ہوں انسان بن قصائی نہ بن،،،ورنہ تیری پسلی میں ایسے ٹکر ماروں گا کہ تیرا سرگھوم،،،
جائےگا،،،اب منوکو بات سمجھ آئی،،،مسکرا کے بولا بکرے کی ماں کب تک خیر منائے گی،،،
منے سن لےآخری بار کہہ رہا ہوں ،،،ماں تک نہ جا،،،ورنہ میں بھی تیری،،،اک کردوں گا،،،
اب منےنے حیرت اور غصے سے بکرے کو دیکھا،،،بکرا بولا،،،مطلب کہ ماں کی بات نہ کر،،،
ورنہ میں بھی تیری ماں بہن اک کردوں گا،،،کیا جاہل انسان ہےاک بات دو دفعہ دوہرانا پڑتی ہے،،،
آٹھویں فیل کہیں کا،،،منو اب سمجھ گیا کہ یہ کوئی فلاسفربکرا ہے،،،اس سے ٹھیک طرح سے،،،
نمٹنا ہوگا،،،بکرے کے پاس جا کر اپنے اردگرد دیکھا،،،کوئی مجھے پاگل نہ سمجھے،،،
کہ بکرے سے کیا باتیں کر رہا ہے،،،اچھا پوچھوں محترم جناب عزت مآب بکرے صاحب کیاپریشانی ہے،،،
بس عزت سے ہماری تکہ بوٹی بنایا کر،،،مرنے کے بعد بھی درد ہوتا رہتا ہے،،،منو غصے سےبولا،،،
یہ نہیں ہو سکتا،،،بکرے نے سوالیہ نظروں سے منو قصائی کو دیکھا،،،دیکھ بھائی بکرے،،،
قوم کی بوٹی بوٹی سب نوچ کے کھارہے،،،ڈاکٹر۔پولیس۔حکمران۔ٹیچر۔سٹودنٹس۔میں بھی ان میں سے ہی ہو،،،
جو مجھے نظر آرہا ہے جو میرے ساتھ ہورہا ہے،،،میں بھی تو وہی کرنا،،،بکرے نے سرجھکا لیا،،،
بات تو سچ ہے مگر ہے رسوائی کی،،،کھال اتار کر منے نے فخریہ لہجے میں کہا،،،پوری قوم کی کھال،،،
کھینچ کر اتار دی ظالموں نے،،،اس کو اپنی فکرتھی۔۔۔۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Hukhan

Read More Articles by Hukhan: 1124 Articles with 862904 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
01 Sep, 2017 Views: 1062

Comments

آپ کی رائے
Is this completed
By: zaeemkhan, Karachi on Sep, 01 2017
Reply Reply
0 Like
not yet still to come
By: hukhan, karachi on Sep, 02 2017
0 Like
hahahah bhut lajwab dost
By: rahi, karachi on Sep, 01 2017
Reply Reply
0 Like
thx
By: hukhan, karachi on Sep, 01 2017
0 Like