روسی فوج کا ایک اور اہم یوکرینی شہر پر ’مکمل قبضہ‘

image
روس کی فوج نے ہفتوں کی لڑائی کے بعد یوکرین کے ایک اور اہم شہر سیوروڈونسک پر ’مکمل قبضہ‘ کر لیا ہے۔

فرانسیسی خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق سیوروڈونسک کے میئر نے شہر پر روسی قبضے کی تصدیق کی ہے۔

روس کی یوکرین میں جنگ پانچویں مہینے میں داخل ہو گئی ہے اور سیوروڈونسک پر قبضہ ماسکو کے لیے ایک اہم سٹریٹیجک فتح ہے۔

روس یوکرین کے مشرقی حصے پر مکمل کنٹرول حاصل کرنے کی کوشش میں ہے۔

ماسکو کے حامی علیحدگی پسندوں کا کہنا ہے کہ روسی فوجی اور ان کے اتحادی لسیچانک میں بھی داخل ہو گئے ہیں۔

اگر اس شہر پر روس قبضہ کر لیتا ہے تو ڈونباس کے پورے لوگانسک کے علاقے کا کنٹرول حاصل کر لے گا۔

علیحدگی پسندوں کے نمائندے ایندری ماروچکو نے کہا ہے کہ ’گلیوں اور سڑکوں میں لڑائی جاری ہے۔‘

یوکرینی حکام نے کہا تھا کہ سیویرودونیسک سے فوجیوں کو اس لیے واپس بلا رہے ہیں کہ وہاں مزید ہلاکتوں کو روکا جائے۔

ایک ویڈیو پیغام میں یوکرین کے صدر ولادیمیر زیلنسکی نے کہا ہے سیورودونسک سمیت اپنے شہر روس کے قبضے سے واپس حاصل کر لیں گے۔

یوکرین کے لاکھوں شہری ہمسایہ ممالک منتقل ہوئے ہیں۔ (فوٹو: روئٹرز)

سنیچر کو روس نے یوکرین میں میزائل حملے شروع کیے تھے۔ جس سے سارنی شہر میں کم از کم تین افراد ہلاک ہوئے ہیں جبکہ دیگر افراد کا ملبے میں دبنے کا خدشہ ہے۔

روس نے شہریوں کو نشانہ بنانے کی تردید کی ہے جبکہ کیئف اور مغربی ممالک کا کہنا ہے کہ روسی فوجیوں نے شہریوں کے خلاف جنگی جرائم کا ارتکاب کیا ہے۔

لیئو کے گورنر کا کہنا ہے کہ بحیرہ اسود سے پولینڈ کی سرحد کے قریب فوجی اڈے پر چھ میزائل داغے گئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ چار میزائل اپنے ہدف پر داغے گئے جبکہ دو تباہ ہوگئے۔

حالیہ دنوں میں روس نے شمالی شہر خارکیف میں بھی حملوں کو تیز کر دیا ہے۔

خارکیف کے مرکزی حصے میں بھی روس نے میزائل داغے لیکن وہاں سے جانی نقصان کی اطلاع نہیں آئی۔

یوکرین کے کئی شہر ملبے کا منظر پیش کر رہے ہیں۔ (فوٹو: اے ایف پی)

یوکرین کی جنگ کی وجہ سے عالمی معیشت اور یورپ کی سکیورٹی پر اثر پڑا ہے۔ اس جنگ کی وجہ سے گیس اور تیل کی قیمتوں میں اضافہ بھی ہوا ہے۔

روس کے حملے کے بعد لاکھوں یوکرینی شہریوں نے اپنا ملک چھوڑ دیا ہے اور زیادہ تر پولینڈ منتقل ہو گئے ہیں۔

یوکرین میں غیرملکی جنگنجو بھی لڑائی میں حصہ لے رہے ہیں۔ روس نے دعویٰ کیا ہے کہ اس کی فوج نے ڈونیسک میں تقریباً 80 پولش جنگجوؤں کا ہلاک کر دیا ہے۔


News Source   News Source Text

مزید خبریں
عالمی خبریں
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.