حضرت امیر شریعت سید عطا اﷲ شاہ بخاری اور جسٹس منیر کا ایک دلچسپ اور ایمان افروز مکالمہ

(Tariq Noman, )

؁1953؁ء کی تحریک ختم نبوت اپنے شباب پر پہنچ کر مائل بہ اختتام تھی۔ تحریک کی قیادت اور ہزاروں کارکن جیلوں میں بند تھے۔ عدالتی تحقیقات کے لیے جسٹس منیر اور ایم آر کیانی پر مشتمل ایک عدالتی کمیشن (لاہور ہائی کورٹ)سماعت کر رہا تھا۔ جسٹس منیر متعصب قادیانی نواز تھا۔ وہ علما ء کو کمرۂ عدالت میں بلا بلا کر بے عزت کر رہا تھا۔ تحریک ختم نبوت کو احرار، احمدی نزاع اور فسادات ِپنجاب کا نام دیتا تھا۔
اسلام کو موضوعِ بحث بنا کر علما ء کا مذاق اڑا رہا تھا، اوراپنے قادیانی آقاؤں اورمحسنوں کو خوش کر رہا تھا۔
لیکن ایک دن وہ اپنی ہی عدالت میں پکڑا گیا۔ اس نے قائد تحریک تحفظ ختم نبوت حضرت امیر شریعت مولاناسید عطا اﷲ شاہ بخاری (علیہ الرحمتہ)کو عدالت میں طلب کر لیا۔ حکومت نے بیان داخل کرنے کے لیے حضرت امیر شریعت کوسکھر جیل سے لاہور سنٹرل جیل منتقل کر دیا۔ پیشی کی تاریخ پرحضرت امیر شریعت اوران کے قیدی رفقا ء کو سخت پہرے میں عدالت میں لایا گیا۔
عدالتی ہر کارے نے آواز لگائی:
سرکار بنام عطا اﷲ شاہ بخاری وغیرہ، وغیرہ۔
اسیرِ ختم نبوت حضرت امیر شریعت، پورے قلندرانہ جاہ و جلال اور ایمانی جرات و وقار کے ساتھ کمرہ عدالت میں داخل ہوئے۔ سرفروشانِ احرار نے پورے ہائی کورٹ کو اپنے حصار میں لے رکھا تھا۔عدالت کے دروازے پر ہزاروں فدائینِ ختم نبوت اور شمعِ ناموس رسالت ﷺ کے پروانے نعرہ زن تھے۔ نعرہ تکبیر:اﷲ اکبر، تاج و تختِ ختم نبوت :زندہ باد، مرزائیت:مردہ باد۔
امیر شریعت نے عدالت کے دروازے پر کھڑے ہو کر ہتھکڑیاں فضا میں لہرائیں اورہاتھ سے اشارہ کیا۔
مجمع وارفتگی سے پوچھ رہا تھا:کہیے:کیا حکم ہے؟ دیوانہ بنوں،یا نہ بنوں ؟
حکم ہوا۔ خاموش
تمام مجمع ساکت وجامد
حضرت امیر شریعت عدالت میں داخل ہو گئے۔
جسٹس منیر بغض و حسد سے بھرا ہوا، غصے سے لال پیلا، گردن تنی ہوئی اورتکبر و غرور کا پیکرِ ناہنجاربناکرسی پر بیٹھا تھا۔
مردِ مومن کے چہرہ انور پر نگاہ پڑی تواس کی آنکھیں جھک گئیں ۔جسٹس منیردوسری مرتبہ آنکھ اٹھا کر دیکھنے کی ہمت نہ کر سکا۔
کارروائی شروع ہوئی۔حضرت امیر شریعت نے اپنا تحریری بیان عدالت میں پیش کیا۔جسٹس منیر نے ایک نظر بیان کو دیکھا(جسے اس نے منیر انکوائری رپورٹ میں شامل نہیں کیا)اور پھر اپنے مخصوص چبھتے ہوئے انداز میں سوالات کا آغاز کر دیا۔
جسٹس منیر: ہندوستان میں اس وقت کتنے مسلمان ہیں ؟
امیر شریعت: سوال غیر متعلق ہے،مجھ سے پاکستان کے مسلمانوں کے بارے میں پوچھیں ۔
جسٹس منیر:(تمسخر آمیز لہجے میں )ہندوستان اورپاکستان میں جنگ چھڑ جائے تو ہندوستان کے مسلمانوں کو کیا کرنا چاہیے؟
امیر شریعت: ہندوستان میں علما ء موجود ہیں،وہ بتائیں گے۔
جسٹس منیر: (طنز کرتے ہوئے)آپ بتا دیں؟
امیر شریعت: پاکستان کے بارے میں پوچھیں،یہاں کے مسلمانوں کو کیا کرنا چاہیے؟
جسٹس منیر: مسلمان کی تعریف کیا ہے؟
امیر شریعت: اسلام میں داخل ہونے اور مسلمان کہلانے کے لیے صرف کلمہ شہادت کا اقرار و اِعلان ہی کافی ہے،لیکن اسلام سے خارج ہونے کے ہزاروں روزن ہیں ۔ ضروریاتِ دین میں کسی ایک کا انکار کفر کے ماسوا کچھ نہیں ۔ اﷲ تعالی کی صفاتِ عالیہ میں سے کسی ایک کو بھی انسانوں میں مانا تو مشرک، قرآن کریم کی کسی ایک آیت یا جملہ کا انکار کیا تو کافر، اور نبی کریم ﷺ کے منصبِ ختم نبوت کے بعد کسی انسان کو کسی بھی حیثیت میں نبی مانا تو مرتد۔
جسٹس منیر: (قادیانی وکیل کی طرف اشارہ کرتے ہوئے)اِن کے بارے میں کیا خیال ہے؟
امیر شریعت: خیال نہیں،عقیدہ۔ جو اِن کے بڑوں کے بارے میں ہے۔
مرزائی وکیل: نبی کی تعریف کیا ہے؟
امیر شریعت: میرے نزدیک اسے کم از کم ایک شریف آدمی ہونا چاہیے۔
جسٹس منیر: (بدتمیزی کے اندازمیں)آپ نے مرزا قادیانی کو کافر کہا ہے؟
امیر شریعت: میں اس سوال کا آرزو مند تھا۔ کوئی بیس برس ادھرکی بات ہے، یہی عدالت تھی۔جہاں آپ بیٹھے ہیں،یہاں انگریزچیف جسٹس، مسٹر جسٹس ڈگلس ینگ تھے اورجہاں مسٹر کیانی بیٹھے ہیں،یہاں رائے بہادر جسٹس رام لال تھے۔ یہی سوال انھوں نے مجھ سے پوچھا تھا۔وہی جواب آج دہراتا ہوں کہ میں نے ایک بار نہیں ہزاروں مرتبہ،مرزاکو کافر کہا ہے،کافر کہتا ہوں اور جب تک زندہ رہوں گاکافر کہتا رہوں گا۔یہ میراایمان اور عقیدہ ہے اوراِسی پر مرنا چاہتا ہوں۔مرزا قادیانی اور اس کی ذریت کافر و مرتد ہے۔ مسیلمہ کذاب اور ایسے ہی دیگر جھوٹوں کو دعوی نبوت کے جرم میں ہی قتل کیا گیاتھا۔
جسٹس منیر: (غصے سے بے قابو ہو کر، دانت پیستے ہوئے)اگر غلام احمد قادیانی آپ کے سامنے یہ دعوی کرتا تو کیاآپ اسے قتل کر دیتے؟
امیر شریعت:میرے سامنے اب کوئی دعوی کر کے دیکھ لے!
حاضرینِ عدالت: نعرہ تکبیر: اﷲ اکبر، ختم نبوت:زندہ باد، مرزائیت:مردہ باد۔کمرہ عدالت لرزگیا۔
جسٹس منیر:(بوکھلا کر)توہین عدالت!
امیر شریعت:(جلال میں آ کر)توہین رسالت!
جسٹس منیردم بخود،خاموش،مبہوت،حواس باختہ،چہرہ زرد،ہوش عنقا،پیشانی سے پسینہ پونچھنے لگا۔
عدالت امیر شریعت کی جراتِ ایمانی اورجذبہ حب ِرسولﷺ دیکھ کر سکتے میں آچکی تھی۔
امیر شریعت:(گرج دار آواز میں )کچھ اور؟
جسٹس منیر:(پریشانی میں بڑبڑاتے ہوئے)میرا خیال ہے۔ ہمیں مزید کچھ بھی نہیں پوچھنا!عدالت برخواست ہوجاتی ہے۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Tariq Noman

Read More Articles by Tariq Noman: 69 Articles with 46260 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
25 Apr, 2018 Views: 553

Comments

آپ کی رائے