*ﺷﺐ ﺑﺮﺃﺕ کا ﺍﺣﺎﺩﯾﺚ ﮐﯽ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﻣﯿﮟ مقام*

(Babar Alyas, Chichawatni)
گناہ سے توبہ کی رات ھے اس رات اللہ پاک اپنی مخلوق کے فیصلے فرماتے ہیں

*ﻣﻐﻔﺮﺕ ﮐﯽ ﺭﺍﺕ*
براۃ کے معنیٰ ہیں نجات، اور شبِ برات کا معنیٰ ہے گناہوں سے نجات کی رات۔ گناہوں سے نجات توبہ سے ہوتی ہے۔ یہ رات مسلمانوں کے لئے آہ و گریہ و زاری کی رات ہے، رب کریم سے تجدید عہد نجات کی رات۔ شیطانی خواہشات اور نفس کے خلاف جہاد کی رات ہے، یہ رات اللہ کے حضور اپنے گناہوں سے زیادہ سے زیادہ استغفار اور توبہ کی رات ہے۔ اسی رات نیک اعمال کرنے کا عہد اور برائیوں سے دور رہنے کا عہد دل پر موجود گناہوں سے زنگ کو ختم کرنے کاموجب بن سکتا ہے۔ اللہ رب العزت نے ارشاد فرمایا:
حٰم وَالْکِتٰبِ الْمُبِيْنِ اِنَّـآ اَنْزَلْنٰـهُ فِیْ لَيْلَةٍ مُّبٰـرَکَةٍ اِنَّا کُنَّا مُنْذِرِيْنَ فِيْهَا يُفْرَقُ کُلُّ اَمْرٍ حَکِيْمٍ
(حقیقی معنی اللہ اور رسول صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم ہی بہتر جانتے ہیں) اس روشن کتاب کی قسم بے شک ہم نے اسے ایک بابرکت رات میں اتارا ہے۔ بے شک ہم ڈر سنانے والے ہیں اس (رات) میں ہر حکمت والے کام کا (جدا جدا) فیصلہ کردیا جاتاہے۔
جاراللہ ابو قاسم زمخشری رحمہ اللہ علیہ فرماتے ہیں کہ:
نصف شعبان کی رات کے چار نام ہیں:لیلۃ المبارکہلیلۃ البراۃلیلۃ الصکلیلۃ الرحمۃ
اور کہا گیا ہے کہ اس کو شب برات اور شب صک اس لئے کہتے ہیں کہ بُندار یعنی وہ شخص کہ جس کے ہاتھ میں وہ پیمانہ ہوکہ جس سے ذمیوں سے پورا خراج لے کر ان کے لئے برات لکھ دیتا ہے۔ اسی طرح اللہ تعالیٰ اس رات کو اپنے بندوں کے لئے بخشش کا پروانہ لکھ دیتا ہے۔ اس کے اور لیلۃ القدر کے درمیان چالیس راتوں کا فاصلہ ہوتا ہے۔ یہ بھی ایک قول ہے کہ یہ رات پانچ خصوصیتوں کی حامل ہوتی ہے۔
اس میں ہر کام کا فیصلہ ہوتا ہے۔اس میں عبادت کرنے کی فضیلت ہے۔اس میں رحمت کانزول ہوتا ہے۔اس میں شفاعت کا اتمام ہوتا ہے۔اور پانچویں خصوصیت یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ کی اس رات میں یہ عادت کریمہ ہے کہ اس میں آب زمزم میں ظاہراً زیادتی فرماتا ہے۔
نبی اکرم (صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے تیرہ شعبان کی رات کو اپنی امت کی بخشش کے بارے میں سوال کیا تو آپ کو تیسرا حصہ عطا فرمایا گیا۔ پھر چودھویں رات کو دعا مانگی تو آپ کو دو تہائی امت عطا فرمائی گئی۔ پھر آپ صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم نے پندرھویں شعبان کی رات کو دعا مانگی تو آپ کی تمام امت سوائے چند نافرمان اشخاص کے آپ کے سپرد کردی گئی
امام بغوی نے نبی اکرم (صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے مرفوع روایت نقل کی ہے کہ آپ (صلیٰ اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے ارشاد فرمایا:

شعبان سے شعبان تک اموات لکھی جاتی ہیں یہاں تک کہ آدمی نکاح کرتا ہے اور اس کے گھر اولاد پیدا ہوتی ہے حالانکہ اس کا نام مُردوں میں لکھا جاچکا ہوتا ہے

شب برات یا شب براءت اسلامی تقویم کے آٹھویں مہینے شعبان کی 15ویں رات کو کہتے ہیں، مسلمان اس رات میں نوافل ادا کرتے، قبرستان کی زیارت کرتے اور ایک دوسرے سے معافی چاہتے ہیں۔ اس رات کو مغفرت کی رات اوررحمت کی رات بھی کہا جاتا ہے.
سرور کائنات حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا ایک شعبان سے دوسرے شعبان تک لوگوں کی زندگی منقطع کرنے کا وقت اس رات میں لکھا جاتا ہے یہاں تک کہ انسانشادی کرتا ہے اور اس کے بچے پیدا ہوتے ہیں حالانکہ اس کا نام مُردوں کی فہرست میں لکھا جاچکا ہوتا ہے۔

ﺷﺐ ﺑﺮﺃﺕ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﯼ ﺧﺼﻮﺻﯿﺖ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺷﺐ ﻣﯿﮟ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺍﭘﻨﮯ ﻓﻀﻞ ﻭﮐﺮﻡ ﺳﮯ ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﺑﺨﺸﺶ ﻓﺮﻣﺎﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﺳﯽ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﺳﮯ ﭼﻨﺪ ﺍﺣﺎﺩﯾﺚ ﻣﺒﺎﺭﮐﮧ ﻣﻼﺣﻈﮧ ﻓﺮﻣﺎﺋﯿﮟ۔
ﺣﺪﯾﺚ -:
( 1 ) ﺣﻀﺮﺕ ﻋﺎﺋﺸﮧ ﺻﺪﯾﻘﮧ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﻋﻨﮩﺎ ﻓﺮﻣﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﺭﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺣﻀﻮﺭ ﺍﮐﺮﻡ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺍﻟﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﭘﺎﺱ ﻧﮧ ﭘﺎﯾﺎ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺍﻟﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﯽ ﺗﻼﺵ ﻣﯿﮟ ﻧﮑﻠﯽ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮐﮧ ﺁﭖ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺍﻟﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﺟﻨﺖ ﺍﻟﺒﻘﯿﻊ ﻣﯿﮟ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻓﺮﻣﺎ ﮨﯿﮟ ﺁﭖ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺍﻟﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮐﯿﺎ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﯾﮧ ﺧﻮﻑ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺭﺳﻮﻝ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺍﻟﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﺯﯾﺎﺩﺗﯽ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻋﺮﺽ ﮐﯽ ﯾﺎ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﮧ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺍﻟﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﻣﺠﮭﮯ ﯾﮧ ﺧﯿﺎﻝ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﺷﺎﯾﺪ ﺁﭖ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺍﻟﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﺴﯽ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺍﮨﻠﯿﮧ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻟﮯ ﮔﺌﮯ ﮨﯿﮟ ﺁﻗﺎ ﻭ ﻣﻮﻟﯽٰ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺍﻟﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﺑﯿﺸﮏ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺷﻌﺒﺎﻥ ﮐﯽ ﭘﻨﺪﺭﮨﻮﯾﮟ ﺷﺐ ﺁﺳﻤﺎﻥِ ﺩﻧﯿﺎ ﭘﺮ ( ﺍﭘﻨﯽ ﺷﺎﻥ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ) ﺟﻠﻮﮦ ﮔﺮ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻗﺒﯿﻠﮧ ﺑﻨﻮ ﮐﻠﺐ ﮐﯽ ﺑﮑﺮﯾﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﺎﻟﻮﮞ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﻐﻔﺮﺕ ﻓﺮﻣﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ( ﺗﺮﻣﺬﯼ ﺟﻠﺪ 1 ﺹ 156 ، ﺍﺑﻦ ﻣﺎﺟﮧ ﺹ 100، ﻣﺴﻨﺪ ﺍﺣﻤﺪ ﺟﻠﺪ 6 ﺹ 238، ﻣﺸﮑﻮٰۃ ﺟﻠﺪ 1 ﺹ 277، ﻣﺼﻨﻒ ﺍﺑﻦِ ﺍﺑﯽ ﺷﻌﺒﮧ ﺝ 1 ﺹ 337، ﺷﻌﺐ ﺍﻻﯾﻤﺎﻥ ﻟﻠﺒﯿﮩﻘﯽ ﺟﻠﺪ 3 ﺹ 379 )
ﺷﺎﺭﺣﯿﻦ ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺣﺪﯾﺚ ﭘﺎﮎ ﺍﺗﻨﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺍﺳﻨﺎﺩ ﺳﮯ ﻣﺮﻭﯼ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺩﺭﺟﮧ ﺻﺤﺖ ﮐﻮ ﭘﮩﻨﭻ ﮔﺌﯽ۔
یہ روایت حدیث کی اکثر کتب میں مذکور ہے، کثرت ِ روایت کے سبب یہ حديث درجہ صحت کو پہنچ گئی ہے۔ اس کو ترمذی، ابن ماجہ، مسند احمد بن حنبل، مشکوٰۃ، مصنف ابنِ ابی شعبہ، شعب الایمان للبیہقی وغیرہ میں اس کو روایت کیا گیا ہے۔ قبیلہ بنو کلب کثرت سے بکریاں پالتے تھے جن کی مثال اس حدیث میں بیان کی گئی ہے۔ محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کا ارشاد ہے اللہ تعالیٰ شعبان کی پندرہویں شب میں اپنے رحم و کرم سے تمام مخلوق کو بخش دیتا ہے سوائے مشرک اور کینہ رکھنے والے کے ۔ ایک رویت میں مسلمانوں کا لفظ ہے اور دو شخصوں میں سے ایک قتل کرنے والا اور دوسرا کینہ رکھنے والا مذکور ہے۔
ﺣﺪﯾﺚ -:
( 2 ) ﺣﻀﺮﺕِ ﺍﺑﻮ ﺑﮑﺮ ﺻﺪﯾﻖ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﻋﻨﮧ، ﺳﮯ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺁﻗﺎ ﻭ ﻣﻮﻟﯽٰ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺍﻟﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ، '' ﺷﻌﺒﺎﻥ ﮐﯽ ﭘﻨﺪﺭﮨﻮﯾﮟ ﺷﺐ ﻣﯿﮟ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺁﺳﻤﺎﻥِ ﺩﻧﯿﺎ ﭘﺮ ( ﺍﭘﻨﯽ ﺷﺎﻥ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ) ﺟﻠﻮﮦ ﮔﺮ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﺷﺐ ﻣﯿﮟ ﮨﺮ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﻣﻐﻔﺮﺕ ﻓﺮﻣﺎ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﺳﻮﺍﺋﮯ ﻣﺸﺮﮎ ﺍﻭﺭ ﺑﻐﺾ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﮯ '' ۔ ( ﺷﻌﺐ ﺍﻻﯾﻤﺎﻥ ﻟﻠﺒﯿﮩﻘﯽ ﺟﻠﺪ 3 ﺹ 380 )
ﺣﺪﯾﺚ -:
( 3 ) ﺣﻀﺮﺕ ﺍﺑﻮ ﻣﻮﺳﯽٰ ﺍﺷﻌﺮﯼ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﻋﻨﮧ، ﺳﮯ ﻣﺮﻭﯼ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻧﺒﯽ ﮐﺮﯾﻢ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺍﻟﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﺎ ﺍﺭﺷﺎﺩ ﮨﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺷﻌﺒﺎﻥ ﮐﯽ ﭘﻨﺪﺭﮨﻮﯾﮟ ﺷﺐ ﻣﯿﻦ ﺍﭘﻨﮯ ﺭﺣﻢ ﻭ ﮐﺮﻡ ﺳﮯ ﺗﻤﺎﻡ ﻣﺨﻠﻮﻕ ﮐﻮ ﺑﺨﺶ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﺳﻮﺍﺋﮯ ﻣﺸﺮﮎ ﺍﻭﺭ ﮐﯿﻨﮧ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﮯ '' ۔
( ﺍﺑﻦِ ﻣﺎﺟﮧ ﺹ 101 ، ﺷﻌﺐ ﺍﻻﯾﻤﺎﻥ ﺝ 3 ﺹ 382 ، ﻣﺸﮑﻮٰۃ ﺟﻠﺪ 1 ﺹ 277 )
ﺣﺪﯾﺚ -:
ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽ ﺭﺿﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻨﮧ ﺳﮯ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺣﻀﻮﺭ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ :
“ ﺟﺐ ﺷﻌﺒﺎﻥ ﮐﯽ ﭘﻨﺪﺭﮨﻮﯾﮟ ﺷﺐ ﮨﻮ ﺗﻮ ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﻗﯿﺎﻡ ﮐﺮﻭ ﺍﻭﺭ ﺩﻥ ﮐﻮ ﺭﻭﺯﮦ ﺭﮐﮭﻮ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻏﺮﻭﺏ ﺁﻓﺘﺎﺏ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺳﮯ ﮨﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﮐﯽ ﺭﺣﻤﺖ ﺁﺳﻤﺎﻥ ﭘﺮ ﻧﺎﺯﻝ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽ ﺍﺭﺷﺎﺩ ﻓﺮﻣﺎﺗﺎ ﮨﮯ ‘‘: ﮐﻮﺉ ﻣﻐﻔﺮﺕ ﮐﺎ ﻃﻠﺐ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﮯ ﺑﺨﺶ ﺩﻭﮞ، ﮨﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺭﺯﻕ ﻣﺎﻧﮕﻨﮯ ﻭﺍﻻ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺭﺯﻕ ﺩﻭﮞ، ﮐﻮﺋﯽ ﻣﺼﯿﺒﺖ ﺯﺩﮦ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﮯ ﻣﺼﯿﺒﺖ ﺳﮯ ﻧﺠﺎﺕ ﺩﻭﮞ، ﯾﮧ ﺍﻋﻼﻥ ﻃﻠﻮﻉ ﻓﺠﺮ ﺗﮏ ﮨﻮﺗﺎ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ “ ۔
( ﺍﺑﻦ ﻣﺎﺟﮧ ﺻﻔﺤﮧ 100 ،ﺷﻌﺐ ﺍﻻﯾﻤﺎﻥ ﻟﻠﺒﯿﮩﻘﯽ ﺟﻠﺪ 3 ﺻﻔﺤﮧ 378 ،ﻣﺸﮑﻮﺗﮧ ﺷﺮﯾﻒ ﺟﻠﺪ 1 ﺻﻔﺤﮧ 278

*ﺷﺐ ﺑﺮﺍﺕ ﮐﯽ ﺣﻘﯿﻘﺖ *ﺍﻭﺭ ﻓﻀﯿﻠﺖ ﻣﻔﺘﯽ ﺗﻘﯽ ﻋﺜﻤﺎﻧﯽ صاحب کی زبانی*
ﺷﺐ ِ ﺑﺮﺍﺕ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﮐﮩﻨﺎ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﻏﻠﻂ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﻓﻀﯿﻠﺖ ﺣﺪﯾﺚ ﺳﮯ ﺛﺎﺑﺖ ﻧﮩﯿﮟ ، ﺣﻘﯿﻘﺖ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺩﺱ ﺻﺤﺎﺑﮧ ﮐﺮﺍﻡ ﺭﺿﻮﺍﻥ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮩﻢ ﺍﺟﻤﻌﯿﻦ ﺳﮯ ﺍﺣﺎﺩﯾﺚ ﻣﺮﻭﯼ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﻣﯿﮟ ﻧﺒﯽ ﮐﺮﯾﻢ
ﷺ ﻧﮯ ﺍﺱ ﺭﺍﺕ ﮐﯽ ﻓﻀﯿﻠﺖ ﺑﯿﺎﻥ ﻓﺮﻣﺎﺋﯽ، ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺑﻌﺾ ﺍﺣﺎﺩﯾﺚ ﺳﻨﺪ ﮐﮯ ﺍﻋﺘﺒﺎﺭ ﺳﮯ ﺑﯿﺸﮏ ﮐﭽﮫ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﺍﺣﺎﺩﯾﺚ ﮐﮯ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺑﻌﺾ ﻋﻠﻤﺎﺀﻧﮯ ﯾﮧ ﮐﮩﮧ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺭﺍﺕ ﮐﯽ ﻓﻀﯿﻠﺖ ﺑﮯ ﺍﺻﻞ ﮨﮯ، ﻟﯿﮑﻦ ﺣﻀﺮﺍﺕ ﻣﺤﺪﺛﯿﻦ ﺍﻭﺭ ﻓﻘﮩﺎﺀﮐﺎ ﯾﮧ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﺍﯾﮏ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﺳﻨﺪ ﮐﮯ ﺍﻋﺘﺒﺎﺭ ﺳﮯ ﮐﻤﺰﻭﺭ ﮨﻮ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺗﺎﯾﯿﺪ ﺑﮩﺖ ﺳﯽ ﺍﺣﺎﺩﯾﺚ ﺳﮯ ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺍﺳﮑﯽ ﮐﻤﺰﻭﺭﯼ ﺩﻭﺭ ﮨﻮﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ، ﺍﻭﺭ ﺟﯿﺴﺎﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻋﺮﺽ ﮐﯿﺎ ﮐﮧ ﺩﺱ ﺻﺤﺎﺑﮧ ﮐﺮﺍﻡ ﺳﮯ ﺍﺳﮑﯽ ﻓﻀﯿﻠﺖ ﻣﯿﮟ ﺭﻭﺍﯾﺎﺕ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﯿﮟ ﻟﮩٰﺬﺍ ﺟﺲ ﺭﺍﺕ ﮐﯽ ﻓﻀﯿﻠﺖ ﻣﯿﮟ ﺩﺱ ﺻﺤﺎﺑﮧ ﮐﺮﺍﻡ ﺳﮯ ﺭﻭﺍﯾﺎﺕ ﻣﺮﻭﯼ ﮨﻮﮞ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺑﮯ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﺍﻭﺭ ﺑﮯ ﺍﺻﻞ ﮐﮩﻨﺎ ﺑﮩﺖ ﻏﻠﻂ ﮨﮯ
ﺍﻣﺖ ﻣﺴﻠﻤﮧ ﮐﮯ ﺟﻮ ﺧﯿﺮﺍﻟﻘﺮﻭﻥ ﮨﯿﮟ ﯾﻌﻨﯽ ﺻﺤﺎﺑﮧ ﮐﺮﺍﻡ ﮐﺎ ﺩﻭﺭ ، ﺗﺎﺑﻌﯿﻦ ﮐﺎ ﺩﻭﺭ، ﺗﺒﻊ ﺗﺎﺑﻌﯿﻦ ﮐﺎﺩﻭﺭ، ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﺭﺍﺕ ﮐﯽ ﻓﻀﯿﻠﺖ ﺳﮯ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﺍﭨﮭﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺍﮨﺘﻤﺎﻡ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ،ﻟﻮﮒ ﺍﺱ ﺭﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﮐﺎ ﺧﺼﻮﺻﯽ ﺍﮨﺘﻤﺎﻡ ﮐﺮﺗﮯ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ، ﻟﮩٰﺬﺍ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺑﺪﻋﺖ ﮐﮩﻨﺎ، ﯾﺎ ﺑﮯ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﺍﻭﺭ ﺑﮯ ﺍﺻﻞ ﮐﮩﻨﺎ ﺩﺭﺳﺖ ﻧﮩﯿﮟ ، ﺻﺤﯿﺢ ﺑﺎﺕ ﯾﮩﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﻓﻀﯿﻠﺖ ﻭﺍﻟﯽ ﺭﺍﺕ ﮨﮯ، ﺍﺱ ﺭﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﮐﺮﻧﺎ ﺑﺎﻋﺚ ِ ﺍﺟﺮ ﻭ ﺛﻮﺍﺏ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﯽ ﺧﺼﻮﺻﯽ ﺍﮨﻤﯿﺖ ﮨﮯ۔
ﺍﻟﺒﺘﮧ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﺩﺭﺳﺖ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺭﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﺎﺹ ﻃﺮﯾﻘﮧ ﻣﻘﺮﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮧ ﻓﻼﮞ ﻃﺮﯾﻘﮯ ﺳﮯ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﮐﯽ ﺟﺎﺋﮯ ، ﺟﯿﺴﮯ ﺑﻌﺾ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻃﺮﯾﻘﮧ ﮔﮭﮍ ﮐﺮ ﯾﮧ ﮐﮩﮧ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﺷﺐ ِ ﺑﺮﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺧﺎﺹ ﻃﺮﯾﻘﮯ ﺳﮯ ﻧﻤﺎﺯ ﭘﮍﮬﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ، ﻣﺜﻼََ ﭘﮩﻠﯽ ﺭﮐﻌﺖ ﻣﯿﮟ ﻓﻼﮞ ﺳﻮﺭﺕ ﺍﺗﻨﯽ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﭘﮍﮬﯽ ﺟﺎﺋﮯ، ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺭﮐﻌﺖ ﻣﯿﮟ ﻓﻼﮞ ﺳﻮﺭﺕ ﺍﺗﻨﯽ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﭘﮍﮬﯽ ﺟﺎﺋﮯ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﻭﻏﯿﺮﮦ، ﺍﺳﮑﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺛﺒﻮﺕ ﻧﮩﯿﮟ، ﯾﮧ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﺑﮯ ﺑﻨﯿﺎﺩ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ، ﺑﻠﮑﮧ ﻧﻔﻠﯽ ﻋﺒﺎﺩﺕ ﺟﺲ ﻗﺪﺭ ﮨﻮﺳﮑﮯ ﻭﮦ ﺍﺱ ﺭﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﯼ ﺟﺎﺋﮯ، ﻧﻔﻞ ﻧﻤﺎﺯ ﭘﮍﮬﯿﮟ ، ﻗﺮﺁﻥ ﮐﺮﯾﻢ ﮐﯽ ﺗﻼﻭﺕ ﮐﺮﯾﮟ ، ﺫﮐﺮﮐﺮﯾﮟ ، ﺗﺴﺒﯿﺢ ﭘﮍﮬﯿﮟ ، ﺩﻋﺎﺋﯿﮟ ﮐﺮﯾﮟ ، ﯾﮧ ﺳﺎﺭﯼ ﻋﺒﺎﺩﺗﯿﮟ ﺍﺱ ﺭﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﮐﯽ ﺟﺎﺳﮑﺘﯽ ﮨﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﺎﺹ ﻃﺮﯾﻘﮧ ﺛﺎﺑﺖ ﻧﮩﯿﮟ۔
ﺍﺱ ﺭﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﻋﻤﻞ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺍﯾﮏ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﺳﮯ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﮯ ﻭﮦ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺣﻀﻮﺭ ﻧﺒﯽ ﮐﺮﯾﻢ ﷺ ﺟﻨﺖ ﺍﻟﺒﻘﯿﻊ ﻣﯿﮟ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻟﮯ ﮔﺌﮯ، ﺍﺏ ﭼﻮﻧﮑﮧ ﺣﻀﻮﺭ ﷺ ﺍﺱ ﺭﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﺟﻨﺖ ﺍﻟﺒﻘﯿﻊ ﻣﯿﮟ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻟﮯ ﮔﺌﮯ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﮐﺎ ﺍﮨﺘﻤﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﮯ ﮐﮧ ﺷﺐِ ﺑﺮﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﻗﺒﺮﺳﺘﺎﻥ ﺟﺎﺋﯿﮟ ، ﻟﯿﮑﻦ ﻣﯿﺮﮮ ﻭﺍﻟﺪ ﻣﺎﺟﺪ ﺣﻀﺮﺕ ﻣﻔﺘﯽ ﻣﺤﻤﺪ ﺷﻔﯿﻊ ﺻﺎﺣﺐ ﻗﺪﺱ ﺍﻟﻠﮧ ﺳﺮﮦ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﯼ ﮐﺎﻡ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﺑﯿﺎﻥ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ، ﺟﻮ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﯾﺎﺩ ﺭﮐﮭﻨﯽ ﭼﺎﮨﺌﮯ، ﻓﺮﻣﺎﺗﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﺟﻮ ﭼﯿﺰ ﺭﺳﻮﻝ ﮐﺮﯾﻢ
ﷺ ﺳﮯ ﺟﺲ ﺩﺭﺟﮧ ﻣﯿﮟ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮ ﺍﺳﯽ ﺩﺭﺟﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﮯ ﺭﮐﮭﻨﺎ ﭼﺎﮨﺌﮯ، ﺍﺱ ﺳﮯ ﺁﮔﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﮍﮬﻨﺎ ﭼﺎﮨﺌﮯ، ﻟﮩٰﺬﺍ ﺳﺎﺭﯼ ﺣﯿﺎﺕِ ﻃﯿﺒﮧ ﻣﯿﮟ ﺭﺳﻮﻝ ﮐﺮﯾﻢﷺ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺟﺎﻧﺎ ﻣﺮﻭﯼ ﮨﮯ، ﮐﮧ ﺁﭖ ﺷﺐِ ﺑﺮﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﺟﻨﺖ ﺍﻟﺒﻘﯿﻊ ﺗﺸﺮﯾﻒ ﻟﮯ ﮔﺌﮯ ، ﭼﻮﻧﮑﮧ ﺍﯾﮏ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﺟﺎﻧﺎ ﻣﺮﻭﯼ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺗﻢ ﺑﮭﯽ ﺍﮔﺮ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻣﺮﺗﺒﮧ ﭼﻠﮯ ﺟﺎﻭ ﺗﻮ ﭨﮭﯿﮏ ﮨﮯ ، ﻟﯿﮑﻦ ﮨﺮ ﺷﺐ ﺑﺮﺍﺕ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺍﮨﺘﻤﺎﻡ ﮐﺮﻧﺎ،ﺍﻟﺘﺰﺍﻡ ﮐﺮﻧﺎ، ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﻮ ﺿﺮﻭﺭﯼ ﺳﻤﺠﮭﻨﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﻮ ﺷﺐ ﺑﺮﺍﺕ ﮐﮯ ﺍﺭﮐﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮐﺮﻧﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﻮ ﺷﺐ ﺑﺮﺍﺕ ﮐﺎ رﻻﺯﻣﯽ ﺣﺼﮧ ﺳﻤﺠﮭﻨﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮑﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﯾﮧ ﺳﻤﺠﮭﻨﺎ ﮐﮧ ﺷﺐ ﺑﺮﺍﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ ، ﯾﮧ ﺍﺳﮑﻮ ﺍﺳﮑﮯ ﺩﺭﺟﮯ ﺳﮯ ﺁﮔﮯ ﺑﮍﮬﺎﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ۔
ﺍﯾﮏ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﺷﺐ ﺑﺮﺍﺕ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﺍﻟﮯ ﺩﻥ ﯾﻌﻨﯽ ﭘﻨﺪﺭﮦ ﺷﻌﺒﺎﻥ ﮐﮯ ﺭﻭﺯﮮ ﮐﺎﮨﮯ، ﺍﺳﮑﻮ ﺑﮭﯽ ﺳﻤﺠﮫ ﻟﯿﻨﺎ ﭼﺎﮨﺌﮯ، ﻭﮦ ﯾﮧ ﮐﮧ ﺳﺎﺭﮮ ﺫﺧﯿﺮﮦ ﺣﺪﯾﺚ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺭﻭﺯﮦ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺷﺐ ﺑﺮﺍﺕ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﺍﻟﮯ ﺩﻥ ﺭﻭﺯﮦ ﺭﮐﮭﻮﻟﯿﮑﻦ ﯾﮧ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﺿﻌﯿﻒ ﮨﮯ ﻟﮩٰﺬﺍ ﺍﺱ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺧﺎﺹ ﭘﻨﺪﺭﮦ ﺷﻌﺒﺎﻥ ﮐﮯ ﺭﻭﺯﮮ ﮐﻮ ﺳﻨﺖ ﯾﺎ ﻣﺴﺘﺤﺐ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﻨﺎ ﺑﻌﺾ ﻋﻠﻤﺎﺀﮐﮯ ﻧﺰﺩﯾﮏ ﺩﺭﺳﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﻟﺒﺘﮧ ﭘﻮﺭﮮ ﺷﻌﺒﺎﻥ ﮐﮯ ﻣﮩﯿﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺭﻭﺯﮦ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﮐﯽ ﻓﻀﯿﻠﺖ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ 28 ﺍﻭﺭ 29 ﺷﻌﺒﺎﻥ ﮐﻮ ﺣﻀﻮﺭﷺ ﻧﮯ ﺭﻭﺯﮦ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﺳﮯ ﻣﻨﻊ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮨﮯ، ﮐﮧ ﺭﻣﻀﺎﻥ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﺩﻭ ﺭﻭﺯ ﭘﮩﻠﮯ ﺭﻭﺯﮦ ﻣﺖ ﺭﮐﮭﻮ، ﺗﺎﮐﮧ ﺭﻣﻀﺎﻥ ﮐﮯ ﺭﻭﺯﻭﮞ ﮐﮯﻟﺌﮯ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﻧﺸﺎﻁ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺗﯿﺎ ﺭ ﺭﮨﮯ۔
اللہ پاک مجھے اور آپکو عمل کی توفیق عطا فرماۓ .آمین

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Babar Alyas

Read More Articles by Babar Alyas : 256 Articles with 92109 views »
استاد ہونے کے ناطے میرا مشن ہے کہ دائرہ اسلام کی حدود میں رہتے ہوۓ لکھو اور مقصد اپنی اصلاح ہو,
ایم اے مطالعہ پاکستان کرنے بعد کے درس نظامی کا کورس
.. View More
26 Apr, 2018 Views: 537

Comments

آپ کی رائے

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ