ووٹ تو تبدیلی کا تھا

(Saleem Ullah Shaikh, Karachi)

امیدوار: بھائی کے الیکٹرک کا معاملہ تو ہم نے اٹھایا تھا،اس ایشو کو عدالتوں میں لے گئی، نیپرا کو عدالتوں میں گھسیٹا۔ آپ کے حق کے لیے لڑائی لڑی۔
تبدیلی پسند :ہاں یہ تو مجھے پتا ہے۔ یہ تو واقعی بڑا کارنامہ ہے۔
امیدوار:اور آپ کو پتا ہے نا کہ نادرا والوں کو بھی ہم نے ہی نکیل ڈالی، ان کی فرعونیت کو ختم کیا۔ نادرا کے دفاتر رات 12 بجے تک کھلوائے۔ عوام کا یہ مسئلہ حل کرایا۔
تبدیلی پسند :بالکل بالکل ! یہ تو آپ لوگوں کا اور آپ کے قائد کا شاندار کارنامہ ہے، اور کسی نے یہ معاملہ اس طرح نہیں اٹھایا۔
امیدوار: اور یہ بھی پتا ہے نا کہ کراچی میں پانی کے معاملے پر بھی ہم نے ہی آواز اٹھائی،واٹر بورڈ کے ایم ڈی سے ملاقات کی،شہر میں پانی کی قلت کے خلاف آواز اٹھائی۔ اس مسئلے کو بھی صرف ہم نے ہی اٹھایا آپ لوگوں کی خاطر؟
تبدیلی پسند:ہاں میں یہ سب جانتا ہوں ۔ اہل کراچی کے یہ سارے مسائل صرف آپ لوگوں نے ہی اٹھائے اور ان کو حل کرنے کی کوشش کی۔
امیدوار: تو پھر آپ نے ہمیں ووٹ کیوں نہیں دیا؟
تبدیلی پسند: سوری یار! ووٹ تو اس بار تبدیلی کا تھا۔
امیدوار: ارے!!!! بھائی خائن لوگوں کی جگہ دیانتدار، بے ایمانوں کی جگہ ایمان دار، آپ کے حقوق بیچنے والوں کی جگہ آپ کو آپ کا حق دلانے والے، آپ کے مفادات کا سودا کرنے والوں کی جگہ آپ کے حق میں آواز اٹھانے والوں کو منتخب کرنا ہی تو تبدیلی ہے۔
تبدیلی پسند :نہیں ! یہ تبدیلی نہیں، دوسری تبدیلی
امیدوار : کون سی دوسری تبدیلی؟
تبدیلی پسند: ارے وہی جوجلسوں میں نظر آئی تھی، وہی جو ڈی چوک پر ھرنے کے دوران آئی تھی، وہی تبدیلی جس کی ایک جھلک 26 جولائی کو ڈیفنس کراچی کی سڑکوں پرنظر آئی تھی۔ ہم نے اس تبدیلی کو ووٹ دیا ہے۔
امیدوار: اور وہ جو آپ کے مسائل؟ آپ کے حقوق؟ ان کا کیا ہوگا؟
تبدیلی پسندـ :سوری بھائی اب چلتا ہوں۔ پارٹی شروع ہونے والی ہے۔ روک سکو تو روک لو تبدیلی آئی رے
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Saleem Ullah Shaikh

Read More Articles by Saleem Ullah Shaikh: 525 Articles with 1090998 views »
سادہ انسان ، سادہ سوچ، سادہ مشن
رب کی دھرتی پر رب کا نظام
.. View More
31 Jul, 2018 Views: 574

Comments

آپ کی رائے