چڑھاوے کی بالیاں

(Azra faiz, Wah)

"کتنی بار سمجھایا ہے ہندوں کے ڈرامے مت دیکھا کرو -ارے یہ کمبخت بتوں کی پوجا کرنے والے ,یہ مشرک لوگ , بیوقوف ,عقل کے اندھے صبح صبح " رام رام ستے ہے " کی رٹ لگا دیتے ہیں " - "دیکھو اٹھ جاؤ میں نے آج دربار پر حاضری دینی ہے -اظہر کی نوکری کی دیگ دینی ہے -دربار پر چڑھاوا چڑھانا ہے "-

"آج پیر سائیں بھی تشریف لارہے ہیں محلے بھر کی عورتیں بڑی ساری ہائی ایس کروا کر اکٹھی جارہی ہیں -" اٹھ جا نہ میری بچی مجھے کچھ کھانے کو دیدے -"اور ہاں دیکھیو جھاڑ پونچھ کے بعد چند ایک کپڑے ہیں مشین سے نکال کر کھنگال لینا -بہن بھاںیوں کے لئے دوپہر کا کھانا بنا لینا -"اور ہاں آج جمعرات ہے پیرو مرشد کا نام لے کر دم کردینا -" دیکھنا مرشد کی نظر ہوگی تو ہمارے حالات بدل جائیں گے " اماں سانس لینے کو روکیں تو رانی نے کہا - " اماں کیا ضرورت ہے پیروں کے پاس جا کر دعائیں کرنے کی یہیں سے دعائیں کر لیں اپنے لئے بھی اور مرشد کے لئے بھی " - "کیسی کافروں جیسی باتیں کرتی ہو -ارے مرشد کو بھلا کیا ضرورت ہے ہماری دعاؤں کی -ہم گنہگاروں کی دعائیں بنا مرشد کیسے قبول ہو سکتی ہیں بے شق ہم الله کو مانتے ہیں لیکن الله تو ان کی مانتا ہے -انہوں نے محنتیں کی ہیں -" دیکھنا آج تو پیر سائیں کے قدموں سے لپٹ لپٹ کر روؤں گی -"دیکھنا یہ تیری چاچی جتنے بھی جادو ٹونے کروالے پیر و مرشد کے ایک تعویذ کی مار ہے -" دیکھو تو لوگوں سے خدا کا خوف جاتا جا رہا ہے میرے گھٹنے رہ گیے اور رزق بندی کا تو ایسا جادو کرواتی ہے کہ خدا کی پناہ ! دیکھ نہ !تیرے اور احسن کے رشتے میں ایسی بندش کروائی ہے اچھی خاصی تیری پھوپھو نے آنکھیں کیسے سر پر رکھ لیں -بھلا بتاؤ کہاں سے جہیز میں نئی موٹر سائکل دیں جبکہ سائیکل تک کے پیسے تو ہیں نہیں ہمارے پاس "- رانی نے اماں کو ٹوکتے ہوئے کہا " ہاں جو تھوڑا بہت پیسہ ہوتا ہے وہ تو چڑھاوے چڑھا کے آجاتی ہے - پچھلی دفعہ یاد ہے تو اپنی آخری سونے کی بالیاں بھی چڑھاوے میں دربار کے باکس میں ڈال آئی تھی "-" ہاں تو کیوں نہ چڑھاتی ! یہ بالیاں بھی تو انھیں کی دین تھیں " -ارے ہم مسلمان ہیں "ہندوں" کی طرح بتوں پر چڑھاوے چڑھائیں کیا !"-
(بی بی کی ڈائری سے ماخوذ )****

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: azra faiz

Read More Articles by azra faiz: 39 Articles with 44771 views »
I belong to a baloach family .I born in a village ,got my primary education under a tree and higher education from the well reputed institute in Karac.. View More
09 Sep, 2018 Views: 457

Comments

آپ کی رائے

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ