ڈاکٹر محمد ریاض انجم :حکایتوں کی روایت کے پاسباں ہم ہیں

(Ghulam Ibnesultan, Jhang)

ڈاکٹر غلام شبیررانا
علم ہے نافع مگر قاری ہیں اکثر بے خبر
قصور میں کھولا دبستاں ریاض نے سب سے جدا
بابا بلھے شاہ کی دھرتی قصور میں مقیم ادیان عالم ، فلسفہ، ادب ،فنون لطیفہ ،تاریخ ،نفسیات ،علم بشریات اور لسانیات کا یگانۂ روزگار فاضل پروفیسر ڈاکٹر سید مقصود حسنی کسی تعارف کا محتاج نہیں۔علم و ادب کے اس دائرۃ المعارف کا وجود اﷲ کریم کی بہت بڑی نعمت ہے ۔وطن عزیز اور دنیا بھر میں جو لاکھوں تشنگان ِ علم اس سر چشمۂ علم سے فیض یاب ہوئے وہ اس وقت ملک و قوم کی خدمت میں مصروف ہیں۔ان میں سے ایک ڈاکٹر محمد ریاض انجم بھی ہیں جن کا پروفیسر ڈاکٹر سید مقصود حسنی کے ساتھ عقیدت کا وہی تعلق ہے جو علی گڑھ تحریک کے دوران میں مولاناالطاف حسین حالیؔ کا سر سید احمد خان کے ساتھ تھا ۔ ڈاکٹر محمد ریاض انجم نے پروفیسر ڈاکٹر سید مقصود حسنی کی مستحکم شخصیت پر تحقیق ،تجزیہ اور تنقید کا جو معیار پیش ِ نظر رکھا ہے وہ ان کی ذہانت اور دیانت کی دلیل ہے ۔ میں یہاں علامہ اقبال کے ایک سو اکتالیسویں یوم پیدائش کے موقع پر سال 2018میں شائع ہونے والی ان کی وقیع تصنیف’’ مسٹر اردو ‘‘ کا حوالہ دوں گا ۔اس کتاب میں انھوں نے پروفیسر ڈاکٹر سید مقصود حسنی کے بارے میں تمام دستیاب اہم معلومات اور بنیادی مآخذ کو یک جا کر دیا ہے ۔اس کتاب کا ایک ایک لفظ حقائق کی کلید اور گنجینہ ٔ معانی کا طلسم ہے ۔شعبہ تدریس سے وابستہ ڈاکٹر محمد ریاض انجم اپنی ذات میں ایک انجمن اور شارح ِ علم وادب ہیں اور پاکستانی ادبیات پر ان کی گہری نظر ہے ۔ اپنی بیس کے قریب معرکہ آرا تصانیف سے انھوں نے پاکستانی ادبیات کی ثروت میں جو اضافہ کیا ہے وہ تاریخ ادب کا اہم واقعہ ہے ۔ایک وسیع المطالعہ ادیب ،زیرک نقاد اور محنتی محقق کی حیثیت سے اس جواں ہمت اور پرعزم دانش ور نے تخلیق ادب سے منسلک ہر شعبہ میں اپنی خداداد صلاحیتوں کا لوہا منوایا ہے ۔ صرف تینتالیس سال کی عمر میں اس نوجوان ادیب کی لائق صد رشک و تحسین علمی وادبی کامرانیوں کے اعتراف میں انھیں اب تک پاکستان کے پانچ اہم ایوارڈ ز سے نواز اگیا ہے ۔ یہ وہ اعزاز ہے جس میں کوئی نوجوان ادیب ان کا شریک و سہیم نہیں ۔اس شہرِ نا پرساں میں بے حسی کے قفل جمود کو توڑنے والے اس جری تخلیق کار نے ایک بزرگ ادیب کی خدمت میں ہدیہ ٔ سپاس پیش کر کے اپنی سعادت مندی کا ثبوت دیا ہے ۔ افق ادب پر ڈاکٹر محمد ریاض انجم کی بلند پروازی دیکھ کر مجھے اختر الایمان کا یہ شعر یاد آ گیا :
کون ستارے چھو سکتا ہے
راہ میں سانس اُکھڑ جاتی ہے

وطن عزیز کے جن ممتاز ادیبوں نے اپنی تحریروں اور خطبات میں ڈاکٹر محمد ریاض کے منفرد اسلوب کو قدر کی نگا ہ سے دیکھا ان میں احمد بخش ناصر ، احسان احمد احسان، احمد تنویر ، اختر حسین اختر ڈاکٹر سید ، ارشاد گرامی، اسحاق ساقی، اطہر ناسک ، اظہار الحق مسعود،بشار ت خان ، انعام الحق کوثر ،فیروز شاہ ، ڈاکٹراختر سندھو ، اعزاز احمد آزر ، اقبال قیصر ، اقبال زخمی، امیر اختر بھٹی ،پروین ملک ، پریتم سنگھ ،تجمل کلیم ، جاوید قاضی ،جمیل احمد پال ،خادم علی کھو کھر ، خیر الدین انصاری ،دین محمد پردیسی ، راجا رسالو،رفعت سلطان، سجاد احمد ساجد بھٹی، سجیلہ نوید ،سعداﷲ شاہ،سلیم آفتاب سلیم،سمیع اﷲ قریشی ، شبیر احمد ہاشمی سید علامہ ،شفقت تنویر مرزا،شوکت علی زاہد قادری نوشاہی،شوکت نقش بندی ،طفیل سرور بلوچ ، ظہور احمد چودھری ڈاکٹر، شفیع ہمدم، صا بر آفاقی ، صابر کلوروی، عبدالجبار شاکر ،عبدالحمید نظامی،عبدالرزاق محسن،عبدالعزیز سلیمی،عبدالقدوس کھوکھر ڈاکٹر ،عصمت اﷲ زاہد ڈاکٹر ،عظمت اﷲ خان عظمت ،علیم شکیل بابا ،ڈاکٹر عبدالعزیز ساحر ، ڈاکٹر غلا م شبیر رانا ، دانیا ل طریر،ڈاکٹر ذوالفقار علی دانش ، سجا د حسین رانا ،ڈاکٹر سعادت سعید ، فخر زماں ،فضل کریم ،فقیر حسین شا می ،کامران سرفراز بیگ ،کرامت علی مغل ،گدا حسین افضل، مقصود حسنی پروفیسر ڈاکٹر ،محمد آصف ندیم ،محمد اجمل نیازی ڈاکٹر ،محمد ارشد شاہد ڈاکٹر ، محمد اقبال بٹ ،محمد اسلم عابد ،محمد جنید اکرم ،محمد رفیق میاں ،محمد شریف انجم ،محمد صادق قصوری ، محمد عباس نجمی ،ڈاکٹر محمد امین، ڈاکٹر محمد عبداﷲ قاضی ، ڈاکٹر مظفر عباس ،ڈاکٹر نجیب جمال ، معین تابش،محمد یوسف آ رائیں ڈاکٹر ،محمد یونس کیانی راجہ، منظور احمد چودھری،منور غنی پروفیسر،نذیر احمد زاہد ،یعقوب پرواز اور یوسف پنجابی شامل ہیں ۔

اپنی تالیف ’’ خوشبو کے امین ‘‘ میں ڈاکٹر محمد ریاض انجم نے تین سو کے قریب مکاتیب شامل کیے ہیں جو مشاہر ادب نے مختلف اوقات میں پروفیسر ڈاکٹر سید مقصود حسنی کے نام لکھے تھے ۔ان میں سے کچھ نام ایسے بھی ہیں جو ہماری بزم ادب سے اُٹھ کر عدم کی بے کراں وادیوں کی جانب سدھار گئے ۔ڈاکٹر محمد ریاض انجم نے مکتوب نگاری کی سحر نگاری کو سامنے لانے کی جو کوشش کی ہے وہ ہر اعتبار سے لائق تحسین ہے ۔ اپنے جذبات کو الفاظ کے قالب میں ڈھال کر انھیں زیبِ قرطاس کرنا انسانی فطرت اور مزاج میں شامل ہے۔ان مکاتیب کے الفاظ کی تہہ میں اتر کر مکتوب نگار کے قلبی جذبات و احساسات کی غواصی کرنا عطیۂ خداوندی ہے ۔ یہ مکاتیب پڑھ کر اس خیال سے آ نکھیں بھیگ بھیگ گئیں کہ اجل کے بے رحم ہاتھوں سے خلوص ،مروّت ،ایثار اور دردمندی کاوہ سب تانا با ہی بکھر گیاجس کو یک جا کرنے میں ہم الم نصیبوں کی زندگی بیت گئی۔رفتگاں کی یاد سے نڈھال پس ماندگان یہ مکاتیب پڑھ کر اشک رواں کی لہر کو دیکھ کر یہ کہنے پر مجبور ہیں کہ سمے کے سم کے ثمر نے تو باغ کا باغ ہی لہو رنگ کر دیا جس کے باعث شہر کا شہر ہی سوگوار دکھائی دیتا ہے ۔اب مسموم ماحول سے نکل کر چمن آرائی کی کوئی سعی کریں تو تقدیر ہماری ہر تدبیر کو خندہ ٔ استہزا میں اُڑا دیتی ہے ۔ قلزمِ فنا کی تلاطم خیز موجیں جاہ و جلال کے کیسے کیسے نشانوں کو بہا لے گئیں ۔ سیل زماں کے تھپیڑوں نے شہرت وثروت کے سب بکھیڑو ں کو قصۂ پارینہ بنا دیا ۔گئی رُتوں کا کوئی راز دان ملے تو اس سے یہ دریافت کریں کہ گردشِ ایام کا شکار فروغ ِ گلشن و صوتِ ہزار کا موسم دیکھنے کی آرزو میں جا ں بہ لب ستم کشوں کا ابھی اور کتنی خزاؤں سے واسطہ پڑنے والا ہے اور کتنے دورِ فلک ابھی اور آنے والے ہیں۔ ۔ عصری آ گہی سے لبریز یہ مکاتیب متعدد چشم کشا صداقتوں کے امین ہیں۔ افکارِ تازہ کی چشم کشا صداقتوں سے معطران گراں قدر مکاتیب کے مطالعہ سے قاری جہانِ تازہ کے بارے میں آ گہی حاصل کرتا ہے ۔

ڈاکٹر محمد ریاض انجم نے اپنی تالیف ’’ زبان غالب کا لسانی و ساختیاتی مطالعہ ‘‘ میں پروفیسر ڈاکٹر سید مقصود حسنی کے وہ تمام مضامین شامل کیے ہیں جو غالب شناسی کے موضوع پرلکھے گئے ۔یہ بات بلا خوف تردید کہی جا سکتی ہے کہ غالب شناسی کے موضوع پر اب تک جو کام ہوا ہے اس میں با لعموم حالی ؔ کے خیالات پر انحصار کیا گیا ہے ۔ ڈاکٹر محمد ریاض انجم کا خیال ہے کہ غالب شناسی کے لسانی اور ساختیاتی پہلو پر سب سے پہلے پروفیسرڈ اکٹر سید مقصود حسنی نے توجہ مرکوز رکھی۔ پس نو آبادیاتی دور میں بر صغیر کے ممالک میں ارضی ،ثقافتی ،تہذیبی اور معاشرتی حوالے جو تغیر و تبدل وقوع پذیر ہوا ڈاکٹر محمد ریاض انجم کی اس پر گہری نظر ہے ۔ ڈاکٹر محمد ریاض انجم نے واضح کیا ہے کہ دیوان ِ غالب میں شامل 185غزلوں پر ڈاکٹر سیدمقصود حسنی نے جس منفرد انداز میں داد تحقیق دی ہے وہ ان کی جدت پسند طبیعت اور تحقیق و تنقید کی رفعت کی مظہر ہے ۔ غالب کے فکر و خیال اور اسلوب کی جدت ، ندرت اور لسانی و ساختیاتی حوالوں کو زیر بحث لا کر اس ابد آ شنا شاعر کے اسلوب کو سمجھنے کے لیے نئے معائر کا تعین کر دیا ہے ۔ پروفیسر ڈاکٹر سید مقصود حسنی کی اس کتاب کی ترتیب میں ڈاکٹر محمد ریاض انجم نے جس محنت ،لگن اور تحقیق سے کام لیا ہے وہ ان کے ذ وق سلیم کی آ ئینہ دار ہے ۔ پروفیسر ڈاکٹر سید مقصود حسنی نے غالب کی شاعری کی تفہیم کے سلسلے میں جن فکر پرور اور خیال افروز مباحث کا آغاز کیا ہے ان کا احوال اس کتاب میں شامل ہے ۔ ڈاکٹر محمد ریاض انجم نے اپنی تصانیف میں محض معروضیت پر انحصار نہیں بل کہ حرفِ صداقت کو زادِ راہ بنا کر روشنی کے سفر کا آغاز کیا ہے حریتِ ضمیر سے جینے کی تمنا اور حریت فکر کے سوتے بھی اس نوعیت کے منفرد اسلوب ہی سے پھوٹتے ہیں ۔اپنے اشہبِ تحقیق کی جولانیوں سے ڈاکٹر محمد ریاض انجم نے متعدد پنہاں حقائق کو منظر عام پر لا کر زبانِ خلق کو نقارۂ خدا کی حیثیت عطا کی ہے ۔ان کے جذبِ دروں کے معجزنما اثر سے علوم و فنون میں تحقیق و تجسس کے متعدد نئے در وا ہونے کے قوی امکان ہیں ۔ان کی تحقیقی کتب کے مطالعہ سے قارئین کے ذہن میں ایسے خیالات نمو پائیں گے جو انھیں دریافت ،تحقیق اور تنقید کے نئے آفاق کی جستجو پر مائل کریں گے۔ڈاکٹر محمد ریاض انجم کی علمی و ادبی کامرانیاں قارئین کے لیے ایسی فقید المثال شادمانیاں ثابت ہوں گی جن سے دلوں کو مرکزِ مہر و فا کرنے میں مدد ملے گی ۔مجھے یہ کہنے میں کوئی تامل نہیں ان تصانیف سے تحقیق و تفحص کی روایت کو پروان چڑھانے میں مدد ملے گی۔

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 511 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Ghulam Ibnesultan

Read More Articles by Ghulam Ibnesultan: 223 Articles with 188993 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Memories are everlasting for us.After 6th July 2017we are in despair .Sajjad Hussain left us for ever .On 5th March 2018 brother Ramzan departed.We read these articles with keen interest .We understand the feelings of a grieved person who is gradually moving towards his end.We pray for his safety and patience.His writings reflect the interior condition of a person who is facing the miseries in loneliness.I was much impressed to read this thought provoking article .Critic has highlighted the important facts about the books Dr.Riaz Anjum.I consider every new article of Dr.G.S Rana as his last memory.It is very difficult to say how long he continues to light this candle of knowledge before strong stormy wind of fated .
By: Rana Sultan Khan , Golarchi Badin Sind on Feb, 16 2019
Reply Reply
1 Like
Language: