سفر مٹی کا

(Syeda Khair-ul-Bariyah, Lahore)

مٹی سے بنا انسان اور اس کے سینے میں مٹی کا دل جس میں مٹی کی بنی خواہشات کھنکتی ہیں جیسے مٹی کے برتن میں اور ان کی کھنک حالت جنگ میں رکھتی ہے اس مٹی کے وجود کو کہ وہ اپنی پسندیدہ مٹی کو اکٹھا کرتا جاۓ اس مٹی کی دنیا میں اور دامن بھر لے اپنا سارا اس مٹی سے جو اسے چمکتی ہوئ دکھائ دیتی ہے سونے کی مانند اور اسے سمیٹتے سمیٹتے وہ اپنی مٹی سے بنی دائمی آرام گاہ تک کا سفر طے کر لیتا ہے جس میں پہنچتے ہی مٹی کا وجود, مٹی کا دل اور اس میں بسی مٹی کی خواہشات مٹی ہو جاتی ہیں. بس نہیں مٹی ہوتی تو وہ غلط فہمی ہے زندہ مٹی کے انسان کی جو ایک مٹی کے انسان کو مٹی کے سپرد کر کے مٹی کے قبرستان سے اس سوچ کے ساتھ آگے بڑھ جاتا ہے کہ میرا یہ مٹی کا سفر کبھی قبر کی مٹی تک اختتام پزیر نہیں ہو گا-
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 360 Print Article Print
About the Author: Syeda Khair-ul-Bariyah

Read More Articles by Syeda Khair-ul-Bariyah: 10 Articles with 3453 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language: