تو تو سورج ہے تجھے کیا معلوم رات کا دکھ

(Sarwar Siddiqui, Lahore)

ایک سہیلی نے دوسری سے پوچھا ’’سناہے تم شادی کررہی ہو؟ــ
’’ہاں ۔۔مگر کیوں ایسے پوچھ رہی ہو تمہیں کیا پریشانی ہے؟
’’کیا تمہارا دولہاایک سیاستدان ہے ‘‘ اس نے سہیلی کی بات سنی ان سنی کرتے ہوئے استفسار کیا
’’ہاں۔اس نے اثبات میں سر ہلاتے ہوئے کہا یہ سچ ہے
سہیلی نے بے ساختہ کہا شہلا! میری مانو کسی سیاستدان سے شادی مت کرنا کمبخت وعدے تو بہت کرتا ہے پورا ایک بھی نہیں کرتا ۔خیر یہ تو ایک لطیفہ تھا لیکن اس میں کمال کی سچائی چھپی ہوئی ہے ہمارے ملک کے سیاستدان پبلک سے جتنے وعدے کرتے ہیں اگر ایک ایک وعدہ بھی ایفا کرتے تو پاکستان ’’پرابلم فری کنٹری ‘‘ بن کر دنیا کے نقشے پر اپنی جولانیاں دکھا رہاہوتا۔ جنرل مشرف کے بعداب مسلسل دو جمہوری حکومتیں بخیرو عافیت اپنی مدت پوری کرکے رخصت ہوگئی ہیں اب ایک بار پھر عام انتخابات کی آمد آمد ہے زرداری حکومت میں تو ہرروز عجب کرپشن کی غضب کہانیاں منظر ِ عام پر آتی رہیں لیکن مسلم لیگ ن کی حکومت نے کرپشن میں پاکستانی تاریخ کے تمام ریکارڈ توڑ ڈالے تین بار وزیر ِ اعظم منتخب ہونے والے میاں نوازشریف نااہل ہو چکے ہیں اور اب کئی کرپشن ریفرنسر میں میاں شہبازشریف اور دیگر فیملی ممبران پر سزا کی تلوار لٹک رہی ہے لیکن جناب زرعی ملک ہونے کے باوجود آلو،ٹماٹراوردیگر سبزیاں ہم پڑوسی ممالک سے منگواتے ہیں جس سے ملک کا قیمتی زرمبادلہ ضائع ہوتاہے پھر ہماری کتنی سادہ دلی ہے کہ ڈالرمہنگا ہونے کی دہانی بھی ہم دیتے رہتے ہیں حکومت میں آصف زرداری ہوں یا پھر میاں نوازشریف یا عمران خان۔اس سے کیا فرق پڑتاہے عوام کے وہی مسائل،وہی محرومیاں ان کا مقدر ٹھہریں اس دوران کچھ نہ بدلا یعنی
ساڈے ملک چہ کوئی گھاٹا نئیں کدی ۔۔بجلی نئیں ۔۔کدی آٹا نئیں
صابن وی مہنگا ہوگیا یارو
اسے گئی تے میں نہاتا نئیں
پاکستان کو بحرانوں کی سرزمین بھی کہا جا سکتا ہے ہر سال کوئی نہ کوئی بحران ملک کو اپنی لپیٹ میں لے لیتاہے اور نقصان صرف اور صرف عوام کا ہوتاہے زیادہ تو بحران’’ ارینج‘‘ کئے جاتے ہیں مقصد صرف لوٹ مار اور عوام کااستحصال ہے اس میں زیادہ تر لوگ وہ ملوث ہوتے ہیں جو خاصے اثرورسوخ کے ملک اور حکومتی عہدیدار ہیں جن کو ئی پوچھنے کی جرأت نہیں کرسکتا بحران در بحران نے عوام کو ہلا کررکھ دیتے ہیں اس کی آڑ میں ناجائز منافع خوروں کا اربوں روپے کمانا معمول کی بات ہے بے چارے عوام کیلئے کبھی بجلی کی لوڈشیڈنگ،اووربگنگ اوربجلی کی قیمتوں میں مسلسل اضافہ عوام پر بجلی بن کر گرتا ہے اوکبھی پٹرول،ڈیزل کی قیمتیں خواب میں آکر ڈراتی رہتی ہیں ۔ کبھی چینی کبھی سبزیوں پھلوں اور آئے روز اشیائے خوردونوش کی قیمتوں میں اضافہ بے چین کرکے رکھ دیتاہے۔کبھی انتہا پسندی اور دہشت گردی کے واقعات خوف وہراس کا باعث بنتے ہیں اوراس کے نتیجہ میں عام آدمی ہی متاثرہوتے ہیں اس کے ساتھ ساتھ شہریوں کی اکثریت زندگی کی بنیادی سہولتوں سے یکسرمحروم ہے۔ابلتے گٹر،ٹوٹی سڑکیں اور مسائل در مسائل نے جینا عذاب بنا دیا،آلودہ پانی کے مسلسل استعمال سے بیماریوں میں خطرناک حد تک اضافہ ہو گیا،دہشت گردی،بیروزگاری اورمہنگائی سے لوگ عاجز آگئے اسی لئے پاکستان کو بحرانوں کی سرزمین بھی کہا جا سکتا ہے۔تازہ ترین اعدادوشمار کے مطابق پاکستان میں مزید ایک کروڑ سے زائدافرادغربت سے بھی نیچے زندگی گزارنے پر مجبورہوگئے ہیں پاکستان میں غربت کی بنیادی وجہ وسائل کی غیرمنصفانہ تقسیم ہے جس کے سبب امیر،امیرترین اور غریب ،غریب ترہوتا جا رہاہے،بدقسمتی سے کسی بھی گورنمنٹ نے غر بت ختم کرنے کیلئے حقیقی اسباب پر غور کرنا ہی گوارہ نہیں کیا۔اس کے علاوہ دہشت گردی سے ملکی معیشت مفلوج ہوتی جارہی ہے۔احتجاجی ریلیوں اور ہنگاموں سے بھی عام آدمی ہی متاثر ہوتاہے بجلی یاگیس کی لوڈشیڈنگ سے بھی عام طور پر غریب ہی کو فرق پڑتا ہے پاکستان میں غربت کی ایک اور وجہ عدم سیاسی استحکام اور آئے روز کے بحران در بحران ہیں جس سے بے چینی میں مسلسل اضافہ ہونا ہے وسائل کی منصفانہ تقسیم اور ہر شہری کے لئے بلا امتیازیکساں مواقع کی فراہمی سے غربت میں کمی آسکتی ہے۔اب خوشی کی بات یہ ہے تحریک ِ انصاف کی نئی نویلی حکومت عوام کیلئے کچھ کرنے عزم رکھتی ہے ایک کروڑ سرکاری نوکریاں اور50لاکھ مکان بنانے کیلئے ترجیحات کا تعین کیا جا چکاہے۔ دیکھئے اس سلسلہ میں حکومت کیا کرتی ہے ماضی میں تو عوامی بہبودکی جتنی بھی سکیمیں بنیں اس سے وہی لوگ استفادہ اٹھا سکے جن پر پہلے ہی’’ فضل ِ ربی‘‘ تھا ایک کام بڑی آسانی کے ساتھ کیا جا سکتاہے جس سے غریبوں کی حالت بدل سکتی ہے لیکن شاید ہمارے حکمران وہ کرنا ہی نہیں چاہتے ایک تجویزہے حکومت کے پاس کئی خفیہ ایجنسیاں قطار اندر قطار ہاتھ باندھے کھڑی رہتی ہیں کیا اچھاہو اگر حکومت بلا امتیاز ایک حقیقی سروے کروا کر کم وسائل، سفید پوش اوربا ہمت افراد کومعاشرے کو مفید شہری بنانے کیلئے بھرپوروسائل مہیا کرے انہیں بڑے بڑے قرضے دینے کی بجائے چھوٹی چھوٹی رقم کا قرض ِ حسنہ دیا جائے ، ملکی ترقی کیلئے کاٹیج انڈسٹری کو فروغ دینے کیلئے خصوصی اقدامات ناگزیرہیں جس انداز سے حکومتیں لون سکیمیں لانچ کرتی ہیں اس کا زیادہ تر فائدہ بڑی بڑی توند والے ہی اٹھاتے ہیں اور حقیقی ضرورت مندہاتھ ملتے رہ جاتے ہیں۔ عمران خان کو قدرت نے ایک سنہری موقعہ دیا ہے خدارا!اس ملک کے عام شہری کیلئے کچھ کیجئے جس کے پاس دینے کو رشوت ہے نہ سفارش۔ جس کا گارنٹی دینے والابھی کوئی نہیں۔گارنٹر میسر ہوتو لون سکیموں کے بغیر بھی قرضے مل جاتے ہیں عمران خان !کو مسائل کے مارے غریب، کم وسائل سفید پوش اورگوپ اندھیرے میں رہنے والے جوآپ کو سورج سمجھ بیٹھے ہیں اس سے پہلے آپ سے مایوس ہو جائیں عام آدمی کیلئے کچھ گذرئیے
تو تو سورج ہے تجھے کیا معلوم رات کا دکھ
تو میرے گھر میں اتر کبھی۔شام کے بعد

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 209 Print Article Print
About the Author: Sarwar Siddiqui

Read More Articles by Sarwar Siddiqui: 218 Articles with 84910 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language: