اسے کیوں نکالا ؟

(Noman Baqi Siddiqi, Karachi)

اس کو اچھی طرح رخصت کرنے کے بعد ایک اطمینان کی کیفیت لیے زندگی زرا تیزی سے آگے بڑھی ، کاروبار اور گھر بار میں دل لگا ، اور ایک آزادی اور ہلکا ہلکا محسوس کرنے کے ساتھ ساتھ ، پیار کی یاد بھی کہیں دل میں موجود تھی ۔

ایک خیال سا آیا کہ یہ آزادی ہی رہے ۔ اور کچھ دن ایسے ہی رہیں ۔
آج وہ جلدی واپس آگئ ہے ۔
اس کے آتے ہی وہ آزادی کا خواب چکنا چور ہو گیا جب اس کے چکنے گالوں اور کاجل والی آنکھوں پر حامد کی نظر پڑی اور سانولی کی آنکھوں نے اسے پھر سے قید کر دیا ۔
پھر سے اس کے قریب جانے کا شوق اور اس کے کپڑے پہنے کا زوق اس کے اندر موجود پیار کو بھڑکانے لگا اور اس سے جدا ہونے کا خوف پھر سے دھڑکانے لگا اور اور اس کے ہوش و حواس کھڑکانے لگا۔
اس نے اپنے آپ کو مشکل سے سنبھالا اور اپنی سوچ کو کھنگالا ، پیار کو خدمت کے رنگ میں ڈھالا مگر پرانے پیار کی ایک دبی دبی سی آواز آئ
"مجھے کیوں نکالا "

اسی سے ملتی جلتی آواز سیاست میں بھی گونج رہی تھی کی اپنے پرانے ساتھی کو جس سے معیشت سنبھل نہ پائ اور جس کو ادا کرنا تھا قرض کی پائ پائ جس سے بڑی خوش فہمیاں اور امیدیں وابستہ تھیں ، اس نے وہ عزت نہ پائ ، نکال دیا گیا کیونکہ بڑھ گئ ہے مہنگائ اور اب لوگ یاد کرنے لگے ہیں اس کو جس نے کبھی معیشت کی عزت بڑھائ اور اس کی ہو گئ تھی چند بڑوں سے لڑای اور اب عوام کی دبی دبی آواز آئ کی پھر
"اسے کیوں نکالا"

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Noman Baqi Siddiqi

Read More Articles by Noman Baqi Siddiqi: 232 Articles with 87451 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
21 Apr, 2019 Views: 148

Comments

آپ کی رائے