میرے بچپن کے دن ......

(Saba Hassan, Lahore)
میرا ماضی میرا سرمایہ

ھماری ادھوری کہانی۔۔۔۔۔۔

زندگی اپنےمدار پہ گھومتی ھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جھوٹ سرا سر جھوٹ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مدار تو دائرے کا ھوتا ھے۔۔۔۔۔ اور دائرہ جھاں سے شروع ھوتا ھے وہیں پہ ختم بھی ھوتا ھے۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ کہو میری زندگی سے کہ اپنے مدار کو میرے ماضی میں لے چلے۔۔۔۔۔ میرے بچپن کے لمس دے پل بھر کو۔۔۔۔۔۔
تف ھے۔۔۔۔۔۔ جانتی ھوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نہیں رُکے گی۔۔۔۔۔۔۔

کتنا قیمتی تھا وہ وقت جب زندگی کے نرم گُداز پل صرف محبت سے ھماری سرپرستی کیا کرتے تھے۔مجھے اکثر یاد آتا ھےکہ کس طرح ھم بسنت پربھائیوں کے ساتھ اٹھکیلیاں کرتے تھے۔۔۔۔ کتنے سُر محبت کے تار سے اُمڈ اُمڈ آتے تھے۔۔۔۔ پتنگوں سے جل تھل ھوتا آسمان کس طرح دل کو اپنے آغوش میں بھینچ لیتا تھا۔

میرے بھائی سال میں صرف یک بار پتنگ اُڑاتے تھے ۔۔۔۔۔۔ اس دن ابوجان ۔۔۔۔ پنے اور ڈھیروں پتنگیں لاتے۔ وہ خوشی وہ سحر۔۔۔۔۔۔۔ توبہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ رات اپنا آنچل پھیلاتی تو ھم سب پہنچ جاتے بھائیوں کا حوصلہ بڑھانے۔۔۔۔۔سال میں ایک بار پتنگ اُڑانے والے کو کیا پتہ کا ھوا کہاں کی ھے ۔۔۔۔ اتنے عقلمند وہ اور ایسے ھی ھم ھوشیار۔۔۔۔ پتنگ کو کنی دیتے مگ مخالف سمت سے۔۔۔۔۔ بھائی کوشش کرتے کہ اُن کی پتنگ بھی آسمان کو چھو لے مگر۔۔۔۔۔ھاھاھاھا۔۔۔۔

پھر اپنے سب کاموں سے فارغ ھو کر ابوجان چھت پہ آتے۔۔۔۔ پہلے تو ابوجان ایک طرف بیٹھ کر دونو کو سرھاتے۔۔۔۔ خوب دلجوئی کے بعد ۔۔۔ابو جان کا درس شروع ھوتا درس بھی اُس کام کا جس کی اجازت سال میں ایک بار ملتی تھی۔۔۔۔۔ ابوجان تلاویں چیک کرت گویا توازن تو پتہ چلے کیسا ھے۔۔۔۔ اور بتاتے کہ ڈور کو چیک کر لو مبادا آسمان پہ پینچ کر تڑکی ھوئی ڈور آسمان پر ساتھ چھوڑ دے۔۔۔۔۔۔ آسمان کی طرف گُڈی اُچھالتے اور چلا کر کہتے۔۔۔۔ اُلو کے پٹھے۔۔۔۔ پتنگبازی میں ھوا کا رُخ تمھارا باپ دیکھے گا۔۔۔۔۔ اور پھی دور فضا ماین آھستہ آھستہ پتنگ کسی شان سے اُڑتی۔۔۔ کبھی ابوجان کسی کو ڈور دیتے کبھی کسی کو۔۔۔۔۔۔۔

وقت کے آسمان پر اُڑتی زندگی کی پتنگ ۔۔۔۔۔۔۔ آہ ہ ہ ہ ہ ہ ہ ہ ہ ہ ہ ہ ہ ہ ہ

وہایک دن جب نہ بھوک کا پتہ تھا نا کسی اور کام کا۔۔۔۔امی رنگ رنگ کے کھانے منہ میں ٹھونستی۔۔۔۔ اور بھائی چلاتے امی جان نہیں نہ ۔۔۔۔نہیں کھانا کھانا۔۔۔۔۔۔سب جانتے تھے کہ پتنگبازی کی عنائیت ایک دن کہ ھی ھے۔۔۔ اگلی صبح کو ڈور اور پتنگیں ابوجان کی کسٹڈی میں چلی جاتی۔۔۔۔۔ گھنٹے کا لیکچر ملتا کہ اب کوئی چھت پر گیا تو۔۔۔۔۔۔۔

ھم تو خیر ایک دن کو سال سمجھ کر صبر کر جاتے مگر بھائی کہ پھپھولے رستے رھتے۔۔۔۔ ھاھاھاھاھاھاھا۔۔۔۔۔ موقع کی تاڑ میں رھتے۔۔۔۔ نظر بچا کے چھت پر پھنچتے۔۔۔۔۔۔ وھی بے تکی پتنگبازی۔۔۔۔ دور ھاتھ میں تھامے چھت پر بھاگتے۔۔۔۔دیواروں سے لٹکلٹک کر پتنگ کو نیچے سے آسمان کی طرف پھینکتے۔۔۔۔ اور جب کچھ نہ بن پڑتا تو ھم میں سے کسی کو کنی دینے کو کہتے۔۔۔۔ وہی مخالف سمت کی کنی۔۔۔۔۔۔ آسمان شاید ان گُڈیوں کو نصیب ھی نہیں تھا۔۔۔۔ اس سے پھلے کہ وہ آسماں پہ جاتی وہ پھٹ ھی جاتی تھی۔۔۔۔ھاھاھا

پھر ھاھا ابوجان کے گھر آنے پہ ابوجان سب سے پڑھائی کی ھماری ناپسندیدہ باتین کرتے تو جانے کہاں سے یک دم گُڈی آجاتی۔۔۔۔۔ اچھا گُڈی کس نے اُڑائی تھی کوئی نہ بولتا۔۔۔۔۔ ابوجان۔۔۔۔ بھائی کے کپڑون پہ لگی سفیدی دیکھ کر کہتے ۔۔۔۔ انسان بن جا۔۔۔۔۔۔۔۔

کہو زندگی سے میرامدار اُسی جگہ لے جائے۔۔۔۔۔جہاں ابوجان، بھائی اور ھم تھے ۔۔۔۔۔۔۔ کیسا ڈگ بھرا ھے اس بے اعتبار زندگی نےکہ آج بھائی ابوجان ھیں ۔۔۔۔۔۔۔ اور انکے بچے بھائی ھیں ۔۔۔۔۔۔۔ اُن کی بہنیں ھم ھیں ۔۔۔۔۔۔ لیکن ھم کھاں ھیں۔۔۔۔۔۔۔۔ پتہ نہیں۔۔۔۔۔ اپنے گھر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس گھر

زندگی ۔۔۔۔۔اور یہ زندگی گزارنے کی مجبوریاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

زندگی بہت بُری ھے تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صباءحسن
١٢-٠٩-٢٠١٥
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: saba hassan

Read More Articles by saba hassan: 12 Articles with 3048 views »
“Good friends, good books, and a sleepy conscience: this is the ideal life.” .. View More
30 Jun, 2019 Views: 346

Comments

آپ کی رائے