برقی رشتے کا غرقی انجام (قسط ۲)

(Noman Baqi Siddiqi, Karachi)

یہاں بات زرا مختلف تھی اور حامد کے لیے نئ بھی تھی کہ اُس نے صاف کہہ دیا تھا کہ اُس نےصرف دوستی رکھنی ہے اور شادی کا کوئ ارادہ نہیں مگر خاتون بضد تھی کہ حامد کے شادی شدہ ہونے کے باوجود وہ اُسے پسند کرتی ہے اور اُسے ایک دو دفع دیکھ بھی چکی ہے اور اچھی طرح جانتی ہے جبکہ حامد نے نہ دیکھا نہ کبھی آواز سُنی اور پھر بھی وہ آہستہ آہستہ نہ نہ کرتے بھی اُس کی محبت میں گرفتار ہو گیا
اب یہ تصور کا جادو تھا یا تجسس کی کارستانی تھی کہ بنتا جارہا تھا محبت کا افسانہ یا ایک ادھوری کہانی تھی

چلتے چلتے یونہی کوی مل گیا تھا سر راہ چلتے چلتے

کہ فسانہ بن گئ ہے میری بات چلتے چلتے

یا دونوں کا اپنے اطراف کی پابندیوں کے اُصولوں سے روگردانی یا یوں ہی محبت کی باتوں کی روانی میں آیا تلاطم اور طغیانی بہرحال ایک برقی رشتہ وجود میں آچکا تھا جو قریبی رشتوں کی دوری کا سبب بن رہا تھا اور اُن دونوں کو اور زیادہ قریب کر رہا تھا اور جیسے اُنہیں ایسی محبت کبھی نہ ملی ہو

دیکھا جاۓ تو نہ یہ کوئ بچپن ساتھ گُزارنے کی کوئ یاد نہ پڑوس نہ رشتہ بس ایک موبائل کی key سے پیدا ہوتی ایک برقی لہر رات کے دوسرے پہر دل میں اُٹھتی خیالات کی نہر اور اُس کا سحر
لیکن ایک مضبوط رشتے کی ڈور میں بندھ جانا جس کو برقی رشتہ کا نام دیا جاسکتا ہے

عورت کا حُسن تو کشش رکھتا ہے مگر کیا عورت کا تصور اور خیال بھی اتنا طاقتور ہوسکتا ہے کہ کسی کے وجود کو مسحور کر دے بلکہ ایک خاص سوچ میں محصور کر دے اور وقتی طور پر مسرور کر دے اور پھر وصل نہ پا کر مغموم کر دے اور دیکھنے والوں کی نظروں میں مزموم کر دے

ایسے گرداب میں پھنستے لوگوں کو وہ دیکھ چُکا تھا اور اُن کی دیوانگی کا دل ہی دل میں تمسخر اُڑاتا تھا اور اب وہ خود اس بھنور میں پھنس کر بے بس گھوم رہا تھا اور تصور میں اُن ہاتھوں کو چوم رہا تھا جو نظر بھی نہ آیں نہ آواز نہ تصویر بس ایک محبت بھرا پیغام اور وہ بھی بے نام اور ایک عشق ناکام مگر برقی رشتہ نہ صبح دیکھے نہ شام اور بظاہر رشتے میں دوام اور نہ کوئ منطق نہ انجام
حامد نے یہ بھی محسوس کیا کہ جمیلہ اپنے گھر والوں کو بھی اعتماد میں لے چکی ہے اور اس سے اس کی حیرت میں مزید اضافہ ہوتا جبکہ وہ تو اہنے خاندان میں نام تک نہیں لے سکتا تھا

اسی طرح موبائل میسیج کا سلسلہ جاری رہا اور عقل سے عاری رہا اور عشق دونوں پر طاری رہا اور برسوں کے رشتوں پر ہاوی رہا کہ ایک دن حامد کو کاروباری سلسلے میں دوسرے شہر جانا پڑا جو وہ اکثر جایا کرتا تھا اور ایک صاحب کے پاس جا کر ٹھیرتا تھا جن سے کاروباری لین دین تھا
اس بار جیسے ہی وہ اُن کے گھر میں داخل ہوا تو موبائل پر اُس نے اُسے لڑکی کا پیغام پڑھا

آخر آہی گۓ آپ ہمارے گھر !!!

جاری ہے

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Noman Baqi Siddiqi

Read More Articles by Noman Baqi Siddiqi: 233 Articles with 91419 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
29 Aug, 2019 Views: 255

Comments

آپ کی رائے