چونیاں کے معصوم بچے اور عزرائیل

(Muhammad Anwaar, Lahore)

میں ہڑبڑا کر اٹھا ،
سامنے عزرائیل کھڑا تھا اور کافی پریشان تھا
اسکو فکرمند دیکھ کر، میری تو جیسے جان ہی نکل گئی
میں نے ڈرتے ڈرتے پوچھا
’’جان لینی ہے؟‘‘اس نے نفی میں سر ہلایا
’’بس کچھ لمحے آہیں بھروں گا، پھر چلا جاوں گا‘‘ وہ بولا
’’تمھارے دھندے میں آہیں کیسی؟؟؟‘‘ میں نے حیران ہو کر پوچھا
اس نے کہا ’’بڑے بڑوں کی جان لی، ایک لمحے کے لئےبھی ہاتھ نہیں کانپا‘‘
لیکن جب چونیاں کے فیضان عرف میٹھو ، حسنین اور سلمان جیسے معصوم بچوں کی روح قبض کرنی ہوتی ہے تو روح کانپ جاتی ہے

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 74 Print Article Print
About the Author: muhammad anwaar

Read More Articles by muhammad anwaar: 19 Articles with 2811 views »
H m anwaar, more than 15 years experience of TV journalism. Reporting,scripting, copy editing, idea generation, packaging, assignment, worked with Tel.. View More

Reviews & Comments

Language: