آسماں ہوگا سحر کے نور سے آٸینہ پوش - قسط 9

(Sara Rahman, Ryk)
کشمیر ہماری شہہ رگ ہے ہم بن شہہ رگ کے زندہ ہیں

کشمیر ہماری شہہ رگ ہے ۔۔ہم بن شہہ رگ کے زندہ ہیں۔۔

آسماں ہوگا سحر کے نور سے آٸینہ پوش

زینی کشمیر کے حالات سے تو واقف آج کی دنیا کا ہر
انسان ہے ۔۔۔۔۔لیکن جو کچھ میں تمہیں بتاٶں گا امید ہے تم اس سب کا بہادری سے سامنہ کرو گی ۔۔۔۔معاذ نے تمہید باندھی ۔۔۔
اب تو اتنا سب کچھ سن اور دیکھ چکی ہوں ۔۔۔۔آگے بھی جو ہو گا برداشت کر لو کی معاذ ۔۔۔۔۔ہم کشمیری ہیں ہی برداشت کرنے کے لیۓ ۔۔۔۔تم بولو میں سن رہی ہوں ۔۔۔
زینی تمہارے بابا پکڑےگۓ ہیں ۔۔۔۔۔وہ درپردہ کشمیریوں کے حامی تھے ۔۔۔یہ بات را کو معلوم ہو چکی ہے ۔۔۔اور انہیں نامعلوم مقام پر منتقل کر دیا گیا ہے ۔۔۔۔اب تو انڈین فوج ہر ایک پر شک کر رہی ہے ۔۔۔۔
کشمیر میں دوبارہ کرفیو لگ چکا ہے ۔۔۔
معاذ نے ایک فاٸل زینی کیطرف بڑھاٸ اور مزید کہنے لگا ۔۔۔۔۔یہ کچھ چیزیں انکل نے مجھے امانت کے طور پر دی ہیں ۔۔۔۔تاکہ میں تم تک پہنچا سکوں ۔۔۔۔اورانکل نے ایک خط بھی تمہارے نام دیا ہے ۔۔۔۔۔
وقت کم ہے زینی ہے ۔۔۔۔میں خود شرمندہ ہوں ۔۔۔تم اپنے بابا کے کارناموں سے واقف نہیں ہو ں ۔۔۔۔۔میری طرف سے بھی اپنا دل صاف کر لینا ۔۔۔۔۔۔ہم کشمیری ہیں ۔۔۔غداری کا سوچ بھی نہیں سکتے ۔۔۔۔۔

--------------------

معاذ را کے کتوں کی آنکھوں میں دھول جھونک کر جیسے زینی کو لے کر گیا تھا ویسے ہی واپس بھی چھوڑ گیا ۔۔اور کسی کو خبر بھی نہ ہوٸ ۔۔۔زینی جب روم میں واپس آٸ تو مریم سو رہی تھی ۔۔۔
رات کے تین بج رہے تھے ۔۔۔آج کی رات زینی پر مزید بھاری ہو چکی تھی ۔۔۔
زینی صبح ہونے سے پہلے پہلے سارے حقاٸق جان لینا چاہتی تھی ۔۔۔
زینی اسٹڈی ٹیبل پر بیٹھی ٹیبل لیمپ آن کیا ۔۔۔اور سامان چیک کرنے لگی ۔۔۔سامان سے زینی کی بچپن کی چند تصویریں بھی نکلیں ۔۔۔اس کے علاوہ ایک اور تصویر بھی تھی ۔۔۔جو ایک مکمل فیملی کی تھی ۔۔۔ایک خوبصورت کپل کی تصویر تھی ۔ ۔۔سامان میں سے ایک ڈاٸری بھی ملی تھی ۔۔ایک سی ڈی ۔۔زینی نے فوراً لیپ ٹاپ میں ڈال کر اسے چیک کیا تو ۔۔وہی نغمہ گونجنے لگا تھا ۔۔جس کے گانے والا شخص گمنام تھا ۔۔۔لیکن اس کی آواز سے وادی کا چپہ چپہ آشنا تھا ۔۔۔۔
جیسے ہی وہ نغمہ ختم ہوا تو ۔۔۔اور جس شخص کی آواز گونجی ۔۔۔اس آواز نے اس کی دھڑکنیں روک دیں تھیں ۔۔۔۔جان بابا ۔۔۔۔جب جب میں تمہاری آنکھوں میں اپنے خلاف امڈنے والی نفرت دیکھتا تھا ۔۔۔
میرا دل چیخ چیخ کر بین کرتا تھا ۔۔۔۔کہ بتا دے زینی کو اپنی اصلیت ۔۔۔
لیکن حقیقت بتانے کا وقت نہیں آیا تھا ۔۔۔زینی جب تک تمہیں حقیقت پتہ چلے گی ۔۔۔میں اپنی دھرتی پہ شاید قربان ہوچکا ہوں گا ۔میری شہادت پر تم دکھی مت ہونا ۔۔رونا مت ۔۔کیونکہ تمہاری بھی یہی خواہش تھی کہ تمہارے بابا ایک غدار نہیں ۔۔۔بلکہ ایک مجاہد ہوتے ۔۔
زینی نے دونوں ہاتھوں سے سر کو تھاما تھا ۔۔۔۔۔زاروقطار روتے ہوۓ بس وہ یہی کہہ رہی تھی ۔۔۔میں کتنی بے وقوف تھی بابا میں اپنوں کو نہ پہچان سکی میں آپ کو نہ پہچان سکی ۔۔۔۔
آٸم سوری بابا ۔۔۔آٸم سوری ۔۔۔۔
بعض دفعہ بیتی ہوٸ ناخشگوار یادوں میں سے تکلیف دہ چیز وہی نفرت بن جاتی ہے ۔۔۔جو ہم کسی سے بے تحاشہ کرتے چلے آرہے ہوتے ہیں ۔۔۔کتنا غلط سوچتی تھی وہ بابا کے بارے ۔۔۔اور بابا کو اس کی بدگمانی ہر پل اذیت ہی پہنچاتی رہی ہو گی ۔۔۔۔آج کا دن اس کیلۓ آگہی کے در کھول گیا تھا ۔۔۔۔
آگہی بھی عذاب سے کم نہیں ہوتی آج وہ جان گٸ تھی ۔۔۔
۔ ۔۔۔اور یہ نغمہ اس کی حقیقت کا راز تم جان چکی ہو گی ۔۔۔بابا یہ آپ تھے ۔۔۔۔یہ نغمہ گانے والے ۔۔۔آج تک کوٸ جان ہی نہ پایا ۔۔۔کاش بابا آپ یہاں ہوتے میں ایک دفعہ تو آپ کو گلے لگا سکتی ۔۔۔کاش بابا ۔۔۔
زینی بے آواز رو رہی تھی ۔۔۔۔آج رازوں کے فاش ہونے کی رات تھی ۔۔۔۔زینی کو دن نکلنے سے پہلے پہلے ساری حقیقت جاننی تھی ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سامان میں ایک خون آلود ڈوپٹہ تھا ۔۔۔اور بابا کی خون آلود جیکٹ ۔۔۔وہ جان چکی تھی کہ ماں بھی اور ماٶں کی طرح دھرتی پر قربان ہو چکی ہیں ۔۔۔اور بابا اس سے آگے وہ سوچ ہی نہ سکی تھی۔۔۔۔ڈاٸری کے چند پیج ہی پڑھے تھے زینی نے کہ اسے لگا تھا ۔۔۔کہ اس کی جان نکل رہی ہے ۔۔۔وہ مر رہی ہے ۔۔۔کتنا بڑا دھوکا ہوا تھا زینی کے ساتھ ۔۔۔۔اس کی آنکھوں میں خون اترنے لگا تھا ۔۔۔۔۔۔جس دھرتی کا دکھ اسے خون کے آنسو رلاتا تھا ۔۔۔۔۔وہ اس کی جنم بھومی ہی نہیں تھی ۔۔۔۔۔
اس نے امڈنے والے آنسو رگڑ ڈالے تھے ۔۔۔۔اسے آنسو بہا کر دکھوں کو بہانا نہیں تھا ۔۔۔۔بلکہ اندر لگی آگ کو مزید ہوا دینی تھی ۔۔۔۔
آج زینی اس شخص کی نگرانی کا راز جان چکی تھی ۔۔۔۔
بھارتی ایجنٹس کی مکاری سے تو واقف ہی تھی ۔۔۔لیکن اس بات کا اندازہ اسے آج ہوا تھا کہ یہ عیار و مکار ہونے کے ساتھ ساتھ غنڈا گرد اور نیچ ذہن کے لوگ ہیں ۔۔۔ان کے گھناٶنے اور انسانیت سوز مظالم دیکھ کر شیطان کی روح بھی کانپ جاتی ہو گی ۔۔۔۔
شراب کے نشے میں دھت زینی کی نگرانی پر معمور ایجنٹ اور اس کے گرو کے خواب وخیال میں ہی نہیں تھا ۔۔۔کہ زینی ساری حقیقت سے آگاہ ہو چکی ہو گی ۔۔۔
اور انکی عیاری اور غیر انسانی کاموں کا پردہ وہی فاش کرے گی ۔۔۔۔
ان کا اپناکھودا ہوا گڑھا ان کے اپنے لیۓ بدنامی کا پھندا ثابت ہونے والا تھا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زینی نے ماں کا ڈوپٹہ اور بابا کی جیکٹ کو آنکھوں سے لگا یا اور دیوانہ وار چومنے لگی ۔۔۔۔ اور جب تھک کر نڈھال ہو گٸ تو معاذ کی ہدایت کے مطابق سب کچھ جلا دیا ۔۔اور راکھ پانی میں بہا دی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
داٶد طے کیۓ ہوۓ وقت کے مطابق صبح ہی پہنچ گیا تھا ۔۔۔مریم حیران تھی کہ صبح سویرے جاگنے والی زینی ابھی تک جاگی کیوں نہیں تھی ۔۔۔
مریم نے زینی کو جگانے کے ارادے سے جیسے ہی گال پر ہاتھ رکھا تو ایک دم چونکی ۔۔۔زینی بخار کی شدت سے بے ہوش تھی ۔۔۔۔
مریم پریشانی میں زینی کو جھنجھوڑنے لگی ۔۔۔داٶد بھی اٹھ کر زینی کے پاس آیا ۔۔۔۔
اففف اسے تو بہت تیز بخار ہے شاید اسی وجہ سے بے ہوش ہے ۔۔۔
زینی کی انکھیں بند تھیں ۔۔۔مریم کے جھنھوڑنے پر اس کے لب ہلے ۔۔۔۔
وہ نیم بے ہوشی میں بابا کو بلا رہی تھی ۔۔۔بابا بابا ۔۔۔۔ماں ۔۔۔۔ممم ممجھے چھوڑ کر نہ جاٸیں ۔۔۔بابا بابا ۔
داٶد اور مریم بمشکل اس کے جملے سن پاۓ تھے ۔۔۔۔
یہ کیا کہہ رہی ہے داٶد رات کو تو بلکل ٹھیک سوٸ تھی ۔۔۔۔مریم رونے لگی ۔۔۔۔
مریم کے بے وقت رونے پر داٶد جھنجھلا گیا اور کہنے لگا۔۔۔۔بن ساون برسات یہ رونے کا وقت نہیں ہے ۔۔۔جاٶ برتن میں پانی لاٶ اور کوٸ کپڑا بھی ۔۔۔بخار کی
وجہ سے ایسی طبیعت ہوٸ ہے ۔۔۔۔بخار کم ہوگا تو کچھ بتا سکے گی ۔۔۔۔داٶد کی بات سن کر مریم نے آنسو پونچھے اور پانی لینے کیلۓ بھاگی ۔۔۔۔۔

داٶد جان گیا تھا کہ زینی کو کوٸ صدمہ لگا ہے ۔۔۔۔ زینی کے ہاسٹل سے کچھ فاصلے پر گاڑی میں بیٹھا شخص داٶد کے دماغ میں پہلے ہی خطرے کی گھنٹی بجا چکا تھا ۔۔۔داٶد نے مریم پیلی پڑتی رنگت دیکھی تو پانی کا باٶل اس کے ہاتھ سے لے لیا ۔۔۔
لاٶ مجھے دو باٶل میں پٹیاں رکھتا ہوں ۔۔۔تم جا کر چاٸ بنا لاٶ ۔۔۔زینی کو میڈیسن بھی دینی پڑے گی ۔۔
لیکن داٶد مریم نے کچھ کہنا چاہا ۔۔۔
لیکن ویکن کچھ نہیں معمولی بخار ہے ۔۔۔ابھی اتر جاۓ گا ۔۔۔۔
داٶد نے مریم سے کہا

پانی کی پٹیاں رکھنے سے اور میڈیسن دینے سے زینی کی طبیعت کچھ سنبھلی تھی ۔۔۔
شکریہ مریم ۔۔۔شکریہ داٶد آپ نے اتنا کیا میرے لیۓ۔۔۔میں اب بہتر ہوں ۔۔میری وجہ سے آپ لوگ اپنا پروگرام ملتوی نہ کریں ۔۔ ۔۔۔۔زینی نے آنکھوں پر بازوں رکھ لیا تھا کہ کہیں اس کی سوجی ہوٸ آنکھیں مریم اور داٶد نہ دیکھ لیں ۔۔۔
زینی شکریہ کی کیا بات ہے ۔۔۔میں تو بہت پریشان ہو گٸ تھی ۔۔۔تم ٹھیک ہو جاٶ بس ۔۔۔گھومنے کا پروگرام پھر بن جاۓ گا ۔۔۔مریم نے زینی کاہاتھ اپنے ہاتھوں میں لیتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔ اور زینی کیلۓ سوپ بنانے کچن میں چلی گٸ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زینیہ آپ کے ساتھ کوٸ مسٸلہ ہے تو آپ مجھے بتا سکتی ہیں ۔۔۔۔۔مریم کے جاتے ہی داٶد نے زینی سے کہا ۔۔۔
زینی کانپ سی گٸ ۔۔۔کہ کہیں اسے کچھ پتہ نہ چل گیا ہو ۔۔۔
مریم نے آپ کو بتایا نہیں ۔۔۔کہ میں پاکستان آرمی میں ہوں ۔۔۔۔یہاں چند کورسز مکمل کرنے آیا ہوں ۔۔۔مجھے میجر داٶد احمد کہتے ہیں ۔۔۔۔
داٶد نے زینی کے سر پر بم پھوڑا تھا ۔۔۔۔
زینی نے ماتھے پر رکھا بازو ہٹایا اور میجر داٶد کو گھورنے لگی ۔۔۔وہ اس پوزیشن میں ہی نہیں تھی کے کسی پر بھی یقین کر سکتی ۔۔۔۔
زینی کی سرخ آنکھوں میں دیکھتے ہی داٶد کا دل شدت سے چاہا تھا وقت تھم جاۓ اور وہ یونہی زینی کی ان آنکھوں کو دیکھتا رہے ۔۔۔۔
زینی کو مسلسل اپنی طرف دیکھتا پاکر داٶد نے بمشکل نظریں چراٸی تھیں ۔۔۔۔
اور کھڑکی کے پردے ہٹا کر کھڑکی سے باہر دیکھنے لگا ۔۔۔۔۔۔
جاری ہے
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 207 Print Article Print
About the Author: Sara Rahman

Read More Articles by Sara Rahman: 13 Articles with 4679 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Thanks dear
By: Sara Rahman, Ryk on Nov, 11 2019
Reply Reply
0 Like
Zabardast jani keep it up
By: Shafaq kazmi, Karachi on Nov, 11 2019
Reply Reply
1 Like
Language: