درد جدائی ۔۔۔قسط 26

(Shafaq kazmi, Karachi)

درد جدائی .۔۔۔ قسط 26 .....منصفہ شفق کاظمی

نوٹ رائیٹر کی اجازت کے بغیر کہیں پوسٹ کرنا منع ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔
منیب کے آنسٶوں نے عدن کی ہتھیلی بھگو دی تھی ۔۔۔۔عدن کی پلکوں میں ارتعاش پیدا ہوا ۔۔۔۔۔منیب کو اس کی انگلیوں میں حرکت سی محسوس ہوٸ ۔۔۔اسے لگا کہ اسے نٸ زندگی مل گٸ ہے ۔۔۔۔وہ بنا آنسو صاف کیۓ ڈاکٹر کو بلانے بھا گا ۔۔۔۔۔۔
ڈاکٹر ۔۔۔۔ڈاکٹر وہ وہ ع۔۔۔ع ۔۔۔۔عدن ٹھیک ہو رہی ہے ۔۔۔۔۔۔منیب ٹھیک سے بول بھی نہیں پا رہا تھا ۔۔۔۔۔

مبارک ہو عدن کو ہوش آرہا ہے ۔۔۔۔اب ٹھیک ہو رہی ہے ۔۔۔۔پر کوشش کریں کسی قسم کی پریشانی سے دور رکھیں ان کو اور نہ ہی کوئی پریشانی والی بات بتائیں ۔۔۔۔۔ڈاکٹر نے عدن کو چیک کر کے منیب کو ھدایت دی ۔۔۔۔۔

جی بہت بہت شکریہ ڈاکٹر صاحب ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

منیب کے آنسوؤں میں اور شدت آگئی تھی اسے یقین ہی نہیں آرہا تھا کہ عدن کو ہوش آگیا ہےاس نے اپنی ہتھیلیوں میں اس کا معصوم سا چہرہ بھر لیا وہ اس کے چہرے کو چھوا تو اسے سچ میں یقین ہوا اس کی عدن کو ہوش آگیا ہے اس نے دل میں اپنے رب کا شکر ادا کیا۔۔۔۔۔۔

م۔ ۔۔۔۔۔م۔ ۔۔۔۔۔۔۔منیب۔۔۔۔۔۔عدن بولنے کی کوشش کر رہی تھی ۔۔۔۔

ہاں عدن بولو ۔۔۔۔۔کسی طبیعت ہے اب تمہاری ۔۔۔۔وہ اس کے رخسار پر اپنی انگلیاں پھیرتا ہوا فکرمندی سے پوچھ رہا تھا۔۔۔

م۔۔۔۔میں . ۔۔۔ٹھیک ہوں ۔۔۔۔۔منیب ۔۔۔۔۔

عدن تم۔ نے میری جان نکال دی تھی پتہ میں کتنا پریشان ہوگیا تھا ۔۔۔۔۔۔ایسا بھلا کوئی کرتا ہے ۔۔۔۔۔میں پل پل مرتا تھا پل پل جیتا تھا ۔۔۔۔۔۔منیب کی آنکھوں میں آنسوں تھے۔۔۔۔معصوم سا چہرہ بنا کر وہ ایک چھوٹے بچے کی مانند شکوہ کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔

منیب کا معصوم سا چہرہ دیکھ کر ۔۔۔۔۔عدن کے لبوں پر ہلکی سی مسکراہٹ آئی جو کافی عرصہ سے کہں کھو چکی تھی۔۔۔۔۔۔۔

عدن کبھی مجھے ایسے چھوڑ کر تو نہیں جاؤ گی نہ ۔۔۔۔۔پلیز عدن مجھے چھوڑ کر مت جانا ۔۔۔۔۔ ہاں اگر تم میرے ساتھ خوش نہیں ہو گی تو میں تمہاری لائف سے دور چلا جاؤں گا پر وعدہ کرو ۔۔۔۔تم اپنا خیال رکھو گی نہ ۔۔۔۔منیب نے عدن کا ہاتھ پکڑ لیا ۔۔۔۔۔۔

عدن نے پہلی بار منیب کی آنکھوں میں اپنے لئے اتنی فکر مندی دیکھی تھی ۔۔۔۔۔ زندگی میں پہلی بار کوئی ایسا تھا جو عدن کو کھونے کے خیال سے بھی خوف زدہ ہو جاتا تھا ۔۔۔۔

تم ریسٹ کرو میں چلتا ہوں ۔۔۔۔ابھی ابھی ہوش آیا ہے تمہیں میں تمہیں پریشان کر رہا ہوں ۔۔۔۔۔ویسے بھی ڈاکٹر نے کہا تمہیں کسی قسم کی پریشانی سے دور رکھوں ۔۔۔۔۔تمہاری حالت کا زمہ دار بھی میں ہی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہیں تم پھر سے ہی ۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ کہتے ہی منیب اٹھ کھڑا ہوا ۔۔۔۔۔۔عدن نے منیب کا ہاتھ پکڑ لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

منیب ۔۔۔مت جاؤ نہ پلیز ۔۔۔۔۔یہیں رہو میرے پاس ۔۔۔۔۔۔

ہیں ؟؟؟؟ منیب نے عدن کو حیرت بھری نگاہ سے دیکھا ۔۔۔۔۔۔سچ میں یہیں رہوں تمہارے پاس ۔۔۔۔۔۔منیب واپس سے بیٹھ گیا ۔۔۔۔اوہ ۔۔۔اچھا ۔۔۔اچھا ۔۔۔۔۔شکریہ ۔۔۔۔شکریہ ۔۔۔۔۔۔میں صرف یہاں نہیں عمر بھر تمہارے ساتھ رہنے کو تیار ہوں ۔۔۔۔۔۔تم ذرا ہاں تو کرو۔۔۔۔۔۔منیب کی اس حرکت پر عدن بے سختہ ہنسی ۔۔۔۔۔۔۔منیب کا دل کر رہا تھا وقت تھم جاۓ ۔۔۔۔وہ یوں ہی عدن کو مسکراتا ہوا دیکھتا رہے ۔۔،۔۔۔۔عدن کتنے عرصے بعد مسکرائی تھی نہ ۔۔۔۔۔۔۔کتنا خوبصورت پل تھا منیب کے لیے ۔۔۔۔۔

۔................
م۔۔۔مم۔۔مجھے تو یہ سمجھ نہیں آتی آخر انہوں نے پکڑا کیسے ہمیں ۔۔۔۔باس ہکلاتے ہوۓ ان تینوں سے کہنے لگا ۔۔۔۔ ابھی وہ تینوں کچھ کہنے کیلۓ منہ کھولنے ہی والے تھے کہ بلیک ٹاٸیگر روم میں داخل ہوا ۔۔۔۔۔اور طنزیہ لہجے میں کہنے لگا ۔۔۔میجر رام داس تو آپ کیا فرما رہے تھے ۔۔دوبارہ سے پوچھیۓ ۔۔۔اور ہم سے پوچھیۓ ۔۔ہم ہیں ناں آپ کے ہر سوال کا جواب دینے والے ۔۔۔۔تت۔۔۔۔تت ۔۔۔۔تم ۔۔۔تم کون ہو اور میرا نام رام داس نہیں ہے ۔۔۔نہ میں کوٸ میجر ہوں ۔۔۔ممم ۔۔۔۔مم مجھے آزاد کر دو ۔۔۔۔۔۔رام داس بدحواسی میں چیخنے لگا ۔۔۔۔اتنا ڈر کیوں رہے ہو ۔۔۔بلیک ٹاٸیگر رام داس کے قریب آیا ۔۔۔۔اور اپنے دونوں ہاتھوں سے رام داس کی گردن کو ایک خاص زاویے میں گھمایا ۔۔۔۔۔رام داس کے جسم نے ایک جھٹکا کھایا ۔۔۔وہ ایسے تڑپنے لگا اسے کسی نے الیکٹرک شاک لگا دیا ہو۔۔۔۔اور ساتھ ہی بھیانک انداز میں چلانے لگا ۔۔۔۔مم مجھے ٹھیک کر دو ۔۔میں سب بتاٶں گا۔۔۔بھگوان کا واسطہ مجھے اس اذیت سے نکالو ۔۔۔۔۔اس کی چیخیں پورے فارم ہاٶس میں گونجنے لگیں ۔۔۔۔۔
باقی تین باس کا حال دیکھ کر تھر تھر کانپنے لگے تھے ۔۔۔۔۔ان کے رنگ زرد پڑ گۓ تھے ۔۔۔۔مجھے تمہارے سوال کا جواب تو دینے دو پیارے ۔۔۔تم نے ہمارے باس کی موت کا جو پلان بنایا تھا اور جہاں سے تم نے کرمنل ہاٸر کیۓ تھے ۔۔۔۔اس کے بارے کیا خیال ہے تمہارا ۔۔۔۔۔خدا کا واسطہ مجھے اس اذیت سے نکالو۔۔۔رام داس مسلسل تڑپ رہا تھا ۔۔اس کے چہرے پر شدید تکلیف کے آثار تھے ۔۔۔۔۔

۔میجر رام داس تمہیں کیا لگا تھا ۔۔۔ڈارک ویب تمہارے سارے کرتوت چھپا لے گی ۔۔۔تم وہاں سے کرمنل ہاٸر کرو گے۔۔۔ڈرگز کا کاروبار کرو گے۔۔۔۔پاکستان کے معصوم بچوں کو زیادتی کا نشانہ بناٶ گے ۔۔۔۔ہماری ساٸنٹیفک ریسرچز چوری کرو گے ۔۔۔تمہاری حرام کی کماٸ ۔۔۔اور حرام کام تمہیں بچا لیں گے ۔۔۔۔ ہم اللہ کے سپاہی ہیں ۔۔۔ہمارا مقصد سرکار کی خوشنودی پیسہ کمانا اور عیاشی کرنا نہیں ہے ۔۔۔۔۔یہ تو محض ڈارک ویب تھی ۔۔۔اگر تم سمندر کی تہہ میں بھی گھس جاتے تو ہم تمہیں وہاں سے ڈھونڈ نکالتے ۔۔بلیک ٹاٸیگر غصے اور نفرت سے پھنکارا تھا ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب میں تمہیں جو کہوں گا ۔۔۔۔شرافت سے ہر بات مانو گے تم میری ۔۔۔نہیں ابھی تو یہ شروعات ہے ۔۔۔۔۔میں تمہارا وہ حشر کرو گا کہ تم موت بھی مانگو گے تو وہ بھی نہیں آۓ گی تمہیں ۔۔۔۔بلیک ٹاٸیگر کا لہجہ اتنا کرخت اور خوفناک تھا ۔۔۔کہ باقی تینوں بھی کانپ کر رہ گۓ تھے ۔۔۔۔رام داس اذیت اور درد سے چلّاتے ہوۓ کہنے لگا ۔۔۔بھگوان کا واسطہ تمہیں تمہارے اللہ کا واسطہ مجھے اس اذیت سے نکال دو ۔۔۔۔تم جو کہو گے میں وہ کروں گا بس تم میری اذیت ختم کر دو ۔۔۔۔
بلیک ٹاٸیگر تلخی سے مسکرایا اور رام داس کو بالوں سے پکڑ کر ایک زور دار جھٹکا دیا۔۔۔رام داس کی حالت ٹھیک ہونے لگی ۔۔۔۔۔۔۔

(جاری ہے)
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shafaq kazmi

Read More Articles by Shafaq kazmi: 84 Articles with 48635 views »
Follow me on Instagram
Shafaq_Kazmi
Fb page
Shafaq kazmi-The writer
.. View More
19 Nov, 2019 Views: 491

Comments

آپ کی رائے