خدارا اپنی اولاد کو اولاد سمجھیں

(Sara Rahman, Rahim yar khan)
اولاد کے کردار پر شک صرف وہ والدین ہی کرتے ہیں ۔۔۔جن کو خود پر اور خود کی تربیت پر شک ہو ۔۔۔۔۔
خدارا ۔۔۔اولاد کو اولاد سمجھیں ۔۔۔زر خرید غلام نہیں۔۔۔۔۔اولاد کو اتنی محبت اتنی اپناٸیت دیں ۔۔۔کہ انہیں باہر سے محبتیں تلاش کرنے کی ضرورت ہی محسوس نہ ہو ۔۔۔انہیں چور دروازے دھونڈنے کی ضرورت نہ پڑے ۔۔۔۔آپ کے رویے سے دل برداشتہ ہو کر وہ ایسا قدم ہی نہ اٹھا لیں جو آپ کیلۓ زلت و رسواٸ اور خودان کیلۓ اذیت کا باعث ہو ۔

آمنہ کیا ہوا ہے ۔۔۔؟منہ کیوں لٹکایا ہوا ہے تم نے ۔۔۔۔؟میں جیسے ہی آمنہ کے روم میں داخل ہوٸ وہ کسی گہری سوچ میں گم تھی ۔اس کےچہرے سے پریشانی ٹپک رہی تھی ۔۔۔

میرے پوچھنے کی دیر تھی کہ آنسو ٹپ ٹپ ٹپ اس کی آنکھوں سے گرنے لگے تھے۔۔۔۔۔

کچھ بتاٶ تو کیا ہواہے ۔۔۔۔؟ آمنہ ۔۔میں نے آمنہ کو گلے لگایا ۔۔۔۔اور اس کے آنسو صاف کیۓ ۔۔۔۔۔

یار وہی بات ہے ۔۔۔۔مامابابا کو مجھ پر یقین ہی نہیں ہے ۔۔۔ہر وقت میرے کردار کی دھجیاں اڑانے پر تلے رہتے ہیں ۔۔۔۔بابا کے سامنے تو میں جا بھی نہیں سکتی ہوں ان کو لگتا ہے میں ان کیلۓ آزماٸش ہوں ۔۔تم بتاٶ اتنی بری دنیا میں پیدا ہونے کا کس کا دل کرتا ہے ۔۔جہاں ہر پل انسان اپنی نظروں میں گرے ۔۔پل پل مرے ۔۔جہاں کوٸ اپنا نہ ہو ۔۔۔۔۔میرا دل کرتا ہے۔۔۔چھپ جاٶ ں یا کسی ایسی جگہ چلی جاٶں ۔۔۔جہاں کوٸ نہ ہو ۔۔۔جہاں خوف نہ ہو ۔۔۔کوٸ ایسا نہ ہو جو مجھے میرے ہونے کے طعنے دے ۔۔۔۔

اب ایساکیا ہواہے ۔۔۔میں نے سوالیہ انداز میں پوچھا ۔۔۔۔؟

نمرہ کال کر رہی تھی ۔۔۔رات کو دیر سے مجھے نیند آگٸ ۔۔۔۔موباٸل کی آواز سے ماما کی آنکھ کھل گٸ ۔۔۔۔مجھے جھنجھوڑ کے اٹھایا۔۔۔تب سے کہہ رہیں ہیں ۔۔اتنی رات کو کون ہے جو کال کرتا ہے ۔۔۔۔۔میں تھک گٸ ہوں یار ۔۔۔۔۔۔

آمنہ دوبارہ رونے لگی تھی ۔۔۔اگر ان کو مجھ پر اعتبار نہیں ہے تو لے لیں مجھ سے موباٸل ۔۔۔میرے کردار پر شک کر کے مجھے میری ہی نظروں میں گرا دیتے ہیں یہ لوگ ۔۔۔۔تم میری دوست ہو تمہیں تو پتہ ہے ۔۔میرا کیا قصور ہے ؟۔۔۔۔بچپن سے ہی ایسا ہوتا آرہا ہے میرے ساتھ ۔۔۔۔میرا دل کرتا ہے میں مر جاٶں ۔۔۔

میں اسے تسلی دینے کے علاوہ کچھ نہیں کر سکتی تھی ۔۔۔

میں افسردہ سی گھر واپس آگٸ ۔۔۔

افرا ٕ ۔۔۔بیٹا۔۔۔۔ اٹھو ۔۔۔جلدی اٹھو ۔۔۔ماما میرے روم میں آٸیں اور مجھے جگانے لگیں ۔۔۔۔کیا ہوا ماما ۔۔۔ایسے کیوں ری ایکٹ کر رہی ہیں ۔۔۔میں آنکھیں ملتے ہوۓ اٹھی اور ماما سے پوچھنے لگی ۔۔۔۔

پتہ نہیں آمنہ کو کیا ہوگیا ہے ۔۔۔جلدی اٹھ جاٶ اس کے گھر جانا ہے ۔۔۔۔کیا ہوا آمنہ کو ماما مجھے بتاٸیں ۔۔۔؟ یہ بات سن کر مجھے اپنی جان نکلتی محسوس ہو رہی تھی ۔۔۔۔شاید آمنہ نے خودکشی کر لی ہے۔۔ماما خود بھی رو رہی تھیں ۔۔۔اس کے گھر سے رونے کی بھی آوازیں آرہی ہیں ۔۔۔۔لیکن اس کا تو آج نکاح ہے ناں ماما ؟۔۔۔وہ بھی زبردستی کر رہے تھے اس کے گھر والے ۔۔۔۔۔میں روتے ہوۓ ماما کو کہنے لگی ۔۔۔اب کیا کہا جاسکتا ہے ۔۔۔تم تیار ہو جاٶ ۔۔۔پھر جانا بھی ہے ۔۔ماما بھی افسردہ سی باہر چلی گٸیں ۔۔۔۔

آمنہ ہم سب کو چھوڑ کے جا چکی تھی ۔۔۔۔وہ آمنہ جس کی میں واحد دوست تھی ۔۔۔جس کا کردار حوروں جیسا شفاف تھا ۔۔۔۔جو اپنے حق کیلۓ بولی ۔۔۔تو اسے بدکردار کہا گیا ۔۔۔اس کا نکاح زبردستی طے کر دیا گیا ۔۔کہ کہیں بھاگ نہ جاۓ ۔۔۔۔

والدین اولاد کو پال پوس کر بڑا کرتے ہیں ۔۔۔اولاد کو پال پوس کر بڑا کرنا ان کی ذمہ داری ہے۔۔۔لیکن زندگی گزارنے کا خوش رہنے کا اولاد کا بھی حق ہوتا ہے ۔۔۔اگر بچے آپ کے کسی فیصلے کے خلاف ہوں ۔۔تو اک پل کیلۓ ضرور سوچیں ۔۔۔کہ وہ ایسا کر رہے تو کیوں کر رہے ہیں ؟ اور آپکا فیصلہ کس حد تک بہتر اور درست ہے ۔۔وہ غلط ہیں تو کہاں پر ۔۔۔اولاد کو اولاد سمجھیں ۔۔۔غلام سمجھ کر اپنی مرضی مسلط کرنے کا حق دنیا کا کوٸ مذہب کسی بھی ماں باپ کو نہیں دیتا ۔۔۔۔

اور اگر اولاد آپ کے فیصلے سے اختلاف کر رہی ہے ۔۔۔تو اس کا مطلب ہر گز یہ نہیں کہ وہ نافرمان ہے ۔۔۔یا بدکردار ۔۔۔

اولاد کے کردار پر شک صرف وہ والدین ہی کرتے ہیں ۔۔۔جن کو خود پر اور خود کی تربیت پر شک ہو ۔۔۔۔۔

خدارا ۔۔۔اولاد کو اولاد سمجھیں ۔۔۔زر خرید غلام نہیں۔۔۔۔۔اولاد کو اتنی محبت اتنی اپناٸیت دیں ۔۔۔کہ انہیں باہر سے محبتیں تلاش کرنے کی ضرورت ہی محسوس نہ ہو ۔۔۔انہیں چور دروازے دھونڈنے کی ضرورت نہ پڑے ۔۔۔۔آپ کے رویے سے دل برداشتہ ہو کر وہ ایسا قدم ہی نہ اٹھا لیں جو آپ کیلۓ زلت و رسواٸ اور ان کیلۓ اذیت کا باعث ہو ۔۔۔اور کوٸ آمنہ اپنی ہی نظروں میں گر کر اپنے ہی ہاتھوں اپنی زندگی کا خاتمہ نہ کرے ۔۔۔۔
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 544 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Sara Rahman

Read More Articles by Sara Rahman: 18 Articles with 7060 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Sara Rahman: kafi had tk ap ki bat theak hay lakin ,yaha phone ka zikar hay to behatr hay kay olad ko phone jise afat se door hi rakha jae is se shak kay darwazay kafi had tk band hojaengy or ghar ka mahol etana acha or muhabat bhara ho kay olad ko kise bahar kay dost ki zarort mehsos na ho.ager ho bhi to talimi had tk khal kud ki had tk ho. or jis hath main phone de dety hain waldain use hath mian ager books dain to bachon kay sth sth bohat se as pass kay logoun ki zindagiyan bhi sanwar jaengi. ALLAH PAK reham farmae ameen suma ameen
By: shohaib haneef, karachi on Jan, 03 2020
Reply Reply
1 Like
Language: