آخرت کی تیاری

(Muhammad yamin, Karachi)
آخرت کی تیاری ایک وصیت کے ذریعے

ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﯿﭩﮯ ﺳﮯ ﻭﺻﯿﺖ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﮩﺎ : ﺑﯿﭩﺎ ! ﻣﯿﺮﮮ ﻣﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﺮﮮ ﭘﯿﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﭘﮭﭩﮯ ﭘﺮﺍﻧﮯ ﻣﻮﺯﮮ ﭘﮩﻨﺎ ﺩﯾﻨﺎ ,ﻣﯿﺮﯼ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﮨﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﻗﺒﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﺗﺎﺭﺍ ﺟﺎﺋﮯ ﺑﺎﭖ ﮐﺎ ﻣﺮﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻏﺴﻞ ﻭ ﮐﻔﻦ ﮐﯽ ﺗﯿﺎﺭﯼ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﯽ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺣﺴﺐ ﻭﻋﺪﮦ ﺑﯿﭩﮯ ﻧﮯ ﻋﺎﻟﻢ ﺩﯾﻦ ﺳﮯ ﻭﺻﯿﺖ ﮐﺎ ﺍﻇﮩﺎﺭ ﮐﯿﺎ ﻣﮕﺮ ﻋﺎﻟﻢ ﺩﯾﻦ ﻧﮯ ﺍﺟﺎﺯﺕ ﻧﮧ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ :ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺩﯾﻦ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺖ ﮐﻮ ﺻﺮﻑ ﮐﻔﻦ ﭘﮩﻨﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺍﺟﺎﺯﺕ ﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﻟﮍﮐﮯ ﻧﮯ ﮐﺎﻓﯽ ﺍﺻﺮﺍﺭ ﮐﯿﺎ ﺟﺴﮑﯽ ﺑﻨﺎﭘﺮ ﻋﻠﻤﺎﺀ ﺷﮩﺮ ﺍﯾﮏ ﺟﮕﮧ ﺟﻤﻊ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﺎﮐﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﺘﯿﺠﮧ ﻧﮑﻞ ﺳﮑﮯ , ﻣﮕﺮ ﮨﻮﻧﺎ ﺳﮑﮯ , ﻣﮕﺮ ﮨﻮﻧﺎ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ ..... ﻟﻔﻈﯽ ﺗﮑﺮﺍﺭ ﺑﮍﮬﺘﯽ ﮔﺌﯽ .....

ﺍﺳﯽ ﺍﺛﻨﺎﺀ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﻭﺍﺭﺩ ﻣﺠﻠﺲ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﻮ ﺑﺎﭖ ﮐﺎ ﺧﻂ ﺗﮭﻤﺎﺩﯾﺎ ﺟﺴﻤﯿﮟ ﺑﺎﭖ ﮐﯽ ﻭﺻﯿﺖ ﯾﻮﮞ ﺗﺤﺮﯾﺮ ﺗﮭﯽﻣﯿﺮﮮ ﭘﯿﺎﺭﮮ ﺑﯿﭩﮯ , ﺩﯾﮑﮫ ﺭﮨﮯ ﮨﻮ؟ﮐﺜﯿﺮ ﻣﺎﻝ ﻭﺩﻭﻟﺖ , ﺟﺎﮦ ﻭ ﺣﺸﻢ , ﺑﺎﻏﺎﺕ , ﮔﺎﮌﯼ , ﮐﺎﺭﺧﺎﻧﮧ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﺎﻡ ﺍﻣﮑﺎﻧﺎﺕ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﮐﯽ ﺑﮭﯽ ﺍﺟﺎﺯﺕ ﻧﮭﯿﮟ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﻮﺳﯿﺪﮦ ﻣﻮﺯﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻟﮯ ﺟﺎﺳﮑﻮﮞ ﺍﯾﮏ ﺭﻭﺯ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻣﻮﺕ ﺁﺋﮯ ﮔﯽ ﺁﮔﺎﮦ ﮨﻮﺟﺎﺅ ﮐﮧ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﯾﮏ ﮐﻔﻦ ﮨﯽ ﻟﯿﮑﮯ ﺟﺎﻧﺎ ﭘﮍﮮ ﮔﺎﻟﮩﺬﺍ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﻧﺎ ﮐﮧ ﺟﻮ ﻣﺎﻝ ﻭ ﺩﻭﻟﺖ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﻭﺭﺛﮧ ﻣﯿﮟ ﭼﮭﻮﮌﯼ ﮨﮯ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺍﺳﺘﻔﺎﺩﮦ ﮐﺮﻧﺎ ﻧﯿﮏ ﺭﺍﮦ ﻣﯿﮟ ﺧﺮﭺ ﮐﺮﻧﺎ ﺑﮯ ﺳﮩﺎﺭﻭﮞ ﮐﺎ ﺳﮩﺎﺭﺍ ﺑﻨﻨﺎ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺟﻮ ﻭﺍﺣﺪ ﭼﯿﺰ ﻗﺒﺮ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ ﻭﮦ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﺍﻋﻤﺎﻝ ﮨﻮﻧﮕﮯ

پھر کیا خیال ہے بھائی تیاری کرنی ہے یا نقل کرنی ہے ۔ہائے افسوس وہاں تو نقل بھی نہیں ہو گی اب کیا کرنا ہے بھائی ذرا مجھے بھی بتادیں تاکہ میں بھی تیاری کر لوں
الموت الموت الموت الموت الموت الموت الموت الموت
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 275 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Muhammad yamin
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language:    

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ