ناول وطن یا کفن ۔۔۔۔قسط نمبر 4

(Shafaq kazmi, Karachi)

ناول وطن یا کفن قسط 4 مصنفہ شفق کاظمی

۔۔ . ۔
کیپٹن حسن میں آپ کی باس ہوں۔۔۔۔۔اپنی باس کو سلوٹ کیجیئے ۔۔۔۔۔

تم باس نہیں تم فلم ہو وہ بھی بہت بڑی کیپٹن حسن نے ہنستے ہوۓ کہا ۔۔۔

افسوس آپ اپنی باس کو فلم کہہ رہے ہیں آپ کے خلاف سخت سے سخت کروائی کی جاۓ گی ۔۔۔امرحہ نے منہ بناتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔

افففف میں تو ڈر گیا ۔۔۔۔۔باس مجھے بہت دیر ہو رہی ہے ضروری کام ہے اگر آپ کی اجازت ہو تو میں جاؤں ہم پھر ملیں گے ۔۔۔

جی جائیں کام کیجیۓ اپنا لیکن سلوٹ کر کے جائیں مجھے ۔۔۔۔

کیپٹن حسن نے امرحہ کو سلوٹ کیا ۔۔۔۔کیپٹن حسن کے سلوٹ کرنے پر امرحہ بہت خوش ہوئی ۔۔۔۔ٹھیک ہے اب آپ جا سکتے ہیں ۔۔۔۔

۔بچی نہیں افلاطون ہے یہ تو کیپٹن حسن بڑبڑاتے ہوۓ وہاں سے چلے گئے ۔۔

امرحہ گھر آتے ہی اسکول کا ہوم ورک کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔
ارے واہ آج تو امرحہ بہت خوشی سے ہوم ورک کر رہی ہے ۔۔۔۔۔۔ہرلین نے پلیٹ میں اچار ڈالتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔۔
جی ماما مجھے بڑے ہو کر آفیسر بھی تو بننا ہے دھرتی ماما کا خیال بھی تو رکھنا ہے ۔۔۔تو اس لئے ابھی میں ہوم ورک کر رہی ۔۔۔۔

امرحہ یہ تمہاری اسکول کی کاپی میں یہ کس ٹائپ کے نمبر لکھے ہیں یہ تو گاڑیوں کے نمبر لگ رہے ہیں ۔۔۔۔۔۔ہرلین کی امرحہ کی کاپی پہ نظر پڑی تو وہ چونک گئیں ۔۔۔ہرلین نے حیرت سے امرحہ کی جانب دیکھتے ہوۓ سوال کیا۔۔۔۔

ماما میں باہر بیٹھی تھی ۔۔۔تو وہاں سے جو بھی گاڑی گزر رہی تھی میں نے ان سب کے نمبر نوٹ کر لئے تھے۔ ۔۔۔۔تا کہ برے انکل کو پکڑنے میں پولیس انکل کی مدد کر سکو ۔۔۔۔۔امرحہ یہ کہہ کر پھر سے ہوم ورک کرنے میں مصروف ہوگئی ۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عاید صاحب یہ دیکھیں امرحہ کے کام ۔۔۔۔۔کاپی میں گاڑیوں کے نمبر لکھے ہوۓ ۔۔۔۔۔سارا دن روڈ پہ بیٹھی رہتی ۔۔۔کہتی ہے میں اپنی دھرتی ماما کا خیال رکھ رہی ہوں ۔۔۔۔۔عاید صاحب مجھے بہت فکر ہو رہی ہے امرحہ کی ۔۔۔۔۔ہماری بس ایک ہی بیٹی ہے ۔۔۔۔محبت کرے بے شک کرے ہمیں بھی اپنے وطن سے بے حد محبت ہے ۔۔۔۔لیکن امرحہ لڑکی ہے ۔۔۔۔اور بیٹیوں کے اتنے مسائل ہوتے ہیں ۔۔۔۔بیٹا ہوتا تب بھی ہم سوچتے ۔۔۔۔۔۔

ہرلین تم ایسے ہی فکر کر رہی ہو امرحہ ۔ ابھی چھوٹی سی بچی ہے ۔۔۔۔وقت کے ساتھ ساتھ شوق بھی بدل جاۓ گا ۔۔۔۔

لیکن عاید صاحب ہمیں اس کا ذہن کسی اور طرف لگانا ہو گا ابھی سے ہی ۔۔۔۔۔

ڈونٹ وری ہرلین ۔۔۔۔کچھ نہیں ہوگا ۔۔۔۔۔۔

لیکن ۔۔۔۔۔۔۔

کہا نہ ڈونٹ وری اچھا جاؤ چاۓ لے کر آؤ بہت کام ہے آج سر میں درد ہو رہا ہے چائے پینے سے بہتر ہو جاۓ گا ۔۔۔۔۔۔عاید نے ہرلین کی بات کاٹتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔۔۔

ہممممم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہوم ورک تو ہوگیا ہے میرا ۔۔۔۔ایک کام کرتی ہوں نانا نانی کے گھر چلی جاتی ہوں ۔۔۔۔

ماما میں نانی امی کے گھر جا رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔

امرحہ اکیلے کیسے جاؤ گی ۔۔۔۔آیا کے ساتھ چلی جاؤ ۔۔۔۔۔

اوہ ہو ماما آپ بھی نہ اتنا کیوں ڈرتی ہیں ۔۔۔۔۔قریب ہی تو ہے نانی امی کا گھر ۔۔۔۔۔۔میں اکیلے چلی جاؤں گی ۔۔۔۔۔۔

اچھا ٹھیک ہے خیال سے جانا اور سنو یہ اچار بھی لیتی جانا تمہاری نانی امی کو بہت پسند ہے ۔۔۔۔۔

جی ٹھیک ہے ماما دے دیں میں لے جاؤں گی ۔۔۔۔۔

خیال سے لے کر جانا ۔۔۔گرا تو نہیں دو گی نہ ۔۔۔۔۔

نہیں نہیں ماما آپ دے دیں ۔۔۔۔

اچھا یہ لو۔۔۔۔ہرلین نے امرحہ کے ہاتھ میں پلیٹ دیتے ہوۓ کہا ۔۔۔۔
امرحہ جہاں رہتی تھی اس کے گھر کے پاس ایک بڑا سا گراؤنڈ تھا اس کو کراس کرنے کے بعد تھوڑا آگے کچھ فاصلے پر ۔۔۔۔امرحہ کی نانی کا گھر تھا ۔۔۔۔

امرحہ نے دیکھا گراؤنڈ میں کچھ لوگ کسی کو مار رہے ہیں
امرحہ پہلے تو خوف زدہ ہوگئی ۔۔۔۔پھر تھوڑی ہمّت کر کے درخت کے پیچھے چھپ گئی تا کہ امرحہ دیکھ سکے کس کو مار رہے ہیں یہ ظالم لوگ ۔۔۔۔۔۔۔
امرحہ کا دل دھک دھک کر رہا تھا ۔۔۔۔اس کو نظر ہی نہیں آرہا تھا کون ہیں وہ لوگ ۔۔۔۔بس ان کی آوازیں امرحہ تک آرہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔

میں تجھے کچھ نہیں بتاوّں گا چاہے جو مرضی کر لے میں نہیں ڈرتا تجھ سے ۔۔۔۔۔۔

تجھے میں جان سے مار دوں گا ۔۔۔۔۔

ہاہاہا شہید کی جو موت ہے وہ قوم کی حیات ہے ۔۔۔۔۔شہادت تو مشن ہے اپنا ۔۔۔۔۔

پھر ان میں سے کسی ظالم درندے نے ایک تیزابی سپرے اس بندے کی آنکھوں میں چھڑک دیا ۔۔جس سے وہ تڑپتا ہوا نیچے گر گیا ۔۔۔۔۔۔

چل ابھی بھی موقع ہے تیرے پاس ۔۔۔چل راز نہ بتا پاکستان مردہ باد بول دے ۔۔اس درندے نے بالوں سے زور سے پکڑ کر سر اُوپر کیا ۔۔۔۔۔۔

پاکستان زندہ باد ۔۔۔۔۔۔اور ہمیشہ زندہ باد ہی رہے گا ان شاء اللّه ۔۔۔۔تم لوگ کیا کر سکتے ہو زیادہ سے زیادہ مجھے مار سکتے ہو ۔۔۔۔۔۔تم لوگ بزدل ہو تم لوگوں کی جرت ہی نہیں ہمارا مقابلہ کر سکو ۔۔۔۔۔
اس درندے نما انسان کو اگ لگ گئی ۔۔جب وہ اپنی تمام کوششوں کے باوجود بھی راز نہ نکلوا سکا ۔۔۔۔۔تو گھوٹنوں کے بل بیٹھ گیا پھر جیب سے تیز چاقو نکل کر۔ اس کی زبان پکڑ۔ لی اور بہت ہی بے دردی سے زبان کاٹ دی ۔۔۔۔۔۔

اففف کیپٹن صاحب ماننا پڑے گا تمہارے جذبہ کو آنکھوں میں تیزاب بھی ڈال دیا ہم لوگوں نے زبان بھی کاٹ دی اس کے باوجود بھی ایک راز نہیں بتایا تم نے ۔۔۔۔اس نے گن اٹھائی اور ٹریگر دبا دیا ۔۔۔۔۔۔کیپٹن کو آٹھ گولیاں مار کر وہاں سے فرار ہوگئے ۔۔۔۔امرحہ نے گاڑی کا نمبر نوٹ کر لیا تھا ۔۔۔۔ڈر کے مارے ہاتھ سے اچار کی پلیٹ گر گئی ۔۔۔۔۔۔ان کے جانے کے بعد امرحہ ہمّت کر کے ۔۔۔۔جب پاس آئ تو سامنے کوئی اور نہیں بالکہ کیپٹن حسن تھے ۔۔۔۔۔۔
کیپٹن حسن کو بے دردی سے شہید کر دیا گیا تھا ۔۔۔۔

حسن انکل ۔۔۔۔انکل اٹھیں انکل کیا ہوگیا آپ کو ۔۔۔۔پلیز آنکھیں کھولیں ۔۔۔۔آئی ایم سوری میں آپ کو دوبارہ شہید ہونے کا نہیں کہوں گی انکل میں مذاق کر رہی تھی پلیز آنکھیں کھولیں ۔۔۔پلیز
امرحہ روتے ہوۓ کیپٹن حسن کو اٹھانے لگی اس کے ننھے ننھے ہاتھ خون سے بھر گۓ تھے ۔۔۔۔شرٹ پر بھی خون لگ گیا تھا ۔۔۔۔ امرحہ کی نظر کیپٹن حسن کے جوتوں کے ساتھ گرے کاغذ پر پڑی ۔۔۔۔جیسے ہی امرحہ نے کاغذ اٹھایا ۔۔۔ہاتھوں پر لگا خون سفید کاغذ کو سرخ کر گیا تھا ۔۔۔۔امرحہ روتے ہوۓ کاغذ پر لکھے الفاظ پڑھنے لگی ۔۔
‏شہید تم سے یہ کہ رہے ہیں لہو ہمارا بھلا نہ دینا
ہماری ماؤں کے بہتے آنسو قسم ہے تم کو بھلا نہ دینا
وضوہم اپنے لہو سے کر کے خدا کے ہاں سرخرو ہیں ٹھرے
ہم عہد اپنا نبھا چلے ہیں تم عہد اپنا بھلا نہ دینا
قسم ہے تم کو اے سرفروشو ! عدو ہمارا بھلا نہ دینا
امرحہ نے روتے ہوۓ وہ الفاظ پڑھے تھے ۔۔۔کاغذ کو چومتے ہوۓ کاغذ کو کسی قیمتی متاع کی طرح سمیٹ کر اپنی ڈاٸری میں رکھ لیا تھا ۔۔۔بابا کو بلانے کیلۓ گھر کی سمت بھاگی ۔۔۔۔

)جاری ہے )
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 221 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Shafaq kazmi

Read More Articles by Shafaq kazmi: 78 Articles with 27491 views »
میرا نام شفق کاظمی ہے ۔۔۔۔میں کراچی سے ہوں ۔۔۔۔میں آفیشل۔ لیکھاری ہوں ۔۔۔نیوز پیپر میں بھی لکھ رہی ہوں ۔۔۔اس کے ساتھ ساتھ میں شاعری بھی کرتی ہوں .. View More

Comments

آپ کی رائے
Language: