سیاسی کھیل

(Qazi Zain Ul Abidin, )

انسان کی فطرت میں یہ بات موجود ھے کہ جب وہ کوئی کھیل دیکھ رھا ھو تو وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ اس کے ذہن میں مختلف طرز کے خیالات جنم لیتے ھیں۔ وہ مختلف قسم کے کے تبصرے کرتا ھے۔ کبھی وہ تماشائی ھو تو کھلاڑیوں پر تنقید بھی کرتا ھے اور بعض اوقات تعریف بھی کرتا ھے۔ کئی مرتبہ ایسا بھی ھو جاتا ھے کہ کسی ایک کھلاڑی سے فطری طور پہ محبت ھو جاتی ھے اور کچھ کھلاڑیوں سے نفرت ھو جاتی ھے۔ وہ کھلاڑی جس سے محبت ھو وہ برا کھیل بھی پیش کرے تو یہ سبجیکٹو اپروچ والا تماشائی مائنڈ تک نہیں کرتا مگر اس کے بر عکس جس کھلاڑی سے نفرت ھو وہ اچھا کھیل پیش کرے تو پھر یہی تماشائی داد دے گا مگر عجیب طریقہ سے یا پھر طنزیہ انداز اختیار کرے گا۔ انہی تماشائیوں میں کچھ اس حد تک متشدد ھوتے ھیں کہ ان کے تبصرے سننے کو ہر کسی کا جی چاہ رھا ھوتا ھے۔وہ کھلاڑیوں پر لعن طعن بھی کرتے ھیں۔ وہ کھیل مکمل سمجھتے نہیں مگر تھوڑا بہت یعنی ادھورے علم والے ھوتے ھیں اور یہ بھی دعوی کر دیتے ھیں کہ اگر اس کھلاڑی کی جگہ میں ھوتا تو یوں کھیلتا۔ مختلف طرح کے خیالی پلاؤ بھی پکا لیتے ھیں اور سننے والا اسے یوں محسوس کرتا ھے کہ جیسے وہ حقیقت میں اس کھلاڑی سے بڑھ کر کھیلنا جانتا ھے۔ مگر جب اسی تماشائی کو کھلاڑی بنا کر میدان اترنے کو کہا جاۓ تو اس وقت اس کا منہ دیکھنے کے لائق ھوتا ھے کیونکہ وہ سمجھتا کہ میں اناڑی ھوں۔ مگر پھر بھی عزت کا سوال آۓ تو وہ اپنی عزت بچانے میدان میں اتر بھی جاتا ھے۔ جب وہ اچھی کارکردگی نہیں دکھا پاتا تو طرح طرح کہ بہانے بنا کر حالات اور دوسرے ساتھیوں کو ذمہ دار اور قصوروار ٹھہرا دیتا ھے۔ مگر جو بھی ھو ایسا اناڑی اور ناقد شخص اپنے ذلت بھرے انجام کو ضرور پہنچتا ھے۔ کچھ ایسا ھی منظر آپ کو سیاست میں نظر آ جاۓ تو بعید از قیاس بات نہیں کیونکہ پاکستانی سیاست بھی کسی کھیل سے کم نہیں۔

موجودہ وزیراعظم عمران خان جو کہ مسٹر یو ٹرن کے نام سے بھی مشہور ھو چکے ھیں جب حکومت میں نہیں تھے تو بڑے بڑے دعوے کرتے نظر آۓ۔ کبھی آٹھ روپے پر یونٹ بجلی کے بل کو مہنگائی تصور کر کے آگ لگائی۔ کبھی سول نافرمانی پہ عوام کو اکسایا۔کرپشن کے خلاف آواز اٹھائی۔ غریب کی امید بن کر سامنے آۓ تھے۔ وہ حقیقی معنوں میں عوامی لیڈر کہلوانے کے دعویدار تھے۔ان کا کہنا تھا کہ جب حکومت میں آۓ تو عوام راج کرے گی المختصر وہ پنجابی میں کہتے ھیں ”میں انج کر دیاں گا میں انج کر دیاں گا“۔۔۔۔مگر آج صورتحال نا قابلِ برداشت ھے مہنگائی اتنے عروج پہ ھے غریب کا جینا محال ھے متوسط طبقہ پریشان ھے۔ بات وہیں کی وہیں کہ وزیراعظم عمران خان اب یہ کہنے لگے کہ میری تنخواہ سے تو میرے گھر کے اخراجات پورے نہیں ھو رھے۔ گویا ان کا اپنا گزارا بھی مشکل ھو چکا ھے۔ آج پاکستان میں آٹے کا بحران ھے۔ چینی کی قیمت 55 روپے سے 80 ھو گئی۔ سبزیوں اور دالوں کی قیمت میں ایک سال میں 83 فیصد اضافہ ھو چکا۔ پٹرول کی قیمت میں 22 روپے اضافہ ھوا۔گیس کی قیمت میں ناقابلِ بیان اضافہ کیا گیا۔ بجلی کا بل پر یونٹ 9روپے سے 16 روپے ھو گیا۔ یہ انتہا مہنگائی اور اس پہ ستم کہ جب یہ سوال ھو کہ اس کا ذمہ دار کون ھے؟کیا آپ نا اہل ٹھہرے؟ کیا آپ کی حکمت عملی نا کام ھوئی؟ کیا آپ کرپٹ نکلے؟ تو جواب میں ”گھبرانا نہیں“ کی گولی عوام کو دے دی جاتی ھے اور اب تو کہتے ھیں کہ سکون قبر میں ھے۔ جب اس کھلاڑی کی کارکردگی کا تذکرہ ان کے عاشقوں سے کیا جاۓ تو اِسے وہ اپنے محبوب لیڈر کی ادا جان کر دفاع کرتے ھیں۔ بہرحال وہ غریب عوام آج خود پہ لعنت کرتی ھے کہ ھم نے عمران خان صاحب سے امید لگائی۔ المختصر آج اسی اناڑی کھلاڑی اور ناقد شخص کی طرح جو باہر بیٹھ کر تنقید کرتا تھا اور کہتا تھا کہ میں اس کھلاڑی کی جگہ ھوا تو یوں کرتا، یہ وزیراعظم کی کرسی پہ براجمان ہستی خود کو اس وطن کے لیے ناگزیر سمجھ رہی ھے اس ہستی کا انجام بھی خطرے میں دکھائی دے رھا ھے۔

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 327 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Qazi Zain Ul Abidin

Read More Articles by Qazi Zain Ul Abidin: 2 Articles with 778 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language: