جنگلوں کا تحفظ انسانی بقاء ہے

(Athar Masood Wani, Rawalpindi)

پاکستان میں82خاندانوں اور226نسلوں سے تعلق رکھنے والے درختوں کی430سے زائد اقسام پائی جاتی ہیں۔دیودار کا درخت پاکستان کا سرکاری طور پر قومی درخت قرار دیا گیا ہے۔پاکستان کا صرف چار فیصد رقبہ جنگل پر مشتمل ہے۔آزاد کشمیر میں سرکاری طور پر چنار کے درخت کو قومی درخت قرار دیا گیا ہے۔آزاد کشمیر میں ہر سال پانچ ہزار ایکٹر زمین سے درخت کاٹ دیئے جاتے ہیں اور آزاد کشمیر میں اب تک پانچ لاکھ ایکڑ زمین سے درخت کاٹے جا چکے ہیں۔آزاد کشمیر کے قیام کے بع 23سال تک درختوں کی کٹائی جاری رہی اور اس دوران ایک درخت بھی نہیں لگایا گیا۔پاکستان میںجنگلات کے تحفظ کے حوالے سے لکڑی کی منتقلی کے خلاف کئی سخت قوانین موجود ہیں لیکن اس کے باوجود تمام جنگل والے علاقوں سے جنگلاتی رقبے میں کمی واقع ہو رہی ہے۔

آج کی انسانی ترقی کی بنیاد درختوں ،لکڑی سے ہی تعمیر ہوئی ہے۔جنگلاتی علاقوں کی کمی دنیا میںموسمیاتی تغیر کی ایک بڑی وجہ ہے۔ قدیم برصغیر میں حکمران شاہراہیں تعمیر کرتے وقت سڑک کے دونوں طرف درخت لگوایا کرتے تھے لیکن جدید دور میں نئی شاہراہیں ،سڑکیں تعمیر کرتے ہوئے اس کے دونوں طرف لگے درخت کاٹ دیئے جاتے ہیں اور شاہراہ کے دونوں طرف درخت لگانے کی کوئی مثال دیکھنے میں نہیں آتی۔ہمار ے ملک میں پودے ،درخت لگانے اور ان کی حفاظت کرنے کا رجحان بہت کم ہے۔البتہ پودوں کو توڑ دینا،اکھاڑ دینا ،مار دینا ایک عمومی رجحان کے طور پر نمایاں ہے۔اگر پودے لگا کر ان کی دیکھ بھال نہ کی جائے تو لوگ اسے توڑنے ،اکھاڑ پھینکنے کا کام ثواب کے کام کی طرح شوق سے کرتے ہیں۔

اس سال موسم بہار کی شجر کاری شروع ہو چکی ہے۔اگر محکمہ جنگلات شجر کاری کئے جانے والے علاقوں کی نشاندہی، تشہیر کرے تو شہری خود دیکھ سکیں گے کہ حقیقت میں شجر کاری کی گئی ہے یا صرف دکھاوے کو۔گزشتہ سال سوشل میڈیا پہ ایک وڈیو میں 'ایس سی او' کی طرف سے شجر کاری کا ایک ''کارنامہ'' دکھایا گیا تھا جس میں چیڑ درخت کی سرسبز ٹہنیاں رکھی گئی تھیں۔دور سے شجر کاری معلوم ہوتی تھی لیکن قریب سے دیکھنے پر معلوم ہوا کہ کوئی شجر کاری نہیں کی گئی ،صرف دوسروں اور خود کو بیوقوف بنانے کی مشق ہے۔اس شجرکاری پہ ایک اعلی افسر کا نام بورڈ پہ آویزاں کیا گیا تھا۔وہ افسر بھی دھوکہ کھا گئے یا وہ بھی جانتے تھے کہ یہ شجرکاری کے نام پہ خود اور دوسروں کو بے وقوف بنانے کی ایک مشق ہے۔

بعض اوقات کوئی پودا یا درخت نچلے حصے سے یوں کاٹا جاتا ہے کہ جس سے پودے/درخت کے مر جانے کا خطرہ پیدا ہو جاتا ہے۔اس پودے/درخت کو بچانے کا ایک آزمودہ طریقہ ہے جس نے نوے فیصد نتائج دیئے ہیں۔کٹے ہوئے پودے/ درختوں کے اوپر کے حصے پر اچھی طرح گیلا گارا بنا کر ، پودے/ درخت کے اس حصے پر موٹائی میں لیپ کر دیں،اوپر کا کٹا ہوا حصہ پوری طرح گارے سے ڈھک دیں، اس کے اوپر پلاسٹک شیٹ لپیٹ کر ڈورے سے باندھ دیں، دو تین دن بعد جب پودے/درخت پہ لگایا گیا گارا خشک ہو جائے تو پہلے والا عمل دوبارہ دہرائیں، بہار کا موسم ہے،قوی امید ہے کہ ان درختوں کے اوپر کے حصے سے نئی شاخ پھوٹ جائے گی۔
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 356 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Athar Massood Wani

Read More Articles by Athar Massood Wani: 586 Articles with 262071 views »
ATHAR MASSOOD WANI ,S/o KH. ABDUL SAMAD WANI
• 2006 to 2009
Press & Publication Officer
Prime minister Secretariat, Govt. of Azad Jammu & Kashm
.. View More

Comments

آپ کی رائے
Language: