’’نیو ورلڈ آرڈر‘‘ کیا ہے اور یہ مسلمانوں کیلئے کیوں نقصان دہ ہے؟۔

(Syed Noor Ul Hassan Gilani, )

اس وقت پوری دنیا میں مسلمانوں کے خلاف بہت سی سازشیں کی جارہی ہیں اور نیو ورلڈ آرڈر انہی سازشوں کی ایک کڑی ہے ۔سب سے پہلے ہمارے لئے یہ جاننا ضروری ہے کہ آخریہ نیو ورلڈ آرڈر ہے کیا اور اس کا آغاز کب ہوا تھا ؟۔دراصل نیو ورلڈ آرڈر ایک ایسا مذہب ہے جس کی بنیاد انسانی خواہشات پر قائم ہے ۔1992 ء میں نیو ورلڈ آرڈر کے نام سے دنیا میں اس نظام کو متعارف کرایا گیا۔یہ درحقیقت ایک نیا مذہب ہے جسکی بنیاد خواہشات پر قائم ہے۔ عالمی ادارے ساری دنیا میں اس نئے مذہب کو رائج کرنے کے لیے متحرک ہوئے اور آپ سوچ کر حیران ہونگے کہ 1992 ء کے بعد کتنی تیزی کے ساتھ زندگی کی ہر شعبے میں تبدیلی آئی ہے۔ ظاہراً یہ نظام اگرچہ دنیا کی اقتصادی صورتِ حال سے تعلق رکھتا ہے۔ لیکن اس نظام کو ایک ضابطہ حیات کے طور پر مسلط کیا گیا۔اخلاقیات اور دینی اعتبار سے اسکے راستے میں واحد رکاوٹ چونکہ اسلام تھا۔ چنانچہ اسلام کی ان تعلیمات کو یکسر ختم کرنے پر زور دیا گیا جو اس نئے مذہب کے راستے میں رکاوٹ بن سکتی تھی۔ لوگوں کی طرز زندگی کو مکمل اس نئے مذہب کے سانچے میں ڈھالنا عالمی اداروں کا ہدف تھا۔آپ دیکھ سکتے ہیں کہ معاشرے کے نظام کو تبدیل کرنے کے لیے ہر شعبے میں محنت کی گئی۔ لوگوں کا پہناوا کھانے پینے کے اوقات، سونا جاگنا، طرزِ رہائش انسان کی ذاتی زندگی، شادی کب ہونی چاہیے، بچے کتنے ہونے چائیے، خواہشات میں اضافہ یا تعلقات کی بنیاد، کاروبار کے طور طریقے، ان تمام باتوں میں لوگوں کو کھینچ کر اس نئے مذہب میں شامل کیا گیا۔ صرف یہی نہیں بلکہ عالمی اداروں نے اسکو بدمعاشی سے دنیا میں نافذ کرایا۔اسکے علاوہ کسی اور مذہب کو بحیثیت طرزِ زندگی یا ضابطہ حیات کے اختیار کرنے پر باقاعدہ جنگوں کا اعلان کیا گیا اور ان قوموں کا کھانا پانی بند کرنے سے لے کر ادویات تک اور پھر ان ممالک پر قبضہ کر کے وہاں اپنا یہی نیا مذہب طاقت کے زور پر نافذ کیا گیا۔اسکے بعد اسکی حفاظت کے لیے تمام دنیا کی فوج کو وہاں تعینات کر دیا گیا۔ سودی نظام اس شریعت کا اہم حصہ اور جان ہیاس نئے مذہب میں عورت ذات کو عزت کی چوٹیوں سے گرا کر فٹ پاتھوں، سڑکوں اور لمبی لمبی قطاروں میں خوار کرنا اور بغیر روک ٹوک کے مرد کی خواہشات کی تکمیل شریعت کا حصہ بنی۔ لہٰذا دنیا کو بھی اپنی عورتوں کے ساتھ ایسا ہی انصاف اور مساوات کا برتاو کرنا ہوگا۔اس نئے مذہب کا واضح خاکہ ڈاکٹر جان کولیمن نے اپنی کتاب کونسپیریٹر ہیرارکی میں کھینچا ہے۔ عالمی ادارے مختلف نعروں، ناموں اور تنظیموں کے ذریعے اس نئے مذہب میں لوگوں کو داخل کر رہے ہیں۔ ڈاکٹر کولمین کے یہ اقتسابات پڑھ کر آپ کو احساس ہوگا کہ نیو ورلڈ آرڈر محض اقتصادی صورتِ حال سے متعلق نہیں ہے بلکہ یہ مکمل ایک نظام اور ایک نیا مذہب ہے۔ ڈاکٹر جان لیمن لکھتے ہیں کہ ایک عالمی حکومت اور ایسا نظام جسکو ایک عالمی حکومت کنٹرول کر رہی ہو، مستقل غیر منتخب موروثی چند افراد کی حکومت کے تحت ہو گا، جس کے امکان قرونِ وسطی کے سرداری نظام کی شکل میں اپنی محدود تعداد میں خود کو منتخب کرینگے،اس ایک عالمی وجود میں آبادی محدود ہو گی اور فی خاندان بچوں کی تعداد پر پابندی ہو گی۔ وہاں جنگوں اور قحط کے ذریعے آبادی کنٹرول کی جائے گی۔ یہاں تک کہ صرف ایک ارب نفوس رہ جائیں جو حکمران طبقے کے لیے کارآمد ہوں۔اور ان علاقوں میں ہوں گے جن کا سختی اور وضاحت سے تعین کیا جائے گا۔ اور جہاں وہ دنیا کی مجموعی آبادی کی حیثیت سے رہیں گے۔ کوئی متوسط طبقہ نہیں ہوگا۔ صرف حاکم اور محکوم ہوں گے۔ تمام قوانین دنیا کی سچی عدالتوں میں ایک جیسے ہوں گے ان پر عملدرآمد ایک عالمی حکومت کی پولیس اور متحدہ عالمی فوج کے ذریعے تمام سابقہ ممالک میں ہو گا۔ نظام ایک فلاحی ریاست کی بنیادوں پر استوار ہو گا۔ جو لوگ ایک عالمی حکومت کے مطیع و فرمانبردار ہوں گے انہیں زندہ رہنے کے وسائل سے نوازا جائے گا۔ جو لوگ بغاوت کریں گے بھوکے مر جائیں گے یا باغی قرار دیے جائیں گے۔ صرف ایک مذہب کی اجازت دی جائے گی۔ اور وہ ایک عالمی سرکاری کلیسا کی شکل میں ہو گا جو 1920 سے وجود میں آچکا ہے۔شیطانیت، ابلیسیت اور جادوگری کی ایک عالمی حکومت کا نصاب سمجھا جائے گا۔ ہر شخص کے ذہن میں یہ عقیدہ راسخ کر دیا جائے گا کہ وہ (مرد ہو یا عورت) ایک عالمی حکومت کی مخلوق ہے اور اس کے اوپر ایک شناختی نمبر لگا دیا جائیگا۔ شناختی نمبر برسلز بیلجیم کے نیٹو کمپیوٹر میں محفوظ ہوگا۔ اور عالمی حکومت کی کسی بھی ایجنسی کی فورس دسترس میں ہوگا۔ شادی کرنا غیر قانونی قرار دیا جائیگا اس طرح کی خاندانی زندگی نہیں ہوگی جیسی آجکل ہے بچوں کو ماں باپ سے چھوٹی عمر میں علیحدہ کر دیا جائیگا۔ خواتین کو آزادی نسواں کی تحریکوں کے ذریعے ذلیل کیا جائے گا۔ جنسی آزادی لازم ہو گی۔ خواتین کا بیس سال کی عمر تک ایک مرتبہ بھی جنسی عمل سے نہ گزرنا سخت ترین سزا کا موجب بنے گا۔ ذہنی قوت سلب کرنے والی ادوایات کا استعمال بھی وسیع تر کر کے اسے لازمی قرار دیدیا جائیگا۔ ذہن پر قابو پانے والی یہ ادوایات کھانوں یا پانی کی سپلائی میں لوگوں کی مرضی یا علم کے بغیر دی جا سکیں گی ۔ تمام صنعتیں، ایٹمی توانائی سسٹم کے ذریعے تباہ کر دی جائیں گی۔اس کتاب میں جو کچھ بیان کیا گیا ہے وہ آپ اپنی آنکھوں سے عملی طور پر دیکھ سکتے ہیں۔ مثلاً عورتوں کو آزادی نسواں کی تحریکوں کے ذریعے ذلیل کیا جا رہا ہے۔ گھروں سے نکال کر بوڑھوں کے ہاسٹل میں قید و تنہائی کی زندگی گزارنے کے لیے ڈالا جا رہا ہے۔ موجودہ دنیا کو ایک عالمی گاؤں بنانے کی جو کوشش کی جا رہی ہے اس کا مقصد بھی یہی ہے کہ سب نظام ایک عالمی قوت کے ہاتھوں میں سونپ دیا جائے۔ مختلف ملکوں میں کمپیوٹرائز نظام کو تیزی سے پھیلانے کا مقصد بھی یہی ہے کہ اس کے ذریع ساری دنیا کی نگرانی کی جاتی رہے۔ نیو ورلڈ آرڈر کے بعد یہودی ملٹی نیشنلز نے بڑے بڑے تجارتی اداروں اور کمپنیوں کو خریدنا شروع کیا۔ اس نظام میں مزید تیزی 1999 کے بعد لائی گئی۔ان اقتباسات کو پڑھ کر آپ اندازہ لگا سکتے ہیں کہ نیو ورلڈ آرڈر ایک نیا مذہب ہے جسکو دجال کے پیروکار ساری دنیا پر مسلط کرنا چاہتے ہیں۔ 1999 ء وہ سال ہے جس کی بعد یہ تبدیلی اور زیادہ تیزی کے ساتھ رونما ہوتی نظر آتی ہے۔اب اگر ہم اپنے آس پاس کے ماحول پر نظر دوڑائیں تو ہمیں یہ پتا چلتا ہے کہ آج کس قدر نیو ورلڈ آرڈر کامیاب تر ہوتا جارہا ہے عورت آزادی مارچ بھی اسی آرڈر کی ایک کڑی تھی اس کے علاوہ پوری دنیا میں جس طرح مسلمانوں کا قتل عام کیا جارہا ہے اور جس طرح اقوام متحدہ جیسے اداروں نے اس پر خاموشی اختیار کی ہوئی اس طرح یہ پتا چلتا ہے کہ ب ادارے اس وقت نیو ورلڈ آرڈر کے تحت کام کررہے ہیں اور مسلمانوں کا قتل عام اسی آرڈر کی ایک کڑی ہے ۔
 

Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 257 Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Syed Noor Ul Hassan Gilani

Read More Articles by Syed Noor Ul Hassan Gilani: 17 Articles with 2768 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Comments

آپ کی رائے
Language: