سچ تو یہ ہے (۲۳واں حصہ )

(Muhammad Siddique Prihar, Layyah)

 منظر۱۷۲
نورالعین۔۔۔۔کریم بخش سے۔۔۔۔۔پیسے دے دیں دکان سے سامان منگواناہے
کریم بخش۔۔۔۔کیاسامان منگواناہے
نورالعین۔۔۔۔طارق کے لیے پکوان بناناچاہتی ہوں وہ ہفتہ کے بعدگھرآتاہے اسے ایک دن تواچھاساکھاناملناچاہیے
کریم بخش۔۔۔۔بیٹے کے لیے تواتناانتظام ہورہاہے میرے لیے توتونے کبھی اتناانتظام نہیں کیا
نورالعین۔۔۔۔آپ کیاچاہتے ہیں میں اپنے بیٹے کے لیے یہ انتظام نہ کروں ؟
کریم بخش۔۔۔۔۔میں نے یہ تونہیں کہا
نورالعین۔۔۔۔آپ یہ کہہ رہے ہیں میرے لیے اتناانتظام کبھی نہیں کیا بیٹے کے لیے بھی نہ کروں
کریم بخش۔۔۔۔میں یہ نہیں کہہ رہا بیٹے کے لیے یہ انتظام نہ کرو
نورالعین۔۔۔۔پھرایسی بات کرکے آپ کیاکہناچاہتے ہیں
کریم بخش۔۔۔۔۔میں توتعریف کررہاہوں جب سے طارق دکان پرگیاہے ماں کے دل میں بیٹے کی محبت اوربڑھ گئی ہے
نورالعین۔۔۔۔۔میرے لیے میرے دونوں بیٹے برابرہیں میں نے پیسے کیامانگ لیے اتنی باتیں سنناپڑیں پیسے دے دیں افضل کوبھیج کردکان سے سامان منگوالوں
کریم بخش۔۔۔اتناخرچہ کرنے کی کیاضرورت ہے
نورالعین۔۔۔۔کیامیں طارق کے لیے پکوان تیارنہ کروں؟
کریم بخش۔۔۔۔بیٹے کے لیے پکوان تیارکرو مگرگھرمیں
نورالعین۔۔۔۔اپنے ہاتھ سے پکوان اس وقت تیارکروں گی جب طارق کودکان پرگئے ہوئے ایک مہینہ ہوجائے گا
کریم بخش۔۔۔۔ایک مہینہ گزرنے پرخاص اہتمام ہوگا کیا
نورالعین۔۔۔۔اہتمام بھی خاص ہوگا اورخرچہ بھی زیادہ آئے گا
کریم بخش۔۔۔۔افضل کی ماں میں چاہتاہوں عارف کے ساتھ رکشے پرچلاجاؤں شہرسے طارق کوبھی لے آؤں اورکچھ سامان بھی لے آؤں
نورالعین۔۔۔۔جیسے آپ بہترسمجھیں مجھے پیسے دیتے جائیں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۷۳
عبدالمجیدکے گھرمیں دونوں گھرانوں کے تمام افرادناشتہ کرچکے ہیں۔ راشدہ ناشتے کے برتن اکٹھے کرنے لگتی ہے تواریبہ یہ کہہ کرروک دیتی ہے کہ سمیرابرتن اکٹھے کردیتی ہے۔ سمیرابرتن اکٹھے کررہی ہے۔
بشیراحمد۔۔۔احمدبخش سے۔۔۔۔احمدبخش تیری وجہ سے تیراابوپریشان ہے تم جانتے ہونا ماں باپ کے نافرمان کے ساتھ کیاہوتاہے
عبدالمجید۔۔۔۔سمجھاؤ احمدبخش کوسمجھاؤ میں نے تواسے باربارسمجھایاہے ہوسکتاہے آپ کے سمجھانے سے سمجھ جائے
بشیراحمد۔۔۔۔ہم بھی اسے سمجھانے آئے ہیں
بشیراحمد۔۔۔۔احمدبخش بیٹا ابوکی بات ماناکرو یہ جوکام کہیں کردیاکرو
راشدہ۔۔۔۔آپ احمدبخش کونہیں اپنے بھائی کوسمجھائیں یہ بلاوجہ اس پرسختی کرتے ہیں
عبدالمجید۔۔۔۔میں بلاوجہ سختی کرتاہوں یہ جواس دن دکان سے اتنی دیربعدواپس آیا اوروہ بھی خالی ہاتھ اب بھی میں سختی نہ کروں
بشیراحمد۔۔۔۔کیابات ہے احمدبخش دکان سے اتنی دیربعدآیا اورسامان بھی نہیں لایا
عبدالمجید۔۔۔۔۔میری بات پرتویقین کوئی نہیں کرتا یہ دکان پرگیاہی نہیں یہ راستے میں کھیل کھیل کرگھرواپس آگیا
بشیراحمد۔۔۔۔احمدبخش سے۔۔۔۔تواس دن دکان سے دیرسے کیوں آیاتھا
احمدبخش۔۔۔۔۔میں بتاچکاہوں میں اتنی دیرسے کیوں آیاتھا ابوکومیری بات پریقین ہی نہیں آتا یہ کہتے ہیں میں جھوٹ بولتاہوں فیاض بھی بیٹھا ہے اسی سے پوچھ لیں میں دکان پرگیاتھا یانہیں
فیاض۔۔۔۔میں نے خوددیکھاتھا اس کودکان میں ہم دونوں ایک ساتھ ہی گھرواپس آئے تھے
احمدبخش۔۔۔ان کویہ بھی بتادو وہاں میرے ساتھ کیاہواتھا
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۷۴
رحمتاں،صابراں اوراس کی دونوں بہنیں ان چارپائیوں کے ساتھ کھڑی ہیں
رحمتاں۔۔۔۔چادریں خشک ہوچکی ہیں
صابراں۔۔۔۔اب یہ چادریں صندوق میں لگائیں گی پھراس میں کپڑے رکھیں گی
صابراں۔۔۔۔دونوں بہنوں سے۔۔۔۔چادریں لے آؤ صندوق میں لگادیں۔
اس کی دونوں بہنیں چادریں اتارنے چلی جاتی ہیں۔ صابراں کمرے میں آتی ہے ۔ایک صندوق کے پاس کھڑی ہوجاتی ہے۔صندوق کی اندرونی طرف باربارنظریں گھماکے دیکھتی ہے ۔اس کے بعددوسری صندوق کی طرف آتی ہے۔اس صندوق کے ساتھ کھڑی رہنے کے بعداس میں اترجاتی ہے۔ اسی دوران اس کی دونوں بہنیں چادریں لے کرپہنچ جاتی ہیں۔ صابراں ایک بہن سے کہتی ہے چادریں مجھے پکڑاکرصندوق میں آجاؤ ۔صابراں دوسری بہن سے کہتی ہے کیل ،ہتھوڑی اورگتالے آؤ ۔صابراں کی ایک بہن اس کوچادریں پکڑاتی ہے اوردوسری بہن کمرے سے باہرچلی جاتی ہے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۷۵
عبدالحق۔۔۔۔۔اس بات کامیرے پاس ثبوت بھی ہے اوردلیل بھی
بشریٰ۔۔۔۔۔کہاں ہیں ثبوت لے آؤ تونے کہاں چھپارکھے ہیں
عبدالحق۔۔۔۔میرے پاس ہیں جوچھپائے نہیں جاسکتے۔ جودیکھناچاہے اسے دکھائی بھی دیتے ہیں
بشریٰ۔۔۔۔۔مجھے توایسی کوئی بات دکھائی نہیں دے رہی ہے
عبدالحق۔۔۔۔میں چاہوں توابھی دکھاسکتاہوں
بشریٰ۔۔۔۔۔باتیں ہی بناتارہے گایا
عبدالحق۔۔۔۔۔امی آپ نے کبھی کوشش ہی نہیں کی
بشریٰ۔۔۔۔انتظارنہ کراؤ
عبدالحق۔۔۔۔۔میں چاہتاہوں یہ ثبوت اوردلیل اس وقت سامنے لاؤں جب آپ اورابوایک ساتھ بیٹھے ہوں
بشریٰ۔۔۔۔۔تیرے ابوآسانی سے یقین نہیں کریں گے جوبھی ثبوت اوردلیل ہے مجھے دے دو میں تیرے ابوسے خودبات کرلوں گی
عبدالحق۔۔۔۔کیاابوآپ کی بات پریقین کرلیں گے
بشریٰ۔۔۔۔۔جب مجھے تیری باتوں پریقین آجائے گا اورتیری باتوں پرمجھے اس وقت تک یقین نہیں آئے گا جب تک تونہیں بتائے گا
عبدالحق۔۔۔۔۔میں سب کچھ بتادوں گا اس سے پہلے آپ کو چندسوالوں کے جواب دیناہوں گے
بشریٰ۔۔۔۔۔میرے پاس ان سوالوں کے جواب نہ ہوئے تو
عبدالحق۔۔۔۔۔سوچ کر یا ابو سے پوچھ کر بتادینا
بشریٰ ۔۔۔۔۔پہلے تومیرے سوال کا جواب دے گا پھر میں تیرے سوالوں کا جواب دوں گی
عبدالحق۔۔۔۔۔آپ کوجس سوال کاجواب چاہیے اس کے لیے ضروری ہے کہ پہلے آپ کومیرے سوالوں کاجواب دیناہوگا
بشریٰ۔۔۔۔۔پوچھو جوپوچھناہے کوشش کروں گی کہ جواب دے سکوں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۷۶
کریم بخش نورالعین کوپیسے دیتاہے
نورالعین۔۔۔۔۔یہ توبہت کم ہیں
کریم بخش۔۔۔۔میں تجھے کتنے بھی پیسے دے دوں وہ کم ہی ہوتے ہیں
نورالعین۔۔۔۔یہ واقعی کم ہیں اورپیسے دے دیں
کریم بخش۔۔۔۔۔آج کے لیے توکافی ہیں
نورالعین۔۔۔۔۔طارق کے لیے پکوان بھی بناناہے اورگھرکاراشن بھی منگواناہے
کریم بخش۔۔۔۔آج کے لیے جومنگواناہے منگوالو اس کے علاوہ جوسامان خریدناہے وہ مجھے بتادو میں شہرسے لے آؤں گا
نورالعین۔۔۔۔۔اس کامطلب ہے پیسے اورنہیں دوگے
کریم بخش۔۔۔۔کہہ تودیاہے جوسامان منگواناہے بتادو میں شہرسے لے آؤں گا
نورالعین۔۔۔۔میں آپ کے لیے چائے بناتی ہوں جس میں چینی کے ساتھ محبت اورخلوص کی مٹھاس بھی شامل ہوگی
کریم بخش۔۔۔۔۔چائے تم اس لیے پلارہی ہو
نورالعین۔۔۔۔اس لیے نہیں کہ آپ سے مزیدپیسے لے سکوں بلکہ اس لیے بنارہی ہوں کہ آپ میرے بیٹے کولینے جارہے ہو
کریم بخش۔۔۔۔۔طارق میرابیٹابھی ہے
نورالعین چلی جاتی ہے کریم بخش گھرسے باہرچلاجاتاہے ،نورالعین چائے بنارہی ہے۔ کریم بخش اپنے بھائی کے گھرکے دروازے پرجاتاہے۔دروازے پردستک دینے کے ہاتھ بڑھایاہی ہوتاہے کہ عبدالحق باہرنکلتاہے اورکریم بخش کودروازے پردیکھ کردم بخودرہ جاتاہے۔کریم بخش کودونوں ہاتھوں سے سلام کرتاہے اورکہتاہے چچاجان میں آپ کی کیاخدمت کرسکتاہوں آپ حکم کریں
کریم بخش۔۔۔۔۔بھائی چلاگیاہے یانہیں
عبدالحق۔۔۔آج سے پہلے توبھائی اس وقت تک چلے جاتے ہیں آج ابھی تک نہیں گئے آپ گھرمیں چلے جائیں اوربھائی سے بات کرلیں
کریم بخش۔۔۔۔۔نہیں اسے باہربلالو میں نے اس سے کوئی بات کرنی ہے
عبدالحق گھرمیں چلاجاتاہے۔ نورالعین چائے کی دیگچی میں چمچ ہلارہی ہے اورکہہ رہی ہے چائے تیارہوگئی ہے طارق کے اباابھی تک نہیں آئے ۔عبدالحق اورعارف گھرسے باہرآتے ہیں۔ عارف کریم بخش کودونوں ہاتھوں سے سلام کرکے پوچھتاہے چچاجان حکم کریں
کریم بخش۔۔۔۔شہرتک جاناہے وہاں سے سامان بھی لاناہے اورطارق کوبھی
عارف۔۔۔۔۔چچاجان آپ گھرچلیں میں کچھ دیرمیں رکشہ لے کرآرہاہوں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۷۷
بشیراحمد۔۔۔۔عبدالمجیدسے۔۔۔۔۔سن لیابھائی جان آپ نے
عبدالمجید۔۔۔۔۔یہ باتیں تومیں پہلے بھی سن چکاہوں
راشدہ۔۔۔۔اس وقت یہ باتیں احمدبخش نے بتائی تھیں جس پرکبھی آپ کواعتمادنہیں رہا
اریبہ۔۔۔۔اب یہ باتیں احمدبخش نے نہیں فیاض نے بتائی ہیں
عبدالمجید۔۔۔۔بات توایک ہی ہے پہلے احمدبخش نے بتادی اب فیاض نے بتائی ہے
راشدہ۔۔۔۔دونوں کی باتوں میں فرق نہیں اب تومان جائیں احمدبخش سچ کہہ رہاتھا
بشیراحمد۔۔۔۔جی جی دونوں کی باتوں میں فرق نہیں اس سے ثابت ہوتاہے کہ یہ باتیں سچ ہیں۔
عبدالمجید۔۔۔۔دونوں نے آپس میں طے کرلیاہوگا کہ کوئی پوچھے تویہ کہانی بتادینی ہے۔
اریبہ۔۔۔اگرآپ کودونوں کی باتوں پریقین نہیں تودکاندارسے پوچھناچاہیے کہ احمدبخش دکان پرگیاتھایانہیں
بشیراحمد۔۔۔۔میں اس مشورہ سے اتفاق کرتاہوں ہم دونوں بھائی دکان پرچلے جاتے ہیں کیاسچ ہے کیاجھوٹ سامنے آجائے گا
عبدالمجید۔۔۔۔۔مجھے اس فضول مشورے سے اتفاق ہے نہ میں دکان پرجاؤں گا
راشدہ۔۔۔۔آپ دس گواہ اوربھی لے آئیں اوروہ بھی ان دونوں بچوں والی بات بتائیں تب بھی ان کویقین نہیں آئے گا
بشیراحمد۔۔۔۔بھائی جان آپ نہیں جاناچاہتے تونہ جائیں میں چلاجاتاہوں آپ کوجس پراعتمادہومیں اس کوہی اپنے ساتھ لے جاتاہوں
عبدالمجید۔۔۔۔۔دکان پرجانے کی ضرورت نہیں
اریبہ۔۔۔۔آپ کوبچوں کی باتوں پریقین آگیاہے کیا
عبدالمجید۔۔۔۔یہ دونوں جھوٹ بول رہے ہیں
اریبہ۔۔۔۔۔میرابیٹا جھوٹ نہیں بولتااورنہ ہی میں احمدبخش کوجھوٹاسمجھتی ہوں
عبدالمجید۔۔۔۔میں احمدبخش کاباپ ہوں میں اسے اچھی طرح جانتاہوں اس نے بھی جھوٹ بولااوراب
٭٭٭٭٭٭٭٭٭

 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Muhammad Siddique Prihar

Read More Articles by Muhammad Siddique Prihar: 338 Articles with 155346 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
15 May, 2020 Views: 770

Comments

آپ کی رائے