سچ تو یہ ہے (چھبیسواں حصہ )

(Muhammad Siddique Prihar, Layyah)

 منظر۱۸۹
بشیراحمدریڑھی لے کراورفیاض دکان کی طرف چلاجاتاہے۔اریبہ چارپائی پربیٹھ کرگہرے سانس لینے لگتی ہے، سمیراناشتے کے برتن دھونے کے لیے رکھ کرماں کے پاس آجاتی ہے۔
سمیرا۔۔۔۔امی آپ جب سے چچاکے گھر سے آئی ہیں اسی طرح بیٹھی ہیں کیاسوچ رہی ہیں
اریبہ۔۔۔۔تم گھرکے کام کرو ابھی مجھے سوچنے دو
سمیرا۔۔۔۔وہ بھی کرلیتی ہوں آپ مجھے پریشان دکھائی دے رہی ہیں ہم چچی کے گھر اس لیے تونہیں گئے تھے کہ آپ پریشان ہوجائیں
اریبہ۔۔۔۔اس لیے تونہیں گئے تھے
سمیرا امی پھرآپ کیوں پریشان ہیں ایسی کیابات ہے
اریبہ۔۔۔۔۔میں سوچ رہی ہوں کہ تیرے چچا ہماری باتوں کا نہ جانے کیامطلب لیں گے
سمیرا۔۔۔۔۔مطلب لیں گے نہیں لے رہے ہوں گے
اریبہ۔۔۔۔۔ہاں تم ٹھیک کہہ رہی ہو
سمیرا۔۔۔۔آپ اس لیے پریشان ہیں
اریبہ۔۔۔۔اس لیے ہوں کہ تیرے چچا ہماری باتوں کاغصہ تیری چچی پریا احمدبخش پرنکال رہے ہوں گے
سمیرا۔۔۔۔آپ کہناچاہتی ہیں کہ ہمیں چچا سے وہ نہیں کہناچاہیے تھا
اریبہ۔۔۔۔۔ہم نے توانہیں سمجھانے کی کوشش کی ہے
سمیرا۔۔۔۔ایک بات میں بھی سوچ رہی ہوں
اریبہ۔۔۔۔کیا
سمیرا۔۔۔۔۔آپ نے اورابونے چچاکوکچھ اورسمجھانے کی کوشش کی ہے اورچچانے کچھ اورسمجھ لیاہوگا
اریبہ۔۔۔۔کہیں ہماری وجہ سے راشدہ کسی نئی مصیبت میں نہ پڑجائے
سمیرا۔۔۔۔۔ہم نے توان کی مشکلیں کم کرنے کاسوچاتھا
اریبہ۔۔۔۔تم گھرکے کام کرلو اس کے بعداس پرباتیں کریں گی
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۹۰
جاویدسڑک نماراستے کے کنارے بکریاں چرارہاہے۔ ایک بکری کی پیٹھ پرہاتھ پھیرتاہے گھرکی مخالف سمت دیکھتاہے تودورسے بشیراحمدریڑھی لے کرآرہاہے جاویداپنے آپ سے کہتاہے آج موقع ہے بھائی بشیرسے بات کرہی لیتاہوں بچیوں کی ماں سے جلدبات کرنے کاوعدہ بھی کیاتھا جاویدراستے کے کنارے کھڑاہے بشیراحمدریڑھی پرآتے ہوئے جاویدکودیکھ لیتاہے اورسوچتاہے آج بھائی اکیلے کھڑے ہیں ۔آج موقع ہے بھائی جاویدسے بھائی عبدالمجیدکے رویے کے بارے میں بات کرتاہوں جاویدبکریوں کے چاروں طرف چکرلگاتاہے چکرلگاتے ہوئے سڑک کوچھوڑ کرسڑک کی منہ کی طر ف منہ کرکے کھڑاہوجاتاہے۔بشیراحمدریڑھی لے کرپہنچ جاتاہے۔ جاویدبکریوں کودیکھ رہاہے۔ بشیراحمدریڑھی کھڑی کرکے لگام سے گدھے کی ٹانگیں باندھتاہے ۔کپڑے سے سراورمنہ صاف کرتاہے۔اپنے کپڑے جھاڑ کرجاویدکی طرف چل پڑتاہے ۔جاویدآنکھیں اٹھاکردیکھتاہے توبشیراحمداس کے پاس آچکاہے۔
بشیراحمد۔۔۔۔اپنے دونوں ہاتھ جاویدکی طرف بڑھاتے ہوئے۔۔۔۔السلام علیکم
جاوید۔۔۔۔اپنے دونوں ہاتھ بشیراحمدکی طرف بڑھاتے ہوئے۔۔۔۔وعلیکم السلام آج کام نہیں ملاکیا
بشیراحمد۔۔۔۔سامان اتارکرآرہاہوں
جاوید۔۔۔۔میں آپ کاانتظارکررہاتھا
بشیراحمد۔۔۔۔خیریت ہے؟
جاوید۔۔۔۔ایک بات کرنی ہے
بشیراحمد۔۔۔۔میں نے بھی آپ سے ایک بات کرنی ہے
جاوید۔۔۔۔پہلے تم بات کرلو
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۹۱
ایک کمرے میں کم وبیش پچاس کرسیوں پرمہمان بیٹھے ہیں۔ ایک شخص قرآن پاک کی تلاوت کرتاہے ۔ایک اورشخص اعظم چشتی کی لکھی ہوئی نعت شریف سناتاہے۔اس کے بعدگفتگوکاسلسلہ شروع ہوتاہے
اخترحسین۔۔۔۔۔گزشتہ اجلاس میں ہم مشاورت کررہے تھے ۔ اسی سلسلے کوجاری رکھاجائے۔
تنویراحمد۔۔۔۔انعامات کیاکیاہوں گے
ظفراقبال۔۔۔۔۔اس کااعلان ابھی نہیں کرناچاہیے
اخترحسین۔۔۔۔اس پرمشاورت کرلی جائے ۔اعلان کرناہے یانہیں اس کافیصلہ بھی کرلیں گے
رب نواز۔۔۔۔صرف تین انعام دیں گے یاہرایک کو
عبدالغفور۔۔۔۔انعامات سب کودیے جائیں توبہترہوگا
عمیرنواز۔۔۔۔میں بھی ایسی ہی رائے دیناچاہتاہوں
اخترحسین۔۔۔۔۔ہم انعامات سب کودیں گے اس کے علاوہ ہرمقابلے میں پہلے تین انعام بھی ہوں گے
کامران محمود۔۔۔انعامات کیاکیاہوں گے
رب نواز۔۔۔۔لوگوں میں آگاہی کیسے دی جائے گی
اخترحسین۔۔۔۔۔مقابلوں میں شرکت کرنے والے ہرایک کوایک مقابلہ میں حصہ لینے کے پانچ ہزارروپے دیں گے۔ کوئی جتنے مقابلوں میں حصہ لے گا اسی تناسب سے اس کوپیسے ملیں گے۔ اس کے علاوہ پہلاانعام ایک لاکھ روپے سے پانچ لاکھ روپے تک دوسراانعام سترہزارسے تین لاکھ روپے اورتیسراانعام پچاس ہزارسے دولاکھ روپے تک ہوگا۔ اس پرکسی کواعتراض ہویاکوئی اوربات کرناچاہتاہوتوکرسکتاہے
تمام شرکاء۔۔۔۔ہم اس سے متفق ہیں
اخترحسین۔۔۔۔۔مقابلے میں استعمال ہونے والاتمام سامان ہم فراہم کریں گے ۔گوشت، چاول، برتن تمام سامان ہم دیں گے ۔انعام دینے کے لیے پوزیشن کاتعین کرتے وقت مقابلے میں کارکردگی کے ساتھ ساتھ غربت اورضرورت مندی کوبھی مدنظررکھاجائے گا پچاس فیصدنمبرغربت، کم آمدنی اورضرورت مندی کے ہوں گے دودوافرادمل کرلوگوں سے ملیں انہیں مقابلے کے بارے میں بتائیں جوجس مقابلے میں حصہ لیناچاہتاہو اس کانام اورپتہ لکھ لو خواتین سے کہیں وہ بھی گھرگھر جائیں اورمقابلوں میں حصہ لینے والی خواتین کے نام لکھیں میں چاہتاہوں اب ہمیں مولوی صاحب سے ملناچاہیے ان سے دعاکرانی چاہیے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۹۲
بشریٰ گھرکے صحن میں کرسی پربیٹھی ہے۔ اس کے سامنے ایک میزاورمیزکی دوسری طرف خالی کرسی رکھی ہوئی ہے۔ میزپرفروٹ رکھے ہوئے ہیں ۔بشریٰ چھری سے فروٹ کاٹ کاٹ کرپلیٹ میں رکھ رہی ہے۔ دروازے پردستک ہوتی ہے
بشریٰ۔۔۔۔عبدالحق سے۔۔۔۔دروازے پرجاؤ
عبدالحق دروازہ کھولتاہے توسامنے نورالعین کھڑی ہے
عبدالحق۔۔۔۔چچی آئیں
نورالعین۔۔۔۔دکان سے کچھ سامان لے آؤ افضل ابھی سکول سے نہیں آیا
عبدالحق۔۔۔۔۔میں امی سے پوچھ لوں
نورالعین۔۔۔۔کیاوہ نہیں جانے دیں گی
عبدالحق۔۔۔۔ہوسکتاہے انہوں نے بھی کچھ منگواناہو
دونوں بشریٰ کے پاس آجاتے ہیں
نورالعین۔۔۔۔بشریٰ سے۔۔۔۔۔میں تیرے بیٹے کودکان پربھیج رہی ہوں
عبدالحق۔۔۔۔امی آپ نے بھی کچھ منگواناہو توبتادیں
بشریٰ۔۔۔۔گھرمیں سب کچھ موجودہے تم چچی کاسامان لے آؤ
نورالعین عبدالحق کوپیسے دیتی ہے اورآہستہ سے سامان بتاتی ہے کہ کیاکیالاناہے عبدالحق گھرسے باہرچلاجاتاہے
نورالعین جانے لگتی ہے
بشریٰ۔۔۔۔آپ جارہی ہیں
نورالعین۔۔۔۔آپ مصروف بیٹھی ہیں پھرکبھی آؤں گی
بشریٰ۔۔۔۔اتنی بھی مصروف نہیں کہ تیرے ساتھ باتیں نہ کرسکوں آؤ بیٹھو
نورالعین کرسی پربیٹھ جاتی ہے
بشریٰ۔۔۔۔کٹے ہوئے پھلوں کی پلیٹ نورالعین کی طرف بڑھاتے ہوئے۔۔۔۔۔اورسناؤ
نورالعین۔۔۔۔۔اﷲ کاشکرہے آپ سنائیں
بشریٰ۔۔۔۔۔کرم ہے پروردگارکا
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۹۳
احمدبخش، عرفان اوراشرف سائیکلوں پرسکول جارہے ہیں۔
اشرف۔۔۔۔احمدبخش آج تمہیں دیرہوگئی خیریت تھی
احمدبخش۔۔۔۔خیریت ہے بھی اورنہیں بھی
عرفان۔۔۔۔۔یہ کیابات ہوئی خیریت ہے بھی نہیں بھی
احمدبخش۔۔۔۔بات ہی کچھ ایسی ہے
اشرف ۔۔۔۔۔ایسی بھی کیابات ہوگئی ہے جوتجھے خوف بھی آنے لگاہے
عرفان۔۔۔۔۔یہ توہروقت خوف زدہ رہتاہے
اشرف ۔۔۔آج کچھ زیادہ ہی خوف زدہ لگ رہاہے
احمدبخش۔۔۔۔مجھے گھرکی باتیں کسی کوبتانااچھانہیں لگتا
اشرف۔۔۔۔ہم تیرے دوست ہیں
احمدبخش۔۔۔۔۔آج چچااورچچی ہمارے گھرناشتہ لے کرآئے تھے
عرفان۔۔۔۔۔تمہارے گھرکسی کی شادی ہوئی ہے کیا
احمدبخش۔۔۔۔ہمارے گھرمیں توکسی کی شادی نہیں ہوئی یہ تم کیوں پوچھ رہے ہو
عرفان۔۔۔۔اس لیے کہ شادی کے دوسرے دن دلہن کے میکے سے دولہاکے گھرناشتہ آتاہے تمہارے گھرشادی بھی ہوگئی اورتونے ہمیں بتایابھی نہیں
اشرف۔۔۔۔اس کے گھرمیں سب سے پہلے اسی کی شادی ہوگی اوریہ توروزانہ ہمارے ساتھ سکول جاتاہے
عرفان۔۔۔۔۔ہاں اس کی شادی کوابھی دیرہے
اشرف۔۔۔۔یہ بات توہم بھی جانتے ہیں تممارے گھرمیں کسی کی شادی نہیں ہوئی
عرفان۔۔۔۔پھرتیرے چچااورچچی تمہارے گھرناشتہ لے کرکیوں آئے
اشرف۔۔۔۔ویسے یہ حیرت کی بات ہے ہم نے تونہیں سنا کہ شادی کے بغیرکوئی کسی کے گھرناشتہ لے کرپہنچ گیاہو
احمدبخش۔۔۔۔جب وہ ناشتہ لے کرآئے توحیرت مجھے بھی ہوئی
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۹۴
بشیراحمد۔۔۔۔بھائی جان پہلے آپ بتائیں
جاوید۔۔۔۔ہوسکتاہے میری بات سے آپ کی بات زیادہ ضروری اوراہم ہو اس لیے پہلے آپ بتائیں
بشیراحمد۔۔۔۔آج ہم ناشتہ لے کربھائی عبدالمجیدکے گھرگئے تھے
جاوید۔۔۔۔حیرانی سے۔۔۔۔ناشتہ لے کر؟ کس لیے
بشیراحمد۔۔۔۔ہم احمدبخش اورعبدالمجید کو اپنے طورپرسمجھانے گئے تھے
جاوید۔۔۔۔۔مجھے تویہ سمجھ نہیں آتی کہ عبدالمجیداپنے گھروالوں پراتنی سختی کیوں کرتاہے
بشیراحمد۔۔۔۔ہم بھی انہیں احساس دلانے گئے تھے کہ وہ گھروالوں پرسختی نہ کریں
جاوید۔۔۔۔۔تم نے کس طرح سمجھانے کی کوشش کی
بشیراحمد۔۔۔۔میں نے پہلے احمدبخش سے کہا کہ کہ وہ باپ کاکہامانے نافرمانی نہ کرے اس کی ماں نے بات کارخ بھائی کی طرف موڑدیا ۔بھائی بیٹے سمیت سب کوجھوٹا سمجھتے ہیں احمدبخش کی ایک سچائی کاگواہ فیاض بھی ہے فیاض نے جب سب کے سامنے وہی بات بتائی جواحمدبخش پہلے ہی بتاچکاتھا توبھائی نے کہا کہ یہ بھی جھوٹ بول رہاہے
جاوید۔۔۔۔یہ تومیں بھی جانتاہوں کہ وہ سب کوجھوٹا سمجھتے ہیں
بشیراحمد۔۔۔۔بھائی احمدبخش شدیدذہنی دباؤ میں ہے اس کی شکل دیکھنے والی تھی عبدالمجید کی سختی اوریہ رویہ اس کے ساتھ رہا تو یہ بچہ بیماربھی ہوسکتاہے اورآپ توجانتے ہیں
جاوید۔۔۔اس بیماری کاعلاج مشکل بھی ہے اورمہنگا بھی
بشیراحمد۔۔۔۔عبدالرحیم کی ماں بھی کہہ رہی تھی کہ اس نے بھی کئی باراحساس دلانے کی کوشش کی ہے
جاوید۔۔۔۔اسے سمجھانابے کارہے
بشیراحمد۔۔۔۔۔ہم دونوں مل کراسے سمجھانے کی کوشش کرتے ہیں ہوسکتاہے اسے سمجھ آجائے
جاوید۔۔۔۔ایساکرتے ہیں مولوی صاحب سے بات کرتے ہیں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭

 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Muhammad Siddique Prihar

Read More Articles by Muhammad Siddique Prihar: 338 Articles with 155232 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
18 Jul, 2020 Views: 307

Comments

آپ کی رائے