سچ تو یہ ہے (ستائیسواں حصہ )

(Muhammad Siddique Prihar, Layyah)

 منظر۱۹۵
مسجدمیں نمازہوچکی ہے ۔ مولوی صاحب اجتماعی دعاکرارہے ہیں اخترحسین، رشیداحمد، ناصراقبال،عبدالغفور، عمیرنواز،ظفراقبال ، ارشدجمال، کامران محمود، تنویراحمد اوررب نواز بھی دیگرنمازیوں کے ساتھ اجتماعی دعامانگ رہے ہیں۔ اجتماعی دعاکرانے کے بعدوہ تسبیح پڑھنے لگ جاتے ہیں۔ نمازی مسجدسے جارہے ہیں
ناصراقبال۔۔۔۔اخترحسین سے۔۔۔۔۔اب نمازاداکرلی گئی ہے مولوی صاحب سے دعاکرائیں مقابلے کے لیے جاکرلوگوں کوبتانابھی ہے
اخترحسین۔۔۔۔اب اس کی ضرورت نہیں پڑے گی
تنویراحمد۔۔۔۔توکیاآپ مقابلے نہیں کرارہے
اخترحسین۔۔۔۔۔وہ ہم ضرورکرائیں گے اب ہم لوگوں سے نہیں لوگ ہم سے رابطے کریں گے
عبدالغفور۔۔۔۔۔وہ کیسے
اخترحسین۔۔۔۔۔مولوی صاحب سے بات ہوجائے دعاکرالیں اس کے بعدآپ سب کو یقین ہوجائے گا کہ میں سچ کہہ رہاہوں
مولوی صاحب سرجھکائے تسبیح پڑھنے میں مصروف ہیں۔اخترحسین کھڑاہوجاتاہے اوراپنے ساتھیوں کوکہتاہے آؤ میرے ساتھ ۔اس کے ساتھ ہی وہ اپنے ساتھیوں کولے کرمسجدسے باہرآجاتاہے۔
رب نواز۔۔۔۔مولوی صاحب سے دعانہیں کرائیں گے جوآپ جارہے ہیں
اخترحسین۔۔۔۔ہم جوکام کرنے آئے ہیں وہ کرکے ہی جائیں گے
ارشدجمال۔۔۔۔۔ہم مسجدسے باہرکس لیے آگئے ہیں
اخترحسین۔۔۔۔آپس میں ایک مشورہ کرناہے
کامران محمود۔۔۔۔۔کون سامشورہ
اخترحسین۔۔۔۔۔ہم اپنے دومنصوبوں میں ناکام ہوچکے ہیں میں چاہتاہوں ہم مل جل کرمولوی صاحب کو مسجدکے لیے کچھ چندہ دے دیتے ہیں
رشیداحمد۔۔۔۔کچھ نہ کچھ ہدیہ مولوی صاحب کوبھی دیناچاہیے
اخترحسین۔۔۔۔اپنی جیب سے پانچ ہزارروہے نکال کر۔۔۔۔مسجدکے لیے جس نے جتنے پیسے دینے ہیں مجھے دے دو
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۹۶
نورالعین ۔۔۔۔بشریٰ سے۔۔۔۔۔اجازت ہوتو آپ سے ایک بات پوچھوں
بشریٰ۔۔۔۔آپ کواجازت لینے کی ضرورت کیوں پڑگئی پوچھو جوبات پوچھنی ہے
نورالعین۔۔۔۔۔کہیں آپ ناراض نہ ہوجائیں اس لیے اجازت لیناضروری سمجھا
بشریٰ۔۔۔۔۔یہ آپ کیسی بات کررہی ہیں جوبات ہے پوچھو
نورالعین۔۔۔۔۔تیرے بیٹے کوسمجھانے کے لیے رشتہ داراکٹھے ہوئے تھے اس کی سمجھ میں آپ کی بات آگئی ہے یا وہ ابھی تک اپنی بات پراڑاہواہے
بشریٰ۔۔۔۔۔وہ ہماری بات سمجھناہی نہیں چاہتا
نورالعین۔۔۔۔۔افضل کے ابواسے شہرلے گئے ہیں ممکن ہے وہ تیرے بیٹے کو تنہائی میں سمجھانے کی کوشش کریں
بشریٰ۔۔۔۔اس کاکوئی فائدہ نہیں
نورالعین۔۔۔۔اس کاکیوں کوئی فائدہ نہیں
بشریٰ۔۔۔۔کریم بخش صاحب گھرآجائیں توپوچھ لینا عارف سے کیابات ہوئی
نورالعین۔۔۔۔۔میں تواسی انتظارمیں ہوں
بشریٰ۔۔۔۔معاف کرنا آپ اتنی دیرسے بیٹھی ہیں میں نے آپ سے پانی کابھی نہیں پوچھا
نورالعین۔۔۔۔پھل کھالیے ہیں اس کے علاوہ تکلف کی ضرورت نہیں
بشریٰ۔۔۔۔آپ بیٹھیں میں پانی بھی لے آتی ہوں اورچائے بھی
اسی دوران عبدالحق آجاتاہے
نورالعین۔۔۔۔عبدالحق واپس آگیاہے افضل بھی سکول سے آنے والاہے چائے کسی اوردن پی لوں گی ابھی میں چلتی ہوں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۹۷
کریم بخش اورعارف شہرمیں رکشے پرجارہے ہیں
کریم بخش۔۔۔۔مجھے اتاردو یہ سامنے دکان ہے تم اپنی روزی کماؤ دوگھنٹے بعدآجانا گھرواپس چلیں گے
عارف۔۔۔۔کیاطارق اسی دکان میں کام کرتاہے
کریم بخش۔۔۔۔کیاتم ان کوجانتے ہو
عارف۔۔۔۔۔میں کئی مرتبہ اس دکان سے سامان لوڈ کرکے لے گیاہوں طارق کے ساتھ کوئی مسئلہ ہوتومجھے بتانا
کریم بخش۔۔۔۔۔میں نے اپنے بیٹے کواچھی طرح سمجھایاہواہے مجھے امیدہے کوئی ایسامسئلہ نہیں ہوگا ہوگا توبتادوں گا سواریاں انتظارمیں بیٹھی ہیں ان کوجاکر اتارو
عارف۔۔۔۔ٹھیک ہے میں دوگھنٹے میں آنے کی کوشش کروں گا دیرہوجائے توپریشان نہ ہونا
عارف رکشہ لے کرچلاجاتاہے کریم بخش کریانہ کی دکان کے سامنے کھڑاہے ایک پھل فروش ریڑھی لے کراس کے پاس کھڑاہوجاتاہے کریم بخش اس سے پھلوں کی قیمت پوچھتاہے
پھل فروش۔۔۔۔دوکلوگرام دے دوں ؟
کریم بخش۔۔۔۔ابھی نہیں جب گھر جاؤں گاتولے جاؤں گا
ریڑھی والاچلاجاتاہے کریم بخش اسی جگہ کھڑاہے کچھ دیرکے بعداسی سڑک کے کنارے کے ساتھ ساتھ چل پڑتاہے ایک بیکری میں مٹھائیوں کے ریٹ پوچھتاہے وہاں سے کچھ خریدے بغیرواپس آجاتاہے اس کے بعدوہ ایک اورکریانہ کی دکان میں آجاتاہے کچھ چیزوں کی قیمتیں پوچھتاہے دکان سے واپس آنے لگتاہے تودکاندارکہتاہے جارہے ہو اس کے ساتھ بیٹھاہوا ایک اوردکاندارکہتاہے اسے جانے دو جوہمارے نصیب میں ہے وہ مل کررہے گا کریم بخش دکان سے باہرآجاتاہے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۹۸
عرفان۔۔۔۔احمدبخش سے۔۔۔۔۔کیاتم اس لیے خوف زدہ ہو تمہارے چچااورچچی ناشتہ لے کرتمہارے گھرآگئے اس میں ڈرنے والی کون سی بات ہے
احمدبخش۔۔۔۔مجھے اس سے نہیں کسی اوربات سے خوف آرہاہے
اشرف۔۔۔۔وہی توہم پوچھ رہے ہیں ہوسکتاہے ہم تیرا خوف ختم کرسکیں یا کم کرسکیں
احمدبخش۔۔۔۔۔میں جانتاہوں تم اس سلسلہ میں میری کوئی مدد نہیں کرسکتے پھربھی بتادیتاہوں
عرفان۔۔۔۔۔بتاؤ ہم سن رہے ہیں
احمدبخش خاموش ہوکرسرنیچے جھکالیتاہے اپنی پیشانی کوہاتھ سے پکڑلیتاہے جیسے وہ کچھ یادکرنے کی کوشش کررہاہو
اشرف۔۔۔عرفان سے۔۔۔۔مجھے لگتاہے یہ وہ باتیں بھول گیاہے جوآج اس کے گھرمیں ہوئی ہیں
عرفان۔۔۔۔۔ابھی وقت ہی کتناگزراہے جویہ بھول بھی گیا مجھے تولگتاہے یہ سوچ رہاہے کہ بتاؤں یانہ بتاؤں
اشرف۔۔۔۔اس وقت اس کی جوذہنی حالت ہے ایساہوجاناحیرت کی بات نہیں ہے تم نے دیکھانہیں یہ سکول میں بھی بھول جاتاہے
احمدبخش اپنامنہ اوپرکی طرف اٹھاتاہے پیشانی کوہاتھ سے چھوڑدیتاہے اورکہتاہے تم کیاپوچھ رہے تھے
عرفان۔۔۔۔تیرے چچااورچچی
احمدبخش۔۔۔۔ہاں ابوکومیری کسی بات پریقین نہیں آرہاتھا میرے چچازادبھائی نے بھی وہی بات ویسے ہی بتادی جس طرح میں نے بتائی تھی میرے ابونے کہا کہ یہ بھی میری طرح جھوٹ بول رہاہے میرے چچا،چچی اورامی نے مل کرابوکوسمجھانے کی کوشش کرتے ہوئے اپنارویہ نرم رکھنے کی اپیل کی
اشرف۔۔۔۔تیرے ابونے کیاکہا
احمدبخش۔۔۔۔اس وقت ابوخاموش رہے
عرفان۔۔۔۔خوف کس بات سے آرہاہے
احمدبخش۔۔۔۔۔اسی بات سے مجھے خوف آرہاہے اب نہ جانے میرے ساتھ کیاہوگا
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۱۹۹
بشیراحمد۔۔۔۔جاویدسے۔۔۔۔میں نے جوبات بتانی بتادی آپ نے مجھ سے کیابات کرنی تھی
جاوید۔۔۔۔اب آپ جائیں بچوں کے لیے روزی کریں میں بھی بکریاں چراتاہوں
بشیراحمد۔۔۔۔۔بات کرنے کے لیے آپ میراانتظارکررہے تھے اب بتا بھی نہیں رہے
جاوید۔۔۔۔میں نہیں چاہتا کہ آپ میری وجہ سے بچوں کے لیے روزی نہ کماسکیں میں کبھی بعدمیں بات کرلوں گا
بشیراحمد۔۔۔۔آپ کی بکریاں چررہی ہیں بچوں کی روزی اﷲ مجھے چاہے تویہاں بھی دے سکتاہے
جاوید۔۔۔۔تجھے یادہے؟ ہم نے رشتہ داروں کوگھرمیں بلاکرتیری بھتیجیوں سے پوچھاتھا وہ کس کس سے شادی کرناچاہتی ہیں
بشیراحمد۔۔۔۔اچھی طرح یادہے ابھی دن ہی کتنے گزرے ہیں کیابچیوں نے اپنی بات تبدیل کرلی ہے
جاوید۔۔۔جیسے رشتے بچیوں نے بتائے ہیں وہ ہم کیسے تلاش کریں
بشیراحمد۔۔۔۔ایسے رشتے تلاش کرنامشکل تونہیں
جاوید۔۔۔۔۔میرے توگمان میں بھی نہیں تھا کہ بچیاں اپنی پسندکااظہاراس طرح کریں گی
بشیراحمد۔۔۔۔یہ توکسی کے گمان میں بھی نہیں تھا
جاوید۔۔۔۔میں اورآپ کی بھابھی چاہتی ہیں بچیوں سے کہیں کہ وہ اپنی پسندمیں تبدیلی کریں
بشیراحمد۔۔۔۔بچیوں نے بہترین پسندکااظہارکیاہے بچیوں نے شخصیات، جائیدادیاسرمایہ کونہیں کرداراورعادات کوترجیح دی ہے
جاوید۔۔۔۔وہ توٹھیک ہے
بشیراحمد۔۔۔۔ایسے دامادمل جائیں تووالدین کی بچیوں کے لیے پریشانیاں کم سے کم ہوجائیں گی
جاوید۔۔۔۔۔ایسے دامادکہاں سے تلاش کریں
بشیراحمد۔۔۔۔آپ بھی نظررکھیں میں بھی نظررکھتاہوں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۲۰۰
درزی کی دکان میں نعیم جھاڑن سے دکان کی صفائی کررہاہے۔سلے ہوئے، بغیرسلے ہوئے اورپیک کیے گئے سوٹس کی جھاڑن سے صفائی کررہاہے۔ سجاداحمداورفیاض دکان سے باہرکھڑے ہیں۔
سجاداحمد۔۔۔۔فیاض کے کاندھے پرہاتھ رکھ کر۔۔۔۔۔نعیم صفائی کرلے جوسوٹ سلائی ہوچکے ہیں استری کرکے تمام سوٹ پیک کردو گاہک آنے والے ہوں گے۔
فیاض۔۔۔۔جی استادجی
نعیم جھاڑن رکھ دیتاہے سجاداحمداورفیاض دکان میں داخل ہوتے ہیں اوراپنی اپنی جگہ پربیٹھ جاتے ہیں فیاض کپڑے استری کرنے کے لیے جگہ خالی کرتاہے استری کاسوئچ بجلی کے بورڈ میں لگاتاہے
سجاداحمد۔۔۔۔اپنی جگہ سے کھڑے ہوکر۔۔۔۔نعیم سے۔۔۔۔جوسوٹ پیک ہوچکے ہیں مجھے اٹھادو
سجاداحمد۔۔۔۔فیاض سے۔۔۔۔نام تولکھ دیے تھے نا
فیاض۔۔۔۔جی استادجی لکھ دیے تھے
نعیم پیک شدہ سوٹ اٹھاکرسجاداحمد کے سامنے رکھ دیتاہے
سجاداحمد۔۔۔۔نعیم سے۔۔۔۔ایک ایک سوٹ مجھے پکڑادو میں الماری میں لٹکادوں
فیاض۔۔۔۔استادجی آپ بیٹھیں یہ کام میں کردیتاہوں
سجاداحمد۔۔۔۔تم کپڑے استری کرو یہ کام میں خودکرلیتاہوں
نعیم ایک سوٹ سجاداحمدکوپکڑاتاہے توایک شخص دکان میں آتے ہی کہتاہے السلام علیکم سجاداحمداوراس کے دونوں شاگردوعلیکم السلام کہتے ہیں
سجاداحمد۔۔۔۔آپ بیٹھیں
وہ شخص بیٹھ جاتاہے
سجاداحمد۔۔۔۔اجازت ہوتومیں یہ کام کرلوں
وہ شخص۔۔۔۔آپ اپناکام کرلیں میں بیٹھاہوں
نعیم ایک اورسوٹ سجاداحمدکوپکڑاتاہے سجاداـحمدوہ سوٹ الماری میں لٹکاہی رہاہوتاہے کہ دوسراشخص دکان میں داخل ہوکرالسلام علیکم کہتاہے دکان میں موجودتمام افراداس کے سلام کاجواب دیتے ہیں وہ شخص پہلے سے آئے ہوئے شخص کے ساتھ خاموشی سے بیٹھ جاتاہے۔
٭٭٭٭٭٭٭٭٭

 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Muhammad Siddique Prihar

Read More Articles by Muhammad Siddique Prihar: 324 Articles with 137975 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
07 Sep, 2020 Views: 152

Comments

آپ کی رائے