امن کے لئے بحری افواج کا اشتراک

(Muhammad Ali, Karachi)

ارمغان احمد
2007سے شروع ہونے والی پاک بحریہ کی کثیر الملکی بحری مشق امن کے سلسلے کی ساتویں مشق ’امن ‘کا انعقاد سال2021 کے اوائل میں کیا جا رہا ہے۔ 2007کے بعد سے ان مشقوں میں حصہ لینے والے ممالک کی تعداد میں بتدریج اضافہ ہواہے۔مشق امن2021میں بڑی تعداد میں مختلف ممالک کی اپنے بحری جہاز، ایئر کرافٹ، ہیلی کاپٹرز ، اسپیشل آپریشنز فورسز /دھماکہ خیز مواد کو ناکارہ بنانے والی ٹیمیں اور میرینز کے ساتھ شرکت کرنے کی توقع ہے ۔ اس کے علاوہ ایک کثیر تعداد میں بحری مبصرین بھی اس مشق میں شرکت کریں گے۔

امن مشقوں کو ترتیب دیتے ہوئے جن اُمور کو مد نظر رکھا گیا اُن میں اولاً پاکستان کی حیثیت کو بطور امن پسند ملک اُجاگر کرنا جو کہ علاقائی امن و سلامتی کا خواہاں ہے۔ دوئم ، عالمی بحری افواج کے درمیان پاک بحریہ کی حیثیت کومستحکم کرنا۔ سوئم، علا قائی اور غیر علاقائی بحری افواج کے ساتھ معاملات کا ر بڑھاتے ہوئے خطوں کے درمیان روابط پیدا کرنا۔ چہارم، دہشت گردی اور سمندری جرائم کا یکجا طور پر مقابلہ کرنا شامل ہیں۔

اس موضوع پر مزید گفتگو سے پہلے ضروری ہے کہ بین الاقوامی مشقوں کے اس سلسلے کی تاریخ اور پس منظر پر کچھ بات کر لی جائے۔امن، جس کو انگریزی میں "Peace" کہا جاتا ہے، اس بحری مشقوں کے سلسلے کا نام ہے جو " امن کے لئے متحد" (Together for Peace)کے نصب العین کے تحت پاکستان نیوی کے زیرِ انتظام ہر دو سال بعد باقاعدگی سے منعقد کی جاتی ہے۔عالمی بحری امن کے قیام کے لئے پاکستان نیوی کے زیرِ انتظام کثیرالملکی بحری مشق ’امن‘ کا انعقاد نہایت بروقت اقدام ہے جس میں عالمی بحری افواج بھرپور شرکت کرتی ہیں۔ اس مشق کا مقصد ایک دوسرے کے تجربات سے مستفید ہو کر حربی صلاحیتوں کو بڑھانا ہے تاکہ دہشت گردی ، قزاقی اور منشیات کی غیر قانونی ترسیل ، سمندری آلودگی اور سمندری تجارتی راستوں کی حفاظت جیسے مسائل پرقابو پا کر خطے میں امن و سلامتی کا ماحول قائم کیا جاسکے۔ اس مشق میں بحری سکیورٹی اور انسانیت کی مدد بشمول مشکل میں گھرے افراد کی تلاش اور امداد کے آپریشنزپر بھی خصوصی توجہ دی جاتی ہے۔ انہی چیلنجزکے مدِ نظر بدلتے حالات سے نمٹنے کے طریقہ کار اور ضوابط مرتب کئے جاتے ہیں تاکہ اہم سمندری تنصیبات کی حفاظت کی جاسکے اوربحری تجارتی رہداریوں کو نقل و حمل کے لئے محفوظ بنایا جاسکے۔

پاکستان کی ساحلی پٹی 1000 کلومیٹر سے زائد طویل ہے ۔ پاکستان آبنائے ہْرمز(Straits of Hormuz)اور خلیج فارس (Persian Gulf)کے سنگم پر واقع ہے، جہاں سے روزانہ ہزاروں بحری جہازوں کے ذریعے خام تیل، معدنی گیس اور دیگر اشیاء کی بحری ترسیل کی جاتی ہے۔ ان تمام حقائق کے باعث پاکستان کیلئے ضروری ہے کہ جنوب ایشیاء سمندری خطے میں اپنی موجودگی برقرار رکھے، جو کہ پاکستان کے دفاع کے علاوہ اقتصادی ترقی کیلئے بھی نہایت ضروری ہے۔

مشق امن 2021 پاکستان اور دوسرے ممالک کے مابین نہ صرف باہمی روابط کو فروغ دینے بلکہ علاقائی اور عالمی مسائل پر پاکستان کی مثبت پوزیشن کو مزید واضح کرنے میں ایک اہم کردارادا کرے گی۔ اس کے علاوہ مختلف ممالک کی بحری افواج کو اپنی پیشہ ورانہ صلاحیتیں بڑھانے اور مشترکہ آپریشنز کرنے کی مہارتوں میں اضافے کے لئے مواقع میسر آئیں گے۔ امن مشقوں کی ایک اہم سرگرمی بین الاقوامی کانفرنس برائے بحری اُمور ہے۔

پاکستان بحیثیت ایک ذمہ دار ریاست اور اپنے اہم جغرافیائی محل و قوع کے باعث اپنی بحری ذمہ داریوں سے نہ صرف بخوبی واقف ہے بلکہ اپنے خطے اور بیرون خطہ دیگر بحری افواج سے بھر پور تعاون کا خواہاں بھی ہے۔ پاکستان اس حقیقت سے بھی بخوبی واقف ہے کہ دور حاضر کے بحری خطرات سے کوئی بھی ملک تن تہا نہیں نمٹ سکتا۔ لہٰذا عالمی بحری افواج کا متحد ہونا نہایت ضروری ہے یہ تب ہی ممکن ہو سکتا ہے جب زمانہ امن میں بحری افواج دو طرفہ اور کثیر الملکی مشقوں کے ذریعے نہ صرف آپس میں باہمی تعاون کے قیام کے ذریعے اتحاد کی فضا قائم کریں بلکہ اپنی پیشہ ورانہ صلاحیتوں میں بھی اضافہ کریں۔ امن مشق 2021کے ذریعے پاک بحریہ کو ایک مرتبہ پھر یہ اعزاز حاصل ہوگا کہ وہ بطور سفیرِ پاکستان برائے امن، دنیا بھر میں نہ صرف امن و سلامتی کا پیغام پھیلائے بلکہ مثبت انداز میں پاکستان کا وقارمزید بلند کرے۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Muhammad Ali

Read More Articles by Muhammad Ali: 4 Articles with 540 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
21 Jan, 2021 Views: 153

Comments

آپ کی رائے