سچ تو یہ ہے (۳۷واں حصہ )

(Muhammad Siddique Prihar, Layyah)


منظر۲۵۹
کامران محمود، تنویراحمداوررب نوازدواورافرادکے ساتھ دورکشوں پرعبدالمجیدکے گھرسے چندگزکے فاصلے پررک جاتے ہیں۔ کامران، محمود، تنویراحمداوررب نوازعبدالمجیدکے گھرکے پاس بیٹھے ہوئے لوگوں کے پاس یہ دیکھنے کے لیے کھڑے ہوجاتے ہیں کہ یہ کیاہورہاہے ۔احمدبخش افسردہ چہریکے ساتھ سرجھکائے بیٹھاہے
مولوی صاحب۔۔۔۔۔آج دوسرادن ہے ہم احمدبخش سے پوچھ رہے ہیں یہ بتابھی نہیں رہا بتانے لگتاہے تواس کاباپ روک دیتاہے
تنویراحمد۔۔۔۔کیاہوا کہیں اس لڑکے نے چوری تونہیں کی
مولوی صاحب۔۔۔۔۔یہ بچہ ایسانہیں ہے
رب نواز۔۔۔۔آپ اس سے کیاپوچھ رہے ہیں
کامران محمود۔۔۔۔۔پہلے ہم وہ کام کرلیں جوکرنے آئے ہیں اس کے ساتھ ہی وہ جاویداوربشیراحمدکوایک طرف لے جاتے ہیں
تنویراحمد۔۔۔۔۔اس رکشہ میں گٹورکھے ہوئے ہیں ۔ ان میں سے تین گٹوجاویدصاحب کے اورایک گٹوبشیراحمدکاہے ۔وہ رکشہ سے اٹھاکرگھرمیں دے دیں
بشیراحمد۔۔۔۔آپ کون ہیں اوریہ کس لیے لائے ہیں
کامران محمود۔۔۔۔مقابلے کرانے کی ذمہ داری ہماری ہے وہی سامان دینے آئے ہیں گوشت اسی دن دے جائیں گے جس دن مقابلے ہوں گے
رب نواز۔۔۔۔۔فیاض کی وردی اورجوتے بھی ایک دودن میں دے جائیں گے باقی تفصیل ہرگٹومیں لکھی ہوئی ہے
جاویداوربشیراحمدرکشے کی طرف چلے جاتے ہیں ،کامران محمود، تنویراحمداوررب نوازمولوی صاحب کے پاس آجاتے ہیں ۔
تنویراحمد۔۔۔۔مولوی صاحب مسئلہ کیاہے
مولوی صاحب۔۔۔۔۔کل یہ بچہ سکول سے نیم بے ہوشی کی حالت میں آیا نہ اس نے سکول میں کسی سے بات کی اورنہ اب دوسرادن ہے کوئی بات کررہاہے یہ بولنے لگا امی ہی کہاتھا کہ اس کے باپ نے اسے روک دیا میں توحکیم صاحب کواس بچے کے علاج کے لیے لایاتھا
کامران محمود۔۔۔۔آپ ہمارے ساتھ مسجدمیں چلیں
رب نواز۔۔۔۔اس بچے کاعلاج ہم کرائیں گے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۲۶۰
سعیداحمد۔۔۔۔۔میں یہ غلط کررہاہوں وہ کس طرح
کریم بخش۔۔۔۔آپ بچوں کواس دعوت سے دوررکھ کرواقعی غلطی کررہے ہیں
سعیداحمد۔۔۔۔اس دعوت سے بچوں کاکیاتعلق
کریم بخش۔۔۔۔۔یہ دعوت ہم بچوں کی وجہ سے ہی توکررہے ہیں اورآپ کہتے ہیں بچوں کاکیاتعلق
سعیداحمد۔۔۔۔آپ کی بات مان لیتاہوں بیٹوں کوسیرکرنے نہیں بھیجتا ایک اورمسئلہ بھی توہے
کریم بخش۔۔۔۔اورکیامسئلہ ہے
سعیداحمد۔۔۔۔ہم نے رشتہ داروں کوجوباتیں بتانی ہیں وہ بچوں کے سامنے کیسے بتائیں گے
کریم بخش۔۔۔۔۔یہ کون سامشکل کام ہے
سعیداحمد۔۔۔۔بچوں کے سامنے یہ کہتے ہوئے عجیب نہیں لگے گا؟
کریم بخش۔۔۔۔۔باکل بھی عجیب نہیں لگے گا
سعیداحمد۔۔۔۔آپ چاہتے ہیں میں عارف اورعبدالحق کوسیرکرنے نہ بھیجوں
کریم بخش۔۔۔۔دعوت کے بعدبھیج دینا
سعیداحمد۔۔۔۔بعدمیں بھیجنے کاکیافائدہ ہم تواسی وجہ سے بھیج رہے تھے
کریم بخش۔۔۔۔۔توکیااولادکے ساتھ وعدہ خلافی کریں گے
سعیداحمد۔۔۔۔۔میں ان کی ماں سے بات کروں گا
کریم بخش۔۔۔۔۔ایک غلطی ہم نے عارف سے یہ نہ پوچھ کرکی کہ وہ ایساکیوں کہتاہے اب ان کودعوت کے دن باہربھیج کردوسری غلطی نہ کریں ان کی ماں کوکہہ دیں یہ دعوت میں شرکت کریں گے اورسیرکرنے بعدمیں جائیں گے
سعیداحمد۔۔۔۔۔ہم نے یہ دعوت رات کے وقت رکھی تھی اب میں چاہتاہوں جمعہ کی نمازکے بعدکاوقت مناسب رہے گا
کریم بخش۔۔۔۔۔جس وقت آپ چاہیں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۲۶۱
مولوی صاحب، کامران محمود، تنویراحمد اوررب نوازمسجدکے پاس پہنچتے ہیں
مولوی صاحب۔۔۔۔۔نمازمیں ابھی وقت ہے آپ نے جوبات کرنی ہے کرلیں اس کے بعدآپ بھی اپناکام کریں اورمیں کچھ دیرآرام کروں گا
تنویراحمد۔۔۔۔وہ بچہ ماں کانام کیوں لے رہاتھا
مولوی صاحب۔۔۔۔یہ معلوم نہیں ہوسکا
رب نواز۔۔۔۔۔اس نے صرف نام لیا اورکچھ نہیں
مولوی صاحب۔۔۔۔آپ ادھرٹھہریں میں کرسیاں لے آتاہوں
یہ کہہ کرمولوی صاحب چلے جاتے ہیں
تنویراحمد۔۔۔۔۔ہم نے کہہ تودیاہے اس بچے کاعلاج کرائیں گے کیسے کرائیں گے
رب نواز۔۔۔۔یہ پتہ چل جائے اسے ہواکیاہے علاج بھی ہوجائے گا
دولڑکے دودوکرسیاں اورایک لڑکامیزلے آتاہے اس کے بعدمولوی صاحب اورایک لڑکابھی ایک ایک کرسی لے آتے ہیں۔ مولوی صاحب اوران کے مہمان کرسیوں پربیٹھ جاتے ہیں
مولوی صاحب۔۔۔۔اس بچے کواس کے باپ نے بولنے سے روک دیا
کامران محمود۔۔۔۔پہلی بات تویہ ہوسکتی ہے کہ اس کی ماں نے اس کوڈانٹاہے ایسانہیں ہے تواس کے باپ نے اس کے سامنے اس کی ماں کوضرورڈانٹاہے
رب نواز۔۔۔۔۔یہ توتب پتہ چلے گا جب کوئی بتائے گا
تنویراحمد۔۔۔۔اس کاپتہ ہم کرالیں گے
مولوی صاحب۔۔۔۔۔کیسے
کامران محمود۔۔۔۔۔یہ آپ ہم پرچھوڑ دیں اب ہم اپنے طریقے سے پتہ کرائیں گے
رب نواز۔۔۔۔مولوی صاحب ہم چاہتے ہیں کہ آپ تلاوت قرآن پاک، نعت خوانی،وضواورنمازکے مقابلوں میں منصف کاکرداراداکریں
مولوی صاحب۔۔۔۔۔یہ مشکل کام ہے آپ دوسرے علاقوں سے مولوی صاحبان لے آئیں یہ کام وہ کریں گے
تنویراحمد۔۔۔۔۔مولوی صاحب آپ کیوں نہیں
مولوی صاحب۔۔۔۔۔یہ بات آپ مجھ سے بہترسمجھتے ہیں آپ جہاں بھی مقابلے کرائیں مقامی لوگوں کومنصف نہ بنائیں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۲۶۲
عبدالمجیداحمدبخش کواس طرح پکڑے ہوئے گھرآتاہے کہ اس کاایک ہاتھ اس کی گردن پرہے اورایک ہاتھ سے احمدبخش کے دونوں ہاتھ اس کی پیٹھ کے پیچھے پکڑے ہوئے ہیں۔ گھرمیں آتے ہی وہ احمدبخش کویہ کہہ کردھکادے دیتاہے کہ پہلے میری کیاکم پریشانیاں ہیں جوتوبہانہ بناکران میں اضافہ کرناچاہتاہے ۔احمدبخش زمین پرگرجاتاہے مگرہاتھ اورگھٹنوں کاسہارالے لیتاہے۔ راشدہ یہ منظردیکھ کربرتن دھوناچھوڑ دیتی ہے۔
راشدہ۔۔۔۔عبدالمجیدکی طرف آتے ہوئے ۔۔۔۔۔اس پرغصہ کیوں کررہے ہیں یہ پہلے ہی ذہنی مریض بن چکاہے
عبدالمجید۔۔۔۔۔یہ کوئی ذہنی مریض نہیں ہے یہ جھوٹ بول کرمجھے بدنام کرنے لگاتھا کہ میں نے اسے بولنے سے روک دیا
راشدہ۔۔۔۔آپ کوکسی کے بولنے سے پہلے یہ کیسے پتہ چل جاتاہے وہ سچ بولنے والاہے یاجھوٹ
عبدالمجید۔۔۔۔۔مجھے پتہ چل جاتاہے
راشدہ۔۔۔۔مولوی صاحب اوردوسرے لوگ کیوں آئے تھے
عبدالمجید۔۔۔۔اس کی وجہ سے ہی آئے تھے
راشدہ۔۔۔۔کیاکہاہے انہوں نے
احمدبخش۔۔۔۔ابونے مجھے بولنے ہی نہیں دیاتووہ کیاکہتے
عبدالمجید۔۔۔۔اس کی زبان پھرچلنے لگی ہے
راشدہ۔۔۔۔۔سب کہہ رہے ہیں یہ ذہنی مریض بن چکاہے
عبدالمجید۔۔۔۔یہ اس نے کام سے بچنے کے لیے بہانہ بنایاہے
راشدہ احمدبخش کولے کرچلی جاتی ہے۔ دونوں ماں بیٹا ایک چارپائی پربیٹھ جاتے ہیں
راشدہ احمدبخش کولے کرچلی جاتی ہے دونوں ماں بیٹا ایک چارپائی پربیٹھ جاتے ہیں
راشدہ۔۔۔۔سلطانہ بیٹی بھائی کے لیے پانی لے آؤ
عبدالمجیدراشدہ اوراحمدبخش کے پاس آجاتاہے
عبدالمجید۔۔۔۔احمدبخش سے۔۔۔۔دودن سے تیری وجہ سے کھیتوں میں کام نہیں ہوا چل میرے ساتھ کھیتوں میں چلیں
راشدہ۔۔۔۔اس حالت میں بھی یہ کام کرے گا
احمدبخش ۔۔۔۔۔امی ابوکہہ رہے ہیں میں چلاجاتاہوں
دونوں باپ بیٹا گھرسے باہرچلے جاتے ہیں
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۲۶۳
اریبہ ایک کمرے میں پڑی ہوئی پانچ چارپائیوں پرچادریں بچھاچکی ہے۔ سمیرا چارپائیوں پرتکیے رکھ رہی ہے
اریبہ۔۔۔۔سمیراسے ۔۔۔۔۔۔کھاناتیارہوگیاہے؟
سمیرا۔۔۔۔۔جی امی کھاناتیارہے
اریبہ۔۔۔۔۔پلیٹوں میں سالن ڈال دو
سمیرا۔۔۔۔۔ابھی وقت ہے جیسے ہی مہمان آئیں گے تب دے دیں گی کھانا
اریبہ۔۔۔۔اتنی دیرمیں ایک میٹھاپکوان بھی بنالو
اسی دوران بشیراحمدآجاتاہے
سمیرا۔۔۔۔السلام علیکم ابو کھاناتیارہے میں میٹھاپکوان بنانے جارہی ہوں
بشیراحمد۔۔۔۔۔رہنے دو نہ بناؤ
اریبہ۔۔۔۔۔مولوی تومیٹھا شوق سے کھاتے ہیں اورآپ منع کررہے ہیں
بشیراحمد۔۔۔۔۔مولوی صاحب اورباقی تمام مہمان چلے گئے ہیں
سمیرا۔۔۔۔۔انہوں نے کھانابھی نہیں کھایا رات بھی چلے گئے اب بھی
بشیراحمد۔۔۔۔۔کھانے کاتومیں نے کہانہیں
اریبہ۔۔۔۔۔ہم نے اتناانتظام کررکھاہے اورآپ نے کہاہی نہیں
بشیراحمد۔۔۔۔۔ابھی توانہوں نے ناشتہ کیا جب کھانے کاوقت ہوتاتوکہہ دیتا وہ توپہلے ہی چلے گئے
سمیرا۔۔۔۔۔جوکام کرنے آئے تھے وہ ہوگیا
بشیراحمد۔۔۔۔۔کام نہیں ہوا مولوی صاحب اورحکیم صاحب باربارپوچھتے رہے احمدبخش نے کچھ نہیں بتایا
اریبہ۔۔۔۔مولوی صاحب اس لیے چلے گئے کہ ادھربیٹھنے کاکوئی فائدہ نہیں
بشیراحمد۔۔۔۔۔جولوگ گٹومیں سامان دینے آئے تھے وہ لے گئے ہیں مجھے ایک بات سمجھ نہیں آرہی
اریبہ۔۔۔۔۔کیا
بشیراحمد۔۔۔۔اکثرمہمان کہہ رہے تھے کہ احمدبخش نے ضرورایساکچھ دیکھ لیاہے جس کااثراس کے دماغ پرپڑاہے کہ اس کی یہ حالت ہوگئی ہے
اریبہ۔۔۔۔اس کی ماں سے پوچھ لیتے ہیں ہوسکتاہے وہ بتادے
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۲۶۴
ایک گھرکے صحن میں پچاس کرسیوں پرمہمان بیٹھے ہیں۔ ایک شخص قرآن پاک کی تلاوت کرتاہے۔ ایک شخص علامہ ریاض الدین سہروردی کالکھاہوانعتیہ کلام سناتاہے۔ اس کے بعدگفتگوکاآغازہوتاہے
اخترحسین۔۔۔۔۔یہ اجلاس مقابلہ کرانے والی کمیٹیوں کے سربراہوں کے کہنے پربلایاگیاہے ۔ وہ اس اجلاس کوکچھ بتاناچاہتے ہیں
ظفراقبال۔۔۔۔۔انتظامات تومکمل ہوگئے ہیں اب کیابتاناچاہتے ہیں
عمیرنواز۔۔۔۔کوئی توخاص بات ہوگی
ارشدجمال۔۔۔۔ہم آپس میں بحث کرنے لگ گئے ہیں جن کے کہنے پراجلاس بلایاگیاہے ان سے توپوچھیں کہ وہ کیابتاناچاہتے ہیں
رب نواز۔۔۔۔۔پہلی بات تویہ ہے کہ ہم مولوی صاحب سے ملے تھے انہوں نے منصف بننے سے صاف انکارکردیاہے
کامران محمود۔۔۔۔مولوی صاحب نے یہ بھی کہاہے کہ جہاں بھی مقابلے کرائیں مقامی لوگوں کومنصف نہ بنائیں
اخترحسین۔۔۔۔۔یہ مولوی صاحب نے اچھامشورہ دیاہے ہم منصف دوسرے علاقوں سے لے آئیں گے
تنویراحمد۔۔۔۔مولوی صاحب بھی یہی کہہ رہے تھے
عبدالغفور۔۔۔۔دوسری بات کون سی ہے
کامران محمود ۔۔۔۔بشیراحمدکے گھرکے ساتھ کچھ لوگ اکٹھے تھے اوراس کے بھتیجے سے کوئی بات پوچھ رہے تھے
عبدالرشید۔۔۔۔وہ اس لڑکے سے کیاپوچھ رہے تھے
تنویراحمد۔۔۔۔مولوی صاحب بتارہے تھے کہ یہ بچہ ذہنی مریض بن چکاہے ضروراس نے ایساکچھ دیکھاہے جس کااثراس کے دماغ پرپڑاہے
ناصراقبال۔۔۔۔اس لڑکے نے ایساکیادیکھ لیاتھا
تنویراحمد۔۔۔۔وہ بتانے لگا اس نے زبان سے امی ہی کہاکہ اس کے باپ نے اسے بولنے سے روک دیا
کامران محمود۔۔۔۔۔ہم اس بچے کے علاج کااعلان کرآئے ہیں
اخترحسین۔۔۔۔۔ہم عبدالغفوراورظفراقبال کی ڈیوٹی لگادیتے ہیں وہ اس بچے کے باپ،چچااوردوستوں سے ملیں دوخواتین کی بھی ڈیوٹی لگادیں جوخواتین سے مل کریہ جاننے کی کوشش کریں کہ معاملہ کیاہے اس کے بعدفیصلہ کریں گے کہ کیاکرناہے۔
٭٭٭٭٭٭٭٭٭
منظر۲۶۵
صابراں اوراس کی دونوں بہنیں مقابلوں کے لیے آئے ہوئے اپنے اپنے گٹوکھولتی ہیں ہرگٹومیں چاول، چینی، گھی ،دالیں اوردوسراسامان ہے۔ ہرگٹومیں ایک بالشت کے برابرایک ایک خوب صورت ڈبہ بھی ہے جس پرلکھا ہے خصوصی تحفہ صابراں کی بہن اپناڈبہ کھولتی ہے تواس میں سوروپے کے بہت سے کرنسی نوٹ ہیں۔ جاوید، رحمتاں اورصابراں کی چھوٹی بہنیں بھی یہ دیکھ رہی ہیں۔
رحمتاں۔۔۔۔یہ پیسے غلطی سے آگئے ہیں واپس کردیں
صابراں۔۔۔۔۔یہ ڈبے میں پیک ملے ہیں ڈبے پرخصوصی تحفہ لکھاہواہے اورتحفہ واپس نہیں کیاجاتا
اسی دوران اریبہ آجاتی ہے اورکہتی ہے سمیراکے گٹوسے بھی یہی سامان اوراس طرح کاڈبہ نکلاہے۔
صابراں کی بہن۔۔۔۔پیسے گننے کے بعد ۔۔۔۔۔دس ہزارروپے ہیں
اریبہ۔۔۔۔ہم نے ابھی ڈبہ نہیں کھولا
رحمتاں۔۔۔۔۔یہ دس ہزارروپے اسی ڈبے سے نکلے ہیں
اریبہ۔۔۔۔۔میں ایک مشورہ کرنے آئی ہوں
رحمتاں۔۔۔۔۔کون سامشورہ
اریبہ۔۔۔۔ہم راشدہ کے پاس چلتی ہیں باتوں باتوں میں اس سے یہ بھی پوچھ لیں گی کہ احمدبخش نے ایساکیادیکھ لیاہے جس کااثراس کے دماغپرپڑاہے
رحمتاں۔۔۔۔۔کیایہ پوچھناضروری ہے
اریبہ۔۔۔۔بہت ضروری ہے اس کے بعدہی احمدبخش کاعلاج شروع ہوگا
رحمتاں۔۔۔۔علاج اس کانہیں اس کے باپ کاکراناچاہیے
اریبہ۔۔۔۔۔پہلے یہ توپتہ چل جائے کہ معاملہ کیاہے
رحمتاں۔۔۔۔۔جب کہوگی چلی جائیں گی
٭٭٭٭٭٭٭٭٭

 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Muhammad Siddique Prihar

Read More Articles by Muhammad Siddique Prihar: 339 Articles with 157309 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
03 Apr, 2021 Views: 134

Comments

آپ کی رائے