یقین اور اعتبار

قراۃالعین شفیق ۔ساہیوال.
پیر فیروز اﷲ شاہ کی گاؤں میں ایک بہت بڑی حویلی تھی اس کی گاؤں میں بہت سی زمینیں تھی گاؤں کے قریبی قبرستان کے پاس پیر فیروز اﷲ شاہ کا بہت بڑا دربار تھا نہ صرف گاوں کے لوگ بلکہ دور دور تک اس کی شہرت کے قصے تھے گاؤں کے لوگوں کا ماننا تھا کہ پیر فیروز اﷲ شاہ ہر پریشانی کا حل ہے لوگ لاکھوں پیسے اس کے دربار پر نچھاور کرتے تھے طرح طرح کے صدقے اس کے دربار پر دیے جاتے تھی پیر کے خلاف کوء بات کرتا تو لوگ اسے اچھی نظر سے نہیں دیکھتے تھے پیر فیروز اﷲ شاہ کالے علم میں ماہر تھا اس بات کا علم صرف اس کے خاص بندوں کو تھا ایک دفعہ ایک عورت دربار میں اکر پیر کے سامنے گڑگڑانے لگی کہنے لگی میرا ایک ہی بیٹا تھا اس نے اپنی من پسند دلہن میرے سر پر لا کر بیٹھادی ہے میں اس کی شادی اپنی بھانجی سے کروانا چاہتی ہوں کچھ بھی کرے اس عورت کو میرے بیٹے سے دور کردیں پیر نے کہا تمہارا کام ہو جائے گا اس کے لیے تمھیں ایک لاکھ روپیہ دینا ہو گا عورت کے پاس اسے دینے کے لیے پیسے نہیں تھے پیر نے کہا پیسے نہیں ہیں تو کیا ہوا یہ جو تمھارے ہاتھ میں دو کنگن ہیں یہ مجھے دیدو تمہارا کام ہو جاے گا اس بوڑھی عورت نے سوچا اور کہا یہ کنگن بہت قیمتی ہیں یہ میں آپ کو نہیں دے سکتی پیر نے کہا بیٹے سے بھی زیادہ قیمتی ہیں کیا یہ کنگن بڑھیا نے کہا کے نہیں بڑھیا کو اپنی بہو سے نجات چاہیے تھی وہ اس کی شادی کرکے اپنی من پسند بہو چاہئے تھی ہر حال میں پھر اس نے کنگن اتارے اور پیر کو دے دیے پیر فیروز اﷲ شاہ نے کہا کے کل آکر تعویذ لے جانا جب سے اس کا بیٹا فیضان علیزے سے شادی کر کے اسے گھر لے کر ایا تھا اس کی ماں کلثوم بیگم ہر وقت غصہ میں رہتی تھی اس نے علیزے کو طرح طرح کی تکلیفیں دی لیکن علیزے اسے اپنا نصیب سمجھ کر برداشت کرگئی جب کلثوم بیگم نے دیکھا کے علیزے اس کا ہر ظلم برداشت کررہی ہے تب اس کے ذہن میں تعویذ گنڈوں کا خیال ایااب پیر نے اسے کچھ تعویذ دیے اور کہا کہ کسی طرح اسے یہ تعویذ کھانے کی کسی بھی چیز میں دے دینا میں ادھر چلہ کاٹنا شروع کر دو گارات بارہ بجے کے بعد تمہیں اپنی بہو سے نجات مل جائے گی وہ بہت خوش تھی اسے اپنی منزل بہت قریب دکھاء دے رہی تھی لیکن وہ اپنی خوشی کسی پر ظاہر نہیں کرنا چاہتی تھی سردیوں کے دن تھے ہلکا ہلکا اندھیرا ہو رہا تھا وہ گھر پہنچی تو علیزے کھانا تیار کر چکی تھی فیضان جب کام سے گھر لوٹا تو علیزے نے جلدی جلدی کھانا لگایا جیسے ہی کھانے سے سب فارغ ہوے علیزے چائے بنانے کے لیے اٹھی کیونکہ کلثوم بیگم کو کھانے کے بعد چاے پینے کی عادت تھی اور علیزے بھی کھانے کے بعد چاے پینا پسند کرتی تھی علیزے کی ساس کلثوم بیگم نے بڑی شفقت سے علیزے کے سر پر ہاتھ پھیرا اور کہا اج میں اپنی چاند جیسی بہو کے لیے خود اپنے ہاتھوں سے چاے بناؤ گک علیزے اس اچانک ا جانے والی تبدیلی سے بہت خوش بھی تھی اور حیران بھی کلثوم بیگم نے چائے بنائی اپنا کپ علیحدہ کیا اور علیزے کی چائے میں تعویذ چمچ سے مکس کرنے لگی فیضان کو دودھ اور علیزے کو چائے دینے کے بعد وہ اپنا کپ لے کر اپنے کمرے میں آگئی فیضان نے کہا بہت دن ہو گئے ماں کے ہاتھوں کی چائے نہیں پی اگر تم مناسب سمجھو تو میں تمہارا چائے کا کپ لے لوعلیزے بہت خوش تھی کیونکہ ان پانچ مہینوں میں آج پہلی دفعہ اس کی ساس نے اسے محبت بھری نظروں سے دیکھا تھا اس نے خوشی خوشی وہ کپ فیضان کو تھما دیا اور خود دودھ پینے لگی جیسے ہی رات کے بارہ بجے فیضان کو ایسا محسوس ہوا جیسے اس کا بدن آگ میں جل رہا ہواس سے پہلے وہ علیزے کو اٹھاتا ایک ہی جھٹکے میں اس کی روح پروز کر گئی ادھر کلثوم بیگم کو اس خوشی میں نیند نہیں ارہی تھی بڑی مشکل سے اس نے رات آنکھوں میں کاٹی اس کے علیزے کی موت کے منتظر تھی لیکن اچانک اس کا دروزہ کوئی زور زور سے کھٹکھٹانے لگا دروازہ کوئی اور نہیں بلکہ علیزے کھٹکھٹا رہی تھی علیزے ہوش وحواس سے بیگانہ تھی اس کی زبان سے الفاظ نہیں ادا ہو رہے تھے علیزے کلثوم بیگم کو اپنے کمرے میں لے کر گئی اور کہا کہ فیضان آنکھیں نہیں کھول رہا ڈاکٹر کو بلایا گیا ڈاکٹر نے کہا کہ اب فیضان اس دنیا میں نہیں رہاکلثوم بیگم اپنے بیٹے کا دکھ برداشت نہیں کرسکی اور وہ اپنے ہوش وحواس کھو بیٹھی اور اب وہ پاگل ہو چکی ہے اور کہتی ہے کہ میں ڈائن ہوں اور اپنے بیٹے کی موت کی ذمہ دار ہوں علیزے کے ماں باپ نے اس کی شادی ایک خوشحال گھر انے میں کردی وہ اب بہت اچھی زندگی گزاررہی ہے پیر فیروز اﷲ شاہ بھی اب اس دنیا میں نہیں رہے جب وہ ایک رات وہ اپنے کمرے میں سورہے تھے تو اس کمرے میں آگ لگ گئی اور وہ ان کی لاش جل کر کوئلہ بن گئی اور ان کا دربار بھی اب ویران ہو چکا ہے اج کے دور میں بھی اسی فیصد لوگ تعویذ گنڈوں پریقین رکھتے ہیں اور اپنے مستقبل کو درد ناک بنا لیتے ہیں کہتے ہیں مظلوم کو خوشیاں مل سکتی ہیں لیکن ظالم انسان کبھی خوش نہیں کرسکتا ایک سچا مومن صرف اﷲ پر یقین رکھتا ہے اور اسی کے اگے جھکتا ہے ان تعویذ گنڈوں پر یقین رکھنے والا انسان تباہ برباد ہو جا تا ہے جس انسان کو اﷲ تعالی پر یقین نہیں ہوتا وہی انسان شرک کرتا ہیاﷲ تعالی کا ارشاد ہے میں ہر انسان کو معاف کر سکتا ہوں سواے شرک کے شرک بہت بڑا گناہ ہیجس کی سزا انسان کو اس دنیا میں ہی مل جاتی ہیبے شک مشکلات اور پریشانیاں جتنی بھی ہوصرف اﷲ سے مدد مانگیبے شک ہر مشکل کے بعد آسانی ہے بے شک اﷲ بہت بڑا مددگار اور اسانیاں پیدا کرنے والا ہے وہ کبھی لے کر آزمانا ہے اور کبھی دے کربس مومن وہی ہے جو ہر آزمائش پر پورا اترے
 

Rasheed Ahmad Naeem
About the Author: Rasheed Ahmad Naeem Read More Articles by Rasheed Ahmad Naeem: 47 Articles with 29712 viewsCurrently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here.