قرآن میں علم سائنس کا قیمتی اثاثہ

(DR ZAHOOR AHMED DANISH, NAKYAL KOTLE AK)
محترم قارںین!مجھے اپنے مسلمان ہونے پر فخر ہے ۔مشکور ہوں اپنے ربّ کا کہ اس نے راہِ حق کا راہی بنایا،گم گشتہ و راہِ ضلالت کی تاریک راہوں سے محفوظ رکھا۔اک اسلام سے نابلد طبقہ ایسا بھی ہے کہ جو اسلام پر یکے بعد دیگرے عقل سے کوسوں دور حقیقت سے ماوراء اعتراض وارد کرتاہے ۔بھائی اسلام تو قدامت پرستی ،رہبانیت کا دین ہے ،جدید چیزیں بھلا اس میں کہاں ،اونٹوں کے سفر سے لیکر ،ماضی کے کم تحقیق یافتہ زمانوں کا تذکرہ کرتے ہیں ۔

مجھے اسی لیے اس عنوان پر کچھ لکھنے کی حاجت محسوس ہوئی کہ بتا دیاان عقل کے اندھوں کو کہ میرے دین نے کئی سو برس بہت سے رازوں سے پردہ اٹھا دیا تھا جسے بعد کے انسان نے اپنی تحقیق کا نام دیا ۔لیجیے پڑھییے ۔!!!!!!!!!!!!!!!!!!!
١۔ ہر چیز پانی سے بنی ہے
وَجَعَلْنَا مِنَ الْمَآءِ کُلَّ شَیْءٍ حَیٍّ(الانبیائ٢١:٣٠)ـ۔
٢۔زمین ، آسمان جڑے ہوئے تھے پھر ایک دھماکے سے جدا ہوئے
اَنَّ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضَ کَانَتَارَتْقاً فَفَتَقْنَاھُمَا(انبیائ٢١:٣٠)۔
٣۔ آسمان ایک مادی اور محسوس چیز ہے
(ا) ثُمَّ اسْتَویٰ اِلَی السَّمَآءِ وَھِیَ دُخَانٌ(حم السجدۃ٤١:١١)۔
(ب) رَفَعَ السَّمٰوٰتِ بِغَیْرِ عَمَدٍ تَرَوْنَھَا(الرعد١٣:٢)۔
(ج) اِذَا السَّمَآءُ انْفَطَرَتْ(الانفطار٨٢:١)۔
٤۔ آسمان میں برج قائم کر دیے گئے ہیں
(ا) تَبَارَکَ الَّذِیْ جَعَلَ فِی السَّمَآءِ بُرُوْجاً(الفرقان٢٥:٦١)۔
(ب) وَالسَّمَآءِ ذَاتِ الْبُرُوْجِ(البروج٨٥:١)۔
٥۔زمین میں طرح طرح کے خزائن موجود ہیں
وَجَعَلَ فِیْھَا رَوَاسِیَ مِنْ فَوْقِھَاوَبَارَکَ فِیْہَا(حم السجدۃ٤١:١٠)۔
٦۔ جانور کے پیٹ میں دودھ کیسے تیار ہوتا ہے
نُسْقِیْکُمْ مِمَّا فِیْ بُطُوْنِہٖ مِنْ بِیْنِ فَرْثٍ وَّدَمٍ لَّبَناً خَالِصاً(النحل١٦:٦٦)۔
٧۔ بارش کیسے برستی ہے
اَلَمْ تَرَ اَنَّ اللّٰہَ یُزجِیْ سَحَاباً ثُمَّ یُؤَلِّفُ بَیْنَہ،(النور٢٤:٤٣)۔
٨۔ سبزہ کیسے اگتا ہے
اِنَّ اللّٰہَ فَالِقُ الْحَبِّ وَالنَّویٰ(انعام٦:٩٥)۔
٩۔ بچہ کیسے بنتا ہے
(ا) خُلِقَ مِنْ مَّآءٍ دَافِقٍ یَّخْرُجُ مِنْ بَیْنِ الصُّلْبِ وَالتَّرَآئِبِ(طارق٨٦:٦،٧)۔
(ب) اِنَّا خَلَقْنَا الْاِنْسَانَ مِنْ نُّطْفَۃٍ اَمْشَاجٍ(دھر٧٦:٢)۔
(ج) ثُمَّ خَلَقْنَا النُّطْفَۃَ عَلَقَۃً فَخَلَقْنَا الْعَلَقَۃَ مُضْغَۃً(مومنون٢٣:١٤)۔
(د) وَنُقِرُّ فِی الْاَرْحَامِ مَانَشَآءُ اِلیٰ اَجَلٍ مُّسَمًّی(حج٢٢:٥)۔
١٠۔سورج چل رہا ہے
وَالشَّمْسُ تَجْرِیْ لِمُسْتَقَرٍّلَّھَا(یسین٣٦:٣٨)۔
١١۔ سورج اور چاند کی روشنی میں فرق ہے
ھُوَ الَّذِیْ جَعَلَ الشَّمْسَ ضِیَآئً وَّالْقَمَرَ نُوْراً(یونس١٠:٥)۔
١٢۔اﷲ تعالیٰ تمہیں پوری کائنات میں اور تمہاری اپنی جانوں میں اپنی نشانیاں دکھائے گا
سَنُرِیْہِمْ آیَاتِنَافِی الْآفَاقِ وَ فِیۤ اَنْفُسِہِمْ (فصلٰت٤١: ٥٣)۔
ریاضی
١۔ ایک کا ہندسہ
وَاِلٰھُکُمْ اِلٰہٌ وَّاحِدٌ(البقرۃ٢:١٦٣)۔
٢۔دو کا ہندسہ
وَمِنَ الْاِبِلِ اثْنَیْنِ وَمِنَ الْبَقَرِ اثْنَیْنِ(انعام٦:١٤٤)۔
٣۔تین کا ہندسہ
(ا) اٰیَتُکَ اَلاَّ تُکَلِّمَ النَّاسَ ثَلٰثَۃَ اَیَّامٍ(آلِ عمران٣:٤١)۔
(ب) ثَلَاثَۃَ قُرُوْۤئٍ(البقرۃ٢:٢٢٨)۔
٤۔ چار کا ہندسہ
(ا) تَرَبُّصُ اَرْبَعَۃِ اَشْھُرٍ(البقرۃ٢:٢٢٦)۔
(ب) اَرْبَعَۃَ اَشْھُرٍ وَّعَشْراً(البقرۃ٢:٢٣٤)۔
٥۔ پانچ کا ہندسہ
وَیَقُوْلُوْنَ خَمْسَۃٌ سَادِسُھُمْ کَلْبُھُمْ(الکہف١٨:٢٢)۔
٦۔ چھ کا ہندسہ
خَلَقَ السَّمٰوٰتِ وَالْاَرْضَ فِیْ سِتَّۃِ اَیَّامٍ(اعراف٧:٥٤)۔
٧۔سات کا ہندسہ
وَیَقُوْلُوْنَ سَبْعَۃٌ وَّثَامِنُھُمْ کَلْبُھُمْ(الکہف١٨:٢٢)۔
٨۔ آٹھ کا ہندسہ
ثَمَانِیَۃَ اَزْوَاجٍ(انعام٦:١٤٣)۔
٩۔ نو کا ہندسہ
وَلَقَدْ اٰتَیْنَا مُوْسیٰ تِسْعَ آیَاتٍ بَیِّنَاتٍ(بنی اسرائیل١٧:١٠١)۔
١٠۔دس کا ہندسہ
اَرْبَعَۃَ اَشْھُرٍ وَّعَشْراً(البقرۃ٢:٢٣٤)۔
١١۔گیارہ کا ہندسہ
اِنِّیْ رَاَیْتُ اَحَدَ عَشَرَ کَوْکَباً (یوسف ١٢:٤)۔
١٢۔بارہ کا ہندسہ
فَانْفَجَرَتْ مِنْہُ اثْنَتَا عَشْرَۃَ عَیْناً (البقرۃ ٢:٦٠)۔
١٣۔جمع کا سوال (10=7+3)
ثَلَاثَۃَ اَیَّامٍ فِی الْحَجِّ وَسَبْعَۃٍ اِذَا رَجَعْتُمْ تِلْکَ عَشَرَۃٌ کَامِلَۃٌ (البقرۃ٢:١٩٦)۔
١٤۔تفریق کا سوال (950=50-1000)
فَلَبِثَ فِیْہِمْ اَلْفَ سَنَۃٍ اِلاَّخَمْسِیْنَ عَاماً(العنکبوت ٢٩:١٤)۔
١٥۔ضرب کا سوال (700=100x7)۔
کَمَثَلِ حَبَّۃٍ اَنْبَتَتْ سَبْعَ سَنَابِلَ فِیْ کُلِّ سُنْبُلَۃٍ مِّائَۃُ حَبَّۃٍ (البقرۃ٢ :٢٦١)۔
١٦۔نسبت تناسب کا سوال
(ا) اِنْ یَّکُنْ مِّنْکُمْ عِشْرُوْنَ صَابِرُوْنَ یَغْلِبُوْا مِائَتَیْنِ (انفال٨ :٦٥)۔
(ب) وَاِنْ یَّکُنْ مِّنْکُمْ مِائَۃٌ یَّغْلِبُوْۤا اَلْفاً (انفال٨ :٦٥)۔
١٧۔زکوۃ ،مال ِ غنیمت اورمالِ فَی کی تقسیم کے علاوہ میراث کی تقسیم میں سو فیصد ریاضی کا دخل ہے۔ جس کی تفصیل سورۃ النساء میں موجود ہے لِلذَّکَرِ مِثْلُ حَظِّ الْاُنْثَیَیْنِ (النسائ٣ :١١)۔

پڑھا آپ نے اب صدقِ دل سے بتائیے اسلام کیسا دین ہے ؟تو پھر اس کی ترویج و اشاعت میں اس قدر سستی کیوں ؟خود تحقیق کیوں نہیں کرتے ؟انگریز کی تحقیق کے منتظر کیوں رہتے ہیں ؟کیا آپ شعور و فکر کی نعمت سے محروم ہیں ؟اگر نہیں تو پھر ابھی اور اسی وقت عہد کرلیجیے کے دینی معاملات ،عبادت ،و اسلام کے ذریں اصول پر کاربند رہوں گا، رہوں گی ۔اپنی بصیرت و بصارت کے مطابق تعلیمات اسلام کو عام کرتے رہیں گئے ۔۔اک نئے جذبہ اور امنگ کے ساتھ پھر حاضر ہونگے ۔اپنے آراء سے ضرور نوازتے رہیے گا۔

طالب ِ دعا:
ڈاکٹرظہوراحمد دانش
چیر مین:ورلڈ اسلامک ریوولیوشن
دوٹھلہ ڈبسی ضلع کوٹلی آزادکشمیر
Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 3505 Print Article Print
About the Author: DR ZAHOOR AHMED DANISH

Read More Articles by DR ZAHOOR AHMED DANISH: 231 Articles with 219322 views »
i am scholar.serve the humainbeing... View More

Reviews & Comments

asalam-o-alikum
ap ka har article kamal hay or ye un pay dhamal Hay
hamara mazhab scince b hay riazi b agar aesa
na hota to americans ki ya kisi bhi mulk k
scientist apni labs main quran ka majmooa na rakhtay
ap ki research qabil-e-tehseen hay
By: farooqui, karachi on Sep, 02 2012
Reply Reply
0 Like
salam!!! HAMARA DEEN ISLAM OR HAMARI KITAAB QURAN TO HAN HE KAMIL TU PHR YH KASAY MUMKIN H K IS MAI AISI BATAIN SHAMIL NA HOON..
By: HAYAKHAN, KARACHI on Jul, 01 2012
Reply Reply
0 Like
salam bhai.ap hamesha boht khob lekhty hain.
By: faqir muhammad attari, karachi on Jun, 11 2012
Reply Reply
0 Like
agar in tamam ayaat ka targuma bhi hota to ek aam admi ko samajhna or bhi asan ho ga ta. Quran sharif main to kai raaz posheeda hain. ek hi muqaam per samandar main do rang kay pani go kabhi apas may nahi miltay, or ek jaga zikar hai tum zoor kay siwa nikal saknay ky nahi (es say murad rocket ki taraf eshara liya jata hai, insan to khuun kay lothray say banagaya hai. baraey meharbahi is hawalnay say bhi kuch tehreer karain
By: tanveer, karachi on Jun, 11 2012
Reply Reply
0 Like
Msshallah
By: Jamil Ahmed, Madina on Jun, 07 2012
Reply Reply
0 Like
ڈاکٹرصاحب کیا یہ ممکن ہے کہ آپ اگر اپنے آرٹیکل مجھے میل کردیں اور میں آپ کی اجازت سے اخبارات و مجلات میں شائع کروادوں ۔تمام کالمز کمال لکھے ہیں ۔لیکن مجھے افسوس ہے کہ ملک میں آئیں بائیں شائیں مارنے والوں کو ٹی وی ،اخبارات مراعات دے رہے ہیں اور آپ جیسے ہمدرد ،عظیم لوگ اپنے زور بازو پر حق کی فراوانی میں مصروفِ عمل ہیں ۔مجھے فخر ہے آپ پر۔
By: lecturer AHMED ALEEM PRACHA, MANGLA AZAD KASHMIR on Jun, 03 2012
Reply Reply
0 Like
slam :DR SAHB KESE MEZAJ HAIN?QLM ME TAQAT HY .AP NEWS PAPER ME KION NAE LIKTE ?AGER IJAZAT HO TO ME APNE KUCH LINKS APKO SEND KERTE HON.JO K JOURNALIST HAIN.AP JESE DARD RAKNE WALE ELM WALON KE AKHBARAT OR TV CHANAL PER HAJAT HAJAT HY.PLZ LIKAIN.....HER GER ME NET NAE KO WO AP KE AWAZ SUN SAKE ,AKHBAR TAK AAM SHAKHS KE PONCH HY.PLZZZZZZZZZZZ
By: SANA SAEED, SIALKOT on May, 31 2012
Reply Reply
0 Like
ڈاکٹرصاحب بہت پیارے انداز میں آپ نے اسلام کے پیغام کی نمائندگی کی ہے ۔مزید بھی لکھیں۔ایک بات عرض ہے کہ معاش اور معاشرت پر کچھ لکھیں
By: qaiser mehmood , sharja on May, 30 2012
Reply Reply
0 Like
Assalam u Alaikum Zahoor Bhai. Aap ka article parha, dil khushi aur fakhr key jazbaat se bhar gaya. Kuch Pashemani ki bhi kaifiyyat hai, woh iss baat par key hamm Musalmano ney Tehqeeq ka kaam Ulaama par hi kion chorr dia. Darjanon musalmanon ko mein jaanta hoon jo na sirf zaheen hain balkey ilm e deen ki aagaahee bhi rakhtyey hain, kutb ka mutalia bhi kartay hain, phir ham apne ilm ke charagh se auron ko kion nahin roshni pohnchatey, aj aap ne ham sab ka sir fakhr se buland kar dia hai aur hamain sochney ka moqa mila hai key ham sab apni maloomaat ko istemal karain, susti chorain aur qalam uthain. Allah Azzawajal ham sab bashaoor musalmanon ko taufeeq ata farmaaey, Amen.
By: Farid Ahmed, Karachi on May, 23 2012
Reply Reply
0 Like
bohout khoob kafi achi research hai apki zahoor bhai mashAllah ilm may izafay ka shukriya
By: Aamir Oatni, Karachi on May, 23 2012
Reply Reply
0 Like
MashAllah ji v.nice knowledge
By: Mubashar Ghuman, Mehrabpur on May, 22 2012
Reply Reply
0 Like
apne jadeed unwanat ka intekhab ker k dushman o hame e dushman ka behtreen jwad de dia k musalman tehqeq nae kerte.ME APKA SHUKRIA ADA KERTE HON K APNE KAMAL ANDAZE TEHRER APNAYA HY.
By: ALLAMA SABTEEN , BARA KAHOO ISLM on May, 21 2012
Reply Reply
0 Like
me mamnoon hon ansa apka k ap elm dost hain.kise fun ya slahiat ke qadar ze shaor or ze qadar shakhs he ker sakta hy .apne apne qemate malfozat se nwaza.boht boht shukria.
By: DR ZAHOOR AHMED DANISH, nakyal kotle ak on May, 21 2012
Reply Reply
0 Like
SubhanALLAH
bohat zabardast...

asal mein hamary yahan asli aur haqeeqi taleem ka kami hae jo hamein QURAN aur SUNNAT se mil sakti hae...dua hae k doctor sahib aap jaisay kuch aur ahl e dil aur sincere loog mil jaein tu aik platform se ikathay hoo ker ham aam musalmano aur dunia bhar k insaano ko ISLAM ki roshni mein laaien...

ye bohat acha kaam hae jo hamariweb walon ne start ki hae k har maktab e fikar ko aam ijazat hae k wo apni ilmi aur tehqeeqi kawish ko ham se share kerty hein aur hamaray zahan ki girhein khoolty hein...

hamariweb k har person k leay naik duaein aur best wishes...JazakALLAH
By: Ansa, Sialkot on May, 20 2012
Reply Reply
0 Like
kmal andaz apnaya.KHUDA RAH LIKTE RAHIAY GA.MUJE SHIDAT SE APKE KALAM KA INTEZAR RAHE GA.NAJANE MUJ JESE KITNE DEWANE APKE TEHRER K MUNTAZIR HONGE.
By: IMRAN SADIQ, JARANWALA PUNJAB on May, 19 2012
Reply Reply
0 Like
Allah apko Jaza-e-Kher de ameen, Or humko Islam ki taleemat aam krne ka zarya bnade ameen. Bohat umda likha he.
By: zai,, karachi. on May, 15 2012
Reply Reply
0 Like
MASHAALLAH ....BHUT ACHA ..likha dua karna hum sab ko samj aa jye deen islam ki . paryen par kar samjyen es par aml karyen aur dosroon tak pounchayen ....
By: s.habib, hong kong on May, 14 2012
Reply Reply
0 Like
بیشک قرآن ہی میں تمام خشکی اور تری کا بیان ہے جس کو اللہ جتا علم و شعور اور تحقیق کی توقیق بخشے وہ اتنے رموز و اسرار سے اگاہی حاصل کرپاتا ہے۔قرآن ایک سمند کی مانند ہے جتنا غوطہ لگاؤ گے اتنے کمالات پاؤ گے۔
صحابی رسول کا قول شاہد ہے کہ اگر میرے اونٹ کی مہار بھی گم ہوجائے تو میں اسے قرآن سے تلاش کر لونگا۔ جب قرآن ہمارے لئے تحقیق کے دروازے کھول رہا ہے تو ہم کیوں تحقیق سے دور اور اور اقتدا انگریز پر اکتفا کر بیٹھے ہیں؟اللہ نے آپ کو جتنی صلاحیت دی ہے اس کو بروکار لاتے ہوئے تحقیق کے میدان میں آئے اور چھا جائیں۔
اللہ تعالیٰ مسلمانوں کو اس فیلڈ میں کارہائے نمایہ انجام دینے کی توفیق عطا فرمائے۔اٰمین
By: M.Arshad Madani, Karachi on May, 14 2012
Reply Reply
0 Like
DR SAHB BOHT KHUSHI HOE K APNE PHR AIK NAE TEHRER K SATH HMARI MALOMAT ME EZAFA KIA.
MZEED BE NOKE QALAM SE ELM JOHAR PAISH KERTE RAHIYE GA.
By: SALEEM QADRI, KARACHI on May, 14 2012
Reply Reply
0 Like
Language: