خواب نگر (پارٹ :سکس)

(hira, gojra)
آج جواد ماموں پھر آے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مگر اس بار ان کے ساتھ ان ہی کی عمر کے ایک آدمی بی تھے ۔۔۔۔۔۔جواد ماموں نے بتایا کہ یہ ان کے دوست ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ آدمی سارہ کو گھور گھور کے دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔
کچھ دیر بعد جب وہ چائے دینے کمرے میں گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔تو واپسی پہ دروازے کہ ساتھ لگ کرکھڑی ہو گئی ۔۔۔۔۔۔
اسے تجسس ہو رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ ایسی کون سی باتییں ھیں جو اس سے چھپ کر کی جا رہی ہیں۔۔۔۔۔۔تھوڑی دیر بعد ماموں کی آواز
سنائی دی۔۔۔۔۔۔
آپا وہ بہت خوش رہے گی اس بات کی گارنٹی میں دیتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آپ زیادہ سوچیں نہ ۔اور ہاں کہہ دیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مگر۔۔۔۔۔۔جواد مجھے کچھ وقت۔۔۔۔۔۔اماں کی شکستہ سی آواز سنائی دی ۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اسے ساتھ لے جائے گا۔۔۔۔۔۔۔۔اسی لیئے ہم یس کام میں تاخیر نہیں کرنا چاہتے۔۔۔۔۔۔۔اس آدمی کی پختہ آواز سنائی دی ۔۔۔۔۔
پھر کچھ دیر کے لیے گہری خاموشی چھا گئی ۔۔۔۔۔۔
اچھا آپا اب ہم چلتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔آخر کب تک ایسی زندگی گزاریں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ماموں کی آواز سن کر کچن میں چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔
اچھا ۔۔۔۔۔آپا ہم ھم پھر آیئں گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماموں نے گھر سے باہر قدم رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اماں کیا بات ہے ۔کیا کہہ رہے تھے ماموں اور یہ آدمی کون تھا۔۔۔۔۔۔۔۔ان کےجانے کے بعد سارہ نے بے چینی سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔
تمھارے ماموں کے دوست تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اماں نے جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔
مگر یہ کرنے کیا آے تھے ۔۔۔کیوں آئے تھے ،،،،سارہ نے پھر پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔
رشتہ لے کر آے تھے ۔۔۔۔۔۔۔اماں نے آیستہ سے کہا ۔
رشتہ لے کر ؟۔۔۔۔
مگر کسکا ۔۔۔۔سارہ نے حیرانگی سے استسفار کیا ۔۔۔
تمھارہ ۔۔۔۔۔۔
میرا ۔۔۔۔۔۔۔۔مگر میرا کیوں اماں ۔۔آپ نے انہیں کہا نہیں کہ وہ کون ھہوتے ہیں میرا رشتہ لے کر آنے والے ۔۔۔۔۔۔
سارہ نے غصے سے کہا ۔۔۔۔۔
مگر بیٹا ۔۔۔۔رشتہ اچھا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔
اماں ۔۔۔۔آپ یہ کیسی باتیں کر رہی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ جانتی ہین کہ ابھی میں پڑھ رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔مجھے ابھی شادی نہیں کرنی۔۔۔۔۔۔
بس آپ انہیں منع کر دیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سارہ نے کہا
جبکہ اماں گھہری سوچوں میں ڈوب گئیں

٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠
سارہ
کالج کی سیڑھیوں پہ وہ دونوں بیٹھی ھوئیں تھیں ۔۔سدرہ نے سارہ کو مخاطب کیا ۔۔۔
ایک بات پوچھ سکتی ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔
پوچھو میڈم ۔۔۔۔۔سارہ نے ھاتھ میں پکڑی کتاب کھولتے ہوئے کہا۔۔۔۔
میرے بھائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔سدرہ نے بات ادھوری چھوڑ دی
کیا تمھارے بھائی ۔۔۔۔۔۔پوری بات کرو ےیار۔۔۔۔۔۔۔سارہ نے چڑتے ہوئے کہا ۔۔۔۔
وہ تمھیں پسند کرتے ہیں۔۔سدرہ نے ڈرت ہوئے کہا ۔۔۔۔۔
تو؟سارہ نے استسفار کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم سے کس نے کہی یہ بات ۔۔۔۔۔۔۔
میرے بھائی نے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔یو نو ۔وہ تم سے شادی کرنا چاہتے ہیں ۔۔۔۔۔سدرہ نے کہا۔۔۔۔۔۔
سارہ کےپاس جواب پہلے سے تیار تھا
پلیز سدرہ ۔یہ ممکن نہیں ۔۔۔۔۔۔۔سارہ نے کتاب سے نظریں ھٹاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔
مگر کیوں۔۔۔۔۔۔۔سدرہ کے چہرے کے رنگ یڑے ہوئے تھے
اس لیے کہ تمھارہ بھائی میرے خواب پورے نہیں کر سکتا ۔۔۔۔۔۔۔سارہ نے جواب دیا
خواب؟
ھاں۔۔۔۔۔۔۔میرے خواب ۔۔۔۔۔۔کیا تم میرے خوابوں سے واقف نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔سارہ نے سدرہ کے چہرے کی ترف دیکھتے ہوئے کہا
بہت سی دولت
عیش و آرام
بہت سی خوشیاں
اور یہ سب دولت سے ہی مل سکتا ہے
کیا تمھارہ بھائی پورے کر سکتا ہے میرے خواب ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سدرہ کو گھہری چپ نے گھیر لیا۔۔۔۔۔۔
تھوڑی دیر کے لیے دونوں کے درمیان خاموشی چھا گئی
مگر ۔سارہ وہ تم سے محبت کرتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سدرہ کی آنکھوں کے سامنے اس کے بھائی کا چہرہ آگیا
اس نے اپنے بھائی کی خوشیوں کے لیے کوشش کرنا چاہی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج کے دور میں محبت کیکوئی اہمیت نہیں ۔۔سب پیسے کی کھیل ہے ۔۔۔۔۔۔سارہ نے مسکراتے ہوئے جواب دیا
میں محبت کے نام پر
تڑپتی ہوئی
سسکتی ہوئی
بے جان زندگی نہیں گزار سکتی
میرے خوابوں کا نگر بہت بڑا ہے سدرہ
اور تم تو جانتی ہو سدرہ ۔۔۔۔ابھی تمھارہ بھائی پڑھ رھا ہے
نجانے کب وہ کامیاب ہو
اور وہ دو کمروں کا چھوٹا سا مکان
نیہں سوری پلیز۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایسا ممکن نہیں۔۔۔۔۔
تم اپنے بھائی سے کہ دو وہ میرا خیال اپنے دل سے نکال دے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سارہ نے جواب دیا ۔۔۔۔۔
اور ہماری دوستی؟
سدرہ نے کہا ۔۔۔۔
کیا مطلب؟سارہ نے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہم پہلے بھی فرنڈز تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس بات کا ہماری دوستی سے کیا تعلق ۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں اگر تم ان باتوں کی وجہ سے مجھے چھوڑنا چاہتی ہو تو جیسے تمھاری مرضی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سارہ نے سدرہ کے چہرے کی طرف دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔

٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠٠

اگلے دن سارہ کالج سے واپس آئی تو گھر کے دروازے پہ تالا لگا دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔اماں ہمسائی کے گھر چابی دے گئیں تھیں ۔۔۔
سارہ نے دروازہ کھولا اور اندر آگئی
ساری دن گزر گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شام کے سائے گھہرے ہونے لگے ۔
مگر
ابھی تک اماں گھر نہیں آیئں تھیں
سارہ پریشان ہو گئی
وہ اماں کے انتطار میں صحن میں ٹہلتی رہی
رات کے دس بجے دروازے پہ دستک ہوئی
اس نے جلدی سے دروازہ کھولا
اماں کے ساتھ ایک آدمی بھی کھڑا تھا
اماں بڑی سی گاڑی میں گھر آئیں تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس آدمی کے ہاتھ میں مٹھائی کے کی ٹوکری تھی ۔۔۔۔۔۔اور پھر اس نے گاڑی میں سے بھت سا سامان لا کر اندر رکھنا شروع کر دیا
سب کچھ انتہائی خوبصورت پیکنگ میں تھا
سارہ یہ سب حیرانگی سے دیکھتی رہی ۔۔۔۔۔۔
آخر میں ڈرائیور نے زیور کے ڈبے لا کر اماں کے ہاتھ میں تھما دیئے ۔۔۔۔۔۔۔اور چلا گیا ۔۔۔۔
یہ سب کیا ہے اماں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس کے چلے جانے کے بعد سارہ نے اماں سے پوچھا ۔۔۔۔۔
کس کا سامان ہے یہ؟ اور آپ گئیں کہاں تھیں؟اماں خاموشی سے چارپائی پہ بیٹھی رہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یوں جیسے بیت لمبا سفر طے کر کے آئی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ گھہری سوچوں میں ڈوبی ہوئی تھیں ۔۔۔۔
اماں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اماں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سارہ نے اماں کو آواز لگائی
اماں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں کچھ پوچھ رھی ھوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بہ سب سامان کس کا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔کس نے دیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔
تمھارہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اماں نے جواب دیا
تمھارے ماموں نے تمھارہ رشتہ طے کر دیا ہے
لڑکا امریکہ میں رہتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہیں پہ اس کا کاروبار ہے ۔۔۔۔اچھا خاصا رشتہ ہے ۔۔۔۔۔۔میں تو دیکھنے گئی تھی ۔مگر تمھارے ماموں
چاہتے تھے کہ رشتہ ابھی طے ہو ۔۔۔۔۔۔۔اور پھر اس رشتے میں کوئی کمی نہیں ۔۔۔۔۔۔
دولت ھے
گھر گاڑی ،،،سب کچھ ۔۔۔تمھارے ماموں کو خاندان کے کسی فرد نے بتائیا تھا۔۔۔۔۔ شائید شاہدہ نے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاہدہ ان کی خالہ زاد بہن تھیں ۔۔۔۔۔۔انہوں نے سارہ کو دیکھ رکھا تھا
اسی لیے اس دن تمھارے ماموں ہمارے گھر آئے تھے ۔۔۔۔۔
اور جو شخص ان کے ساتھ تھا ان ہی کا چھوٹا بھائی ہے ۔۔۔۔۔جس کے ساتھ تمھارا رشتہ طے کیا ہے ۔۔۔۔۔۔انہیں حافظ قرآن اور خبصورت
لڑکی چاہئے تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تمھارے ماموں نے انہیں ہاں تو کہ دی ہے مگر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابھی بھی تمھاری مرضی کے بغیر یہ شادی نہیں ھو گی ۔۔۔۔۔
چاہے مجھے اپنے بھائیوں کو ہمیشہ کے لیے چھوڑنا پڑے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میرے لیے میری بیٹی کی خوشیوں سے بڑھ کر کچھ نہیں ۔۔۔۔۔۔میرے بھائی تو پہلے بھی مجھے چھوڑچکے تھے
میں جانتی ہوں ۔۔۔۔۔۔تمھارے دماغ میں بہت سے سوال گردش کر رہے ہوں گے ،۔۔۔۔
مگر ان سب باتوں کو نظر انداز کر کے صرف اپنی زندگی کے بارے میں سوچو ۔۔۔۔۔۔تو شائد تم صحح فیصلہ کر پاو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور یہ بھی یاد رکھنا
دولت سب کچھ نہیں ہوتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔جب تک نصیب ساتھ نہ ہو
اور اگر
صرف دولت ہی چاہتی ہو
تو اس رشتے کو ٹھکرانے کے بعد
شاید ہی دولت
اس بوسیدہ مکان کے
ٹوٹے پھوٹے
دروازے پہ دستک دے ۔۔۔۔۔

جاری ہے
Rate it:
Share Comments Post Comments
Total Views: 5402 Print Article Print
About the Author: hira

Read More Articles by hira: 53 Articles with 35172 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

mashAllah hira aap acha likh rahi hain...agli episode ka hummain intezaar rahay ga.....
By: farah ejaz, dearborn,mi USA on Oct, 26 2014
Reply Reply
2 Like
bohat bohat shukria .........farah je....bohat khushi hui.........hamesha khush rahien.......muskrati rahien
By: hira, gojra on Oct, 28 2014
1 Like
Language: