ﻓﻮﻥ ﺳﺮﮨﺎﻧﮯ ﺭﮐﮭﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﻧﯿﻨﺪ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﯽ؟

(Mohammed Masood, Nottingham)
ﺭﺍﺕ ﮐﻮ کمرے ﻣﯿﮟ ﺍﮐﯿﻠﮯ ﺳﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﮈﺭنے والی اولاد ﻣﻮﺑﺎﺋﻞ ﺳﯿﭧ ﺁﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍتنی ﺑﮩﺎﺩﺭ ﮐﯿﺴﮯ ﮨﻮگئی ؟

ﺍﺳﮯ ﻓﻮﻥ ﺳﺮﮨﺎﻧﮯ ﺭﮐﮭﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﻧﯿﻨﺪ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﯽ؟

والدین خاموش کیوں ؟

ﻧﻮﺟﻮﺍﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﺭﻭﺯ ﺑﮧ ﺭﻭﺯ ﺑﮕﮍﺗﯽ ﺣﺎﻟﺖ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﺗﺎ ہے کہ اس کے ذمہ دار کون ہے

آج کے ہمارے معاشرے پر نظر کرتا ہوں تو میرے وہ اسکول کا زمانہ یاد آتا ہے

جیسے ﻣﯿﺮﮮ ﻃﺎﻟﺐ ﻋﻠﻤﯽ ( پرائمری ) ﮐﮯ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﮐﻮ ﺻﺪﯾﺎﮞ بیت ﮔﺌﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮩﺘﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﺮﮮ ﺩﻭﺭ ﻣﯿﮟ ﻣﺎﺣﻮﻝ ﺳﻮ ﻓیصد ﭘﺎﮐﯿﺰﮦ ﺗﮭﺎ، ﺗﻤﺎﻡ ﮨﯽ طلباء ﮐﺎ ﭼﺎﻝ ﭼﻠﻦ ﻣﺜﺎﻟﯽ ﺗﮭﺎ، ﻣﮕﺮ آج کے دور میں لڑکے ﻟﮍﮐﯿﻮﮞ کا ﯾﻮﻧﯿﻔﺎﺭﻡ ﻣﯿﮟ ﺁﻧﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﺎﻟﺞ ﮐﮯ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺍﺩﮬﺮ ﺍﺩﮬﺮ ﻧﮑﻞ ﺟﺎﻧﺎ، ﮐﺎﻟﺞ کے ﺩﻭﺭﺍن ﺑﮭﯽ ﮐﻮﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭼﮭﭗ ﮐﺮ ﻓﻮﻥ ﭘﺮ ﮔﻔتگو ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺗﻨﺎﺳﺐ ﺭﻭﺯ برﻭﺯ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﺗﯿﺰﯼ ﺳﮯ ﺑﮍﮪ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺫﻣﮯ ﺩﺍﺭ ﻧﮧ ٹی وی کو ٹھراتا ﮨﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ ﻣﻮﺑﺎﺋﻞ ﻓﻮﻥ ﮐﻮ، ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺑﮕﮍﺗﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﺣﺎﻝ کا ﺫﻣﮯ ﺩﺍﺭ صرف اور صرف ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﭘﺮ ﮈﺍلتا ہوں ۔
ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﻣﺘﻮﺳﻂ ﻃﺒﻘﮯ ﺳﮯ ﺗﻌﻠﻖ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻭﺍلے طلباء و ﻃﺎﻟﺒﺎﺕ ﺟﻦ ﮐﮯ ﻻﻏﺮ ﻭﺟﻮﺩ ﭼﯿﺦ ﭼﯿﺦ ﮐﺮ ﺑﺎﻭﺭ ﮐﺮﻭﺍ ﺭﮨﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﮐﺌﯽ ﺭﻭﺯ ﺳﮯ ﭘﯿﭧ ﺑﮭﺮ ﮐﺮ ﺭﻭﭨﯽ ﻧﺼﯿﺐ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺋﯽ ﮨﮯ، ﻓﯿﺲ ﺟﻤﻊ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻣﺎﻟﯽ ﻣﺸﮑﻼﺕ ﮐﺎ ﺳﺎﻣﻨﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﻥ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﻣﻮﺑﺎﺋﻞ ﺳﯿﭧ ﻗﺎﺑﻞ ﺩﯾﺪ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﯾﮧ ﺳﯿﭧ ﮐﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﺁﯾﺎ، ﺍﮔﺮ ﺁ ﺑﮭﯽ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﺑﯿﻠﻨﺲ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭘﯿﺴﮯ ﮐﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﺁ رہے ﮨﯿﮟ ، ﯾﮧ ﻧﺖ ﻧﺌﮯ ﻧﺎﻡ ﮐﯽ ﺩﻭﺳﺘﯿﺎﮞ ﮐﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﮨﻮ ﮔﺌﯿﮟ ؟ ﻣﻮﺑﺎﺋﻞ ﻓﻮﻥ ﺳﺎﺋﻠﻨﭧ ﭘﺮ ﮐﯿﻮﮞ ﺭﮐﮭﺎ ﺟﺎﻧﮯ ﻟﮕﺎ

ﻭﮦ اولاد ﺟﻮ ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﮐﺴﯽ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺍﮐﯿﻠﮯ ﺳﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﮈﺭتے تهے، ﻣﻮﺑﺎﺋﻞ ﺳﯿﭧ ﺁﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﺗﻨﮯ ﺑﮩﺎﺩﺭ ﮐﯿﺴﮯ ﮨﻮ گئے ؟ ﺍﺳﮯ ﻓﻮﻥ ﺳﺮﮨﺎﻧﮯ ﺭﮐﮭﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﻧﯿﻨﺪ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﯽ ؟ ﯾﮧ ﺳﻮﺍﻻﺕ والدین ﮐﮯ ذھنوں ﻣﯿﮟ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ آتے ؟

ﯾﮧ ﺻﺮﻑ ﮐﺎﻟﺞ کے طلباء و ﻃﺎﻟﺒﺎﺕ ﮨﯽ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ، ﺑﻠﮑﮧ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺷﮑﺎﺭ ﺗﻤﺎﻡ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻧﺴﻞ ﮨﮯ۔

ﻟﮍﮐﮯ، ﻟﮍﮐﯿﺎﮞ ﺳﺐ ﮨﯽ ﺍﺱ ﺑﻼ ﮐﺎ ﺷﮑﺎﺭ ﮨﯿﮟ۔ والدین اولاد ﮐﯽ ﺯﺑﺎﻧﯽ ﺳﻦ ﮐﺮ ﻣﻄﻤﺌﻦ ﮨﻮ جاتے ﮨﯿﮟ ۔ ﺑﻼﺷﺒﮧ ﺍﮐﺜﺮ ﺳﭻ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ، ﻣﮕﺮ والدین ﮐﻮ ﺍﺯ ﺧﻮﺩ ﺗﺼﺪﯾﻖ ﮐﺮﻧﯽ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔ بچے ﺑﭽﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﻗﯿﻤﺘﯽ ﺗﺤﺎﺋﻒ ﻣﻞ ﺭﮨﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ۔ والدین ﺑﮧ ﺁﺳﺎنی اولاد ﮐﮯ ﺟﮭﺎﻧﺴﮯ ﻣﯿﮟ ﺁ جاتے ﮨﯿﮟ۔ ﯾﮧ ﭘﻮﭼﮭﻨﮯ ﮐﯽ ﺯﺣﻤﺖ ﮔﻮﺍﺭہ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮتے ﮐﮧ ﯾﮧ ﮐﻮﻥ ﺳﯽ ﺳﮩﯿﻠﯽ اور دوست ﮨﮯ۔ ﺍﮔﺮ ﺑﭽﯽ یا بچہ ﺍﻧﺠﺎنہ ﻧﺎﻡ ﻟﯿﺘﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺗﻔﺘﯿﺶ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ ﺟﺎﺗﯽ، والدین ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﻮچتے ﮐﮧ بیٹا یا ﺑﯿﭩﯽ کا نیا ﺩﻭﺳﺖ ﺟﺲ ﮐﺎ ﺟﻤﻌﮧ ﺟﻤﻌﮧ ﺁﭨﮫ ﺩﻥ ﺳﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﻦ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ، بهلا ﻭﮦ ﮐﯿﻮﮞ ﺍﺗﻨﮯ ﻗﯿﻤﺘﯽ ﺗﺤﺎﺋﻒ ﺩیں ﮔﮯ ۔ بیٹے اور بیٹی ﮐﻮ ﮐﯿﻮﮞ ﺍﭼﺎﻧﮏ ﮨﯽ ﺳﺠﻨﮯ ﺳﻨﻮﺭﻧﮯ ﮐﺎ ﺷﻮﻕ ﭼﮍ آیا ۔ ﮐﯿﻮﮞ ﻭﮦ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﺳﻨﻮﺭ ﮐﺮ ﻧﮑﻠﻨﮯ لگے ؟ والدین ﮐﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﭘﺮﻭﺍ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﯽ۔ ﺧﻮﺩ ﻣﺤﻠﮯ ﮐﯽ ﺗﺎﻧﮏ ﺟﮭﺎﻧﮏ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﻣﮕﻦ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻋﺰﺕ ﮐﮯ ﻣﺤﻞ ﻣﯿﮟ ﺩﺭﺍﮌﯾﮟ ﭘﮍﺗﯽ ﺟﺎ رہی ﮨﯿﮟ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ، ﺍﻟﺒﺘﮧ ﻣﺤﻞ ﮈھا ﺟﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻭﺍﻭﯾﻼ ﻣﭽﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ۔

ﻣﯿﺮﯼ والدین ﺳﮯ ﺍﻟﺘﺠﺎء ﮨﮯ ﺧﺪﺍﺭﺍ ﺍﭘﻨﯽ اولاد ﭘﺮ ﺗﻮﺟﮧ ﺩﯾﮟ۔ ﯾﮧ ﻧﺎﺯﮎ ﮐﻠﯿﺎﮞ ﮨﯿﮟ ، ﺍﻥ ﮐﯽ ﺍﭼﮭﯽ ﺁﺑﯿﺎﺭﯼ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﮯ ﺗﻮ ﯾﮧ ﺁﭖ ﮐﮯ ﮔﻠﺸﻦ ﮐﯽ ﺭﻭﻧﻖ ہوں گی ﻭﺭﻧﮧ ﻣﺴﻠﯽ ﻣﺮﺟﮭﺎﺋﯽ ﮐﻠﯿﺎﮞ ﮔﻠﺸﻦ ﮐﺎ ﺣﺴﻦ ﻣﺎﻧﺪ ﮐﺮﺩﯾﺘﯽ ﮨﯿﮟ ﯾﮧ ﯾﺎﺩ رکھیں ۔ آخر میں اللہ تعالیٰ سے دعا ہے کہ وہ ہم کو اپنی اولاد کی صحیح اسلامی تربیت کرنے کی توفیق عطا فرمائے آمین..

آخر میں ہمیشہ کی طرح وہی ایک بات آپ مُجھے میری فیملی اور جتنے بھی چاہنے والے ہیں آپ اپنی دُعاؤں میں ضرور یاد رکھیں اور میں آپکو اپنی دُعاؤں میں
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Mohammed Masood

Read More Articles by Mohammed Masood: 59 Articles with 99335 views »
محمد مسعود اپنی دکھ سوکھ کی کہانی سنا رہا ہے

.. View More
29 Jul, 2016 Views: 1058

Comments

آپ کی رائے
Article ma apki koi b bat complete ni hoti k next issue start ho jata ha.
By: Rizwan, Islamabad on Aug, 02 2016
Reply Reply
0 Like
بہت شُکریہ رضوان صاحب نیچے لکھ دیں کہ کہاں کہاں بات اُدھوری ہے یا کہاں پر کیا لکھنا تھا رضوان تھوڑی سی رہنمائی فرما دیں تو بہت اچھا ہو گا ویسے میں اسٹوری یا کہانیاں نہیں لکھتا میں تو اپنے دل کی آواز لکھتا ہوں کہ شاہد اُتر جائے کسی کے دل میں میری بات
By: Mohammed Masood, Nottingham on Aug, 04 2016
0 Like