فقراء و مساکین کی عید

(M Yaqoub, )
میں عید پڑھاکے احباب سے ملنے گھر سے باہر نکلا ،
موٹر سائکل اسٹارٹ کی دوستوں کی طرف روانہ ہوا ،
جن سے مِلا ان میں سے کچھ تو دوست تھے کچھ عزیزواقارب ،
کچھ وہ جن سے میں عقیدت رکھتا ہوں ،
جاتے ہوئے مجھے لگا آج تو عید ِسعید ہے ۔
فقراء اور مساکین کی موجیں لگیں گی جو قربانی نہیں کر سکتے ۔
آج تو وہ بھی گوشت کا لطف اٹھائیں گے ، جو پورا سال گوشت کیلئے ترستے ہیں ۔

جہاں قربانی ہو رہی ہوگی وہاں فقراء کی لائنیں لگی ہونگی ۔ ایک طرف کسی یتیم کی آواز آرہی ہوگی بھیا ذرا جلدی مجھے میرے حصے کا گوشت دے دو ! میں دور سے آیا ہوں پہنچتے پہنچتے کہیں دیر نہ ہو جائے ، تو دوسری طرف قربانی کرنے والے کی آواز ہوگی بیٹا تھوڑا سا صبر کرو میں ذرا حصے برابر کرلوں ۔ دوسری طرف سے کسی مسکین کی آواز آرہی ہوگی چاچو ذرا جلدی! مجھے تھوڑ ا گوشت دے دو ، میرے گھر صبح سے کچھ نہیں پکا ۔ اور تقسیم کرنے والا اسکی منتیں کرتے ہوئے بیٹا مجھے پتہ ہے لیکن تھوڑا سا مجھے یہ ہڈیاں کاٹنے دو تاکہ گوشت اور ہڈیاں مِلا کر تقسیم کا کام شروع کروں اور آپ چونکہ دور سے آئے ہیں میں پہلے آپ کاحصہ دونگا ۔

دوسرے لفظوں میں ایک طرف سے فقراء کی آوازیں ہونگی تو دوسری طرف قربانی کرنے والے مالدار ہونگے جو اُن فقراء اور مساکین اور یتامیٰ کی منتیں کر رہیں ہونگے کہ کہیں اللہ کے یہ آئے ہوئے مہمان ناراض نہ ہو جائیں ۔
لیکن یہ کیا؟
مجھے گلیوں میں سڑکوں کے کنارے یا خیموں کی اوٹ میں یا تو قصائی نظر آئے یا قربانی کرنے والے ، کسی فقیر یا مسکین کو میری نظر نے نہیں دیکھا بہت کوشش کی کہیں نام و نشان بھی نہیں تھا ۔

پہلے مجھے لگا یہ آپﷺ کے نام لیوا ء ہیں شاید یہ گوشت کے حصے بناکے فقراء اور مساکین کے گھروں میں خود پہنچانے جائیں گے ،لیکن ایسا صرف میرا خیا ل تھا وہم تھا گوشت تھیلیوں میں بند ہوکے جا رہا تھا پر اُنکو جو خود قربانی کررہے تھے ۔
جی ہاں! جا تو رہا تھا لیکن خُوشامد کی جگہ ۔

میں نے آتے ہوئے سوچا شاید میں سوچتے سوچتے چودہ سو سنتیس سال پیچھے چلاگیا ، جہاں قربانی کرنے والے میرے پیارے آقاﷺ ہوتے آپ کے گرد یتیموں فقراء مساکین کی لائنیں لگی ہوتیں ۔

کہیں سے ایک یتیم کی آواز ہوتی یارسول اللہ ! میرے بابا اسلام کی سربلندی کیلئے آپکے ساتھ فلاں غزوے میں شہید ہو گئے میرے گھر کھانے کیلئے کچھ نہیں میں گوشت لینے آیا ہوں آپﷺ اسے شفقت اور پیار بھی دیتے اور یہ کہتے ہوئے اسے عطاء کرتے کہ میں ہوں نا تمہارا بابا ۔

کہیں سے کسی مسکین کی آواز ہوتی یارسول اللہ میں مدینہ کے فلاں محلے سے آیا ہوں میرے پورے خاندان کو مشرکین مکہ نے اسلام کی پاداش میں مکہ سے نکالا ، آپﷺ اسے یہ کہتے ہوئے گوشت دے رہے ہوتے بیٹا کوئی بات نہیں میں بھی تو ہجرت کرکے آیا ہوں میں بھی مہاجر ہوں ۔ سارا گوشت یتامیٰ فقراء مساکین میں تقسیم کر دیتے اور شام کو بھوک کی وجہ سے فرما رہے ہوتے ، عائشہ وحفصہ وزینب ! بھوک لگی ہے نیدھ نہیں آرہی اگر کہیں سے ایک دو کجھوریں مل جائیں ؟ جواب ملتا آقا آج کھانے کیلئے گھر میں کچھ بھی نہیں ،ازواج مطہرات پوچھتیں ، اے اللہ کے رسول آپ نے جو قربانی کی تھی اسکا گوشت ؟میرے آقا کا جواب ہوتا:آج یتیم ،مسکین، ضرورت مند بہت زیادہ آئے تھے گوشت ان میں تقسیم کردیا ۔ اللہ اکبر کبیرا
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: yaqoub ghazi

Read More Articles by yaqoub ghazi : 15 Articles with 6216 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
16 Sep, 2016 Views: 497

Comments

آپ کی رائے

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ