گیس کے دباؤ میں کمی۔۔۔

(Hafeez Khattak, Karachi)
 سوئی سدرن گیس کمپنی (ssgc)وطن عزیز کے ان چند اداروں میں سے ایک ادارہ ہے جس کے متعلق عوامی شکایات کا حجم دیگر کی نسبت کم ہے۔ ماہ کے آغاز میں عوام کی جانب سے ادا کئے جانے والے بلز میں گیس کا بلز عوام دیگر بلوں کی نسبت باآسانی ادا کرتے ہیں۔ssgcکے شکایتی نمبر 1199پر بھی مسائل پر کی جانے والی شکایات کا تناسب کم ہے۔شہر قائد میں بھی اس محکمے کی خدمات کے باعث عوام کو جس قدر کے الیکٹر ک و دیگر محکموں سے شکایات ہیں اس محکمے سے نہیں۔تا ہم درج بالا نکات کے باوجود چند روز قبل اسی محکمے کی جانب سے شہر قائد میں کے گلشن اقبال میں ہی اس نوعیت کا قدم اٹھایا گیا جس کے باعث عوام کو قدرے مشکلات کا سامنا کر نا پڑ رہا ہے۔

6نومبر اتوار صبح کے اوقات میں گلشن اقبال کے مکینوں کے ساتھ ہوٹل والوں نے جب اپنے چولھوں کے ذریعے آگ لگانا چاہی تو اس وقت انہیں حیرت ہوئی کہ گیس پائپ لائن میں گیس آہی نہیں رہی۔ شہریوں نے اپنے پڑوسیوں سے اور ارد گرد کے دیگر ذرائع سے گیس کی بندش کی وجوہات جاننا چاہیں اور اسی طرح کا معاملہ ہوٹل سمیت ان تمام کاروبایوں کے ساتھ بھی پیش آیا جو کہ اپنے روزگار کے لئے گیس کا استعمال کرتے ہیں۔ ہوٹل والوں نے تو گیس کی غیر موجودگی میں سلینڈر کے ذریعے اپنے کاموں کا آغاز کردیا لیکن گھروں کے مکینوں کو اب اک نئی صورتحال سے نبٹنے کیلئے کوئی لائحہ عمل مرتب کرنا تھا ۔گھروں میں ناشتوں کا وقت تھا اور گھر کے چولھے میں گیس کی بندش تھی جبکہ ہوٹل پر معمول سے بڑھ کر ناشتہ لینے والوں کا ہجوم تھا اور اس تعداد میں اضافہ ہی ہوتا چلا گیا ۔گلشن اقبال کے رہائشیوں نے ایمر جنسی یا شکایتی نمبر پراطلاع کی تو اول فون کو قدرے تاخیر سے اٹھایا گیا اور اس کے بعد شہری کی باتیں سن کر بڑے ہی سکون سے یہ کہہ دیا گیا کہ گلشن اقبال سے ٹول پلازے تک گیس تعمیرانی کاموں کے باعث بند کر دی گئی ہے۔ یہ بندش صبح کے 3بجے سے کی گئی ہے اور صبح کے 10بجے گیس کو دوطارہ کھول دیا جائیگا ۔یہ بات شہریوں کے لئے ناقابل یقین تھی کہ گیس کا یہ محکمہ بھلا اس نوعیت کا قدم کیسے اٹھا سکتا ہے کہ انہیں کو ئی کام کرانا تھا اور اس کی اطلاع انہوں نے ذرائع ابلاغ سمیت عام شہریوں کو نہیں دی، ترجمان ssgcنے ذرائع ابلاغ تک کو یہ بتانا مناسب نہ سمجھا اوراپنے منصوبے پر علمدرآمد کا آغاز کردیا ۔کئی شہریوں نے شکایتی مرکز والوں کو اس عمل پر اپنی ناراضگی بھرے جذبات کے اظہارسے نوازا ،لیکن کالرز کی کالز کو عملے نے بھرپور انداز میں منظم منصوبے بندی کے تخت سنا ،وہ عوام کو یہی سمجھانے کی کوشش کرتے کہ اتوار کے دن گھروں میں صبح ذرا دیر سے ہوتی ہے اس لئے اس فوری نوعیت کے کام کو عوام کی فلاح بہبود کیلئے ایسے وقت میں شروع کیا گیا جس میں عوام گیس کا استعمال نہیں کرتی ۔اور چھٹی کے دن کی صبح تو اس روز شہری ویسے بھی ذرا دیر اسے اٹھتے ہیں لہذا جو طے کیا اس پر عمل درآمد کیا گیا۔ بحر حال شکایتی نمبر پر متعدد شہریوں نے کالز کر کیں اور گیس کی بندش پرغم و غصے کا اظہار کیا ،دوبارہ بحالی کا وقت دریافت کیا ، جس پر انہیں کہا گیا کہ صبح کے 10بجے گیس بحال کردی جائیگی لیکن اس محکمے کے یہ دس بجتے بجتے شام کے 6بج گئے اور اس وقت تک گیس بحا ل نہیں ہوئی ۔ گیس کی بحالی 6بجے کے بعد ہوئی ۔تعمیراتی کام جس کے متعلق بتایا گیا کہ وہ ابوالحسن اصفہانی روڈ کے قریب ہی اک جگہ پر بڑے پائپ کے ڈالے جانے کو کہا گیا،اس حوالے سے بھی عملے نے شکایت کرنے والوں کو اصل مقام نہیں بتایا ، اس کے ساتھ فون سننے والے بعض عملے نے یہ تک کہا کہ پورے گلشن اقبال میں گیس بند ہے اور یہ بندش ٹول پلازہ تک کی گئی ہے۔ اتوار کے دن عزیز رشتے دار ایک دوسرے کے گھروں میں جاتے ہیں ، اس اتوار کے روز یہ بھی ہواکہ مہمانوں کو پہلے سے ہی یہ بتا دیا جاتا کہ وہ لوگ چونکہ باہر سے آرہے ہیں لہذا وہ آتے ہوئے ناشتہ و دیگر اشیاء ساتھ لیتے آئیں۔اس درخواست پر عمل درآمد جاری رہا ۔

گیس کی بندش کے باعث وہ گھر جہاں جنریٹر گیسوں پر ہی چلائے جاتے ہیں انہیں بھی سخت تکلیف کا سامنا کرنا پڑا ۔گھروں میں گیس نہیں اور اس وقت بجلی بھی اپنے طے شدہ وقت پر یا اس سے پہلے ہوئی ، اس نوعیت کی لوڈشیڈنگ بھی عوام کو سخنی پڑ رہی تھی ، بعض شہریوں نے تو پٹرول پمپوں پر جاکر اپنے گھروں میں موجود جنریٹر کیلئے پٹرول لئے تاہم اکثریت ایسے ہی شہریوں کی تھی جو اس اچانک کی پریشانی دکھ و تکلیف کو سہتے رہے۔عوام نے 15گھنٹوں سے زائد گیس کی بندش برداشت کرلی ، اس صورتحال میں بھی یہ نقطہ واضح رہا کہ پورے گلشن اقبال میں گیس کی بندش نہیں ہوئی کچھ محسوس علاقوں میں ہی یہ معاملہ رہا تاہم مجموعی طور پر عوام کو تکلیف کا سامنا کرنا پڑا ۔ شہر میں جاری صورتحال و مرکزی حکومت کو درپیش پانامہ لیکس کے مسائل میں چھوٹے مسائل کی بہ نسبت بڑے مسائل زیادہ اہمیت کے حامل تھے اس کے ساتھ یہ عمل بھی ہوا کہ عوام نے خود عارضی مسئلے سے نبرآزما ہونے کیلئے اقدامات کئے۔
 
شام میں جب گیس کی بندش ختم ہوئی تو تب سے آج تلک یہ معاملہ رہا کہ گیس کی روانی میں کمی واقع ہوئی ۔ اس کمی کے ساتھ شام کے اوقات میں گیس کی بھی لوڈشیڈنگ کی سی کیفیت مرتب رہی۔گیس کی کمی سے متعلق شکایات نمبرز پر لکھوائی گئیں اور عملے نے بھی اس کمی کو پورا کرنے کی نام نہا د کاوش کیں لیکن ان کا بھی تاحال نتیجہ منفی ہی رہا ہے۔ شکایت نمبر پر رابطہ کریں اور اس مسئلے کی نشاندہی کرنے پر عوام سے گیس کے بل پر موجود اکاؤنٹ نمبر و دیگر تفصیلا ت دریافت کی جاتیں اور انفرادی طور پر ایک شکایت لکھ کر اسے حل کرنے کیلئے قدم اٹھایا جاتا لیکن ان تما م اقدامات کے باوجود گیس کی بندش کے بعددوبارہ کھولے جانے کے بعد بھی گیس کا دباؤ کم ہے۔

ضرورت اس امر کی ہے کہ ssgcکے ذمہ داران فوری قدم اٹھاتے ہوئے آگے بڑھیں اور گلشن اقبال کے ان متا ثرین کے مسائل کو حل کریں تاکہ جو مثبت پہلو اس محکمے کا عوام کے دلوں میں رہا ہے وہ نہ صرف قائم رہے بلکہ اس میں اور بھی اضافہ ہو۔
 
Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Hafeez khattak

Read More Articles by Hafeez khattak: 190 Articles with 101944 views »
came to the journalism through an accident, now trying to become a journalist from last 12 years,
write to express and share me feeling as well taug
.. View More
13 Nov, 2016 Views: 442

Comments

آپ کی رائے