ایک واقعہ:ایک سبق

(Umer, Karachi)
امام حرم،امام کعبہ ڈاکٹر عبدالرحمن السدیس ایک واقعہ بیان کرتے ہیں:
ایک لڑکا تھا،اس کی عمر یہی کوئی نو،دس برس رہی ہوگی۔وہ بھی اپنی عمر کے لڑکوں کی طرح شریر تھا،بلکہ شاید اس سے کچھ زیادہ ہی.......
( یہ وہ دور تھا،جب نہ آج کی طرح بجلی پنکھے تھے،نہ گیس کے چولہے،گھر بھی مٹی کے،چولہا بھی مٹی کا ہوا کرتا تھا،اور نہ اس زمانہ میں دولت کی اس قدر ریل پیل تھی،جو آج دیکھی جارہی ہے )
ایک دن اس کے گھر مہمان آگئے، اس کی ماں نے اپنے مہمانوں کے لئے کھانا تیار کیا، یہ لڑکا بھی قریب ہی دوستوں کے ہمراہ کھیل رہا تھا، ماں نے جیسے ہی سالن تیار کیا،بچہ نے شرارت سے اس سالن میں مٹی ڈال دی۔
اب آپ خود ہی اس ماں کی مشکل کا اندازہ کر سکتے ہیں،غصے کا آنا بھی فطری تھا........
غصہ سے بھری ماں نے صرف اتنا کہاکہ :
"جا تجھے اللہ کعبہ کا امام بنادے"
اتنا سنا کر ڈاکٹر عبدالرحمن السدیس رو پڑے اور کہنے لگے:
آپ جانتے ہو کہ یہ شریر لڑکا کون تھا؟
پھر خود ہی جواب دیتے ہیں:
وہ شریر لڑکا "میں" تھا،جسے آج دنیا دیکھتی ہے کہ وہ کعبہ کا امام بنا ہوا ہے۔
ڈاکٹر عبدالرحمن السدیس کسی بھی تعارف کے محتاج نہیں ہیں،
2010 تک کے عالمی سروے رپورٹ میں یہ بات سامنے آئی کہ امام کعبہ عبد الرحمان السدیس اس وقت پوری دنیا کے مسلمانوں کی مقبول ترین شخصیت ہیں۔اللہ نے ان کو دنیا کی سب سے بڑی سعادت عطا کی کہ ان کو اپنے گھر کا امام بنادیا،اب نہ صرف وہ امام کعبہ ہیں، بلکہ حرمین کی نگران کمیٹی کے صدر اور امام اﻷئمة ہیں۔
ڈاکٹر عبدالرحمن السدیس یہ واقعہ کئی بار سنا چکے ہیں،اور جب بھی سناتے ہیں،جذباتی ہوجاتے ہیں۔
ابھی پچھلے ماہ یہ واقعہ سنا کر انہوں نے ماووں کو اس جانب توجہ دلائی ہے کہ وہ اولاد کے معاملے میں ذرا دھیان دیں،اور غصہ یا جذبات سے مغلوب ہوکر اپنی اولاد کو برابھلا نہ کہہ بیٹھیں۔کیونکہ ماووں کے لب کی "ہلکی سی جنبش"اولاد کا نصیب لکھ دیتی ہے۔
توجہ طلب بات یہ ہیکہ ہمارے معاشرہ میں والدین، بالخصوص مائیں اولاد کی غلطیوں پر ان کو برا بھلا کہہ دیتی ہیں،اور انکے لئے ہدایت اور صالح بننے کی دعا کرنے بجائے بددعا کر بیٹھتی ہیں۔
آپ سب یاد رکھئے کہ ایمان اور صحت کے بعد اس دنیا کی سب سے بڑی نعمت "اولاد" ہے۔حتی کہ قرآن میں اولاد کو "آنکھوں کا قرار" کہا گیا ہے،زندگی کی رونق مال یا مکان یا خوبصورت لباس سے نہیں ہے،بلکہ زندگی کی تمام تر بہاریں اور رونقیں اولاد کے دم سے وابستہ ہیں،یہی وجہ ہیکہ ابراہیم علیہ السلام اور زکریا علیہ السلام جیسے جلیل القدر پیغمبروں نے 'نبوت' کی سعادت رہنے کے باوجود اللہ سے اولاد مانگیں؛
لہذا ہر اس عورت کا جو "ماں" ہے،فرض بنتا ہے کہ اپنے بچوں کی قدر کریں،اور ہمیشہ ان کے لئے دعا کرتے ہیں،بچے تو بچے ہی ہوا کرتے ہیں،وہ شرارت نہ کریں تو کیا بوڑھے شرارت کریں؟؟؟
کبھی بچوں کی شرارت سے تنگ آکر ان کو برا بھلا مت کہیں،کہیں ایسا نہ ہو کہ بعد میں پچھتانا پڑے
اللہ کے نبی صلی اللہ علیہوسلم نے بھی اس سے منع کیا ہے،ہم یہاں حدیث کا مفہوم ذکرکررہے ہیں:
اپنے لئے،اپنے بچوں کے لئے،اپنے ماتحت لوگوں کے لئے اللہ سے بری (غلط) دعا نہ مانگو،ہوسکتا ہے کہ جب تم ایسا کررہے ہو،وہ وقت دعاووں کے قبول کر لئے جانے کا وقت ہو.......
ماں باپ کے منہ سے نکلے جملے کبھی اولاد کا مقدر لکھ دیتے ہیں۔اسی لئے حضرت علی رضی اللہ عنہ فرمایا کرتے تھے کہ:
اپنی اولاد کو عزت دو،اور ان کی قدر کرو،کیونکہ وہ تمہارے بعد تمہارا نشان بن جاتے ہیں۔(یعنی والدین کی وفات کے بعد اولاد کے دم سے ان کا نام باقی رہتا ہے)
اگر آپ کو امام حرم کا واقعہ اچھا لگا ہو،اور آپ مناسب سمجھیں تو اسے ان تمام خواتین سے جو "ماں "ہیں،شیئر کریں،ممکن ہے کہ کوئی ایک ہی نصیحت قبول کرلے.....
جزاک اﷲ
 
Most Viewed (Last 30 Days | All Time)
27 Feb, 2017 Views: 6988

Comments

آپ کی رائے