ایک روایت کی تحقیق

(manhaj-as-salaf, Peshawar)

سند:

حدثنا أبو كريب‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ حدثنا عبد الله بن نمير‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ وأبو معاوية‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عن الأعمش‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عن عمرو بن مرة‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عن أبي البختري‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ عن أبي سعيد‏‏‏‏‏‏ٍ‏‏‏‏،‏‏‏‏ قال:‏‏‏‏ قال رسول الله صلى الله عليه وسلم:‏‏‏‏

متن:

"لا يحقر أحدكم نفسه"،‏‏‏‏ قالوا:‏‏‏‏ يا رسول الله،‏‏‏‏ كيف يحقر أحدنا نفسه؟ قال:‏‏‏‏ "يرى أمرا لله عليه فيه مقال،‏‏‏‏ ثم لا يقول فيه،‏‏‏‏ فيقول الله عز وجل له يوم القيامة:‏‏‏‏ ما منعك أن تقول في كذا كذا وكذا،‏‏‏‏ فيقول:‏‏‏‏ خشية الناس،‏‏‏‏ فيقول:‏‏‏‏ فإياي كنت أحق أن تخشى"

(سنن ابن ماجہ ،حدیث 4008 مسند احمد حدیث 11255 المعجم الاوسط و الکبیر للطبرانی ، اور امام بیہقی شعب الایمان اور سنن کبری میں روایت کیا ہے)

سیدنا ابو سعید خدری رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

کوئی شخص اپنے آپ کو حقیر نہ جانے، لوگوں نے عرض کیا: اللہ کے رسول! ہم میں سے کوئی اپنے آپ کو کیسے حقیر جانتا ہے؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”تم میں سے کوئی شخص کوئی بات ہوتے دیکھے اور اس کے بارے میں اسے اللہ کا حکم معلوم ہو لیکن نہ کہے، تو اللہ تعالیٰ قیامت کے دن اس سے فرمائے گا: تجھے فلاں بات کہنے سے کس نے منع کیا تھا؟ وہ جواب دے گا: لوگوں کے خوف نے، اللہ تعالیٰ فرمائے گا: تیرے لیے زیادہ درست بات یہ تھی کہ تو مجھ سے ڈرتا“۔

اس روایت کی سند میں اعمش مدلس ہیں ، اور روایت عنعنہ سے کی ہے
قال الشيخ الألباني: ضعيف

اور الشيخ زبیر علی زئی (انوار الصحیفة فی احادیث ضعیفة) میں لکھتے ہیں:
إسناده ضعيف السند منقطع، أبو البختري لم يسمعه أبي سعيد، صرح به أحمد 84/3، 91
یعنی اس کی سند منقطع ہے کیونکہ ابوالبختری نے ابوسعید صحابی رضی اللہ عنہ سے نہیں سنا ،

اور اس کی اسناد ضعیف ہونے کا ثبوت ابوداود طیالسی کی اسناد سے واضح ہے:

حدثنا أبو داود قال: حدثنا شعبة، عن عمرو بن مرة، عن أبي البختري، عن رجل، عن أبي سعيد، أن النبي صلى الله عليه وسلم قال: " لا يحقرن أحدكم نفسه أن يرى أمرا لله عليه فيه مقال، فلا يقول به، فيلقى الله، عز وجل، وقد أضاع ذلك، فيقول: ما منعك؟ فيقول: خشيت الناس، فيقول: فإياي كنت أحق أن تخشى "
(مسند ابوداود طیالسی 2320)

اس سند میں ( عن رجل ) مجہول ہے
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: manhaj-as-salaf

Read More Articles by manhaj-as-salaf: 286 Articles with 217423 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
22 Mar, 2017 Views: 219

Comments

آپ کی رائے

مزہبی کالم نگاری میں لکھنے اور تبصرہ کرنے والے احباب سے گزارش ہے کہ دوسرے مسالک کا احترام کرتے ہوئے تنقیدی الفاظ اور تبصروں سے گریز فرمائیں - شکریہ