زرمبادلہ کے ذخائر میں 27.5 کروڑ ڈالر کی کمی

image

زرمبادلہ ذخائر میں ایک ہفتے کے دوران 27.5 کروڑ ڈالر کی کمی ہوگئی۔ 26 نومبر کو اسٹیٹ بینک کے پاس موجود ذخائر 16.01 ارب ڈالر کی سطح پر پہنچ گئے۔

اسٹیٹ بینک اور کمرشل بینکوں کے پاس زرمبادلہ کے ذخائر 22 ارب ڈالر 50 کروڑ ڈالر ہیں جب کہ کمرشل بینکوں کے پاس موجود ذخائر 6.49 ارب ڈالر ہیں۔

ذخائر میں کمی بنیادی طور پر بیرونی قرضوں کی ادائیگی کی وجہ سے ہوئی، ملک کا بیرونی کھاتہ بڑھتے ہوئے قرضوں کی ادائیگی اور بڑھتےہوئےکرنٹ اکاؤنٹ خسارے کے دوہرے دباؤ کا شکار ہے۔

بیرونی قرضوں میں اضافہ

بدھ کے روز اسٹیٹ بینک آف پاکستان کی جانب سے جاری ہونے والے اعدادوشمار کے مطابق پاکستان کے غیر ملکی قرضے اور واجبات (بقایا) ستمبر 2021 کے آخر میں 4.8 ارب ڈالر یا 4 فیصد بڑھ کر 127 ارب ڈالر ہوگئے جو کہ جون کے ماہ تک 122.2 ارب ڈالر تھے۔4.8 ارب ڈالر یا 4 فیصد بڑھ کر 127 ارب ڈالر ہو گئے جو کہ جون کے ماہ تک 122.2 ارب ڈالر تھے۔۔

تجارتی خسارے میں اضافہ

ادارہ شماریات کے تجارتی اعدادوشمارکے مطابق نومبر میں درآمدات 7.84 ارب ڈالر رہی جو کسی بھی ماہ کی درآمدات کی بلند ترین سطح ہے۔ اس کے برعکس نومبر میں برآمدات صرف 2.88 ارب ڈالر رہی جس سے نومبر میں تجارتی خسارہ 4.96 ارب ڈالر اور رواں مالی سال کے پہلے پانچ ماہ میں 20.59 ارب ڈالر تک پہنچ گیا جس کے باعث کرنٹ اکاونٹ خسارے میں بھی اضافے کا خدشہ ہے۔

آئی ایم ایف قرض پروگرام کی بحالی

آئی ایم ایف اور پاکستان کے درمیان 6 ارب ڈالر قرض کی بحالی کا معاہدہ طے پاگیا ہے جس کے تحت پاکستان کو آئی ایم ایف کےایگزیکٹو بورڈ کی منظوری کے بعد1 ارب 5 کروڑ 90 لاکھ ڈالر کی اگلی قسط جاری کی جائےگی۔

آئی ایم ایف کی جاری کردہ رپورٹ کےمطابق نئی قسط ملنےکےبعدپاکستان کو فراہم کردہ رقم 3 ارب 2 کروڑ 70 لاکھ ڈالر ہوجائے گی۔اس کےعلاوہ قرض پروگرام کی بحالی سے پاکستان کو دیگر ممالک اور عالمی اداروں سے فنڈنگ کے حصول میں مدد ملے گی۔


News Source   News Source Text

WATCH LIVE NEWS

مزید خبریں
خبریں
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.