آئی ٹیل اور گلوبل ساکر وینچرز کے درمیان بین الاقوامی فٹبال کوپاکستان میں فروغ دینے کیلئے اشتراک

image

آئی ٹیل اور گلوبل ساکر وینچر کے درمیان معاہدہ طے پاگیا، 2022 آئی ٹیل پاکستان کا سال ہے۔

آئی ٹیل نے پاکستانی فٹبال کھلاڑیوں کے لیے زندگی کو بدل دینے والے کیریئر کے مواقع کا آغاز کردیا اس اقدام کی شروعات آئی ٹیل گلوبل ساکر وینچرز (جی ایس وی) نیکسٹ جنریشن ساکر ٹرائلز کے ساتھ مل کر کرہا ہے۔

آئی ٹیل گلوبل ساکر وینچرز کے ہمراہ پاکستان میں فٹبال کے مستقبل کوبہتر شکل دینے میں ایک اہم کردار ادا کرے گا اب فٹبال ہوگا۔

آئی ٹیل کے چیف ایگزیکٹو آفیسر ذیشان یوسف نے کہا دنیا کا انتہائی مقبول کھیل جسے تقریباً4 ارب افراد دیکھتے ہیں، پاکستان میں فٹبال میں حرارت پیدا کرنے والا ہے۔

 انکا کہنا تھا کہ یہ انتہائی قابل دید اور عالم گیر کھیل ہے۔مجھے جی ایس وی کے اس لیگیسی پروجیکٹ کی جو بات بہت زیادہ پرجوش بناتی ہے وہ20 کامیاب بچوں کی زندگی میں تبدیلی لانا ہے جویورپ کی جانب زندگی بدل دینے والے سفر کا آغاز کریں گے۔

 پاکستانی ٹیلنٹ کے لیے یہ ایسا موقع ہے جو زندگی میں صرف ایک مرتبہ ملتا ہے کہ وہ ترقی کریں اور پیشہ ورانہ معاہدے کریں تاکہ دنیا کا سامنا کر سکیں اور بین الاقوامی سطح پر پاکستان کی نمائندگی کر سکیں۔ یہ کس قدر عمدہ بات ہے۔

گلوبل ساکر وینچرز کے چیف ایگزیکٹو آفیسر زیب خان نے کہا فٹبال ایک زندگی بدل کے رکھ دینے والا کھیل ہے، یہ ہمارے لئے اعزا زکی بات ہے کہ آئی ٹیل پاکستانی فٹبالرز کو مواقع فراہم کررہا ہے۔

مائیکل اوون کا کہنا تھا کہ فٹبال سے میری زندگی بھی بہتر ہوئی ۔۔ اب وقت ہے کہ پاکستانیوں کی زندگی بھی بہتر ہو۔

گلوبل ساکر وینچرز کے چیئرمین یاسر محمود نے کہا آئی ٹیل جیسے برانڈ کوپاکستان میں فٹبال کی ترقی کو فروغ دینے پر کام کرتا دیکھ کرخوشی ہوتی ہے۔

مائیک فرنان سابق مانچسٹر یونائیٹڈ کے سی ای او ثاقب رفیق کا کہنا تھا کہ ہم آئی ٹیل کے ساتھ شراکت داری پر خیر مقدم کرتے ہیں، اور آئی ٹیل کے ساتھ مل کر فٹبال کی ترقی کو فروغ دینے کے منتظر ہیں۔

مائیک فرنان سابق مانچسٹر یونائیٹڈ کے سی ای او کا کہنا ہے کہ  میں فٹبال کی دنیا مین ٹیکنالوجی لیڈر کا خیر مقدم کرتا ہوں۔

Square Adsence 300X250


News Source   News Source Text

WATCH LIVE NEWS

مزید خبریں
کھیلوں کی خبریں
مزید خبریں

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.