احیائے خلافت ،امن کی ضمانت

(Abdullah Ibn-e-Ali, Karachi)

مکرمی! رواں سال الیکشن کا سال ہے یعنی ایک بار وہی تماشہ لگے گا ، بہروپیئے مسیحا بن کر عوام کی ہمدردی حاصل کریں گے، امیدیں جگائیں گے کہ اگر تم نے ہمیں چُن لیا تو تمہاری قسمت بدل دیں گے، کہتے وہ صحیح ہیں کیونکہ ہر دفعہ قسمت بدل ہی جاتی ہے یعنی بد سے بدتر ہوجاتی ہے ، جیسا کہ وہ وعدہ کرتے ہیں مگر یہ ہرگز نہیں بتلاتے کہ قسمت اچھی کی جائے گی یا بُری۔ خیر ہر پنج سال یہی ڈرامہ ہوتا آرہا ہے، جب الیکشن سے پہلے وعدے اور الیکشن کے بعد اپنے گندے ارادوں کی تکمیل ہوتی ہے۔ ہماری عوام تو اس بات کی عادی ہوچکی ہے کہ ہر پانچ سال ایک حکومت کو گالیاں نکالنی ہیں اور پھر جب دوسری حکومت آتی ہے تو پہلی کی تعریفوں کے پُل باندھے جاتے ہیں ، اس لیئے نہیں کہ پہلے والوں نے کوئی خدمت کردی تھی بلکہ اس لیئے کہ وہ دوسری حکومت کے مقابلے میں کم ظالم و جابر تھی۔ سمجھنے کی بات یہ ہے کہ جب ہم نے ہر حکومت کو ایک بار آزما ہی لیا ہے تو کیوں نا ایک بار اُس نظام کو بھی موقع دیا جائے جس نے ظلم و جبر کا خاتمہ کرکے دُنیا بھر میں مثال قائم کردی تھی۔ جی ہاں خلافت ِ نبوۃ کہ جس کی عظیم الشان حکمت ِ عملی کو دُنیا کے ہر بڑے انسان نے سراہا ہے چاہے وہ مُسلمان ہو یا غیر مُسلم۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Abdullah Ibn-e-Ali

Read More Articles by Abdullah Ibn-e-Ali: 22 Articles with 10455 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
07 Jan, 2018 Views: 341

Comments

آپ کی رائے