بی آرٹی ،ایک بہترین منصوبہ

(Waqar Ahmad Awan, )

ہمارے ہاں ایک روایت عا م ہوچکی ہے کہ جب تک ہم کسی معاملے میں بال کی کھال نہ اتارلیں تب تک ہم چین سے نہیں بیٹھتے یاپھردوسرے الفاظ میں ہمیں کسی کے اچھے کام ایک آنکھ نہیں بھاتے ،اور اسی لئے شاید ہماری سوچ ترقی نہیں کرپاتی۔جیسے صوبائی حکومت نے پشاورکے باسیوں کو ان کی روزمرہ زندگی آسان بنانے کی غرض سے دنیاکا ایک بہترین منصوبہ ترتیب دیاہے کہ جس نے ابھی مکمل ہونا ہے،مانا کہ صوبائی حکومت نے عجلت سے کام لیتے ہوئے منصوبہ کو صرف چھ ماہ کے انتہائی قلیل عرصہ میں مکمل کرنے کاعندیہ دیا ہے،جسے پاکستان کی بہترین تعمیراتی کمپنیاں اپنے مقررہ وقت میں مکمل بھی کرلیں گی ،لیکن ہمیں تو سب کچھ ایک دن میں چاہیے ،صاف ستھرا چاہیے۔جیسے گزشتہ روز ایک نجی ٹی وی پر ایک رپورٹر صوبائی حکومت کے مذکورہ منصوبے پر بلاجوازتنقیدسننے کوملی ،اس کے مطابق صوبائی حکومت بی آرٹی کے ساتھ پشاورکی خوبصورتی اور صفائی کابھی خیال رکھے ۔توجناب اخلاقی جواز تو یہ ہے کہ تعمیراتی کام کے ساتھ صفائی کی صورتحال یقینا متاثرہوگی ،یہ تو وہ مثال ہوئی کہ ایک شخص اپنے ہاتھ پہ شیر بنانے گیا ،ابھی ٹیٹو بنانے والے نے شیرکا سرہی شروع کیا تھا کہ مذکورہ شخص دردسے چلانے لگا،اور کہا جنا ب آپ کیا کررہے ہو ،بنانے والے جواب دیا کہ شیر کا سربنارہاہوں تو اس پر اس شخص نے کہاکہ سر چھوڑو شیربناؤ،اسی طرح وہ شخص پیر،پیٹ وغیرہ چھوڑتا گیا ،آخر تنگ آکر بنانے والے کہاکہ جناب آپ جس شیر کی بات کررہے ہیں وہ ایسے ممکن نہیں۔یقینا آپ کو شیر بنانے کے لئے اپنے جسم پہ درد محسوس کرناپڑے گا۔افسوس کہ دنیا اتنی ترقی کرچکی ہے اور ہم مستقبل کی سوچ رکھنے سے یکسر دورہیں،مذکورہ نمائندہ اگر صوبائی حکومت کے مذکورہ منصوبہ کو کچھ اس اندازسے پیش کرتا کہ گاڑی مالکان فلاں فلاں روڈکا استعمال کریں،اسی طرح شہریوں سے اپیل کی جاتی کہ صفائی کا خاص خیال رکھیں تھوڑے ہی عرصہ کی بات ہے آپ گرد سے بچنے کے لئے منہ پہ ماسک کا استعمال کریں،متعلقہ اداروں جیسے پی ڈی اے،محکمہ ماحولیات ،ٹریفک پولیس کے ساتھ تعاون کریں وغیرہ وغیرہ جیسی ہدایات اگر کسی بھی ٹی وی چینل پر دو سے تین منٹ یومیہ چل جائے تو کوئی مضائقہ نہیں کہ عوام میں کسی بھی اچھے کام بارے مثبت سوچ پروان چڑھے۔لیکن جناب انہیں تو ایک کھلا ہوا مین ہول نظرآجاتاہے تاہم اسے بند کرنے اور کسی بھی بڑے حادثے سے بچاؤ کے لئے کوئی احتیاطی تدابیر دیکھنے سننے کونہیں ملیں گے،خیر بات ہورہی تھی پشاورکے تاریخی منصوبہ بی آرٹی کہ جس پر بلاجواز تنقید سننے اوردیکھنے کومل رہی ہے۔جناب میگاپراجیکٹ کی تکمیل میں یقینا شہر کی خوبصورتی اور صفائی کی صورتحال شدیدمتاثرہوگی تاہم اس کی تکمیل کے بعد پشاورکے حالات معمول پر آجائیں گے۔تنقید کرنے اس جانب کیوں نظرنہیں کرتے کہ بی آرٹی کی بدولت ہمیں اور ہمارے بچوں کو سستا ، آرام دہ ،صاف ستھرااور سب سے بڑی بات کہ لگژری سفر کرنے کوملے گا۔جہاں ہرروز عوام کے ٹرانسپورٹرزکے ساتھ جھگڑے معمول بن چکے ہیں وہاں انہیں کم سے کم ذہنی کوفت سے آرام تو ملے گا۔رہی بات بی آرٹی سے متاثر ہونے والی شہر کی صفائی کی تو یومیہ بنیادوں پر پی ڈی اے باقاعدہ صبح شام پانی کے ٹینکرز کے ذریعے جی ٹی روڈپر چھڑکاؤکرتانظرآتاہے کہ جس سے گرد وغیرہ کم ہوجاتی ہے،ساتھ صفائی کاعملہ ہمہ وقت چوکس نظرآتاہے ،اسی کے ساتھ پشاورٹریفک پولیس کی کارکردگی پر کسی نے دواچھے الفاظ نہیں کہے کہ کس طرح انہوں نے رش پر قابو پانے میں کامیابی حاصل کرلی ہے،جی ٹی روڈکی بے ہنگم ٹریفک کو متصل روڈزپر منتقل کردیاہے ،یوں گھنٹوں کی ٹریفک سے بھی پشاورکے باسیوں کی جان چھوٹ چکی ہے۔چمکنی سے کارخانوں جانے والی لوکل اور کمرشل گاڑیاں رنگ روڈکا استعمال کررہی ہیں،اسی طرح رنگ روڈکی دوسری جانب ٹریفک کو چارسدہ روڈپر ڈال دیاگیاہے۔بہرکیف کسی بھی کام کے مکمل ہونے سے قبل اس پر تنقید اخلاق کے دائرے میں نہیں آتا،میڈیا ہاؤسز مذکورہ معاملے میں صوبائی حکومت کے شانہ بشانہ کھڑیں ہوں تاکہ بی آر ٹی کی اصل شکل عوام کے سامنے آئے،کام کے دوران ٹریفک کی روانی بارے عوام کو وقتاًفوقتاً آگاہی فراہم کریں۔اوراسی طرح وہ سب کچھ جو ہم سب سے ہوسکتاہے۔خدارا۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Waqar Ahmad Awan

Read More Articles by Waqar Ahmad Awan: 65 Articles with 26322 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
17 Jan, 2018 Views: 398

Comments

آپ کی رائے