میت کا کھانا اور معاشرتی بے حسی

(Dur Re Sadaf Eemaan, Karachi)

یوں تو ہمارا معاشرہ بے حس اور بے شمار المیوں سے بھرپور ہے ان میں سے ہی ایک ایسا المیہ ہے اور جو لوئر مڈل کلاس اور مڈل کلاس میں ازحد پریشانی کا باعث ہے اور اگر دیکھا جائے تو یہ المیہ سنگین صورتحال اختیار کر رہا ہے اگر کہیں کسی خاندان میں موت واقع ہو تی ہے تو میت کی تدفین ہوتے ہی دیگوں کے ڈھکن کھل جاتے ہیں اور وہی احباب جو کچھ دیر پہلے تسلی دیتے ہوئے نظر آرہے تھے انہیں اپنے کھانے کی، بوٹیوں کی، گرم گرم بریانی کی، فکر ہو جاتی ہیاس کے بعد اہل خانہ جو غم سے نڈھال ہوتے ہیں۔ اب وہ بے چارے مصروف میزبانی ہونے پر مجبور ہو جاتے ہیں۔ لیکن افسوس اس بات کا ہے کہ تعزیت کرنیوالے خود کیوں نہیں سوچتے کہ آیا وہ تعزیت کیلئے آئے ہیں یا پھر دعوت کھانے؟ اگر شریعت میں ہے کہ میت کے گھر والوں کو کھانا پہنچایا جائے تو یہ کھانا صرف اور صرف میت کے گھر والوں کے لیے ہوتا ہے یا پھر جو دور دراز سے تعزیت کیلئے آتے ہیں ان کے لیے۔ مکمل برادری کیلئے کھانا بنوانا، کھانا کھلانا اور ان سب باتوں سے قطع نظر خود غور کریں کہ یہ سب کس پر بار ہے؟ کس پر بوجھ؟ میت کے گھر پر اور اگر بالافرض جس کے گھر میں انتقال ہوا ہے اور وہ اس گھر کا واحد کفیل تھا تو جو تھوڑی بہت بھی جمع پونجی موجود بھی ہوتی ہے وہ اس برادری کی دعوت ِ طعام کی نظر ہو جاتی۔ موجود نہ ہو جمع پونجی تو وہ بے چارے اس غم میں اور برادری کی دعوتِ شیراز کرنے میں قرض دار بھی ہوجاتے ہیں اور اس طرح میت کے اہل خانہ ہر طرح سے خالی ہاتھ ہو جاتے ہیں ۔شرعی طور پر تعزیت کا حکم اس سے بالکل جداگانہ ہے۔ میت کے گھر جائیں اہل خانہ کو تسلی و تشفی دیں ، خاندان کے قریبی اقارب میں جو مالی طور پر مستحکم ہو میت کے گھر والوں کے لیے کھانے کا انتظام فرمائے، دعائے مغفرت و ایصالِ ثواب کا اہتمام کرے اور اس کے بعد اپنے گھروں کی راہ لیں ۔ ایسا ہرگز نہیں جنازہ اٹھنے کے بعد دیگوں کے کھلنے کا انتظار کریں۔ پھر دسترخوان پر تشریف فرما ہو کر بھرے پیٹ سے دوبارہ ملنے کے اختتامی و رسماً جملے بولیں اور گھر کی طرف جائیں یہ طریقہ نہ اخلاقی طور پور ٹھیک ہے نہ شرعی طور پر معتبر ہے بلکہ انسان کی انسانیت پر حرف اٹھانے والی بات ہے۔ کرنے کا کام صرف اتنا ہے کہ معاشرے کے رسم و رواج کے مطابق دیگیں آہی گئیں اور اہلخانہ کا کھانا کھانے پر اصرار بھی ہو توصرف دو لقمے سے زیادہ نہ کھائیں، اس طرح امید ہے ایک نا ایک دن اس نظام فرسودہ سے نجات مل جائے گی۔ ہمیں اپنے آپ کوبدلنا ہے جبھی اس بگڑے ہوئے نظام میں تبدیلی آسکے گی اور ایک مستحکم معاشرہ بھی ان شاء اﷲ جلد وجود میں آجائے گا۔

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: Dur Re Sadaf Eemaan

Read More Articles by Dur Re Sadaf Eemaan: 49 Articles with 26929 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
28 Mar, 2018 Views: 842

Comments

آپ کی رائے
Dur Re Sadaf Eemaan:
bilqul theak farmaya ap ne......mujhe ap ki tahreer se ek asa jumla yad aya hay ky jese likhty hoay bhi mujhe is rasam o rewaj par afsos hora hay ...main ni suna hay ky log intiqal kay khano main bhi is bat per naraz hojaty hain ky hamain sahi se waqt nhi deya gya or hamain khana nhi poucha gya .or had ye hay ky kuch log to intiqal ky khane ko shadi k khana smjhty hain .or kehty hain hamain to ajj birayani main boti bhi nhi mili...had or afsos ki intaha hay ..ap ni tahreer bohat hi achy mozu per likhe ha.ALLAH pak reham farmae ameen .
By: shohaib haneef , karachi on Mar, 29 2018
Reply Reply
0 Like