بے لوث محبت

(راجہ ابرار حسین عاجز, چکوال)
بے لوث محبت کے بارے میں ایک دل کو چھوتی ھوئ تحریر


💘💘 بے لوث محبت 💘💘

تحریر۔۔ راجہ ابرار حسین عاجز

لڑکی کافی دیر سے اصرار کر رہی تھی ۔۔وہ چاھتی تھی کہ مجھ سے محبت کرنے والا لڑکا مجھے بتاۓ کہ وہ کیوں مجھے پسند کرتا ھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔ ۔ لڑکا بار بار یہی کہتا "" ڈارلنگ مجھے تم سے محبت ھے۔۔۔۔۔ اور بس ھے ۔۔۔۔ اسکی کیا وجہ ھے۔۔ میں بتانا بھی چاھوں تو نہیں بتا سکتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔ کیونکہ خود مجھے بھی یہ معلوم نہیں ھے۔۔۔

میں تم سے محبت کرتا ھوں۔کیوں کرتا ھوں ۔مجھے کچھ پتا نہیں۔۔یوں سمجھو میں تمھارے جسم سے نہیں بلکہ تمھاری روح سے محبت کرتا ھوں۔۔۔۔

لڑکی کا اصرار مگر بڑھتا ھی گیا۔۔۔۔۔وہ کہتی " دیکھو ۔۔۔ میری سہیلی کا محبوب میری سہیلی سے بہت محبت کرتا ھے ۔ اور اسکو بتاتا ھے کہ وہ کیوں اس سے محبت کرتا ھے ۔تم مجھے کیوں نہیں بتا سکتے۔میں تمھارے منہ سے وجہ سننا چاھتی ھوں""

لڑکے کا ھر بار وہی جواب ھوتا۔"" جانو میں بغیر کسی وجہ کے تم سے محبت کرتا ھوں۔ کیا ضروری ھے کہ محبت کسی غرض سے۔۔۔کسی وجہ سے ھی کی جاۓ۔۔۔۔۔کیا بے لوث محبت نہیں کی جاسکتی ۔۔۔۔ کیا محبت میں وجوھات کا جاننا ضروری ھے۔۔ ۔۔۔ کیا محبت جسم کی محتاج ھے۔۔

لڑکی اسکی ان فلسفیانہ باتوں پر الجھ سی جاتی۔۔۔ اس کا دل یہ ماننے کو تیار نہ تھا کہ کوئی مرد کسی عورت کے ساتھ اس طرح کی محبت بھی کر سکتا ھے۔۔۔جسکی وجہ عورت کا جسم نہیں بلکہ روح ھو۔۔۔۔۔۔۔وہ تو بس یہ سمجھتی تھی کہ مرد عورت کی خوبصورتی کو دیکھ کر محبت کرنے لگتا ھے۔۔۔۔ وہ عورت کی اداؤں پر دل ہار بیھٹتا ھے۔۔۔۔۔وہ عورت کے جسمانی نشیب و فراز دیکھ کر گھائل ھو جاتا ھے۔۔۔یہ پہلا مرد تھا جو ان سب چیزوں کو چھوڑ کر صرف روح سے محبت کر بیٹھا ھے۔

لڑکا کہتا ۔۔۔""" ھاں میں تمھارے جسم سے نہیں تمھاری روح سے محبت کرتا ھوں۔۔اور تمھیں میرا یقین کرنا ھی پڑے گا۔۔ البتہ اگر تم کہو تو میں اپنی محبت کو ثابت کر سکتا ھوں۔""
""" نہیں مجھے ثبوت نہیں چاھیے۔۔۔مجھے وجہ معلوم کرنا ھے۔۔۔آخر تم نے میرے اندر ایسی کیا چیز دیکھ لی ھے۔۔۔۔۔ جو اسطرح مجھ سے محبت کرنے لگے ھو۔۔"""" لڑکی ضد کرتی

آخر لڑکے نے ہار مان لی ۔وہ تھکے ھوۓ لہجے میں بتانے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔"سنو۔۔۔۔۔ جب تم ہنستی ھو ۔۔۔ تو ایسا محسوس ھوتا ھے ۔۔۔۔جیسے باغوں میں کوئل بول رہی ھے ۔۔۔ میں اس وجہ سے تمہیں پسند کرتا ھوں۔۔۔۔۔۔۔میں تمھاری خوبصورت آنکھوں کی وجہ سے تمہیں محبت کرتا ھوں۔۔۔۔۔۔۔۔تم ایک خیال رکھنے والی لڑکی ھو۔۔۔۔۔۔میں اس لیۓ تمیں محبت کرتا ھوں۔۔۔۔۔۔تمھاری آواز بہت سریلی ھے۔۔۔۔تمھاری سوچ بہت اچھی ھے ۔۔۔۔ میں اس وجہ سے تم سے محبت کرتا ھوں۔۔۔تمھارے گلاب جیسے گال۔۔۔تمھارا کتابی چہرہ۔۔۔۔۔۔۔تمھارا سرو قد سراپا۔۔۔۔۔۔تمھارے سیاہ بال جس سے رات بھی شرماتی ھے۔۔۔۔۔تمھاری ناک اور اس میں پڑی نتھلی نے مجھے پاگل کر دیا ھے۔۔۔تمھاریے چلنے کا انداز ۔۔۔۔ ہرنی بھی جس سے شرما جاۓ۔۔۔۔۔تمھارے مرمریں پیر۔۔۔۔۔۔تمھاری مخروطی انگلیاں۔۔۔۔۔۔تمھاری۔۔۔۔۔تمھاری۔۔۔۔۔۔۔۔۔لڑکا بولتا رہا اور لڑکی سر شاری کے عالم میں سنتی رہی۔۔۔۔

اب لڑکی خوش ھوگئی۔۔۔۔وہ اب مطمئن نظر آنے لگی ۔۔۔۔۔ کیونکہ اس کے محبوب نے اسے محبت کرنے کی وجہ بتا دی تھی ۔ ۔۔۔۔۔

پھر چند دن بعد ایک خوفناک حادثہ پیش آیا ۔کسی گاڑی والے نے لڑکی کو ایسی چوٹ پہنچا دی کہ لڑکی بے ھوش ھو گئی۔۔۔ اب وہ ھسپتال کے ایک بستر پر بے حس و حرکت پڑی ھوئی تھی ۔۔۔ڈاکٹر اس کے گرد گھیرا ڈالے کھڑے تھے۔۔گاڑی کی ٹکر سے لڑکی کے دل کو ایسی چوٹ لگی کہ اب وہ بہت آہستہ دھڑک رہا تھا۔۔۔۔ڈاکٹر مایوس تھے ۔۔کیونکہ لڑکی کا دل کام کرنا چھوڑ رہا تھا۔۔

پھر اس کا محبوب لڑکا اس کے پاس پہنچا۔۔لیکن لڑکی اسکی طرف۔۔۔ نہ دیکھ سکتی تھی۔۔۔ ۔نہ اسکی بات سن سکتی تھی۔۔۔۔وہ اسکی آمد سے بےخبر پڑی تھی ۔

لڑکا سُن ھو کر رہ گیا۔۔ڈاکٹر نے بتایا کہ لڑکی کی زندگی بچانے کا ایک ھی راستہ رہ گیا ھے۔۔۔۔۔ اور وہ یہ ھے لڑکی کو کسی دوسرے کا دل لگا دیا جاۓ۔۔

۔۔۔ لڑکا کچھ سوچنے لگا۔۔ ۔اس کے دل میں ہلچل مچی ھوئی تھی ۔اسکی محبوبہ اب زندہ لاش کی طرح اس کے سامنے پڑی تھی۔۔۔۔۔ اس نے ایک کاغذ لیا اور کچھ لکھ کر لڑکی کے سرھانے رکھ دیا۔اور چلا گیا۔ ۔۔۔۔کاغذ پہ لکھا تھا۔۔۔۔۔۔۔
" میری پیاری محبوبہ ۔
۔۔میں نے تمھاری سریلی آواز کی وجہ سے تم سے محبت کی۔۔۔۔۔۔۔اب تم بول نہیں سکتی۔۔۔۔ ۔اس لیۓ میں بھی اب تم سے محبت نہیں کر سکتا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔مجھے تمھاری مسکراہٹ اچھی لگتی تھی۔۔۔۔ ۔مگر اب تم مسکرانے کے قابل نہیں ھو۔۔۔۔۔ اس لیۓ اب میں بھی تم سے مزید محبت نہیں کر سکتا۔۔۔۔۔۔تم میرا بڑا خیال رکھتی تھیں ۔۔۔۔۔۔لیکن اب تو تم اپنا خیال رکھنے کے قابل بھی نہیں رہی۔۔۔۔۔۔لہذاہ اب میرے پاس کوئی وجہ نہیں رہی کہ میں تم سے محبت کر سکوں۔۔وہ ساری وجوھات ختم ھوگئیں۔ جن کو تم محبت کے لیۓ ضروری سمجھتی تھی۔

۔۔۔۔۔۔لیکن۔۔۔۔۔۔۔۔ میں نے کہا تھا نا۔۔۔۔۔ کہ میں تم سے محبت بغیر کسی وجہ کے کرتا ھوں۔۔۔میں نے کہا تھا نا۔۔۔۔ کہ میں تمھاری روح سے محبت کرتا ھوں۔۔۔۔۔۔۔تمھاری ھنسی ختم ھو گئی ھے۔۔۔۔۔۔تمھاری آنکھوں کی چمک ماند پڑ چکی ھے۔۔۔۔تمھاری گالوں کی سرخی مدھم ھو چکی ھے۔۔تمھارا سراپا زرد پتے کی طرح سوکھ چکا ھے۔۔
۔۔۔۔۔۔۔لیکن۔۔۔۔۔۔۔۔
تمھاری روح اب بھی موجود ھے۔۔۔تم اب بھی وہی ھو۔۔۔۔۔۔۔۔میرے لیۓ پہلے بھی تمھارے جسم کی کوئی اہمیت نہ تھی ۔۔۔۔اور اب بھی نہیں ھے۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لہذٰا میری محبت اب بھی قائم ھے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔میں نے کہا تھا کہ میں اپنی محبت ثابت کر سکتا ھوں۔۔۔۔۔۔مجھے امید ھے کہ جب تم یہ خط پڑھ رہی ھو گی ۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔ تو تمھیں میری محبت کا ثبوت مل چکا ھوگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تمھیں میری محبت کا یقین آگیا ھو گا۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فقط تمھارا محبوب۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔چند دن بعد جب لڑکی یہ خط پڑھ رہی تھی تو آنسو اسکی آنکھوں سے لڑئیوں کی طرح جاری تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس کے ساتھ والے بیڈ پر سفید کفن میں لپٹا لڑکے کا مردہ جسم پڑا تھا۔۔۔۔۔۔اپنا دل دے کر اس نے اپنی محبت کا ثبوت دے دیا تھا۔۔۔
 

Comments Print Article Print
 PREVIOUS
NEXT 
About the Author: راجہ ابرار حسین عاجز

Read More Articles by راجہ ابرار حسین عاجز: 10 Articles with 5817 views »
Currently, no details found about the author. If you are the author of this Article, Please update or create your Profile here >>
05 May, 2018 Views: 730

Comments

آپ کی رائے